منگل، 15 ستمبر، 2015

نیلی کے سو رنگ/سرمد صہبائی

ماوری کے نام


خلقت جب مکر وریا کے جبر میں دَر بند ہوئی تو صوفیوں نے معرفت کا دروازہ کھولا۔ اہل دربار کا لہجہ ترک کیا، اور اس خطے میں بہنے والے دریاؤں کی مٹی میں گوندھے ہوئے کوذۂ سخن کے لب کلمۂ ہُو سے وا کیے۔
یہ کلمۂ ہُو دربار سے باہر بسنے والی مخلوق کے دلوں میں صدیوں سے دھڑک رہا ہے۔
اس دھمال میں ہمارے جلا وطن استعاروں دیو مالاؤں اور سُروں کا رس گُھلتا ہے۔
یہی دھمال ہمارے تہذیبی لاشعور کا ماخذ ہے۔
’’نیلی کے سو رنگ‘‘ اس حال میں اتر کر ایک بچھڑے ہوئے سخن سے ہم آغوش ہونے کی خواہش ہے۔
حاجی لوگ مکّے نوں جاندے
اساں دیس رانجھن دے جانا
__________
’’نیلی کے سو رنگ‘‘ میں میرے کئی دوستوں کے رنگ شامل ہیں، خاص طور پر اشفاق سیلم مرزا، جنھوں نے وادئ سندھ اور ہڑپہ کی قدیم تہذیبوں کے دروازے مجھ پر کھولے۔
مرحوم عبدالغفور درشن کی سنگت جو ایک اور رنگ لائی اور راحت نسیم ملک جس نے اِن نظموں اور کافیوں کی ایک ایک سطر سے گزر کر اس کتاب کو نکھرایا اور ترتیب کیا۔
سرمد یار سجن پر واری
اپنی سخن کمائی سائیں
اَن ہونی کی دُھول پر نیلیؔ کے سو رنگ
صاحباںؔ سوئے صحن میں مہک اُڑے چودنگ

سرمد صہبائیؔ

موسمِ وصال کا گیت


لال کپڑوں میں آ
دُھوپ کے کیسری بھیس میں
من کے سندیس میں
بن کے سُورج مکھی
آنکھ میں لہلہا
لال کپڑوں میں آ
لال کپڑوں میں آ
ریشمی شام کے
جامنی اَنگ میں
وصل کے رنگ میں
رقص کرتے ہوئے
جھانجھریں چھن چَھنا
لال کپڑوں میں آ
لال کپڑوں میں آ
چُوم آنکھیں مری
ہونٹ پر ہونٹ رکھ
کھینچ سانسیں مری
موج بن کر لپٹ
آ مجھے لے بہا
لال کپڑوں میں آ
لال کپڑوں میں آ
بستیوں میں نِکل
آنگنوں میں اُتر
بند گلیوں کے سینے سے
ہو کر گزر
ہاں جلا ہاں جلا
اِک دیے سے دیا
لال کپڑوں میں آ
لال کپڑوں میں آ
***

بھور بھئے دیدار کی

بھور بھئے دیدار کی
تھم تھم دیوے لَو
جیسے پیاسی اُوک میں
میٹھے جل کی رَو

سَر پر چُنری کیسری
اندر اُجلی پَو
بادل میگھ ملہار کا
پلّو گیا بھگو

کجلائے گی چاندنی
آنگن میں مت سو
***


تیری بیل چڑھوں

تیری بیل چڑھوں میں سَانول
تیری بیل چڑھوں
خوشبو کے مدھم کَن رس میں
اپنا بھید کہوں
تیری بیل چڑھوں
تیرے شہد بھرے ہونٹوں سے
پیاسی گود بھروں
تیری بیل چڑھوں
ہم آغوشی کے موسم میں
کلی سے پُھول بنوں
تیری بیل چڑھوں
رنگ اور خوشبو جیسے بچے
تیرے سنگ جنوں
تیری بیل چڑھوں میں سانول
تیری بیل چڑھوں
***

دوہا چندی داس کا

شام کے اُودھے ہونٹ پر
دوہا چندی داس کا

سر پر نیلا آسماں
نیچے بستر گھاس کا

بہے ترے دریاؤں پر
کاسا میری پیاس کا

لال کنول سے ہاتھ میں
سندیسہ کس باس کا

سدا جیے تیری گود میں
اُجلا پھول کپاس کا
***

کافی

مُکھ کی جوت بڑھی
پوہ ماگھ کے موسم میں یہ
کیسی دُھوپ چڑھی
مُکھ کی جوت بڑھی
اُترا لال لبوں میں بوسہ
صدف میں بوند پڑی
مُکھ کی جوت بڑھی
جیون کچی گا گر سَائیں
چاروں اُور جھڑی
مُکھ کی جوت بڑھی
رات ڈھلی نہ دِن ہی بِیتا
اُتری عجب گھڑی
مُکھ کی جوت بڑھی
آدھی رات میں ناچی مِیرؔ ا
جیسے پُھول جھڑی
مُکھ کی جوت بڑھی

پتھرائے نینوں میں سانول
تیری مُکھٹ جڑی
مُکھ کی جوت بڑھی
سرمدؔ یار تری گھدڑی میں
دیکھی لعل لڑی
مُکھ کی جوت بڑھی
***

کافی

ہونٹوں پر ہونٹ کو رکّھ سَائیں
میری جان لبوں پر چکّھ سَائیں
بے شک سَائیں
بے شک سَائیں
تجھ بِن یہ جوبن ککّھ سَائیں
ہو مہر تری تو لکّھ سَائیں
بے شک سائیں
بے شک سائیں
یہ جیون اک جاتک سَائیں
من بھیدوں کی گولک سَائیں
بے شک سَائیں
بے شک سَائیں
سب رُوپ رہس ناٹک سَائیں
اِک تیرا درشن حق سَائیں
بے شک سَائیں
بے شک سَائیں
***

سنو لائی لگ سانول کے انگ سانولیاں

سنولائی لگ سانول کے انگ سانولیاں
چیتر رُت کی لاڈلیاں
ندی کنارے عریاں ہوتیں
اپنے آپ کو جَل میں دیکھ کے حیراں ہوتیں
کالے بالوں والڑیاں
چیتر رُت کی لاڈلیاں

امبر اُترا ندی کے اندر
ہرا سمندر گوپی چندر
’’
کتنا پانی کِتنا پانی‘‘
پوچھیں یہ مَن بھانولیاں
چیتر رُت کی لاڈلیاں
سنو لائی لگ سانول کے اَنگ سانولیاں
***

کافی

ٹھل ٹھل آوے موج سندھل کی
تاہنگ پرانی یار پُنھل کی
موج سندھل کی
شام کی مُٹھی میں اِک جُگنو
صحراؤں میں بوند اِک جَل کی
موج سندھل کی
خواہش اِک بے انت سمندر
سانس کی مہلت پل دو پل کی
موج سندھل کی
ہجر زدہ آنکھوں میں اُتریں
گرم دو پہریں تپتے تھل کی
موج سندھل کی
سارنگ کے سنگ آ گھر سائیں
موڑ مُہار اُڑتے بادل کی
موج سندھل کی
رمز سخن کی مُشکی بُوٹی
گہرے گیانوں کے جنگل کی
موج سندھل کی
***

کافی

چیتر رُت کی جَائی ہُو
من میں آن سَمائی ہُو

مُشکی کالی مینڈھری
چھَاتی پر مستائی ہُو

تیرے ہجر کا فاصلہ
ازلوں کی تنہائی ہُو

تیری دید سے نسریں نیناں
تیرا مُکھ بینائی ہُو

میرے سنگ نہ میرا سایا
تیرے سنگ خدائی ہُو

آدے مجھ کو بھی رَب سَائیں
اپنی بے پروائی ہُو
ایک سلونے سَپنے کی رُت
گورے مُکھ پر چھائی ہُو

سرمدؔ سانگ مِلے سب سنگی
سچّل اور بھٹائی ہُو
***

کافی

تیرے سنگ پریتی سَائیں
تیرے سنگ پریتی
بسر گئی سَب سُدھ بُدھ اپنی
کیا بیتی جگ بیتی سَائیں
تیرے سَنگ پریتی
رُوم رُوم سے پُھوٹے سرگم
کیسے سُر سنگیتی سَائیں
تیرے سَنگ پریتی
تیری دید سے سَپنے سینچوں
تیری نندیا نیتی سَائیں
تیرے سَنگ پریتی
ریت ازل کی پریت پُنھل کی
ناں ہاری ناں جیتی سائیں
تیرے سَنگ پریتی
تیرے میگھ بدن کے رَس میں
میں پیاسی سُکھ سِیتی سَائیں
تیرے سَنگ پریتی
***

کافی

تُم سَنگ سانول نین سدھارے
تم سَنگ نین سدھارے
ایک ہی پَل کی اوٹ میں ہم نے
رنگ عجب دیدارے
سانول
تم سَنگ نین سدھارے
برکھا رُت کی مست ہوانے
تیرے نقش سنگھارے
سانول
تم سَنگ نین سدھارے
بھید بھری آنکھوں میں کیسی
رمزوں کے جھلکارے
سانول
تم سَنگ نین سدھارے
ہم نے شب بھر تیرے بدن سے
اپنے لَب رُخسارے
سانول
تم سَنگ نین سدھارے
رات اور دن کے چوک پہ ہم کو
خلقت کیوں سنگسارے
سانول
تم سنگ نین سدھارے
***

کافی

تو بے انت سمندر جاناں
پل بھر عُمر ہماری
جاناں
پل بھر عُمر ہماری
دیکھوں تو وہ سُرخ آلاؤ
چکھّوں تو گلزاری
جاناں
پل بھر عُمر ہماری
تیری دید کی عُریانی میں
کیا خوابی بیداری
جاناں
پل بھر عُمر ہماری
بوسہ بوسہ اُن ہونٹوں سے
اُتری دھُوپ کنواری
جاناں
پل بھر عُمر ہماری
ناں میں صاحباںؔ ناں میں سوہنیؔ
بیچ کھڑی منجدَھاری
جاناں
پل بھر عُمر ہماری
اپنا کچّ کس اُوٹ چھپاؤں
سر پر بادل بھاری
جاناں
پل بھر عُمر ہماری
جیون کے سَنگ راس رچاؤں
موت مری اسواری
جاناں
پل بھر عُمر ہماری
تیرا شوق تری زر دوزی
اپنا من غفّاری
جاناں
پل بھر عُمر ہماری
***

چمکا تارہ شام کا

چمکا تارہ شام کا
دِیا جَلا تِرے نام کا

تنہا دِل کے سامنے
لشکر تھا آلام کا

تیرے سُخن کی اوٹ میں
موسم تھا الہَام کا

رگ رگ مَستی باؤلی
مُکھ چُوما کس جَام کا

سرمدؔ تیری کُوک سے
بَن گونجا اُوھام کا

دِیا جلا ترے نام کا
***

مِیرا بائی کے بھجن کا رُوپ

مائی مرامَن موہن ہَریو
جاؤں کہت مَاں پَران ہمارو
سانول کے سَنگ وریؤ
مائی مرامَن موہن ہَریو
سجنی جاؤں مَیں جَل بھرنے
سَر پر گا گر دھریو
مائی مرامَن موہن ہَریو
اس آلی بھولی صُورت پر
کِس نے ٹُونا کریو
مائی مرامَن موہن ہَریو
لوک لاج سب تج دیو سَائیں
کام کاج تب سَریو
مائی مرامَن موہن ہَریو
سرمدؔ مِیراؔ کے گُن واری
جس سَنگ دُکھ سُکھ جَریو
مائی مرامَن موہن ہَریو
***

کافی

سوئے سوئے مَیں ہو گئی چوری
کھینچ رہا ہے ہولے ہولے
کون مرے سپنوں کی ڈوری
ہو گئی چوری
سوئے سوئے مَیں ہو گئی چوری
مست بدن میں سات سمندر
لہر لہر مُنہ زوری
ہو گئی چوری
سوئے سوئے مَیں ہوگئی چوری
تُو چڑھتا مٹیالا دریا
اور مَیں گا گر کوری
ہو گئی چوری
سوئے سوئے مَیں ہو گئی چوری
تیرے رنگ میں رنگ لَیا جی کو
ناں کالی ناں گوری
ہو گئی چوری
سوئے سوئے مَیں ہو گئی چوری
میں سسیؔ تھل بابل میرا
سندھو دیوے لوری
ہو گئی چوری
سوئے سوئے میں ہو گئی چوری
***

کافی

سانول آکر دِل آبادی
عرض گزاریں پیا سے نیناں
انگ انگ فریادی سانول
آکر دِل آبادی
مَست ہوانے کھولی زُلفیں
جاگی چیتر زادی سانول
آ کر دِل آبادی
تیرے لال لَوے ہونٹوں کی
خوشبو کرے منادی سانول
آ کر دِل آبادی
تیرا ہجر سَدا محکومی
تیرا وصل آزادی سانول
آ کر دِل آبادی
پنج دریا جہاں گلے ملیں وہ
اپنے سخن کی وادی سانول
آ کر دِل آبادی
***

کافی

تیرے انگ سمائی سَائیں
تیرے انگ سمائی
گھر گھِر آیا گہرا بادل
بوند صدف مُکھ پائی سَائیں
تیرے انگ سمائی
لال لبوں کی دُھن میں اُڑتی
چیتر کی پُروائی سَائیں
تیرے انگ سمائی
رگ نزدیکی، موت شریکی
جیون سَنگ سگائی سَائیں
تیرے انگ سمائی
دید کروں نادید کا موسم
کیسی جاگ جگائی سَائیں
تیرے انگ سمائی
نیناں شام کجل کی دھارا
مُکھ فجری رُشنائی سَائیں
تیرے انگ سمائی
برکھا رُت میں قوس دھنک کی
رنگوں کی انگڑائی سَائیں
تیرے انگ سمائی
رستہ تکتے دن چڑھ آیا
رو رو رین بہائی سَائیں
تیرے انگ سمائی
سرمدؔ یار سجن پرواری
اپنی سخن کمائی سائیں
تیرے انگ سمائی
***

کافی

کیسی کیسی رچنا بولے
چنچل اِک رچّنار
نیا تھیئے سنسار
سمے کی راسیں تھام کے نِکلا
نَراک شاہ سوار
نیا تھیئے سنسار
کون و مکاں میں تُلی رکابیں
دھڑکتے سُم انگیار
نیا تھیئے سنسار
سَپ رنگی ساڑھی کے کسّ میں
مستائی اِک نار
نیا تھیئے سنسار
کب اترے گی پیاس لبوں کی
اُن ہونٹوں کے پار
نیا تھیئے سنسار
بینائی سے باہر پاؤں
مُرشد کا دیدار
نیا تھیئے سنسار
***

کافی

سُن سانول تُو سورج مُکھیّا
تیری دید سنہری
تیرے دھیان کی صبحیں روشن
جسم کی نیندیں گہری سانول
تیری دید سنہری
دَائیں بائیں موت اور جیون
اندر چوک کچہری سانول
تیری دید سنہری
کس چادر دُہرے دُکھ باندھوں
میری سانس اکہری سانول
تیری دید سنہری
راکھ ہُوا برہاکا راون
اُتری رات دسہری سانول
تیری دید سنہری
تیری آنکھ فجر کا تارہ
پِنڈا شکر دو پہری سانول
تیری دید سنہری
تیری دید سنہری
***

میں راوی دریا کی داسی

میں راوی دَریا کی داسی
مادھو کے سَنگ راسی
مادھو کے سَنگ راسی
لہر لہر وہ چڑھتا ساگر
اور میں پورن ماشی
مادھو کے سَنگ راسی
تیرا نام مری مُکھ بولی
کیسی سُخن شناسی
مادھو کے سَنگ راسی
آ برکھا کے بھیس میں سانول
ہری تھیئے بے آسی
مادھو کے سَنگ راسی
دِن ناہیں دیکھوں رات نہ دیکھوں
میں تو درس پیاسی
مادھو کے سَنگ راسی
کیچ سندھ میں ڈھونڈے سکھیاں
شہر لہور کی واسی
مادھو کے سَنگ راسی
***

لوک رس

سانولی سے ملنا
پھول سَنگ کھِلنا

کنکے کی بالی
موتیے کی ڈالی

پُھول کی کٹوری
دُودھ بھری گوری

ماتھے پہ بَندھڑی
سینہ آم سندھڑی

ہونٹ کچناری
رُوپ گلناری

پتناں پہ پانی
پھوٹتی جوانی

برہا کا موسم
چلے ہَوا تھم تھم

چاند کی سواری
کُونج کی اُڈاری

پریت کی رسمیں
کچی پکی قسمیں

ڈبیا میں مُندری
گھونگھٹا میں سُندری

کھیت ہیں سنہرے
چاروں اُور پہرے

آشا نراشا
چوک پہ تماشا
***

کافی

تیرا سپنا امر سمے تک
اپنی نیند اَدھوری، سائیں
اپنی نیند اَدھوری
کالے پنکھ کُھلے کوئل کے
کُو کی بَن میں دُوری، سائیں
اپنی نیند اَدھوی
تیرے تن کا کیسر مہکے
خوشبو اُڑے سندھوری، سائیں
اپنی نیند اَدھوری
میرا عشق زمیں کی مٹی
ناں ناری ناں نوری، سائیں
اپنی نیند اَدھوری
سزا جزا مالک کا حصّہ
بندے کی مزدوری، سائیں
اپنی نیند اَدھوری
تیرا ہجررُتوں کی ہجرت
تیرا وصل حضوری، سائیں
اپنی نیند اَدھوری
تیری مُشک بدن کا موسم
جو بن رس انگوری، سائیں
اپنی نیند اَدھوری
بوسہ بوسہ انگ انگ میں
کس نے گُوندھی چُوری، سائیں
اپنی نیند اَدھوری
تیرا کِبر تری یکتائی
اپنا من منصُوری، سائیں
اپنی نیند اَدھوری
تن کو چیر کے پُھوٹی خواہش
کیا ظاہرمستوری، سائیں
اپنی نیند اَدھوری
***


کافی

میں نہ کل نہ آج
سمے کی شہ رگ میں اِک ازلی
تڑپتا کھرج کھماج
میں نہ کل نہ آج
تیرے دار کی مُنہ دِکھلائی
سردیوے حلاّج
میں نہ کل نہ آج
ظاہر باطن شرع شریعت
تیرے رسم رواج
میں نہ کل نہ آج
ہم سادہ بندے ربّ سائیں
لُچّا دَھرم سماج
میں نہ کل نہ آج
تیری شاہی میں دے خلقت
خوں کا باج خراج
میں نہ کل نہ آج
بیچ کھیت کے کھڑا بجوکا
چاروں اُور اناج
میں نہ کل نہ آج
میں سندھو دریا کی باندی
روھی میرا داج
میں نہ کل نہ آج
اُن آنکھوں میں پگھلے دیکھوں
نیلم اور پکھراج
میں نہ کل نہ آج
سرمدؔ یار سخن کی رمزیں
بجلی رم جھم گاج
میں نہ کل نہ آج
***

کافی

جیون ایک دھمال اُوسائیں
جیون ایک دھمال
تن کا چولا لہر لہو کی
آنکھیں مِثل مَشال
جیون ایک دھمال
سانولے مکھ کی شام میں چمکے
دو ہونٹوں کے لعل
جیون ایک دھمال
وصل کی برکھا باندھ کے نکلی
ست رنگارومال
جیون ایک دھمال
آنکھوں میں دیدار کی مِستی
تن میں لہو بھونچال
جیون ایک دھمال
سانجھے دُکھ سُکھ سانجھا اَن جَل
سانجھ مویشی مال
جیون ایک دھمال

کِن گہری مُشکی راتوں کے
بھیدی کالے بال
جیون ایک دھمال
سرمدؔ یار تمھیں ہو رانجھو
ملے جو ہیرؔ سیال
جیون ایک دھمال او سائیں
جیون ایک دھمال
***

کافی

اپنا آپ نہ پُورن ہو
دل کے اندر بیٹھا کیدو
کیسے رانجھن ہو
اپنا آپ نہ پُورن ہو
مُکھ بھر ہو تری دید سُہانی
پل بھر جیون ہو
اپنا آپ نہ پُورن ہو
آلگ سینے کر رشنائی
اب گھر روشن ہو
اپنا آپ نہ پُورن ہو
چاند چڑھے تیری خواہش کا
دریا جوبن ہو
اپنا آپ نہ پُورن ہو
پَل میں دھُوپ پلک میں چھایا
ہونی اور اَن ہو
اپنا آپ نہ پُورن ہو
آرچ میرے لہو میں سجنی
سدا سہاگن ہو
اپنا آپ نہ پُورن ہو
***

کافی

کیسا دِن اور کیسی رات
ذات صفات سے باہر پاؤں
میں بندے کی ذات
کیسا دِن اور کیسی رات
شطرنجی شہروں میں دیکھو
خلقت کی شہ مات
کیسا دِن اور کیسی رات
کاٹو مایا کو مایا سے
مِلتے لمبے ہات
کیسا دِن اور کیسی رات
حَبس کے بعد چڑھے گی آندھی
پھر ہو گی برسات
کیسا دِن اور کیسی رات
تیرے ہونٹ کا بوسہ مانگوں
موسم کی سوغات
کیسا دِن اور کیسی رات
***

کافی

سورج سَنگ رنگ ہو گیؤ لال
واہ شمسو تبر یزی تیرا
کیسا حال دھمال
سورج سَنگ رنگ ہو گیؤ لال
تیری دُعائیں سُرخ کبوُتر
اُڑ اُڑ توڑیں جال
سورج سَنگ رنگ ہو گیؤ لال
تیرے سُر سے مَن کی مستی
دھم دھم دیوے تال
سورج سَنگ رنگ ہو گیؤ لال
او لاثانی، تیری بانی
بھڑکے مثل مشال
سورسَنگ رنگ ہو گیؤ لال
تیری کوُک پہ گھر سے نکلے
مان رکھو لج پال
سورک سَنگ رنگ ہو گیؤ لال
تو ظاہر تُو باطن تجھ سے
اپنا سُخن سوال
سُورج سِنگ رنگ ہو گیؤ لال
***

کافی

واہ ری ماں تیرے بیٹوں پر
کیسی جوانی آئی
مُکھ پر دھُوپ چڑھی غیرت کی
تن میں رَت اَتھرائی
واہ ری ماں تیرے بیٹوں پر
کیسی جوانی آئی
مَس پُھوٹی تو بجلی چمکی
ایک گھٹا گھِر آئی
واہ ری ماں تیرے بیٹوں پر
کیسی جوانی آئی
چھاتی لگ ہوئی موت سہاگن
کیسے بَر پرنائی
واہ ری ماں تیرے بیٹوں پر
کیسی جوانی آئی

کس نے موت کو باندھ سرہانے
صاحباں آن جگائی
واہ ری ماں تیرے بیٹوں پر
کیسی جوانی آئی
صدقے جاؤں اس ہیبت کے
پتھر تھِی گئے رائی
واہ ری ماں تیرے بیٹوں پر
کیسی جوانی آئی
بزدل شہروں کے سینے پر
شیروں کی انگڑائی
واہ ری ماں تیرے بیٹوں پر
کیسی جوانی آئی
تیرے بخت بھرے ہاتھوں نے
کیسی گھڑہت چکھائی
واہ ری ماں تیرے بیٹوں پر
کیسی جوانی آئی
***

کافی

اُو مہاویر اُو مہاویر
کھنچی ہے رات اور دَن کے پُل پر
خلقت کی تقدیر
او مہاویر او مہاویر
تُلی ہے کیچ سے راوی تٹ تک
اِک خونی شمشیر
او مہاویر او مہاویر
ہاڑا دیس پنجاب کے لوگو
کھیڑے لے گئے ہیر
او مہاویر او مہاویر
جاگ فرید اُٹھ لُٹ گیا تیرا
رُوہی ملک ملیر
او مہاویر او مہاویر
ایک پلک بھردید ہے اُس کی
باقی ہے تفسیر
او مہاویر او مہاویر
بارش اور خوشبو دو بہنیں
چیتر سوہنا ویر
او مہاویراو مہاویر
سانسوں سے یہ رچنا کاتے
من ہے بھگت کبیر
او مہاویر او مہاویر
***

کافی

تاب نہ لائے دِل بے تابی
اُدھم کرے کافر بے دیدہ
توڑ ے شرم حجابی
تاب نہ لائے دِل بے تابی
من کے اندر من نہ ٹھہرے
ساحل کے سینے سے باہر
دم چڑھتے پانی کا لہرے
گاجے چمکے، بھر بھر چھلکے
ہر پل کرے خرابی
تاب نہ لائے دِل بے تابی
ناں مانے مَن اَڑ اَڑ جائے
اس شہدُے کو کون منائے
بے صبرا بے مہرا ظالم
حق سچ کرے شتابی
تاب نہ لائے دِل بے تابی

اپنے دیس ہوئے پردیس
اپنے دیس ہوئے پر دیس
تیری گلی میں تجھ سے ملنے
آئیں اب کس بھیس
اپنے دیس ہوئے پردیس
ماند پڑی آنکھوں کی جوتی
گورامُکھ گہنایا
رہن پڑا ترا اُجلا جیون
جوبن ہوا پرایا
کن ہاتھوں سے اب گوندھے گی
لہو میں بھیگے کیس
اپنے دیس ہوئے پردیس
بے وطنی کے شہر میں اُتری
غیروں جیسی رات
کہاں گئے وہ گوری تیرے
چندر ماں سے ہاتھ
کب لائیں گے پُھول اور پنچھی
اب تیرا سندیس
اپنے دیس ہوئے پردیس
***

کافی

اُٹھ گیؤ آب و دانہ ،سائیں
اُٹھ گیؤ آب و دانہ
بچھڑے ساک سجن سب سنگی
تھی گیؤ دیس بگانہ، سائیں
اُٹھ گیؤ آب و دانہ
نئی نئی تیری چترائی
اپنا جہل پُرانا، سائیں
اُٹھ گیؤ آب و دانہ
پَل دو پَل تیری فِرعونی
اپنی عُمر زمانہ، سائیں
اُٹھ گیؤ آب و دانہ
موت اور جیون تیری رسمیں
اپنا اور بہانہ، سائیں
اُٹھ گیؤ آب و دانہ
تیرا سُوت چر خڑے تیرے
اپنا تانا بانا، سائیں
اُٹھ گیؤ آب و دانہ
نافۂ گل کہیں کُنجِ صدف میں
اپنا ٹھور ٹھکانہ، سائیں
اُٹھ گیؤ اب و دانہ
سرمدؔ یار سخن کی تسبی
سو سو جگ اک دانہ، سائیں
اُٹھ گیؤ آب و دانہ
***

لوک رس

رنگوں میں رس جاناں
پُھول ہیں باغوں میں
تیرے ہونٹوں کا مَس جاناں

موسم ہے جوانی کا
پتناں سے باہر ہے
دَم چڑھتے پانی کا

اک جوڑا سیبوں کا
چاند ہے پاؤں میں
ہالہ پازیبوں کا

تیرا ہجر شدیدی ہے
رات ہے کربل کی
دِن شمریزیدی ہے
پیڑوں پہ پھل جاناں
عمر ہماری ہے
تیری دید کا پل جاناں

چادر پشمینے کی
سُرخ رومالوں میں
خوشبو ہے پسینے کی

دن پورے ست جاناں
ڈار پرندوں کی
لائی تیرے خط جاناں
***

کافی

واہ جانِ محبُوبیاں
عیب مرے تری خوبیاں
واہ جانِ محبُوبیاں
اُجلے مُکھ کی دھوپ پر
آنکھیں شاماں ڈوبیاں
واہ جانِ محبُوبیاں
ایک جھلک تیری دید کی
عمروں کی مجذوبیاں
واہ جانِ محبُوبیاں
موت، مقّدر، فیصلے
تیری خوش اسلوبیاں
واہ جانِ محبُوبیاں
سرمدؔ کی عریانیاں
اور تیری محجوبیاں
واہ جانِ محبُوبیاں
***

کافی

دلِ نہ ازل سے راضی سائیں
دِل نہ ازل سے راضی
ایک ہی رمز سمائی من میں
کیا مُلاّ کیا قاضی سائیں
دِل نہ ازل سے راضی
آدھی رات میں کُوک سخن کی
اُڑتی آتش بازی سائیں
دِل نہ ازل سے راضی
تیری دید سے موسم بدلا
جاگ لگی کیا تازی سائیں
دِل نہ ازل سے راضی
بوسہ بوسہ آیت اُترے
تسبی پڑھیں نمازی سائیں
دِل نہ ازل سے راضی
چکھوں حال میں حال کی مستی
مستقبل کیا ماضی سائیں
دِل نہ ازل سے راضی

جنم جنم میں بانٹے عُمریں
تیری زُلف درازی سائیں
دِل نہ ازل سے راضی
تیرا شوق ہے دوزخ جنت
اپنی دُھن سُر سازی سائیں
دِل نہ ازل سے راضی
میٹھی چندن ڈال کمر پر
پُھول کھلا پشوازی سائیں
دِل نہ ازل سے راضی
سَنگ کو آب کرے ہے سرمدؔ
تیری سخن گدازی سائیں
دِل نہ ازل سے راضی
***

کافی

واہ حُسینا تیری مَستی
تن کے اندر شب کربل کی
مُکھ پر فجر الستی
واہ حُسینا تیری مستی
اپنا کعبہ دین اور دنیا
تیری سخن پرستی
واہ حُسینا تیری مستی
بوند صدف مُکھ گل سَنگ شبنم
تیری لب پیوستی
واہ حُسینا تیری مستی
دُکھ سُکھ تیرا تانا بانا
سُر سنگیت گرہستی
واہ حُسینا تیری مستی
***

چندر مُکھ کی ڈاریاں

چندر مُکھ کی ڈاریاں
اَمرت رَس کی دھاریاں

چیتر رُت کی اوٹ میں
نکلی گھر سے کنواریاں

کیدو بیٹھا چوک پر
اور رنگپوری لاریاں

اپنی مات اور اپنی جیتیں
اپنی اپنی باریاں
***

گوری سِیس گندھایا

گوری سِیس گندھایا دیکھو
گوری سِیس گندھایا
گورے تن کی عریانی میں
تازہ جَل کملایا
گوری سِیس گندھایا
گہرا رس چڑھتے جوبن کا
چھاتی میں بھر آیا
گوری سِیس گندھایا
اِک کیسر رنگی اَجرک کا
موسم سَر پر چھایا
گوری سِیس گندھایا
چلتی پھرتی دھوپ بدن میں
کمر کمر تک سایا
گوری سِیس گندھایا
سویا پُھول ترا رخُسار
دُھوپ لگی کھِل آیا
گوری سِیس گندھایا دیکھو
گوری سِیس گندھایا دیکھو
***

چندن رَس

چندنا اُو چندنا
آنا میرے اَنگنا
تن کی منڈیر پر
ہولے ہولے چڑھنا
بن کے چنبلی
گود میں مہکنا
نیند کے سُرور میں
روم روم چلنا
بن جانا ہنسلی
سینے سے لپٹنا
نور بھر پور سے
چھاتیاں مسلنا
بانہہ کو پکڑ کر
بن جانا کنگنا

بوند بوند ڈھلنا
انگ انگ لگنا
ہونٹ رکھ ہونٹ پر
دُکھ میرے چکھنا
اکھّیوں کو چوم کر
بن جانا سپنا
صُبح سویرے
آنکھ سے ٹپکنا
پُھول پُھول کھِلنا
اوس میں چمکنا
چندنا او چندنا
آنا میرے انگنا
***

وصال رَس
مہندی کالے باغ کی
عُریاں لاٹ چراغ کی

آنکھیں کجّل دَھاریاں
دو چانن کی باریاں

چُومے زلف اِک باؤلی
سینے کی مُکتاؤلی

کنگن بھری کلائیاں
رنگوں کی پرچھائیاں

جوبن بھری گلابیاں
ڈھکی ہوئی بیتابیاں

کانوں میں دو بالیاں
دو چھوٹی دیوالیاں

مہکی قلم گلاب کی
رگ چمکی مہتاب کی

خواب بھری اِک پالکی
اُتری رات وصال کی
***

اب ہم گُم ہوئے اپنے ہی شہر

اب ہم گُم ہوئے اپنے ہی شہر
کہاں گنوائی صُبحیں شامیں
گزری کہاں دوپہر
اب ہم گم ہوئے اپنے ہی شہر
پل میں چھایا پل میں بادل
پل میں شام کا تارہ
گہرے بن کی اوٹ میں جیسے
بہتی دھوپ کی دھارا
لیے پھری ہمیں کہاں کہاں اِک
رنگ برنگی لہر
اب ہم گُم ہوئے اپنے ہی شہر
تیرے رُوپ کی گہری رمزیں
کیا دریا کیا تھل
تیری دید کو جاتے دیکھے
رانجھن یار پُنھل
تیری خاطر ہم نے پیا ہے
کیا امرت کیا زہر
اب ہم گم ہوئے اپنے ہی شہر
***

جوبن رس

جوبن پہلی عمر کا
جوں چیتر کی سَار
پُروا جھک جُھک کھولتی
کلیوں کے اسرار

کھُلی نین کی پنکھڑی
دُھوپ گئی کجلا
اُن بالوں کی سیج پر
مستائی پُروا

لے بادل کو گودڑی
پگ باندھے ملہار
چڑھی گھٹائیں باؤلی
اُن تلوؤں کے بھار

لال چُنر کی اوٹ میں
لو دیتی پزوان
چلے پون کے ڈھنگ میں
وہ ہنڈول سمان

کھنکی جھا نجھر راہ میں
جیسے پُھول جھڑی
دودھ بھرے دو پاؤں تھے
پگ پگ بوند اُڑی

اُترا نازک ڈھاک پر
تتلی جیسا ہاتھ
ترچھا روزن بانہہ کا
چندر ماں کی جھات

میٹھی نار دُلار سی
جوں پنگھٹ کا پُھول
رکھّے پاؤں سہج سے
اُڑے سندھوری دُھول

ہاتھ پیالی نُور کی
مُکھ رشموں کی پھوار
کوندے کمر کٹار سی
جُوں تِلڑے کی تار

جھلمل ہالہ حوض کا
گلے گلے تک آئے
ڈلک سُنہرے جسم کی
پانی کو کملائے

لَب جوں قاش گلاب کی
لال تمت رخسار
ہنستے مُکھ کی اوٹ میں
کُھلتے صدف ہزار

دو اکھّیاں رس دھاریاں
جھپک رچائیں راس
پل میں اڑتی پُھلجڑی
پل میں تھیئ اداس
مہندی بھری ہتھیلیاں
دھیرے دھیر کُھلیں
ایک دیے کی اُوٹ سے
نکلیں پانچ لویں

بھور بھئے تو اُوڑھ کر
چلے بسنتی بھیس
شام ڈھلے تو شہر میں
بانٹے کالے کیس
***

بیراگ رس

رہیے رانجھن دیس میں
اور رانجھن سے دُور
کیسی گھڑی عذاب کی
جھنگ بنا رنگ پور

باسی ہار گلاب کے
اور سونی در گاہ
تنہا لاٹ چراغ کی
مُڑ مُڑ دیکھے راہ

جنگل جنگل کُوکتی
کوئل کی کُوکُو کُو
میں ناہیں سب تُو
میں ناہیں سب تُو

تِتلی بوسہ چاند کا
مکھ پر پَنکھ دھرے
سیپی کو سِکّ بُوند کی
پَل پَل آہ بھرے

کُملائی رُت چیت کی
پیلے تھی گئے پات
کہاں گئے وہ ساجنی
پُھولوں جیسے ہاتھ

بارش تیری اُوڑھنی
بادل تیرا بھیس
خوشبو کے رومال میں
بھیج کوئی سندیس

پورن مَاں کی راتری
من میں تیری تاہنگ
آ مل سائیں نیند میں
بھر سپنے کا سوانگ
جل تَھل پانی سامنے
کچا میرا دِھیر
پتن کھڑی میں ہجر کے
آ مِل ندیاں چیر

کیسی تپش فراق کی
آتش تھیئے چنار
تنہا بن میں تیتری
جوں اُڑتا انگیار

راکھ تھیئے تیرے ہجر میں
آ اَب کاجل ڈار
کھینچ نین کے بیچ میں
ہر پل ہو دیدار
***

وصال رس

غیبی مہک وصال کی
جوں جنّت کی باس
جھکی بدن کے گھاٹ پر
ہجر بھری اِک پیاس

چیتر مسیّا جسم پر
ریشم کی بانات
میٹھے مُکھ کی ماکھڑی
موسم کی سوغات

پُرزہ پُرزہ جسم پر
بوسوں کے پیوند
نیند بھری آغوش میں
اَزلوں کا آنند

روزی پیاسے نین کی
سانول مُکھ کی دید
ریشم جیسے جسم پر
بوسہ کروں کشید

پُھول اُتاروں بانہہ کے
جوبن کے تہوار
کروں نین کی آرتی
زلف کروں زُنّار

بوسہ بوسہ وار دُوں
اپنا ہار سنگار
پھونک چُنر لج لاج کی
پھروں قلندر ہار

نیند رچے تیرے جسم کی
جوں مہندی کا حال
پہلے ھرا ہریل سا
اور پھر گہرا لال
آتی جاتی سانس میں
وجد کرے ترا نام
بوسہ وحی وصال کی
اور سُخن الہام

دیکھوں میٹھے حوض میں
چندر ماں سی دید
جھک جھک پانی میں بھروں
چلوں لہر کی سیدھ

تنہا تن کی سیج پر
آ ہولے سے لیٹ
جیسے بھنورا پُھول پر
بیٹھے پنکھ سمیٹ

گھونگھٹ کچّی عُمر کا
اَوربل کی پرچھائیں
چڑھتی دھوپ سہاگ کی
دیکھیں اور اُڑ جائیں
عریاں سیج وصال کی
گھنن گھنن برسات
گورے تن پر دُھوپ تھی
کمر کمر تک رات
***

دیس رس

کھُلے ہوا کی چولڑی
گھر گھر برسیں رنگ
ہنس اُڑے اک دھوپ کا
دَریاؤں کے سنگ

پگ پازبیں اوس کی
سر پر سبز ردا
پہن بسنتی مُندریاں
مستی کرے ہوا

حیراں دل کی آرسی
دم دم عکس بھرے
سد ا زیارت یار کی
کیسی جھلک کرے

مس پھوٹی اس شہر کی
چھائی چیتر چھاں
جوبن رسّیا جسم کا
پُھول ہُوا عریاں

زر سُچ تیرے عشق کا
جنم اجنم بہے
ساحل ساحل سیپیاں
اندر لعل چُھپے

مگن ہوے کس دھیان میں
سب کچھ دیا وسار
اک بنسی کی کُوک پر
تج دیا تخت ہزار

کھینچ سُخن کا زائچہ
بیٹھے دھرنا مار
جوتش تیرے رُوپ کی
غائب کا دیدار
اَن ہونی کی دھول پر
نیلی کے سو رنگ
صاحباں سوئے صحن میں
مہک اُڑے چودنگ

رات دِناں کے موڑ پر
اُوڑھ عجائب بھیس
میں پنج پنکھی لالڑی
اُڑی پھروں چوندیس

اَمر پرندہ گیان کا
کیسا جاپ کرے
اَن ہونی کی ڈار پر
اپنے پنکھ دھرے

بولی مشرِ ملاپ کی
ایسا سخن کروں
راوی سندھ چناب سے
پیاسی اُوک بھروں
***

دیس رس
(
۲)

ظالم شہر یزید کا
اور خلقت کی پیاس
دریاؤں سے لَوٹتی
لہو میں بھیگی باس

نا اَشنائی شہر کی
بے وطنی کی رات
اک سایا سا بھاگتا
روشنیوں کے ساتھ

اس شطرنجی شہر میں
اُترے شاہ وزیر
کن ہاتھوں کے رہن ہے
خلقت کی تقدیر
چاروں اُور سراب ہیں
کہاں بُجھائیں پیاس
سائیں تیرے ملک میں
اپنا رِزق اُداس
***

رچنا مُکھی

پھُول کھِلا ہے
میرے دو تلوؤں کے نیچے
پُھول سفر کا
بے وطنی کے رات اور دن میں
تیرے گھر کا
پھُول سفر کا

پھُول کھِلا ہے
تنہا روہی کے کیکر پر
پھُول پُنھل کا
میری پیاس اور تیرے جل کا
پھُول کھِلا ہے
پھُول پُنھل کا


پھُول کھِلا ہے
آدھی رات میں اُجلی پَو کا
پُروا کی مدھم کنسو کا
شاہ حسینو کی گھدڑی میں
لعل چُھپا پیارے مادھو کا
پھُول کھِلا ہے
اُجلی پَو کا

پھُول کھِلا ہے
پُھول کھِلا ہے عالمِ ہوُ کا
تیرے بدن کے بھیدوں کی
سوندھی خوشبو کا
راوی کی چڑھتی لہروں کا
جنم جنم بہتے سندھو کا
سچل، بلھے اور باہو کا
میرے لہو کی رسم وضو کا
پھُول کھِلا ہے
عالمِ ہُو کا
پھُول کھِلا ہے
میرے جسم کے دوراہے پر
تعزیروں کا
بہتے خون کی تفسیروں کا
تدبیروں کوروندنے والی
تقدیروں کا
پھُول کھِلا ہے
تعزیروں کا

پھُول کھِلا ہے
میرے رمز بھرے تالو پر
پھُول زباں کا
باطن کے گہرے عُریاں کا
گونگے صحراؤں میں اُڑتی
صُبحِ اذاں کا
پھُول کھِلا ہے
پھُول زباں کا

یہی زباں ہے پھُول بدن کا
جوگ ہے یہ پُورن رانجھن کا
بھجن ہے یہ میرا جوگن کا
پھُول بدن کا

جس پل رات اور دِن ملتے ہیں
میرے رمز بھرے تالُو پر
ان پھُولوں کے بَن کھلتے ہیں
اِن کی بھڑکتی روشنیوں میں
گویائی کے لب ہلتے ہیں
***

جاتک کہانی

مایا ؔ نے سپنے میں دیکھا
اُس کی کوکھ میں ست رنگی دریا چڑھتا تھا
دریا کے اُجلے پانی میں
پُورن ماشی کا سایا تھا
چاند بدن کے اندر اُترا
لے کر اِک دیو مالا
مایا کے سُندر چہرے پر
کِن بھیدوں کا ہالا
سُن رِی مایاؔ
تیرا سَپنا سچا ہو گا
تیری گود میں اک دِن چاند سا بیٹا ہو گا
وہ جگ کا اَن داتا ہوگا
لیکن اُس کے اپنے تن پر
گیروا چولا
اور ہاتھوں میں کاسا ہوگا
دریا کی سیپی کے اندر
لعل چھُپا انمول
مایا رانی سمجھ نہ پائے
اِن شبدوں کے بول
***

گوتم کا جنم

جیٹھ و ساکھ کی رُت میں مایا
اپنے گھر سے باہر نکلی
رستے میں اک باغ کھِلا تھا
ہرے بھرے پیڑوں کے اندر
اک انجانا بھید چُھپا تھا
مایا پیڑ کے نیچے بیٹھی
اپنا سپنا دُہراتی تھی
اُس کی کوکھ میں جیسے ندّیا
بل کھاتی تھی
یک دم اُس نے
ندّی کو دریا بنتے دیکھا
کمرے کے گھاٹ سے پُورے چاند کو چڑھتے دیکھا
ہری بھری جھولی میں اُترا
دیکھو اِک مہاویر
اس دُکھیارے جگ کی ڈھارس
اِس خلقت کی دِھیر
***

گوتم کے رُوپ

اِک دن گوتم
کپل وستو کے محلّوں سے
باہر نکلا
اُس کے قدموں میں پھُولوں کے
ہار بچھے تھے
پانچوں موسم
اُس کی سنگت میں چلتے تھے
وہ اپنے جوبن کے رس میں
جھُوم رہا تھا
سُورج جُھک کر
اُس کا ماتھا چُوم رہا تھا
یک دَم گوتم نے رستے میں
اِک بُوڑھے کو اپنی جانب آتے دیکھا
کھُلی ہوئی آنکھوں سے جیسے
ایک ڈراؤنا سپنا دیکھا
’’
رستے میں یہ کون کھڑا ہے‘‘
گوتم نے رتھ بان سے پُوچھا
’’
گوتم یہ تیرا چہرہ ہے
اِک دن تیرا پھُول سا جسم مَسَل جائے گا
تیرا جوبن اِس بوڑھے میں ڈھل جائے گا

شہزادے کے اندر ٹوٹی
جیسے اک تلوار
پلک جھپک میں اس نے دیکھا
دُکھیا سب سنسار

شام ہوئی گھر واپس آتے
شہزادے نے ایک جنازہ اُٹھتے دیکھا
اُس کے پیچھے
اِک خلقت کو روتے دیکھا
’’
گوتم! یہ تیری میّت ہے
اِک دِن تجھ کو مَوت بیاہ کر کے جائے گی
تو مٹی میں جیسا ہو جائے گا
اِک اِک کر کے ٹوٹ گیا سب
شہزادے کا مان
گوتم نے اِک پل میں دیکھے
جنم جنم کے پَران
***

تیاگ

آدھی رات اور پُورن ماشی
محلّوں کی بے نُورا اُداسی
دُور کہیں دریا چڑھتا تھا
شہزادے کو اپنے آپ سے ڈر لگتا تھا
اُس کے سامنے جیسے لاکھوں چہرے اُبھرے
آہستہ آہستہ اُس نے
اُن چہروں کو
اِک چہرے میں ڈھلتے دیکھا
اپنے آپ کو سب بھیسوں میں چلتے دیکھا
دریا کے ساحل پر اُس نے
اک غیبی مستی کی دُھن میں
تن پر گیروا چولا اُوڑھا
اور ہاتھوں میں کاسا لے کر
پل بھر پیچھے مڑ کر دیکھا
مرن جیون کے بیچ کھڑی تھی
خواہش کی منجدھار
ایک جنم دریا کا ساحل
ایک جنم دریا کے پار
***

وہ رنگ رسّا، سُورج مکھیا

وہ رنگ رسیّا
بند گلی کی کوکھ میں کھِلتا سُورج مُکھیا
اُس کے سر پر
اَن دیکھی پریوں کا سایا
رَمزرتے سپنوں کی چھایا

وہ رنگ رسیّا
اپنے دھیان کی دُھن میں چلتا
دُکھوں سکھوں کے رس میں پکتا
رات کے گہرے تالابوں پر
ہنس کی مانند اُڑتا جائے
کنول کے رُوپ میں ہنستا جائے
وہ رنگ رسیّا
بودھی ستوا
اُس کے سنگ میں سب کی سنگت
نروانوں کی کڑی تپسّیا
اُس کی سانسیں
بیماروں کو شفا کا موسم
بھُوکے اور پیاسے شہروں میں
اس کا بدن روٹی کا لُقمہ
خون کی بوندیں
آبِ زمزم

وہ رنگ رسیّا
ہجر زدہ شہروں میں اُڑتا
سُرخ پرندہ
مجبوروں کی مجبوری میں
خوہش کی گونگی دُوری میں
جگنو بن کر
اُجلے دِن کی خوشبو بن کر
نگر نگر اُڑتا رہتا ہے
جیتے پانی کی شکلوں میں
جنم جنم بہتا رہتا ہے
وہ رنگ رسیّا
ناں کافر نہ آدم جایا
اک جولاہا
من کی تیکھی تند ہلائے
راس رچائے
اپنی عُریاں زرخیزی میں
ہر بستر پر آ کر سوئے
ساری کنواریاں
اس کے جسم کے گھاٹ پہ اُتریں
آہستہ آہستہ کچی کلیاں نسریں

وہ رنگ رسیّا
اپنی رچناؤں کے جپ سے
سمے کے بہتے پانی پر دَم کرتا جائے
جنم جنم گہرے بھیدوں کی
عُریانی میں بہتا جائے
***

ہرا سمندر اور گوپی

’’
ہَرا سمندر
گوپی چندر
بول میری مچھلی کتنا پانی
کتنا پانی‘‘

ہَرے سمندرے کے رستے پر
پھُول کھِلے ہیں
وہ اِن کی مدہوش عبادت میں رہتی ہے
اپنی خواہش کی مستی میں
لہرلہر عُریاں ہوتی ہے

’’
ہَرا سمندر
گوپی چندر
بول میری مچھلی کتنا پانی
کتنا پانی‘‘
صبح سویرے
سورج کے کیسر میں اُس کا
کندن جسم دہکتا ہے
اور بانہوں کی اوٹ سے جیسے
لال پرندے اُڑتے ہیں
وہ پُھولوں کی پنکھڑیوں کو
ہونٹ میں لے کر
آہستہ آہستہ اُن کے جیتے رس کو
اپنے لہو کی پیاس میں کھینچتی رہتی ہے
سارے موسم
اس کے شہد بھرے تالو پر
رُک جاتے ہیں

’’
ہَرا سمندر
گوپی چندر
بول میری مچھلی کتنا پانی
کِتنا پانی‘‘

ہَرے سمندر کی سانسوں میں
چودہ چاند اُترے ہیں
تیز کشش میں اُس کے بدن کا
پارہ ہانپنے لگتا ہے
اور سمندر کی بانہوں میں ڈھلتے موتی
سیپی سیپی سو جاتے ہیں

’’
ہرا سمندر
گوپی چندر
بول میری مچھلی کتنا پانی
اِتنا پانی اِتنا پانی اِتنا پانی۔‘‘
***

کافرستان کی لڑکی کے لیے

کافر سولہ سال کی
چومسّیا چترال کی

گھونگٹ کالی زُلف کا
اندر دُھوپ سیال کی

لال لبوں کی اوٹ میں
دیکھی نبض ہلال کی

گز گز لمبی مینڈھیاں
گھبرو ٹہل غزال کی

رُن جُھن کرتی سیپیاں
رنگ برنگی پالکی

جھانجھر اُڑتی پھلجڑی
پگ میں دھمک دھمال کی

اُس جوبن کی اوک میں
ہمکے پیاس وصال کی

فجری مُکھ دیدار کا
شام بسنتی شال کی
***

موہنجو دڑو کی رقاصہ کے نام

ناچ اے نرتکی
ناچ اُن کے لیے
وہ جو جُدائی کے صدمے میں ہیں
جن کی سانسوں کی دہلیز پر
اُن کے جسموں کے مہتاب گہنا گئے
جو پُراسرار خواہش کی بیلوں کو چُھوتے ہی
پتھرا گئیں
ناچ ہاں ناچ اُن کے لیے
وہ جوانی کے شہروں میں
تنہائیوں کو پہن کر نکلتی ہیں
اور وصل کی رات مہندی کی خوشبو سے ڈرتی ہیں
ہاں ناچ اے سانولی
کہ تیری انگلیوں میں
ہرے موسموں کے نرِت بھاؤ ٹھہرے ہیں
تُو خواہشوں کے قبیلے میں
سُورج کا کنگن پہن کر
جبلّت کے تہوار میں ناچتی ہے
سلامت رہیں یہ ترے نرِت بھاؤ
کہ ہم موت کے تابلو میں زمانوں سے ساکت ہیں
تیری پُراسرار آنکھوں میں کھویا ہوا
اپنا پچھلا جنم ڈھونڈتے ہیں

تھِرک نرِتکی
کہ ترے لہلہاتے بدن کے تموج سے
دِن رات چڑھتے اُترتے ہیں
صدیوں میں پھیلی ہوئی سیڑھیوں پر
ترے گھنگھرؤں کی دھمک گونجتی ہے
تجھے ہم نے جنموں کی سنگت میں دیکھا ہے

ہاں ناچ اے نرِتکی
ناچ اُجڑے دِلوں میں
گہن خوردہ آنکھوں میں
سنسان جسموں میں
ماتم زدہ آرزؤں میں
ہم پر کرم کر
کہ ہم موت کی نیند سے
تازہ سانسوں کے موسم میں جاگیں
چمک باؤلی
جسم پر پھڑ پھڑاتے پرندوں کے پر کھول
ہاں ناچ اے کامنی
پد منی رس بھری
کہ دِلوں کے طبل پر
ترے پاؤں کی چھن چھنا چھن
بیابان سینوں کی دف پر
تری انگلیوں کی چھما چھم
تڑپ نرتکی
کہ رگیں کھنچ کے تاریں بنیں
ایک اک انگ تیرے سُروں میں پگھل جائے
ہاں ناچ اے سانولی
مدھ بھری
تیرے چڑھتے اُترتے نرت بھاؤ کی فاختائیں
جنم در جنم
دیس پر دیس
سارے گھروں کی منڈیروں پہ اُڑتی رہیں
اور ترے پاؤں کی تتلیوں کے تعاقب میں
بچے ہمیشہ بھٹکتے رہیں
***

دیس سندیس

یہ بہتے گہرے پنج دریا
مرے بدن کی پانچ حِسّیں ہیں
جن سے تیرے رُوپ کا چشمہ
پھُوٹ رہا ہے

اِن دریاؤں کے ساحل پر
ہم نے اپنی آنکھیں رکھ کر
میٹھے پانی کی لہروں سے
اپنا دکھ اور درد کہا ہے

آگ، ہوا، بارش اور مٹی
گوندھ کے ہم نے
سانول تیری شکل بنائی
اپنے تن کے چاک پہ ڈھالے
باوے مُورتیاں اور پیالے
انھیں پیالوں کی سنگت میں
گوتم اپنے گھر سے نکلا
انھیں پیالوں میں گھُلتا تھا
نانک اور کبیر کا بھرتا
تیر میر کا ازلی دھوکا
انھیں پیالوں میں امرت تھا
اور انھیں پیالوں میں ہم نے
زہر پیا تھا
تیری خاطر ہم نے دونوں
راس رچائے
کبھی پُنھل ہم اور کبھی رانجھو کہلائے
***

قصہ گاموں کمہار کی گھوڑی کا

لوجی! گاموں کمہار کی گھوڑی

اللہ والیؔ
ڈیگر ویلے سے چھپڑی میں دھنسی
پیراں دتّہ لوہار، مولوی صاحب
گاموں اور گاؤں کے بچے
اللہ والیؔ کو چھپڑی کے گارے سے باہرکھینچتے
ہت! ہت!!
اُٹھ جا رانی! میری دُلُدل!
اُٹھ جَا!
کل چوہدری حاکم کے بیٹے کا بیاہ ہے اُٹھ جا!
گاموں پیٹھ تھپتھپاتا، چمکارتا!
یا علی مدد!
مولوی صاحب اللہ والی کی گردن دبا
بغل میں کس کے زور لگاتے: ’’یا علی مدد!‘‘
’’
ہاہا........ ہت ہت!‘‘
کل میں تجھ کو چاندی کے کُھّرے لگاؤں گااُٹھ جا!
دِتا لوہار اللہ والیؔ سے مستیاں کرتا
بچے دُم کر پکڑ کر گاتے
بسم اللہ جی آیا سوالی،
اُٹھ جا! اُٹھ جا اللہ والی!
اللہ والیؔ ہڈیوں کی مُٹھ کیسے اُٹھتی

لو جی گاموں اَب غصے سے بے قابو
آیا اپنی آئی پر،
اُٹھ!
سوراں کھڑی!
اُٹھ تیری بھین کو، تیری ماؤ کو، اُٹھ!
لوجی بڑی مچی ہا ہا کار
سب نے مل کر اللہ والیؔ کو چھپڑی سے باہر کھینچا
شا واہ! شاوا......... شاواشے
گاموں ٹیڑھے دانت نکال ہنستا
تگڑی ہو جا
کل چوہدری حاکم کے بیٹے کا بیاہ ہے!
لوجی فجرے فجرے
اللہ والیؔ کو، چاچے چراغ کے کھو ہے
نہلایا گیا
دِتے نے لگائی نعل
دھنو میراثی نے مہندی
اور پھر ماتھے پہ چاند ستارہ، پاؤں میں جھانجھریں
اور کاٹھی پر جھلمل جھلمل کرتے
تاروں والی مخمل
واہ! جی واہ!
گاموں نے بھی صاف سُتھرے کپڑے پہنے
چھڑکا عطر خسخاس کا
خط بنوایا رمضونائی سے
رنگے چٹے بال مہندی میں
آنکھوں میں لگایا سُرمہ
واہ بھئی واہ
دھنو میراثی اور ہجڑوں نے
بڑھ بڑھ بلائیں لیں
مولوی صاحب نے دم پُھونکا
سُبحان اللہ!
لو جی دُوسرے دِن
چوہدری حاکم کا بیٹا کیا دُھوم سے
لُنگی سہرے میں
کمر پہ باندھ تلوار
اللہ والیؔ پہ چڑھ کے نکلا
چھن چھن ہوئی سوٹ پیسوں کی،
بجے اُونچے اُونچے باجے
پر کرنا کیا ہُوا خدا کا
عین بیچ بازار کے
اللہ والیؔ اَڑ گئی
گاموں نے پچکارا تھپکی دی
پر اللہ والیؔ ٹس نہ مَس!
لوجی اب گاموں نے آنکھ بچا کر
اُس کے پیٹ میں گھونسا مارا
لیکن نہیں، اللہ والیؔ مول نہ ہٹکی
لو جی تماشا ہو گیا
حلوائی، موچی دکانیں چھوڑ پہنچ گئے موقع پر
اَڑی سی اَڑی توبہ توبہ
پھر کیا ہوا؟
سرڑ سرڑ بیچ بارات کے پہلے لید
اور پھر مُوتر کا پرنالہ
استغفراللہ!
’’
سؤراں کھری‘‘
گاموںؔ نے مُنہہ بھر کر گالی دی
اور پھر ٹھوکروں چھانٹوں کی بوچھاڑ
گاموں مار مار تھک گیا
لیکن اللہ والیؔ نہ ہلی
پل بھر اس نے گاموں کو منہہ پھیر کر
دیکھا
اور سڑک پر ڈھیر ہو گئی
دھڑام سے گرا چوہدری حاکم کا بیٹا
لت پت لَید میں نوٹوں والاسہرا اور پگڑی
توبہ توبہ
گاموں تو جیسے کملا ہو گیا
’’
اُٹھ جا سؤراں کھڑی
رَب کا واسطہ! رسول کا واسطہ! اُٹھ جا.....
گاموں چھانٹے مار مار اَدھ مُوا ہو گیا
لیکن اللہ والیؔ پھر نہ اُٹھی
’’
معاف کر دو چوہدری جی! غلطی معاف!‘‘
گاموں ہاتھ جوڑ،پاؤں پڑتا، کبھی اپنے بال نوچتا
اور کبھی خود کو چھانٹے مارتا،
گاموں کی کُل کائنات
اللہ والیؔ دَم توڑ رہی تھی
اس کے لمبوترے مُنہہ سے جھاگ بہہ رہی تھی
آنکھوں کے ڈیلے
چوبچوں میں مُردہ مینڈکوں کی طرح تیر رہے تھے
شام کو مولوی صاحب آئے، کہنے لگے:
’’
بڑی خدمت کی ہے تیری اس نے گاموں‘‘
تیس سالوں سے چوہدریؔ ، ملکؔ ، لڈنؔ ،ٹھمّنؔ ،
ٹوانےؔ ، ملکانےؔ
تیری اس گھوڑی پر سواری کر چُکے
اَب اس کا آخری وقت ہے
بھیج دے اس کو
بُوچڑ خانے
***

قصہ دو مونہے سانپ کا

اللہ رحم کرے
مائی جنتے فجرے نہا دھو کر نماز پڑھتی اور سارا دن
کڑکتی دوپہر میں فصلیں کاٹتی
سب عزت کرتے مائی جنتے کی
جو ان گھبرو، بوڑھے سلام کو آتے
لین دین کی کھری، جَتی سَتّی مائی جنتے
بڑی جی دار عورت تھی
لیکن ایک دن کیا ہُوا
فصل کاٹتے کاٹتے یک دم
گندلوں سے ایک زہری سانپ نے سر نکالا
مائی کا سانس دم بھر اس کے تالو پر
خشک ہو گیا اور آنکھوں کو جیسے تریلی چڑھی
لیکن پھر جنتے نے درانتی کھینچ کر سانپ پر ایسا وار کیا
کہ اس کا سر کچل ڈالا
’’
سانپ! سانپ!!‘‘
مائی جنتے ہانپتی ہوئی کھیت سے باہر بھاگی
آن کی آن میں سارا گاؤں جمع ہو گیا:
’’
سانپ! سانپ!!‘‘
سب کے سب سانپ دیکھنے آگے بڑھے
لیکن سانپ غائب
اللہ رحم کرے
سب حیران ایک دوسرے کو دیکھتے
کوئی کہتا:
’’
مائی جنتے! تو نے کوئی دن میں سپنا دیکھا ہے‘‘
’’
مردہ سانپ بھلا کہاں جا سکتا ہے‘‘
’’
کوئی چیل لے اُڑی گی‘‘
کوئی کچھ کہتا کوئی کچھ
اللہ رحم کرے
مائی جنتے کبھی درانتی کو دیکھتی اور کبھی کٹی ہوئی گندلوں کو
یا اللہ! یہ کیا ہوا
’’
ہونا کیا ہے مائی!‘‘
سائیں بوری والے نے آگے بڑھ کر کہا
’’
سانپ دو مونہاں تھا‘‘
’’
دو مونہاں!‘‘
’’
ہاں مائی! تُو نے اس کا ایک منہ تو کچل ڈالا
لیکن دوسرا منہ اس کے پیچھے تھا‘‘
اللہ تجھے اپنی حفاظت میں رکھے!
وہ دوسرے منہ سے بدلہ لینے ضرور آئے گا‘‘
اللہ رحم کرے وہی ہوا
چند ہی دنوں بعد کسی نے کہا:
’’
مائی جنتے پاگل ہو گئی ہے‘‘
وہ درانتی کو ہاتھ لگاتی ہے تو اسے سانپ کا دوسرا منہ نظر آتا ہے
تند دور میں ہاتھ ڈالتی ہے تو اسے سانپ کاٹتا ہے
مائی جنتے کہتی ہے:
’’
سانپ دو مونہاں تھا
اور دو مونہے سانپ کو دونوں طرف سے مارنا پڑتا ہے‘‘
***

قصہ بابے بوڑھ والے کی بیٹی کا

بابا بوڑھ والا روز
جوان جہان بیٹی کو چوک پہ لے کر آواز لگاتا:
’’
کوئی ہے خدا ترس اللہ کا بندہ
جو میری بیٹی کے سر سے سایہ اُتارے
خدا جانتا ہے وہ برسوں سے بیمار ہے
اور مُنہ سے کچھ نہیں بولتی
حضور!...... سرکار!........ جناب!........ سُنیے!‘‘
کون سُنتا
سب اپنے اپنے سایوں کے ساتھ گُزر جاتے

لڑکی پھٹی ہوئی سبز اُوڑھنی میں گُم سُم
ہونٹ نیلے گچّ
بدن تختے کی طرح اکڑا ہُوا
آنکھیں جیسے کسی نے پُتلیوں میں تلانویں کھینچ دی ہوں
’’
کوئی ہے خدا ترس اللہ کا بندہ!
کوئی ہے؟
کوئی ہے؟‘‘
ایک دن کیا ہوا
محلّے کے مولوی صاحب آئے، کہا:
’’
جا بابا! لے آ کسی معصوم پاک صاف بچے کو
اللہ کے حکم سے تیری بیٹی آزاد ہو جائے گی‘‘

آدھی رات بیچ چوک کے
مولوی صاحب نے دِیا جلایا، کہا:
’’
بچہ! دیئے کی لاٹ میں کیا دیکھتا ہے؟‘‘
’’
کچھ نہیں!‘‘
مولوی صاحب نے وظیفے کا ورد کرتے ہوئے کہا:
’’
بول بچہ بول!‘‘
ہزاروں کا مجمع دم سادھے بچے کے جواب کا منتظر تھا
’’
مولوی صاحب! شکل نظر آتی ہے‘‘
’’
ہاں ہاں پہچان اِس مُوذی مردود کو، پہچان کر بتا!‘‘
بچے نے پل بھر لاٹ سے نظر اُٹھائی
اور گھگھیا کر بولا:
’’
مولوی صاحب! آپ...... آپ کی شکل‘‘
’’
ہٹ کافر پلید کا بچہ
ناپاک حرامی! دُور ہو جا میری نظروں سے‘‘
مولوی صاحب نے اُٹھائی جُوتی
مجمع نے کیا ٹھمٹھا
کہا: لڑکی پر تو مولوی صاحب کا سایا ہے‘‘
اور سب اپنے اپنے سایوں کے ساتھ گزر گئے

’’
کوئی ہے خدا ترس، اللہ کا بندہ
جو میری پھُول سی بیٹی کے سر سے سایا اُتارے
کوئی ہے! کوئی ہے؟‘‘
اب پہنچا ایک عامل چوک پر، کہا:
’’
بابا! نوّے دن کا چلا ہے، جن بلا دُور ہو گی،‘‘
عامِل نے کھینچا لڑکی کے گرد دائرہ
اور کرنے لگا طواف باندھ کر لنگوٹی
دیکھتا جا بابا! نوّے دِن بعد دائرہ ٹوٹے گا
اور رہا ہو گی تیری بیٹی جنّ کے قبضے سے‘‘
نوّے دِن پلک جھپکتے گزر گئے
بابا بوڑھ والا کیا دیکھتا ہے
عامِل دائرے میں ہے اور لڑکی طواف میں
’’
بچاؤ! بچاؤ! چلّہ اُلٹا ہو گیا‘‘
عامل بھاگا کپڑے چھوڑ کر، مجمع نے کیا ٹھٹھّا
’’
تو جی! عامل دائرے میں اور جنّ باہر‘‘
سب اپنے اپنے سایوں کے ساتھ گزر گئے

کوئی ہے خدا ترس، اللہ کا بندہ
کوئی ہے؟ کوئی ہے؟
عمریں گزر گئیں، کوئی نہ آیا
آخر ایک دن بابے بوڑھ والے نے تنگ آ کر
بیٹی کو گریبان سے پکڑا، کہا:
’’
اے مُوذی مردود! بتا تُو کون ہے؟ اپنی پہچان دے‘‘
یک دَم لڑکی کا سارا جسم تڑپا
آنکھوں میں پُتلیوں کی تلانویں ڈھیلی ہوئیں
ہونٹوں میں ہوئی جنبش
اور بابے بوڑھ والے کی اپنی ہی آواز پلٹ کر آئی
’’
اے مُوذی مردود! بتا
تُو کون ہے؟ تو کون ہے؟ تُو کون ہے؟‘‘
***

قصہ میراں کے بچے کا

اللہ جانتا ہے
جیسے زمینوں سے چشمے، بیج سے پَھل
اور رات کی پسلی سے دن نکلتا ہے
عورت کے بطن سے اولاد جنم لیتی ہے
میراںؔ اَلھڑ، مست، جیسے گھنگھور بادل
بھری بھری چھاتیاں، چوڑے سُرین اور اُونچا قد
سیال کی رات میں جیسے آلاؤ کی لاٹ
جوبن تھا کہ پھٹا پڑتا
لیکن اللہ جانتا ہے.
میراں کو آس نہ لگتی
’’
یا پیرا! یا شاہ دولہ! دے، دے،
ننگے پیر پا پیادہ آئی تیرے دَر پر
داتا! کوکھ ہری کر، دے دے‘‘
میراں فریاد کرتی، کوکتی، کُرلاتی
لیکن میراںؔ کو آس نہ لگتی
اللہ جانتا ہے
ایک دن میراںؔ کا جی متلایا
یوں لگا جیسے ساتوں موسم بدن میں اُتر گئے ہوں
میراں نے مُٹھی میں تارے، گود میں چاند اور ہونٹوں سے
شہد بہتے دیکھا
لوجی موجو خوش، موجوکی ماں خوش،
گھر کے تالے، چار پائی کی رسّی
اور میراں کے گندھے ہوئے بالوں کی چوٹیاں کھول دی گیءں
اور اس کی دائیں ران پر تعویز باندھ دیا گیا
لیکن اللہ جانتا ہے
میراں تیسرے مہینے میلے کیا گئی بدن سے رس نُچڑ گیا
دس روز وہ تپ چڑھا
کہ شہد کا ڈول اُلٹ گیا
’’
یا داتا! یا شاہ دولہ! دے دے
دے دے سخی لجپال
تیرا چاکر ہوسی، سائیں! دے دے‘‘

اولاد کی بُھوکی میراں شدائن ہو گئی
کبھی پُورن کے کنوئیں دیے کی لاٹ میں برہنہ ہوتی
کبھی مُردہ بچوں کی آنکھ میں سُرمہ ڈالتی
اللہ جانتا ہے
میراں کو پھر آس لگی
ہمسائیوں میں ہوئی کھُسر پُھسر
دودھ، مکھانے، گھی، شکر اور کھٹائیاں
ٹھنڈی میٹھی در دوں میں مدہوش میراں
نو مہینے گھر میں رہی
لیکن اللہ جانتا ہے
میراں نے مُردہ بچہ جنا
مُردہ بچہ جننے والی میراں گاؤں میں منحوس ہوئی
سُہاگنوں پر اس کا سایا حرام ہوا
سیال کی رات میں چڑھتا الاؤ ٹھنڈا پڑ گیا
موجو نے مار مارنیل ڈال دئیے جسم پر
میراں کی جوانی اُلا ہمہ ہو گئی
’’
دے دے سائیں بچڑا دے دے‘‘
عمریں گز رگئیں
چیلوں کو ماس، کووّں کو روٹی
اور شاہ دولے کے مزار پر گھی کے چراغ جلاتے
آخر میراں کو پھر آس لگی
نو مہینے اس نے اپنا اندر سینت سینت کر رکھا
رات دِن مائی مریم کا پنجہ بھگو کر پیتی رہی
اور چیت کی رات کے آخری پہر
جیسے سیپی لعل کو اُگلتی ہے.
میراں نے بچے کو جنم دیا
’’
واہ پیرا! میں جھوٹی تو سچا
یا شاہ دولہ! تیری خیر،
تو نے میراں کی لاج رکھ لی‘‘
لیکن اللہ جانتا ہے
دن چڑھے میراں کو جو ہوش آیا
تو دیکھا
اُن کا بچہ کہیں نہیں تھا
دُور دُور تک ہجوم تھا شاہ دولے کے فقیروں کا
’’
یا پیرا! یا شاہ دولہ!!
دے، دے!‘‘
***

آخری چڑھاوا
(
ایک وجد)

یامولا یا مُرشد!
میں تیری درگاہ پہ کیسے نذر چڑھاؤں
کن سانسوں سے
تیرے پتھریلے ہونٹوں پر
دیا جلاؤں
تیری اَزلی چُپ کو توڑوں
دل کا حال سُناؤں
کس قالب تیرے سامنے آؤں
اپنی نذر چڑھاؤں
یا مولا یا مرشد!

یا مولا یا مرشد!
ماؤں نے اپنے بچوں کو
تیرے گہنے ڈالا
سدا سہاگنیں تیرے قدموں کی مِٹی سے
مہندی لائیں
بہنوں نے ریشم جیسے جسموں سے تیرا
ٹھنڈا مَرمَر ڈھانپا
یا مولا یا مرشد!

یا مولا یا مُرشد!
پھٹی ہوئی تقدیریں اُوڑھے
بھوک میں لَتھڑے بچے
تیرے نام پہ پیسہ مانگیں
یا مولا یا مُرشد!

یا مولا یا مُرشد
ہم نے رزق کا خواب ترے تعویذ میں رکھ کر
خالی پیٹ پہ باندھ لیا ہے
اپنے دکھوں کو بُھول کے ہم نے
سدا تجھے ہی یاد کیا ہے
لیکن مولا
آج ترے اُجلے سینے پر
مجبوری کی اِک میلی چادر پھیلاؤں
دِلوں کی مٹی اور ہڈیوں کا ہدیہ لے کر
بُرے شگونوں کے پھولوں کے ہار اُتاروں
اپنے پیٹ کے کُفر سے تیرے
سچ کو توڑوں
اپنی نذر چڑھاؤں
یا مولا یا مُرشد!
***

غیبی منظر پار کا
رستہ سخن سوار کا

جوتی اُجلے نین کی
ہالہ کجّل دھار کا

جیسے انگ اُمنگ میں
جھونکا پون ہلار کا

جوبن تاک شراب کی
چڑھتا ابر خمار کا

تازہ مہک گلاب کی
بوسہ میگھ ملار کا

اُن آنکھوں کی اُوٹ میں
موسم تھا اسرار کا

***

اپنا ہار سِنگھارنا
خود کو تجھ پر وارنا

بوسہ لینا ہونٹ
تالو شہد اُتارنا

دُکھ کو لے کر گودڑی
سُکھ کا سخن گزارنا

عُریاں پھرنا شہر میں
کیسا بھیشن دھارنا

شعر و سخن کی اُوٹ
غائب کو دیدارنا
***

خیر ہو سائیں خیر

خیر ہو سائیں
او رَب سائیں
ہم عاجز بندوں کی خیر
دانہ دانہ رزق اُٹھاتے
سب حاجت مندوں کی خیر
خیر ہو سائیں خیر!

خیر ہو سائیں
یار فریدؔ کے روہی تھل کی
شاہ لطیفوؔ کے سندھل کی
خیر ہو سائیں خیر

خیر ہو سائیں
سانولیوں کی
جھنگ سیال کی لاڈلیوں کی
کیچ سے نکلے پُنوںؔ یار کی
رانجھوؔ سائیں تخت ہزار کی
خیر ہو سائیں خیر!
خیر ہو سائیں
حال دھمال کی
وجد میں آتے مادھولال کی
خیر ہو سائیںؔ خیر
خیر ہو سائیں
حُسن اور عشق کے تعویذوں کی
شرم و حیا کی دہلیزوں کی
خیر ہو سائیں خیر
خیر ہو سائیں
سنگی، ساتھی اور سجنا کی
میری بانہہ ترے کنگنا کی
سرمدؔ یار تری رچنا کی
خیر ہو سائیں خیر
***

لفظالی

نیلیؔ : لوک داستان ’مرزا صاحباں‘ سے، مرزا جٹ کی گھوڑی بکّی کا دوسرا نام۔
جاتک : بالک۔ چھوٹا بچہ
گولک : مٹی کا برتن۔ گلّا۔ جس میں بچے پیسے جمع کرتے ہیں۔
مِیرا : مِیرا بائی
چیتر : چیت۔ بہار کا موسم۔
پُنھل : پنّوں
سندھل :دریائے سندھ
نِسریں : نِسرنا، پھوٹنا، بڑھنا۔
لوے : ملائم، نرم، کچا۔
بھوچھن : لباس۔ اُوڑھنی
شِکر دوپہری : کڑکتی دھوپ جیسا۔
مادھو : مادھو لال حسین۔
بے آسی : بے آس۔ ایسی عورت جو بچے کو جنم نہ دے سکتی ہو۔
ہری تھیئے : یعنی گود ہری ہو۔
واسی: واس، باس، باسی، رہنے والی۔
کنکے کی بالی : گندم کی بالی
پتناں : پتن، کنارہ
چولا : چولی سے، پہناوا
مَشال : مشعل
پُورن : پُورا ہونا، پُورن بھگت۔
رَت : لہو۔
اَتھری : منہ زور ہونا۔
پَرنائی :بیاہی گئی
گھُڑہٹ :گھٹی۔ نوزائیدہ بچے کو دی جاتی ہے
چترائی : چالاکی، ہشیاری
جاگ : دودھ کو دہی بنانے کے لیے ہلکا دہی شامل کیا جاتا ہے
سِکّ : شدید خواہش
بجوکا :جھاکا۔ لکڑی کا ایک ڈھانچہ جو کھیتوں میں پرندوں کو ڈرانے کے لیے کھڑا کیا جاتا ہے۔
ہاڑا : بین، پکار
چومسّیا : چومس کا موسم۔ چترال میں چومس کا جشن منایا جاتا ہے۔ چومسیا یعنی چومس کے موسم میں پیدا ہونے والی۔
ہنسلی : گلے کا زیور۔
ہریو : ہار دیا گیا۔
وریؤ : شادی ہونا۔
سریَو : سنورنا۔
جَریؤ : جرنا، سہنا
زرسُچ : دریائے بولان کا قدیم نام
وسار : بسر نے سے، بھُول جانا
لالڑی : پنجاب کا ایک پرندہ
مِشر : موسیقی کی ایک اصطلاح۔ ایک راگ کو دوسرے راگ سے ملا کر گانا
سار : خبر، سار لینا، بھید لینا
گودڑی : گود
گھدڑی : گدڑی
پزوان : پشتو زبان میں ناک کے زیور کو کہتے ہیں
ڈھاک : کولہا
تلہڑے کی تار:طلّے یعنی سونے کی تار
ڈلک : چمک
تمت : تمتمانے سے
پورن ماں کی راتری:پورے چاند کی رات
تاہنگ : خواہش
ماکھڑی : ماکھی،شہد
شنکی : سبز
قلندر ہار : قلندر کی طرح
اُوربل : سرحد کے علاقے میں غیرے شادی شدہ لڑکیوں کے ماتھے پر بالوں کی جھالر۔ جو شادی کے بعد کاٹ دی جاتی ہے۔
کنسو : سر گوشی
گہنے ڈالنا :رہن رکھنا
سانول : محبوب
***


 

کوئی تبصرے نہیں:

رابطہ فارم

نام

ای میل *

پیغام *