جمعرات، 2 جون، 2016

کلیات غزلیات ولی

ولی دکنی کے نام سے کون واقف نہیں۔ وہ اردو کے پہلے ایسے شاعر ہیں، جن کی زبان اور اسلوب نے اردو غزل کے ابتدائی نقوش پر زبردست اثر ڈالا۔ولی کی غزلیں، جب ان کے دیوان کے ساتھ دہلی پہنچیں تو لوگ گلیوں میں اسے گاتے پھرے، شاعروں نے اس کے طرز میں طبع آزمائی کی اور اس طرح تتبع کا ایک طویل سلسلہ شروع ہوا، جس کو اس وقت کے مشہور شاعر اور پیشے سے داروغہ مطبخ شیخ ظہور الدین حاتم نے بھی اپنایا اور ایک پورا دیوان، اسی طرز میں لکھا۔ دیوان ولی میں موجود ولی دکنی کی ان غزلیات کے بارے میں کہا جاتار ہا ہے کہ انہیں یہ مضامین ان کے ایک بزرگ یا پیر سعدا اللہ گلشن نے سجھائے تھے، لیکن میں نے اپنے ایک مضمون 'دکنی غزل کا جائزہ(ولی اور اس سے پیشتر دکنی شاعری کے حوالے سے)میں اس پر تحقیقی نقطہ نظر سے بات کرنے کی کوشش کی ہے، میرے خیال میں یہ بات نہ صرف نادرست ہے بلکہ گمراہ کن ہے۔بہرحال یہ ایک طویل اور بحث طلب موضوع ہے۔ہم آج آپ کے لیے یہاں 'کلیات غزلیات ولی' لے کر حاضر ہوئے ہیں۔ دہلی کی غزل پر جتنا اثر فائز نے نہیں ڈالا، اتنا ولی نے ثبت کیا ہے۔اب ولی کی تمام غزلیات یونی کوڈ میں موجود ہیں اور آپ انہیں کہیں سے بھی پڑھ سکتے ہیں۔ شکریہ(تصنیف حیدر)

ردیف ’الف‘
1
کیتا ہوں ترے نانوں کو میں ورد زباں کا
کیتا ہوں ترے شکر کو عنوان بیاں کا
جس گرد اُپر پانوں رکھیں تیرے رسولاں
اُس گرد کوں میں کحل کروں دیدۂ جاں کا
مجھ صدق طرف عدل سوں اے اہلِ حیا دیکھ
تجھ علم کے چہرے پہ نئیں رنگ گماں کا
ہر ذرۂ عالم میں ہے خورشید حقیقی
یوں بوجھ کے بلبل ہوں ہر اک غنچہ دہاں کا
کیا سہم ہے آفات قیامت ستی اُس کوں
کھایا ہے جوکُئی تیر تجھ ابرو کی کماں کا
جاری ہوئے آنجھو مرے یو سبزۂ خط دیکھ
اے خضر قدم! سیر کر اس آبِ رواں کا
کہتا ہے ولیؔ دل ستی یوں مصرع رنگیں
ہے یاد تری مجھ کوں سبب راحتِ جاں کا
2
وو صنم جب سوں بسا دیدۂ حیران میں آ
آتش عشق پڑی عقل کے سامان میں آ
ناز دیتا نئیں گر رخصتِ گل گشت چمن
اے چمن زار حیا دل کے گلستان میں آ
عیش ہے عیش کہ اس مہ کا خیال روشن
شمع روشن کیا مجھ دل کے شبستان میں آ
یاد آتا ہے مجھے جب وو گل باغ وفا
اشک کرتے ہیں مکاں گوشۂ دامان میں آ
موج بے تابیِ دل اشک میں ہوئی جلوہ نما
جب بسی زلف صنم طبع پریشان میں آ
نالہ و آہ کی تفصیل نہ پوچھو مجھ سوں
دفتر درد بسا عشق کے دیوان میں آ
پنجۂ عشق نے بے تاب کیا جب سوں مجھے
چاک دل تب سوں بسا چاک گریبان میں آ
دیکھ اے اہلِ نظر سبزۂ خط میں لب لعل
رنگ یاقوت چھپا ہے خطِ ریحان میں آ
حسن تھا پردۂ تجرید میں سب سوں آزاد
طالب عشق ہوا صورت انسان میں آ
شیخ یاں بات تری پیش نہ جاوے ہرگز
عقل کوں چھوڑ کے مت مجلس رندان میں آ
دردمنداں کو بجز درد نئیں صید مراد
اے شہ ملک جنوں غم کے بیابان میں آ
حاکم وقت ہے تجھ گھر میں رقیب بدخو
دیو مختار ہوا ملک سلیمان میں آ
چشمۂ آب بقا جگ میں کیا ہے حاصل
یوسف حسن ترے چاہِ زنخدان میں آ
جگ کے خوباں کا نمک ہوکے نمک پروردہ
چھپ رہا آکے ترے لب کے نمکدان میں آ
بسکہ مجھ حال سوں ہمسر ہے پریشانی میں
درد کہتی ہے مرا زلف ترے کان میں آ
غم سوں تیرے ہے ترحم کا محل حال ولیؔ
ظلم کو چھوڑ سجن شیوۂ احسان میں آ
3
اے گل عذار غنچہ دہن ٹک چمن میں آ
گل سر پہ رکھ کے شمع نمن انجمن میں آ
جیوں طفل اشک بھاگ نکو مجھ نظر ستی
اے نور چشم نور نمط مجھ نین میں آ
کب لگ اپس کے غنچۂ مکھ کو رکھے گا بند
اے نو بہار باغ محبت سخن میں آ
تا گل کے رو سے رنگ اڑے اوس کی نمن
اے آفتابِ حسن ٹک یک تو چمن میں آ
تجھ عشق سوں کیا ولیؔ دل کوں بیت غم
سرعت ستی اے معنیِ بے گانہ من میں آ
4
وو نازنیں ادا میں اعجاز ہے سراپا
خوبی میں گل رخاں سوں ممتاز ہے سراپا
اے شوخ تجھ نین میں دیکھا نگاہ کر کر
عاشق کے مارنے کا انداز ہے سراپا
جگ کے ادا شناساں ہے جن کی فکر عالی
تجھ قد کوں دیکھ بولے یو ناز ہے سراپا
کیوں ہوسکیں جگت کے دلبر ترے برابر
تو حسن ہور ادا میں اعجاز ہے سراپا
گاہے اے عیسوی دم یک بات لطف سوں کر
جاں بخش مجھ کو تیرا آواز ہے سراپا
مجھ پر ولیؔ ہمیشہ دل دار مہرباں ہے
ہر چند حسب ظاہر طناّز ہے سراپا
5
کتاب الحسن کا یہ مکھ صفا تیرا صفا دستا
ترے ابرو کے وو مصرع سوں اس کا ابتدا دستا
ترا مکھ حسن کا دریا و موجاں چین پیشانی
اُپر ابرو کی کشتی کے یوں تل جیوں ناخدا دستا
ترے لب ہیں بہ رنگ حوض کوثر مخزن خوبی
یہ خال عنبریں تس پر بلال آسا کھڑا دستا
اشاراتِ آنکھیاں سوں گرچہ ہوں بیمار میں لیکن
ترے لب اے مسیح وقت قانون شفا دستا
ہوا جو گوہر دل غرق بحر حسن، ہے نایاب
زبس دریائے حسنِ دلبراں بے انتہا دستا
بیاں اس کی نزاکت ہور لطافت کا لکھوں تاکے
سراپا محشر خوبی منیں ناز و ادا دستا
یو خط کا حاشیہ گرچہ ولیؔ ہے مختصر لیکن
مطوّل کے معانی کا تمامی مدّعا دستا
6
تو آج ہے سینہ شاد دستا
مطلب ہے کہ با مراد دستا
تجھ مکھ کے صفے پہ نقطۂ خال
سرمایۂ ہر مِداد دستا
ہر نسخہ لذّت جہاں کا
انکھیاں میں تری سواد دستا
ابرو کے نزک یہ خال موزوں
خوش مصرعۂ مستزاد دستا
تیری یہ جبین با صباحت
مجھ جلوۂ با مداد دستا
تجھ نین کی کیا کروں میں تعریف
یہ عین ثُلُث کا صاد دستا
مجھ پر ولیؔ ہمیشہ دل دار مہرباں ہے
ہر چند حسب ظاہر طناّز ہے سراپا
7
یو تل تجھ مکھ کے کعبہ میں مجھے اسود حجر دستا
زنخداں میں ترے مجھ چاہ زمزم کا اثر دستا
پریشاں سامری کا دل تری زلف طلسمی میں
زمرد رنگ یوتل مجھ کوں سحر باختر دستا
مرا دل چاند ہور تیری نگہ اعجاز کی اُنگلی
کہ جس کی یک اشارت میں مجھے شق القمر دستا
نین ویول میں پتلی یو ہے یا کعبہ میں اسود ہے
ہرن کا ہے یو نافہ یا کنول بھیتر بھنور دستا
ولیؔ شیرینی زبانی کی نئیں ہے چاشنی سب کو
حلاوت فہم کو میرا سخن شہد و شکر دستا
8
طاق ابرو ترا حرم دستا
محرم اس کا عرب عجم دستا
خط ترا سر نوشت عاشق میں
حرف تقدیر کا رقم دستا
خط ترا آئینہ سکندر ہے
ہر دو عالم منیں عدم دستا
لوح محفوظ ہے ترا رخسار
زلف اس پر مگر قلم دستا
تجھ زنخداں کے چاہ کنعاں میں
یوسفِ مصر دم بہ دم دستا
خط ترا ہے ضرور لشکر حسن
کاکل اُس کے اُپر علم دستا
جان من غصّہ و غضب تاکے
ولیؔ مشتاق پر کرم دستا
9
مت آتش غفلت سوں مرے دل کوں جلا جا
مشتاق دَرَس کا ہوں ٹک یک دَرَس دکھا جا
بے رحم نہ ہو، غصّہ نہ کر، بات مری سُن
ڈرتا نئیں، یک بات کی سو بات سُنا جا
جلتا ہوں میں مدّت ستی اے حسن کے دریا
ٹک مکھ کوں دکھا، آگ مرے دل کی بجھا جا
خواہش ہے مجھے وِرد کے پڑھنے کی ہمیشہ
یک بار کسو طرز سوں ٹک اسم بتا جا
جب اس کی طرف جاتا ہوں کر قصد تماشا
کہتا ہے مجھے خوف رقیباں سوں کہ جا جا
میں بوسہ کیا لب سوں پری رو کے طلب جیوں
غصّے ستی بولیا کہ چلا جا بے چلا جا
مدت سوں ولیؔ جھانج میں ہے ہات سوں دل کے
تو بھی اے جگر آہ کی نوبت کوں بجا جا
10
تن پیس سرمہ کر کے بسا تجھ نین میں جا
ہو بوئے گل بسا ہوں ترے پیرہن میں جا
ہر تار میں زُلف کی تری سیر جا کروں
باد صبا کا ساتھ لیا ہوں چمن میں جا
آتش نے تجھ جمال کے جلوے کوں دیکھ کر
کیتی ہے زندگی کوں اپس کی کفن میں جا
جگ میں جو اعتبار نہ پایا ترے نزیک
ہوکر خجل سُرج نے لیا ہے گگن میں جا
مانند خوں عقیق، ولیؔ گل کے بہہ چلے
شہرت مرے انجھوں کی پڑے جب یمن میں جا
11
مت غصّے کے شعلے سوں جلتے کوں جلاتی جا
ٹک مہر کے پانی سوں تو آگ بجھاتی جا
تجھ چال کی قیمت سوں دل نئیں ہے مرا واقف
اے مان بھر چنچل ٹک بھاؤ بتاتی جا
اس رات اندھاری میں مت بھول پڑوں تجھ سوں
ٹک پاؤں کے جھانجھر کی جھنکار سناتی جا
مجھ دل کے کبوتر کوں باندھا ہے تری لٹ نے
یہ کام دھرم کا ہے ٹک اس کو چھڑاتی جا
تجھ مکھ کی پرستش میں گئی عمر مری ساری
اے بت کی پُجن ہاری ٹک اس کو پُجاتی جا
تجھ عشق میں جل جل کر سب تن کوں کیا کاجل
یہ روشنی افزا ہے انکھیاں کو لگاتی جا
تجھ نیہہ میں دل جل جل جوگی کی لیا صورت
یک بار اسے موہن چھاتی سوں لگاتی جا
تجھ گھر کی طرف سُندر آتا ہے ولیؔ دایم
مشتاق دَرَس کا ہے ٹک دَرَس دکھاتی جا
12
دل رُبا آیا نظر میں آج میری خوش ادا
خوش ادا ایسا نئیں دیکھا ہوں دوجا دلربا
بے وفا گر تجھ کوں بولوں ہے بجا اے نازنین
نازنین عالم منیں ہوتے ہیں اکثر بے وفا
کم نما ہے نوجواں میرا بہ رنگ ماہ نو
ماہ نو ہوتا ہے اکثر اے عزیزاں کم نما
مدعائے عاشقاں ہر آن ہے دیدار یار
یار کے دیدار بن دوجا عبث ہے مدّعا
کیمیا عاشق کے حق میں ہے نگاہ گل رُخاں
گل رخاں سوں جگ میں پایا ہوں ولیؔ یہ کیمیا
13
غضب سوں چہرۂ رنگیں بہارِ ناز و ادا
بہارِ حسن میں ہے لالہ زارِ ناز و ادا
لکھا ہے صفحۂ ایجاد پر مصوّر صنع
قلم سوں موے کمر کے نگارِ ناز و ادا
چمن طراز نزاکت کیا ہے صنعت سوں
سہی قداں کا مکاں جوئبار ناز و ادا
سنا ہوں خضر سوں دل کے یہ حرف تازہ و تر
بہار جلوۂ خط ہے بہار ناز و ادا
ولیؔ پڑیا ہے نظرجب سوں وو کماں ابرو
ہزار دل سوں ہوا ہوں شکارِ ناز و ادا
14
دل کوں لگتی ہے دل رُبا کی ادا
جی میں بستی ہے خوش ادا کی ادا
گرچہ سب خوب رو ہیں خوب ولے
قتل کرتی ہے میرزا کی ادا
حرف بے جا بجا ہے گر بولوں
دشمنِ ہوش ہے پیا کی ادا
نقش دیوار کیوں نہ ہوئے عاشق
حیرت افزا ہے بے وفا کی ادا
گل ہوئے غرق آب شبنم میں
دیکھ اس صاحبِ حیا کی ادا
اشک رنگیں میں غرق ہے نِس دن
جن نے دیکھا ہے تجھ حنا کی ادا
اے ولیؔ درد سر کی دارو ہے
مجھ کوں اُس صندلی قبا کی ادا
15
ہوش کھوتی ہے نازنین کی ادا
سحر ہے سروِ گل جبیں کی ادا
گر ہے مطلوب تجھ کوں نقش مراد
دیکھ اس کی بھواں کی چیں کی ادا
ہوش میرا نئیں رہا مجھ میں
جب سوں دیکھا ہے نازنیں کی ادا
موجِ دریا کو دیکھنے مت جا
دیکھ اس زلف عنبریں کی ادا
اے ولیؔ دل کوں آب کرتی ہے
نگہ چشم شرمگیں کی ادا
16
ترے فراق میں دل کوں کیا ہوں بند جدا
کیا ہوں خال اُپر جی کو جیوں سپند جدا
تجھے شمع کے برابر سو کہہ سکوں کیوں میں
کہ نخل موم جدا سرو سر بلند جدا
ترے یو رُخ کو ہور ابرو کوں دیکھ اے ظالم
جلا ہے سو‘ر جدا ہور گلیا ہے چند جدا
ترے لباں کی حلاوت کو رکھ نظر بھیتر
شکر گھلی ہے جدی ہور گھلا ہے قند جدا
ترے جو قد سوں رکھا نَے شکر نے دل میں گرہ
تو کھینچ پوست کیا اس کوں بند بند جدا
ترے فراق میں کیا کہوں دوجے رقیباں سوں
ہوا ہے مجھ سوں مرا دل اے دل پسند جدا
نہ بوجھ دل میں دوجے طالباں برابر مجھ
کہ اہلِ عیش جدا ہور یو دردمند جدا
ترے یو مکھ کی جھلک ہور زلف کی موج کوں دیکھ
تپاں ہے سُرج تو بے تاب ہے سپند جدا
ولیؔ برہ میں ترے حال کی حقیقت دیکھ
خجل ہے ناصح و رسوا ہے اہل پند جدا
17
ہے فیض سوں جہاں کے دل با فراغ میرا
مرہم سوں نئیں ہوا ہے محتاج داغ میرا
اسباب سوں دنیا کے بے غرض ہوں سدا میں
بن تیل ہور بتی ہے روشن چراغ میرا
وو ماہ جلوہ گر ہو دل کوں کیا منوّر
ہے آج آسماں سوں اوپر دماغ میرا
مجھ دل کے آچمن میں کر یک نظر تماشا
داغاں کے ہے گُلاں سوں روشن یو باغ میرا
از بسکہ زندگی میں یوں محو ہوں ولیؔ میں
مشکل ہوا اجل کوں کرنا سراغ میرا
18
ہوا ہے سیر کا مشتاق بے تابی سوں من میرا
چمن میں آج آیا ہے مگر گل پیرہن میرا
مرے دل کی تجلی کیوں رہے پوشیدہ مجلس میں
ضعیفی سوں ہوا ہے پردۂ فانوس تن میرا
نئیں ہے شوق مجھ کوں باغ کی گل گشت کا ہرگز
ہوا ہے جلوہ گر داغاں سوں سینے کا چمن میرا
مُوا ہوں تجھ جدائی کے دُکھوں اے نورعینِ دل
برنگ مردمک انکھیاں کا پردہ ہے کفن میرا
لگے پھیکی نظر میں اے ولیؔ دوکانِ حلوائی
اگر ہو جلوہ گر بازار میں شیریں بچن میرا
19
دیکھا ہے جن نے تیرے رخسار کا تماشا
نئیں دیکھتا سُرج کی جھلکار کا تماشا
اے رشک باغ جنت جب سوں جدا ہوا توں
دوزخ ہے مجھ کوں تب سوں گلزار کا تماشا
بے قصد مجھ زباں پر آتا ہے لفظ تمکیں
دیکھا ہے جب سوں تیری رفتار کا تماشا
رشتے کو بندگی کے ڈالا اَپس گلے میں
دیکھا جو تجھ صنم کے زنار کا تماشا
نرگس نمن رہی نئیں پل مارنے کی طاقت
آ دیکھ اپس انکھیاں کے بیمار کا تماشا
اس مکھ کا رنگ اڑکر قوسِ قزح کوں پہنچا
دیکھا جو تجھ بھواں کی تردار کا تماشا
تب سوں ولیؔ کا مطلب جا بیچ میں پڑیا ہے
دیکھا ہے جب سوں تیری دستار کا تماشا
20
موسیٰ اگر جو دیکھے تجھ نور کا تماشا
اس کوں پہاڑ ہووے پھر طور کا تماشا
اے رشک باغ جنت تجھ پر نظر کیے سوں
رضواں کو ہووے دوزخ پھر حور کا تماشا
روز سیاہ اس کے مومو سوں جلوہ گر ہے
تجھ زلف میں جو دیکھا دیجور کا تماشا
کثرت کے پھول بَن میں جاتے نئیں ہیں عارف
بس ہے موحّداں کو منصور کا تماشا
ہے جس سوں یادگاری وو جلوہ گر ہے دایم
تو چیں میں دیکھ جاکر فغفور کا تماشا
وہ سر بلند عالم از بس ہے مجھ نظر میں
جیوں آسماں عیاں ہے مجھ دور کا تماشا
تجھ عشق میں ولیؔ کے آنجھو اُمنڈ چلے ہیں
اے بحرِ حسن آ دیکھ اِس پو‘ر کا تماشا
21
بے تاب آفتاب ہے تجھ مکھ کی تاب کا
پیاسا ہے اِس جہاں میں ترے لب کے آب کا
تجھ مکھ کی آب و زلف کی مو جاں کو دیکھنے
سب تن نین ہوا ہے سو جل پر حباب کا
تجھ حسن انتخاب کا لکھتے تھے جب حساب
موہوم یک نقط ہے سُرج اس حساب کا
ہے مدرسے میں چرخ کے خورشید فیض بخش
جب سوں لیا ہے درس تری مکھ کتاب کا
مجلس ہے گرم چرخ کی تجھ آفتاب سوں
خالی ہے جام سرد اُپر ماہتاب کا
تجھ شوق سوں مدام لبالب ہے جام نین
شیشے میں دل کے جوش ہے نت اُس شراب کا
مجھ شعر کی روانی سنیا جب سوں اے ولیؔ
نم ناک ہے تدھاں ستی دامن سحاب کا
22
روح بخشی ہے کام تجھ لب کا
دم عیسیٰ ہے نام تجھ لب کا
حسن کے خضر نے کیا لبریز
آب حیواں سوں جام تجھ لب کا
منطق و حکمت و معانی پر
مشتمل ہے کلام تجھ لب کا
جنتِ حسن میں کیا حق نے
حوض کوثر مقام تجھ لب کا
رگ یاقوت کے قلم سوں لکھیں
خط پرستاں پیام تجھ لب کا
سبزہ و برگ و لالہ رکھتے ہیں
شوق، دل میں دوام ، تجھ لب کا
غرق شکّر ہوئے ہیں کام و زباں
جب لیا ہوں میں نام تجھ لب کا
مثل یاقوت خط میں ہے شاگرد
ساغر مے مدام تجھ لب کا
ہے ولیؔ کی زباں کو لذت بخش
ذکر ہر صبح و شام تجھ لب کا
23
مجھ گھٹ میں اے نِگھرگھٹ ہے شوق تجھ گھونگھٹ کا
دیکھے سوں لٹ گیا دل تیری زلف کا لٹکا
کردیا تجھ کپٹ کوں پڑتے ہیں اشک ٹپ ٹپ
مکھ بات بولتا ہوں شکوہ تری کپٹ کا
تجھ نین کے دیکھن کا دل ٹھاٹ کر چلا تھا
غمزے کے دیکھ ٹھٹ کوں ناچار ہو کے ٹھٹکا
تجھ خط کے بن توجہ کھلنا ہے اُس کا مشکل
حلقے میں تجھ زُلف کے جو جیو جا کے اٹکا
ہرگز ولیؔ کسی کن شاکی ترا نہ ہوتا
گر تجھ میں اے ہٹیلے ہوتا نہ طور ہٹ کا
24
نہیں شوق اُس کے دل میں کدھین لالہ زار کا
مشتاق ہے جو پیو کے رُخ آب دار کا
لگتا ہے مجھ کوں پنجۂ خورشید رعشہ دار
دیکھا ہے جب سوں دست نگاریں نگار کا
ہر ذرہ اُس کی چشم میں لبریز نور ہے
دیکھا ہے جن نے حسن تجلّی بہار کا
طاقت نئیں کسی کوں کہ یک حرف سُن سکے
احوال گر کہوں میں دل بے قرار کا
آوے ولیؔ ہماری طرف، تیغ ناز لے
اُس شوخ کوں خیال اگر ہے شکار کا
25
جگ منیں دوجا نئیں ہے خوب رو تجھ سار کا
چاند کوں ہے آسماں پر رشک تجھ رخسار کا
جب سوں تیری زلف کوں دیکھا ہے زاہد اے صنم
ترک کر سُبحہ کوں ہے مشتاق تجھ زنار کا
دل کو میرے تب ستیں حاصل ہوا ہے پیچ و تاب
جب سوں دیکھا پیچ تیری لٹ پٹی دستار کا
تجھ گلی کی خاک رہ جب سوں ہوا ہوں اے پیا
تب سوں تیرا نقش پا تکیہ ہے مجھ بیمار کا
بلبلاں گر یک نظر دیکھیں ترے مکھ کا چمن
پھر نہ دیکھیں زندگی میں مکھ کدھیں گلزار کا
بحر بے پایاں نے مجھ انجھواں ستی پایا ہے فیض
ابرنیساں عبد ہے مجھ چشم گوہر بار کا
ٹک اپس کا مکھ دکھا اے راحت جان و جگر
ہے ولیؔ مدت ستی مشتاق تجھ دیدار کا
26
دیکھنا ہر صبح تجھ رخسار کا
ہے مطالعہ مطلع انوار کا
بلبل و پروانہ کرنا دل کے تئیں
کام ہے تجھ چہرۂ گل نار کا
صبح تیرا درس پایا تھا صنم
شوقِ دل محتاج ہے تکرار کا
ماہ کے سینے اُپر اے شمع رو
داغ ہے تجھ حسن کی جھلکار کا
دل کوں دیتا ہے ہمارے پیچ و تاب
پیچ تیرے طرّۂ طرّار کا
جو سُنیا تیرے دہن سوں یک بچن
بھید پایا نسخۂ اسرار کا
چاہتا ہے اس جہاں میں گر بہشت
جا تماشا دیکھ اُس رخسار کا
آرسی کے ہاتھ سوں ڈرتا ہے خط
چور کوں ہے خوف چوکیدار کا
سرکشی آتش مراجی ہے سبب
ناصحوں کو گرمیِ بازار کا
اے ولیؔ کیوں سن سکے ناصح کی بات
جو دِوانا ہے پری رُخسار کا
27
یاد کرنا ہر گھڑی اس یار کا
ہے وظیفہ مجھ دلِ بیمار کا
آرزوئے چشمۂ کوثر نئیں
تشنہ لب ہوں شربت دیدار کا
عاقبت کیا ہووے گا، معلوم نئیں
دل ہوا ہے مبتلا دل دار کا
کیا کہے تعریف دل، ہے بے نظیر
حرف حرف اس مخزن اسرار کا
گر ہوا ہے طالب آزادگی
بند مت ہو سُبحہ و زنار کا
مسند گل منزل شبنم ہوئی
دیکھ رتبہ دیدۂ بیدار کا
اے ولیؔ ہونا سری جن پر نثار
مدّعا ہے چشم گوہر بار کا
28
گر میری طرف ہوے گزر اس شوخ پسر کا
سب راہ کروں فرش اپس نور نظر کا
مقصود کا تیار کروں حلوۂ بے دود
تجھ لب ستی گر ہاتھ لگے تُنگ شکر کا
اے نور نظر جب سوں تو آیا ہے نظر میں
پلکاں کو کیا شانہ ترے موے کمر کا
شرمندہ ہو تجھ مکھ کے دِکھے بعد سکندر
بالفرض بنا دے اگر آئینہ قمر کا
جوں لالہ بجز آتشِ خاموش لب یار
مرہم نئیں عالم میں ولیؔ داغ جگر کا
29
زخمی ہے جلاّدِ فلک تجھ غمزۂ خوں ریز کا
ہے شور دریا میں سدا تجھ زلف عنبر بیز کا
تجھ صاحب نیرنگ کی دیکھے اگر تصویر کوں
دل جا پڑے حیرت منیں نقاّش رنگ آمیز کا
اے عیسوی دم جگ منیں پایا وو عمر جاوداں
جو جگ منیں بسمل ہوا تیری نگاہ تیز کا
تب سوں ہوا ہے دل مرا کان نمک اے با نمک
جب سوں سُنیا ہوں شور میں تجھ حسن شور انگیزکا
یوں شعر تیرا اے ولیؔ مشہور ہے آفاق میں
مشہور ہے جیوں کر سخن اس بلبل تبریز کا
30
عیاں ہے ہر طرف عالم میں حسن بے حجاب اس کا
بغیر از دیدۂ حیراں نئیں جگ میں نقاب اس کا
ہوا ہے مجھ پہ شمع بزم یک رنگی سوں یو روشن
کہ ہر ذرے اُپر تاباں ہے دائم آفتاب اس کا
کرے عشاق کوں جیوں صورت دیوار حیرت سوں
اگر پردے سوں وا ہووے جمال بے حجاب اس کا
سجن نے یک نظر دیکھا نگاہ مست سوں جس کوں
خراباتِ دوعالم میں سدا ہے وو خراب اس کا
مرا دل پاک ہے از بس، ولیؔ زنگ کدورت سوں
ہوا جیوں جو ہر آئینۂ مخفی پیچ و تاب اس کا
31
سناوے مجکوں گر کُئی مہربانی سوں سلام اُس کا
کہاؤں آخر دم لگ بہ جاں منت غلام اُس کا
اگرچہ حسبِ ظاہر میں ہے فرقت درمیاں لیکن
تصور دل میں میرے جلوہ گر ہے صبح و شام اُس کا
محبت کے مرے دعوے پہ تا ہووے سند مجھ کوں
لکھیا ہوں صفحۂ سینہ پہ خونِ دل سوں نام اُس کا
برنگ لالہ نکلے جام لے کر اس زمیں سے جَم
اگر بخشے تکلم سوں مئے جاں بخش جام اُس کا
کُفَر کوں توڑ دل سوں دل میں رکھ کر نیتِ خالص
ہوا ہے رام بَن حسرت سوں جا لکھمن سو رام اُس کا
ہوئی دیوانگی مجنوں کی یوں میرے جنوں آگے
کہ جیوں ہے حسنِ لیلیٰ بے تکلف پائے نام اُس کا
کرے آزادگی اپنی گرفتاری اُپر قرباں
جو دیکھے یک قدم پھر، سرو گلشن میں خرام اُس کا
زباں تیشے کی کر سمجھے زبان دوجے فصیحاں کی
اگر فرہاد دل جا کر سنے شیریں کلام اُس کا
ولیؔ دیکھا جو اس انکھیاں کے ساقی کن وو جام مے
ہوا ہے بے خبر عالم سوں ہور خواہانِ جام اُس کا
32
چاروں طرف کھُلیا ہے گلزار رنگ درس کا
اس سیر جاں فزا سوں سینہ کھلیا ہوس کا
تجھ مکھ کے دیکھنے سوں اے آفتاب طلعت
مشتاق دل سوں میرے شعلہ اُٹھا اُمس کا
سب دلبراں پہ حق نے تجھ کو دیا فضیلت
ہر مدرسے کے بھیتر چرچا ہے تجھ دَرَس کا
یاں پیم کے دریا میں گرداں ہے کشتیِ عقل
اس موج شعلہ زن میں کیا آسرا ہے خس کا
پھرپھر ولیؔ ترے کَن آتا ہے جیوں کے سائل
تیری مٹھی زباں کا پایا ہے جب سوں چسکا
33
گزر ہے تجھ طرف ہر بوالہوس کا
ہوا دھاوا مٹھائی پر مگس کا
اپس گھر میں رقیباں کو نہ دے بار
چمن میں کام کیا ہے خار و خس کا
نگہ سوں تیری ڈرتے ہیں نظر باز
سدا ہے خوف دزدوں کو عسس کا
بجز رنگیں ادا دوجے سوں مت مل
اگر مشتاق ہے تو رنگ درَس کا
ولیؔ کوں ٹک دکھا صورت اپس کی
کھڑا ہے منتظر تیرے درَس کا
34
تری زلفاں کا ہر تار سیہ ہے کال عاشق کا
ہوا ہے اُس کے جلوے سوں پریشاں حال عاشق کا
نئیں درکار تا بولے بیاں اپنی زباں سیتی
عیاں ہے اشک کے طومار سواں احوال عاشق کا
جاوے ملک بیتابی سوں یک لمحہ کدھی باہر
زمیں میں بے قراری کی گڑیا ہے نال عاشق کا
ترا دل اے پری پیکر اگر شہرت کا طالب نئیں
تو اپنا مکھ دکھا کر دور کر جنجال عاشق کا
اگر جاوے پیا کے مکھ طرف بخت آزمائی کوں
کرے پیو کا تغافل اُٹھ کے استقبال عاشق کا
پیا کے ابروے کج نے کیا ہے دل کوں سرگرداں
کرو معلوم اس چوگان و گو سوں حال عاشق کا
نہ ہووے چرخ کی گردش سوں اس کے حال میں گردش
بجا ہے قطب کے مانند استقلال عاشق کا
کدھی دام محبت سوں خلاصی اس کو ممکن نئیں
ترے انکھیاں کے ڈورے سوں بُنا ہے جال عاشق کا
نہ پوچھو عشق میں جوش و خروش دل کی ماہیّت
بہ رنگ ابر دریا بار ہے رومال عاشق کا
ولیؔ ، یو مصرعِ رنگیں ہوا ہے درد جان و دل
فدا ہے عشق میں دلبر کے جان و مال عاشق کا
35
مجھ درد پہ دوا نہ کرو تم حکیم کا
بن وصل نئیں علاج برہ کے سقیم کا
دیکھا ہوں قدّو زلف و دہن پیو کا جب ستی
کیتا ہوں درد تب سوں الف لام میم کا
جنت میں کب دیے ہیں وہ رضواں کو مرتبہ
جو مرتبہ ہے تیری گلی کے مقیم کا
پیو کے نزیک انجھو کو مرے کچھ وقار نئیں
عالم میں گرچہ قدر ہے دُرِّ یتیم کا
کرتا ہے اس کی زلف کی تعریف اے ولیؔ
جو ہے مرید سلسلۂ مستقیم کا
36
دل کو گر مرتبہ ہو درپن کا
مفت ہے دیکھنا سری جن کا
جامہ زیباں کو کیوں تجوں کہ مجھے
گھیر رکھتا ہے دور دامن کا
اے زباں کر مدد کہ آج صنم
منتظر ہے بیانِ روشن کا
حکمت عشق بوعلی سوں نہ پوچھ
نئیں وہ قانوں شناس اس فن کا
آئینہ تجھ سے ہو کے ہم زانو
غیرت افزا ہوا ہے گلشن کا
امن میں تجھ نگہ سوں ہیں بے درد
خوف نئیں مفلسوں کوں رہزن کا
دل صد پارہ تجھ پلک سوں ہے بند
خرقہ دوزی ہے کام سوزن کا
تجھ نگہ سوں بہ شکلِ شان عسل
دل ہوا گھر ہزار روزن کا
ٹک ولیؔ کی طرف نگاہ کرو
صبح سوں منتظر ہے درشن کا
37
ہر طرف ہے جگ میں روشن نام شمس الدین کا
چین میں ہے شور جس کے ابروے پُرچین کا
مکھ پہ لے رنگ خجالت، چھوڑ کر معدن گیا
لعل نے سن کر سخن تیرے لب رنگین کا
ہے ترے ہر مو سوں روشن جلوہ گر رنگ وقار
کیا عجب گر تجھ سے لیوے درس نت تمکین کا
دیکھ تجھ پلکاں کوں بولیا عاشق جاں بازیوں
مرغ دل کے صید کوں چنگل ہے یو شاہین کا
صورت تسکیں نئیں دِستی مگر اس حال میں
اے ولیؔ جب پیو پو‘چھے حال مجھ مسکین کا
38
بدخشاں میں پڑیا ہے شور تیرے لعل رنگیں کا
ہوا ہے چین میں شہرہ تری اس زلف پُرچیں کا
عجب نئیں ہے اگر ساقی فلک کا اے کمال ابرو
تری مجلس میں لیا دے جام روشن ماہ سیمیں کا
لکھیا اے ظالم خوں خوار و صیّاد دل عاشق
تری مژگاں نے میرے دل اُپر مضمون شاہیں کا
اُٹھے شیریں سر تعظیم کوں اس کی ادب سیتی
اگر کئی کوہ کن بولے سخن تجھ عزّ و تمکیں کا
ولیؔ اُس طبع کا گلشن گل معنی سوں ہو روشن
کوئی دل کوں کرے مسکن مرے اشعار رنگیں کا
39
ہوا ہے دل مرا مشتاق تجھ چشم شرابی کا
خراباتی اُپر آیا ہے شاید دن خرابی کا
کیا مدہوش مجھ دل کوں آ نیندی نین ساقی نے
عجب رکھتا ہے کیفیّت زمانہ نیم خوابی کا
خطِ شب رنگ رکھتا ہے عداوت حسن خوباں سے
کہ جیوں خفّاش ہے دشمن شعاعِ آفتابی کا
نہ جاؤں صحن گلشن میں کہ خوش آتا نئیں مجکوں
بغیر از ماہ رو ہرگز تماشا ماہ تابی کا
نہ بوجھو اب ہوا ہے کم سخن وو دلبر رنگیں
لب تصویر پر ہے رنگ دائم لاجوابی کا
پری رخ کوں اٹھانا نیند سوں برجا ہے اے عاشق
عجب کچھ لطف رکھتا ہے زمانہ نیم خوابی کا
نہ جانوں کس پری رو سوں ہوا ہے جا کے ہم زانو
کہ آئینے نے پایا ہے لقب حیرت مآبی کا
ولیؔ سوں بے حسابی بات کرنا بے حسابی ہے
نئیں وو آشنا اے یار ہرگز بے حسابی کا
40
نئیں کُئی تا سنے احوال میری دل فگاری کا
کہوں کس کن گریباں چاک کر دکھ بے قراری کا
عجب نئیں اُٹھ کے بے تابی سوں سر مارے کنارے پر
سنے گر ماجرا دریا ہمارے اشک جاری کا
ترے غم میں نَین سے جو نکلتا ہے انجھو باہر
دوجا گوہر کہاں ہے جگ میں اُس کی آبداری کا
تری وو انتظاری ہے جسے حد ہور نہایت نئیں
شکایت کس کنے جاکر کروں اس انتظاری کا
ہوئی ہے آرسی جوگن ترے مکھ کے تصوّر مسں
بھبھوتی موں پہ لیا دم مارتی ہے خاک ساری کا
کھڑا ہے راستی کے دم میں یک پگ پرسو جیوں جوگی
ترے قد سوں لگا ہے دھیان سروِ جوئباری کا
ولیؔ انکھیاں کی کر داوات پُتلی کی سیاہی سوں
لکھیا تیری صفت کوں لے قلم معنی نگاری کا
41
طالب نئیں مہر و مشتری کا
دیوانہ ہوا جو تجھ پری کا
یو غمزۂ شوخ ساحری میں
استاد ہے سحرِ سامری کا
تجھ تل سوں اے آفتاب طلعت
ممنون ہوں ذرّہ پروری کا
کفار فرنگ کوں دیا ہے
تجھ زلف نے درس کافری کا
تیرا خط خضر رنگ اے شوخ
سلطان ہے خشکی و تری کا
توں سر سوں قدم تلک جھلک میں
گویا ہے قصیدہ انوری کا
خورشید ستی ہوا ہے ہم سر
چیرا، ترے سر اُپر، زری کا
اے غنچہ نہ کر تو فخر، یو دل
ہے بند پیا کی بکتری کا
پایا ہے جو کوئی دولت فقر
مشتاق نئیں سکندری کا
پھیکی لگے اس کوں شان دولت
چاکھیا جو مزہ قلندری کا
کہتا ہے ولیؔ پکار یو بات
بندہ ہوں پیا کی دلبری کا
42
شغل بہتر ہے عشق بازی کا
کیا حقیقی و کیا مجازی کا
ہر زباں پر ہے مثل شانہ مدام
ذکر تجھ زلف کی درازی کا
آج تیری بھواں نے مسجد میں
ہوش کھویا ہے ہر نمازی کا
گر نئیں راز عشق سوں آگاہ
فخر بے جا ہے فخر رازی کا
اے ولیؔ سر و قد کو دیکھوں گا
وقت آیا ہے سرفرازی کا
43
یکایک مجھ دِسا یک شہ جواں آ سوار تازی کا
کہ جن نے حق سوں پایا ہے خطاب عاشق نوازی کا
نزک میرے کرم کر کر فصاحت ہور بلاغت سوں
کہا وو سرو قد مجھ کوں سخن سو سرفرازی کا
محبت یار بے پروا کی سینے میں ہے رات ہور دن
یہی مطلب ہے رات ہور دن نمازی ہور نیازی کا
مجھے بولیا کہ گر عشق حقیقی سوں تو واقف نئیں
تو بہتر یوں ہے جا دامن پکڑ عشق مجازی کا
سنیا ہوں جب سوں یو نکتہ ولیؔ شیریں سخن سیتی
لگیا ہے تب سوں شیوہ جی کوں میرے عشق بازی کا
44
پڑیا ہے لعل میں پر تو سجن تجھ لب کی لالی کا
بیاں ہے مہ سوں روشن تر تری صاحب کمالی کا
ترا قد مصرعِ برجستہ ہے دیوان عالی کا
تری یو بیت ابرو شعر دستا ہے ہلالی کا
گئی ہے خواب مخمل کی ترے پانو کی سرخی سوں
کہ جس کے عکس سوں رنگیں ہوا ہے نقش قالی کا
تری لب کی حلاوت نے کیا مجھ طبع کو شیریں
ہوا ہے نقلِ مجلس ذکر مجھ شیریں مقالی کا
ہوا مجھ دل کی جنّت میں سو ہر یک آہ جیوں طوبیٰ
لٹک چلنا جو دیکھا، بسکہ میں سیدِ معالی کا
نزاکت تجھ کمر کی دل نشیں ہے، اس سبب ساجن
ہوا ہے شہرہ عالم میں مری نازک خیالی کا
رنگیلے شعر کا کہنا کیا تھا ترک مدّت سوں
ترا یو قد ہوا ہے پھر کے باعث فکر عالی کا
تری وہ طبع ہے ہموار اے رشک مہِ کنعاں
کہ جس میں مو‘ برابر نئیں اثر بے اعتدالی کا
ولیؔ تجھ شعر کوں سنتے ہوئے ہیں مست اہلِ دل
اثر ہے شعر میں تیرے شراب پرتگالی کا
45
کیا ہوں جب سوں دعویٰ شاہ خوباں کی غلامی کا
علم برپا ہوا ہے تب سوں میری نیک نامی کا
اسے دشوار سے جگ میں نکلنا غم کے پھاندے سوں
جو کُئی دیکھا ہے تیرے بر منیں جامہ دو دامی کا
اُٹھا ریحاں اگرچہ خواجۂ بستاں سَرا لیکن
دیا تجھ خط کوں اے یاقوت لب سر خط غلامی کا
پری رویاں کے کوچہ میں خبرداری سوں جا اے دل
کہ اطراف حرم میں ڈر ہمیشہ ہے حرامی کا
ہوا جوہر شناس تیغ معنی اے ہلال ابرو
کہ جن نے درس پایا ہے تجھ ابرو کی حامی کا
بسے فرہاد کے مانند کوہ بے ستوں میں جا
اگر قصّہ سنے خسرو تری شیریں کلامی کا
اگر تجھ حسن کامل کی سنیں تعریف مہ رویاں
تمام آکر کریں اقرار اپنی نا تمامی کا
اگر تجھ حسن عالم گیر کو دیکھیں سخن فہماں
نہ لاویں پھر زباں اوپر بیاں خوبان نامی کا
لگے جیوں نخل ماتم سر و گلشن اُس کی انکھیاں میں
تماشا جن نے دیکھا ہے سجن تجھ خوش خرامی کا
حقیقت سوں تری مدّت ستی واقف ہیں اے زاہد
عبث ہم پختہ مغزاں سوں نہ کر اظہار خامی کا
ولیؔ لکھتا ہے تیری مست انکھیاں دیکھ اے ساقی
بیاضِ گردنِ مینا اُپر دیوان جامی کا
46
عبث غافل ہوا ہے گا فکر کر پیو کے پانے کا
صفا کر آرسی دل کی سکندر ہو زمانے کا
چراغ دل اگر گل ہے تو کر جیوں گل اسے روشن
کہ یہ تحفہ ہے سالک کوں نزک حق کے لجانے کا
نہ پاوے دین کی لذت جسے دنیا کی خواہش ہے
قُفَل ہے لذت دنیا حقیقت کے خزانے کا
نئیں یو آہ ہور زاری جو سینے ہور انکھاں میں ہے
سمجھ بیشک کہ افسوں ہے یہ اُس پیو کے لبھانے کا
موے کو جیو بخشے آب حیواں بے گماں ہے جیوں
نین میں تیو نچ پانی ہے سوتے دل کے جگانے کا
برہ کی آگ میں دھنسنے کی نئیں ہے کچھ فکر دل کوں
کہ جیوں غم نئیں ہے ابراہیم کو آتش میں جانے کا
ولیؔ تجھ کو رکھیں گے شیر مرداں اپنی مجلس میں
رہے گر سگ ہوکر دائم نبیؐ کے آستانے کا
47
کیا،یک بات میں واقف مجھے راز نہانی کا
لکھوں غنچے اُپر حرف اس دہن کی نکتہ دانی کا
کتابت بھیجنی ہے شمع بزم دل کوں اے کاتب
پر پروانہ اوپر لکھ سخن مجھ جاں فشانی کا
عزیزاں بعد مرنے کے نہ بوجھو تم کہ تنہا ہوں
لکھا ہوں پردۂ دل پر خیال اُس یار جانی کا
چھپا کر پردۂ فانوس میں رخ شمع ہے گریاں
سنیا ہے جب سے آوازہ تری روشن بیانی کا
پرت کی بزم میں تا سرخ روئی مجھ کوں ہو حاصل
نین سوں اپنے دے ساغر شراب ارغوانی کا
بجا ہے گر کرے پرواز رنگ چہرۂ عاشق
ہوا ہے شوق موہن کوں لباس زعفرانی کا
ترے مکھ کی صفائے حیرت افزا کیوں سکے لکھ کر

قلم ہے جو ہر آئینۂ نا صاف مانی کا
رہے وو مُو کمر جیوں دیدۂ تصویر حیراں ہو
لکھوں گر خامۂ موسوں بیاں مجھ ناتوانی کا
شراب جلوۂ ساقی سوں مت کر منع اے زاہد
یہی ہے مقتضا عالم میں ہنگامِ جوانی کا
ولیؔ جن نے نہ باندھیا دل کوں اپنے نونہالاں سوں
نہ پایا پھل جہاں میں ان نے ہرگز زندگانی کا
48
لیا ہے جب سوں موہن نے طریقہ خود نمائی کا
چڑھیاں ہے آرسی پر تب سوں رنگ حیرت فزائی کا
اپس کی زلف کافر کیش کی جھلکار ٹک دکھلا
کہ زاہد بے خبر دم مارتا ہے پارسائی کا
سُرج کوں گر اجازت ہو تو آوے سیس سوں چل کر
کہ اس کوں شوق ہے تجھ آستاں پر جبہّ سائی کا
مرے دل کی حقیقت یوں ہوئی ہے شہرۂ عالم
کہ جیوں مذکور ہووے جگ میں تیری دل رُبائی کا
کرے تا تجھ شکر لب سے طلب اک بوسۂ شیریں
مرے دل نے لیا ہے اس سبب شیوہ گدائی کا
جو کُئی تیری سیہ چشماں کوں سمجھا بے مروت کر
بھروسا کیوں کے ہووے اس کوں تیری آشنائی کا
سجن کی انجمن میں ہوئے تب ہر یک طبع روشن
ولیؔ چرچا اُچھے مجلس میں جب طبع آزمائی کا
49
جس وقت اے سری جن تو بے حجاب ہوے گا
ہر ذرّہ تجھ جھلک سوں جیوں آفتاب ہوے گا
مت جا چمن میں لالن بلبل پہ مت ستم کر
گرمی سوں تجھ نگہ کی گُل گل گلاب ہوے گا
مت آئینے کوں دکھلا اپنا جمال روشن
تجھ مکھ کی آب دیکھے آئینہ آب ہوے گا
نکلا ہے وو ستم گر تیغ ادا کو لے کر
سینے کا عاشقاں کے اب فتح باب ہوے گا
رکھتا ہے کیوں جفا کوں مجھ پر روا اے ظالم
محشر میں تجھ سوں میرا آخر حساب ہوے گا
مجکو ہوا ہے معلوم اے مست جام خوبی
تیری انکھیاں کے دیکھے عالم خراب ہوے گا
ہاتف نے یوں دیا ہے مجھ کو ولیؔ بشارت
اُس کی گلی میں جا تو مقصد شتاب ہوے گا
50
اس قد سوں جس چمن میں وو نونہال ہوگا
کیا سرو کیا صنوبر ہر یک نہال ہوگا
آوے گا گر سخن میں وو مایۂ لطافت
شرمندہ اس کے آگے آبِ زُلال ہوگا
عالم میں جو ہوا ہے طالب تری بھواں کا
اس کے نگین دل پر نقشِ ہلال ہوگا
ہے اُس کے حق میں ہر شب مانند روز محشر
جس کوں فراق جاناں سینے کا سال ہوگا
معنی کے ہے چمن کا جو بلبل معانی
تجھ گل بدن کے دیکھے رنگیں خیال ہوگا
جیوں شمع گل پڑیں گے شرمندگی سوں گُل رو
جس انجمن میں حاضر گو بند لال ہوگا
البتہ وصف تیرا لاوے گا ہر سخن میں
جو شعر میں ولیؔ سا صاحب کمال ہوگا
51
تجھ غمزۂ خوں ریز سوں لڑ کون سکے گا
تجھ ناز ستم گر سوں جھگڑ کون سکے گا
تجھ حسن کے بازار میں دیوانۂ دل کوں
بِن زلف کی زنجیر جکڑ کون سکے گا
پھرتی ہیں سیہ مست ہو شمشیر نظر لے
بِن نیند اُن انکھیا کو پکڑ کون سکے گا
ہیں خضر کے چشمے سوں ترے لب یو لبالب
بِن سبزۂ خط اُس کوں انپڑ کون سکے گا
تجھ زلف کا بستار لکھا آج ولیؔ نے
اس سحر کے طومار کوں پڑ کون سکے گا
52
تجھ نین کے شسوار سوں لڑ کون سکے گا
بن نیند اس انکھیاں کوں پکڑ کون سکے گا
خوش آب حیاتی ستیں یو لب ہیں لبالب
بیڑے بغیر اُس لب کوں انپڑ کون سکے گا
بدمست دو پستاں ترے سینے پہ ہیں قائم
اُن باج بھی اس صدر پہ چڑ کون سکے گا
دریاے برہ غم میں مجھے دل ہے سو یونس
اس بحر میں دل باج سو پڑ کون سکے گا
مانند ولیؔ تجھ سوں جو پایا شرف وصل
اس باج اپس دل سوں بچھڑ کون سکے گا
53
زرد رو ہے جو کیا ہے فکر تسخیر طلا
مت ہو اے وحشی صفت زنہار نخچیر طلا
کیوں کرے آلودۂ زر جگ منیں صید مراد
ہے علم او پر معطل صورت شیر طلا
گر غرض ہے حاصل غیر گردش اس کوں جگ ہیں رات دن
جیوں سُرج لاگے ہیں جس کے دل منیں تیر چلا
دیکھ کر تجھ مکھ کے پرتو کوں اے رشک آفتاب
موج سوں پانی نے ڈالا پگ میں زنجیرطلا
جب سنا تجھ حسن سوں دعوی کیے ہیں اختراں
گرم ہو نکلا سُرج لے ہاتھ شمشیر طلا
شمع تیری بزم میں جس وقت ہووے جلوہ گر
ماہ نو لاوے اپس کوں کر کے گل کیر طلا
بوالہوس رکھتے ہیں دائم فکر رنگِ عاشقاں
جوں مہوّس کے سدا دل میں ہے تدبیر طلا
زندگی زرّیں لباساں کی گئی بازی منیں
دیکھ جگ کے گنجفے میں صورت میر طلا
آہ سوں عاشق کی عارف بوجھتے ہیں حال دل
جیوں کہ سمجھے صوت سوں صرّاف تقریر طلا
یوں زمین عشق میں ہے، دام عاشق، نام یار
نام شہ جیوں ہوتا ہے نس دن گلوگیر طلا
شکل تجھ بت کی جو مجھ دل میں منقش ہوئے ہے
ہے سمندر کی نمط آتش میں تصویر طلا
اے ولیؔ یو شعر ہے لبریز معنی سربسر
ہے بجا اطراف اس کے گر ہو تحریر طلا
54
پی کے ہوتے نہ کروں توں مہ کی ثنا
معتبر نئیں ہے حسن دور نما
باعثِ نشۂ دو بالا ہے
حسن صورت کے ساتھ حسن ادا
اے گل باغ حسن مکھ سوں ترے
جلوہ پیرا ہے رنگ و بوے حیا
ماہ نو تجھ بھواں پہ کر کے نظر
سوے مغرب چلیا ہے رو بہ قفا
سرخ رویاں منیں سرآمد ہے
تجھ قدم کے اثر سوں رنگ حنا
نئیں ہے گل پی کے مکھ سا عالم میں
قائل اس بات کی ہے باد صبا
اے ولی مجھ سخن کوں وو بوجھے
جس کو حق نے دیا ہے فکر رسا
55
تیرے شکر لب کوں اب مثل عسل بولنا
بلکہ عسل ہے یو اصل اُس کوں نقل بولنا
تجھ قد و قامت آگے سرو ہوا سرنگوں
تجھ سے رواں سرو آگے سرو کوں شل بولنا
مکھ کے صدف میں ترے دُر ہے مبارک بچن
دُر سمندر اسے سٹ کے عقل بولنا
بات کی مجلس منیں میر سخن تو نچھ ہے
جگ میں مسیحا تجھے جیبھ سنبھل بولنا
مور ضعیف ہے ولیؔ خاک قدم ٹھار اسے
بلکہ ضعیفی منیں اُس نے نبل بولنا
56
تجھ حسن عالم تاب کا جو عاشق شیدا ہوا
ہر خوبرو کے حسن کے جلوے سوں بے پروا ہوا
دیکھا ہے تیری زُلف کے حلقے کو جن یک نظر
تجھ خال کے نقطے نمن وو بے سرو بے پا ہوا
جس وقت سوں تجھ قد کے تیں لائے ہیں شاعر فکر کر
اس وقت سوں عالم منیں نرخ سخن بالا ہوا
ہیں صلح کل کے گوہراں میرے سخن سوں جلوہ گر
از بسکہ وسعت مشربی سوں دل مرا دریا ہوا
پایا ہے جگ میں اے ولیؔ وہ لیلیِ مقصود کوں
جو عشق کے بازار میں مجنوں نمن رسوا ہوا
57
تجھ برہ کی آتش منیں دل جل کے انگارا ہوا
اس کے اُپر جلنے کوں جیوجیوں عنبر سارا ہوا
تجھ مکھ کے مصحف کے بھتر آیت جو دیکھی قہر کی
ہیبت سوں جیوں زیر و زبر دل ٹوٹ سیپارا ہوا
فرہاد کے تیشے سوں مجھ ادھکا ہوا ہے غم ترا
ہر آہ دل کوں چیرنے سینے بھتر آرا ہوا
گلشن منیں اس خلق کے وو مکھ ہے تیرا رشک گل
شبنم عرق کا جب اُڑا افلاک کا تارا ہوا
مجھ نین کے یعقوب کی نظارہ بازی پیر تھی
یوسف کے دیکھے سوں جواں پھر آج نظارا ہوا
مارا ہے جس کوں اے صنم وو رات دن تجھ پاس ہے
دامن کوں بلکا گرد ہو تجھ راہ کا مارا ہوا
غافل نہ رہ اے سنگ دل ہرگز ولیؔ کے حال سوں
جس آہ کی آتش کوں سن خارا کا دل پارا ہوا
58
تجھ مکھ کا یو تل دیکھ کر لالے کا دل کالا ہوا
تجھ دور خط سوں طوق جیوں مہتاب پر ہالا ہوا
مستی منیں محشر تلک کونین کوں بسرا ہے وو
جو تجھ نین کے جام سوں مدھ پی کے متوالا ہوا
گل زار کے مبحث منیں تھی راستی کی گفتگو
شمشاد پر تجھ سرو کا اکثر سخن بالا ہوا
کاجل نین کا دیکھ کر بولے ہیں یوں جادوگراں
عشاق کی تسخیر کوں یو سحر بنگالا ہوا
غمزاں کو فوجاں باندھ کر آئے ہیں راوت نین کے
ہر مو پلک کا ہاتھ میں اُن کے سو جو‘ں بھالا ہوا
جلتا ہے دوزخ رات دن تیرے جلے کے رشک سوں
مشتاق تیرے درس کا جنت سوں نروالا ہوا
سٹ نیں کی شمشیر کی اوجھڑ ولیؔ کے دل اُپر
تیرے شکار ستاں میں یو نخچیر ہے پالا ہوا
59
جب صنم کوں خیال باغ ہوا
طالب نشّۂ فراغ ہوا
فوج عشاق دیکھ ہر جانب
نازنیں صاحبِ دماغ ہوا
رشک سوں تجھ لباں کی سرخی پر
جگر لالہ داغ داغ ہوا
دل عشاق کیوں نہ ہو روشن
جب خیال صنم چراغ ہوا
اے ولیؔ گل بدن کوں باغ میں دیکھ
دل صد چاک باغ باغ ہوا
60
جلوہ گر جب سوں وو جمال ہوا
نور خورشید پائمال ہوا
فیض تشبیہ قدِّ دلبر سوں
سرو گلشن منیں نہال ہوا
نشۂ سبزیِ خطِ خوباں
والیِ عالم خیال ہوا
یاد کر تجھ بھواں کی بیت بلند
ماہِ نو صاحبِ کمال ہوا
دیکھ کر تجھ نگاہ کی شوخی
ہوش عاشق رم غزال ہوا
حسن اس دل رُبا کا مدت سوں
عکس آئینۂ خیال ہوا
وصف میں تجھ بھواں کے ہر مصرع
ثانیِ مصرع ہلال ہوا
عزل مجنوں کے بعد مجھ کوں ولیؔ
صوبۂ عاشقی بحال ہوا
61
جب تجھ عرق کے وصف میں جاری قلم ہوا
عالم میں اس کا ناؤں جواہر رقم ہوا
نقطے پہ تیرے خال کے باندھا ہے جن نے دل
وو دائرہ میں عشق کے ثابت قدم ہوا
تجھ فطرت بلند کی خوبی کوں لکھ قلم
مشہور جگ کے بیچ عطار و رقم ہوا
طاقت نہیں کہ حشر میں ہووے وو داد خواہ
جس بے گنہ پہ تیری نگہ سوں ستم ہوا
بے منت شراب ہوں سرشار انبساط
تجھ نین کا خیال مجھے جام جم ہوا
جن نے بیاں لکھا ہے مرے رنگ زرد کا
اس کوں خطاب غیب سوں زریں رقم ہوا
شہرت ہوئی ہے جب سے ترے شعر کی ولیؔ
مشتاق تجھ سخن کا عرب تا عجم ہوا
62
تصویر تیری دیکھ کر سارا جگت حیراں ہوا
تجھ زلف کے کوچے منیں دل جا کے سرگرداں ہوا
ابرو کی کشتی مت چھپا اس وقت اے دریائے حسن
تجھ نین کی گردش ستی عالم منیں طوفاں ہوا
نئیں خال تیرے مکھ اُپر یہ دل ہے اس کا اے صنم
تیری زلف کوں دیکھ کر جو دشمن ایماں ہوا
سنبل پڑیا ہے دام میں تجھ زلف کے اے گل بدن
تجھ خط کی خوبی دیکھ کر فرماں میں نافرماں ہوا
وہ عاشقی کے کیش میں ثابت ہے دائم اے ولیؔ
تجھ سے کماں ابرو اُپر جو جیو سوں قرباں ہوا
63
عشق سوں تیرے صنم جیو پہ طوفاں ہوا
مسکنِ اشکِ نین ساحل داماں ہوا
اے گل باغ ادا، سرو ترے قد انگے
دل پہ ہر آزاد کے صورت سوہاں ہوا
درد سوں آیا مری شام پہ روز سیہ
صبح کا مجھ حال سوں چاک گریباں ہوا
کنج میں تجھ عشق کے جن نے کیا ہے مقام
اس کوں ٹوٹا بوریا تخت سلیماں ہوا
بسکہ اے نور نین تجھ میں ہے انسانیت
عشق سوں تیرے صنم صورت انساں ہوا
جب سوں ترے مکھ کی یاد کرتا ہوں اے گل بدن
تب سوں ہر اک زخم دل باب گلستاں ہوا
تیری انکھیاں کے آگے کیوں کے ہر اک آسکے
مدِّ نگہ چوب دار ہر مژہ درباں ہوا
جگ کے دل اے برہمن کانپتے ہیں مثل بید
جب سوں یو ہندوے خال دشمن ایماں ہوا
تب سوں ولیؔ کی زباں تیز ہے تجھ وصف میں
تجھ مژۂ شوخ کا جب سوں زباں داں ہوا
64
وو مرا مقصود جان و تن ہوا
جس کا مجھ کوں رات دن سُمرن ہوا
مثل میناے شراب بزم حسن
حوض دل تجھ عکس سوں روشن ہوا
نور کا ہے گنج تیرا یو جمال
حسن کے گوہر کا توں معدن ہوا
بسکہ یادِ حسن حیرت بخش ہے
دل مرا صافی میں جیوں درپن ہوا
جو ولیؔ ہے مرجعِ ہر جزو کل
وو مرا مقصود جان و تن ہوا
65
ہر انجھو تجھ غم میں اے رنگیں ادا گل گوں ہوا
غیرت گل زار جنت دامن پُر خوں ہوا
ہے پسند طبع عالی مصرع سرو بلند
جب سوں گلشن میں ترا قد دیکھ کر موزوں ہوا
رات دن انجھواں میں اپنے شاستر کرتا ہے تر
اے برہمن دیکھ تجھ کوں بید خواں مجنوں ہوا
گر نہیں ہے خنجر بے داد خوباں کا شہید
دامن صد چاک گل کس واسطے پُر خوں ہوا
ہر غزل میں وصف لکھتا ہے ترے بے اختیار
تجھ نگاہ با ادا سوں جب ولیؔ ممنوں ہوا
66
تجھ لب مِٹھے کوں دیکھ پھکا انگبیں ہوا
چیں بہ جبیں کو دیکھ خجل نقش چیں ہوا
مجھ دل کے دائرے میں سویدا نہ بوجھ توں
تجھ خال کا خیال مجھے دل نشیں ہوا
مسجود آفتاب ہوا ہے شرف سوں آج
وہ نقش پاک زینت روے زمیں ہوا
تو جہاں رہتا ہے واں تجھے دیکھتا ہوں میں
تجھ یاد میں ز بسکہ یو دل دوربیں ہوا
تجھ زلف کا خیال کہ وہ رشک مشک ہے
عنبر سوں موج بحر میں جا ہم نشیں ہوا
پی کی گلی نگاہ کرو ہے عجب مکاں
اس اشرف المکاں میں یو دل جا مکیں ہوا
ہے آج مجکو جگ میں ولیؔ دست گاہ جم
اس کا خیال دل منیں نقش نگیں ہوا
67
تخت جس بے خانماں کا دشت ویرانی ہوا
سر اُپر اس کے بگولا تاج سلطانی ہوا
کیوں نہ صافی اس کوں حاصل ہو جو مثل آرسی
اپنے جوہر کی حیا سوں سر بسر پانی ہوا
زندگی ہے جس کوں دائم عالم باقی منیں
جلوہ گر کب اُس اَنگے یو عالم فانی ہوا
بے کسی کے حال میں یک آن میں تنہا نہیں
غم ترا سینے میں میرے ہمدمِ جانی ہوا
اے ولیؔ غیرت سوں سورج کیوں جلے نئیں رات دن
جگ منیں وو ماہ رشک ماہِ کنعانی ہوا
68
پھر میری خبر لینے وو صیّاد نہ آیا
شاید کہ مرا حال اسے یاد نہ آیا
مدت ستی مشتاق ہیں عشاق جفا کے
بے داد کہ وو ظالم بے داد نہ آیا
جاری کیا ہوں جوے رواں اشک رواں سوں
افسوس کہ وو غیرت شمشاد نہ آیا
جس غم منیں موزوں کیا ہوں آہ کا مصرع
وو مصرع دل چسپ پری زاد نہ آیا
پہنچی ہے ہر اک گوش میں فریاد ولی ؔ کی
لیکن وو صنم سننے کوں فریاد نہ آیا
69
افسوس اے عزیزاں وو سیم بر نہ آیا
مجھ درد کی خبر سن وو بے خبر نہ آیا
بیمار پر برہ کے نہیں کُئی کہ مہرباں ہو
مجھ دکھ کے پوچھنے کو جز درد سر نہ آیا
مدت تلک جنگل میں دیوانہ ہو پھرا میں
آخر کوں وو پری رو میری نظر نہ آیا
آزاد سوں سُنیا ہوں یہ مصرعِ مناسب
’’جس سوں وو یار ملتا ایسا ہنر نہ آیا‘‘
کیوں عاشقاں کی صف میں پاویں وو سرخروئی
جن کی انکھیاں کے اوپر خون جگر نہ آیا
میں غم سوں گل سراپا جیوں مو ہوا ہوں لیکن
مجھ ناتواں کی جان وو مو کمر نہ آیا
عشاق متفق ہو کہتے ہیں جان و دل سوں
ہرگز زمیں کے اوپر تجھ سا بشر نہ آیا
کچھ نقد جاں کا کھونا تخصیص نئیں ولیؔ کی
نئیں کُئی کہ تجھ گلی میں دل کوں بِسر نہ آیا
70
بے داد ہے بے داد کہ وو یار نہ آیا
فریاد ہے فریاد کہ غم خوار نہ آیا
صد حیف ہے صد حیف کہ وو ناز و ادا سوں
یک بار مرے بر منیں دل دار نہ آیا
اغماض کیا، چلتا رہا، مجھ کوں نہ پوچھا
کیا اُس کوں مرے حال پہ کچھ پیار نہ آیا
میں جیوں کوں رکھیا عشق کے بازار میں لیکن
ہیہات مرے جیو کا خریدار نہ آیا
کیا ہے سبب اس وقت ولیؔ جیوکوں لینے
خنجر کوں لیے ہات میں خوں خوار نہ آیا
71
صد حیف کہ وو یار مرے پاس نہ آیا
میرا سخن راست اسے راس نہ آیا
بیگانی لگی بات یگانے کی عجب ہے
آخر کوں اُسے غیر سوں وسواس نہ آیا
بلبل کی نمط نالہ و زاری میں ہوں نس دن
افسوس وو گل دستۂ خوش باس نہ آیا
اس یار وفادار سوں مجھ آس تھی لیکن
ہرگز وو بجھانے کوں مری پیاس نہ آیا
میں انبہ نمط تن کوں گلایا ہوں اپس کے
وو باغ محبت کا اننّاس نہ آیا
جس باج مرے سینے پہ ہر آن ہے یک سال
اُس ماہ بناتن پہ مرے ماس نہ آیا
یو بات ولیؔ دل کی سیاہی سوں لکھا ہوں
وہ نور نین حیف مرے پاس نہ آیا
72
ترے بن مجکوں اے ساجن یو گھر اور بار کرناں کیا
اگر تو نا اچھے مجھ کَن تو یو سنسار کرناں کیا
مُنڈی گردن منے بھاکر اپس کے آپ منصف ہو
نگارا یو نچھ بک بک کراتا بیزار کرناں کیا
اَگے جب سوں نہ آنے کی تھی منسا من میں تمنا کے
تو مجھ سے دکھ بھری سوں پھر جھوٹا اقرار کرناں کیا
پتیارا نئیں ترے کہنے کا چپ حیران کرنا ہے
جو من میں نہینچھ ملنے کا تو پھر تکرار کرناں کیا
ترے آنے کی باٹ اوپر بچھاے ہوں میں انکھیاں کو
توں بیگی آ، کہ تجھ بن مجکوں یہ گھردوار کرناں کیا
تمھیں ملنے سوں گر اپنے سہاگن نا کروگے مجھ
تو جوڑا گجکری کا اور کریلا دھار کرناں کیا
جو کئی جالے پرت کی آگ میں تن من کو یوں اپنے
ولیؔ سنگم بنا، ایسے کوں پھر آدھار کرناں کیا
73
پرت کی کنٹھا جو پہنے اسے گھر بار کرناں کیا
ہوئی جوگن جو کئی پی کی اسے سنسار کرناں کیا
جو پیو نے نیر نیناں کا سے کیا کام پانی سوں
جو بھوجن دکھ کا کرتی ہے اسے آدھار کرناں کیا
سکھی تمنا کوں ارزانی یہ کسوت ہور زرینہ سب
وو ہے جو جیوں سوں بیزار اسے سنگھار کرناں کیا
خجالت کی گرد انجھواں کے پانی سوں گلابے میں
بنانے غم کے گھر مجکوں دوجا معمار کرنا کیا
نئیں کُئی دھرم دھاری جو کہے پیتم سوں سمجھا کر
کہ دکھیا کوں بجھوہی سوں اِتا بیزار کرناں کیا
محل دل کا تری خاطر بنایا ہوں میں دل جاں سوں
جدائی سوں اسے یک بارگی مسمار کرناں کیا
سہیلیاں جب تلک مجھ سوں نہ بولیں گے ولیؔ آکر
مجھے تب لگ کسی سوں بات ہور گفتار کرناں کیا
74
اہل گلشن پہ ترے قد نے جب امداد کیا
اوّلاً سرو غلامی ستی آزاد کیا
اس کی تعظیم ہوئی اہل چمن پر لازم
بلبل باغ نے جب مصحف گل یاد کیا
روز ایجاد تری چشم سوں اے نور نظر
حسن کہ فرد پہ دیوان ازل صاد کیا
جن نے عشاق کے چہرے کوں دیا رنگ نیاز
معنیِ ناز کوں تجھ قد ستی ایجاد کیا
سب سوں ممتاز ہوا سلسلۂ معنی میں
دل دیوانہ کوں جب عشق نے ارشاد کیا
سینۂ بلبل قمری کوں کیا مخزن درد
جب کہ اس سرو نے سیر گل و شمشاد کیا
آج تجھ یاد نے اے دلبر شیریں حرکات
آہ کوں دل کے اُپر تیشۂ فرہاد کیا
اے ولیؔ جب سوں کیا عشق میں تحصیل جنوں
روح مجنوں نے اپس کا مجھے استاد کیا
75
مستی نے تجھ نین کی مجھ بے خبر کیا
دل کوں مرے بھواں نے تری جیوں بھنور کیا
تیری نگہ کے تیر کی ہیبت کوں دل میں رکھ
سورج نے تن اپس کا سراسر سپر کیا
تجھ مہر کا ہوا ہے دل و جاں سوں مشتری
جب سوں ترے جمال پہ مہ نے نظر کیا
تب سوں ہوا ہے محمل لیلیٰ کی شکل دل
جب سوں ترے خیال نے دل میں گزر کیا
جیوں سرو بے خزاں ہے جہاں میں وو سبز بخت
تیرے قد بلند پہ جن نے نظر کیا
ہر شب تری زلف سوں مطول کی بحث تھی
تیرے دہن کوں دیکھ سخن مختصر کیا
حق تجھ عذار دیکھ کے سُر چاہے رنگ گل
پیدا ترے لباں ستی شہد و شکر کیا
دیکھا ہے یک نگہ میں حقیقت کے ملک کوں
جب بے خودی کی راہ میں دل نے سفر کیا
تیرا یو شعر جگ میں موثر ہے اے ولیؔ
تو دل منیں ہر ایک کے جاکر اثر کیا
76
دل میں جب عشق نے تاثیر کیا
فرد باطل خط تدبیر کیا
بند کرنے دل وحشت زدہ کوں
دام زہ زلف گرہ گیر کیا
موج رفتار نے تجھ قد کی صنم
سرو آزاد کوں زنجیر کیا
سبز بختوں میں اسے لکھتے ہیں
وصف تجھ خط کے جو تحریر کیا
جز الم اُس کوں نہ ہووے حاصل
عشق بے پیر کوں جو پیر کیا
شمع مانند جلی اس کی زباں
جن نے مجھ سور کی تقریر کیا
گریہ و گرد ملامت سوں ولیؔ
خانۂ عشق کوں تعمیر کیا
77
کشور دل کوں ترے ناز نے تسخیر کیا
فوج مجنوں کوں تری زلف نے زنجیر کیا
پیچ سوں نقد دل عاشق بے تاب کوں لے
زلف کوں اپنی پری رو نے گرہ گیر کیا
عاشق زار سمجھ مجھ سوں ہوا ہے بیزار
نقد دل دے کے میں دلدار کوں دلگیر کیا
نالۂ شوق نے شعلے کی زباں سوں جیوں برق
درس میں شوخ کے جا عشق کی تقریر کیا
کیونکہ ذرّات جہاں تجھ کوں پرستش نہ کریں
حق نے تجھ حسن کوں خورشید جہاں گیر کیا
گردِ غم آب نئیں، درد کے معمار نے لے
خانۂ عشق جگر سوز کوں تعمیر کیا
اے ولیؔ شوخ کی زلفاں کی سیاہی لے کر
قصہۂحال پریشاں کوں میں تحریر کیا
78
خدا نے مکھ پہ ترے باب حسن باز کیا
قد بلند کوں تیرے تمام ناز کیا
یو مکھ تراہے جیوں مسجد بھواں ہیں جیوں محراب
انکھیا سوں جا کے میں وھاں عشق کی نماز کیا
گھُلا ہوں شمع نمط اُس کے مکھ کے پرتو سے
کہ جس کی یاد کی آتش نے تن گداز کیا
فدا کیا ہوں یو قیامت اُپر دل و جاں کوں
کہ مجھ کوں شور قیامت سوں بے نیاز کیا
کمند شوق میں کھینچا ہے زہرہ رویاں کو
تری زلف کی حکایت کوں جو دراز کیا
مثال زلف پڑی دل کی فوج بیچ شکست
تری نگاہ نے جب آکے ترک تاز کیا
خدا دیا ہے مجھے صد ہزار عجز و نیاز
جو سرسوں پانوں تلک تجھ کوں شکل ناز کیا
ولیؔ اپس کے قدم بوس کے شرف سوں مجھے
ہزار شکر کہ دلبر نے سرفراز کیا
79
صحن گلشن میں جب خرام کیا
سرو آزاد کوں غلام کیا
حق ترا جگ میں کیوں نہ ہو حافظ
کہ تجھے حافظ کلام کیا
کاملیت کا تجھ کوں تھا دعویٰ
حق نے دعویٰ ترا تمام کیا
وو بھواں ہم سوں کیوں نہ ہوں بانکی
ماہ نو نے جسے سلام کیا
غمزۂ شوخ نے بہ نیم نگاہ
کام عشاق کا تمام کیا
حق نے تجھ قد کوں دیکھ مثل الف
خوش قداں کا تجھے امام کیا
کاف کوفی ہے تجھ کمر کا پیچ
جگ میں اس کو سرِ کلام کیا
تجھ دہن نے کہ میم معنی ہے
دل سیماب میں مقام کیا
تا کہے خلق تجھ کوں ماہ تمام
زلف تیری کوں حق نے لام کیا
گل رخاں خوف سوں ہوئے یکسو
تجھ نگہ نے جب اہتمام کیا
نام تیرا ولیؔ نے اے اکملؔ
شوق سوں درد صبح و شام کیا
80
تجھ زلف کے مشتاق کوں مشکِ عنبر سوں کام کیا
طالب جو تیرے لب کے ہیں اُن کوں شکّر سوں کام کیا
بوجھے ضرر کوں جو نفع اور نفع کوں بوجھے ضرر
اُس عاشق ممتاز کوں نفع و ضرر سوں کام کیا
جو بھید سوں محرم نئیں ہور طعن عاشق پر رکھے
یو عاشق جاں باز کوں اس بے خبر سوں کام کیا
غافل قیامت کے بھتر اپنے کیے کوں پائیں گے
جو کام کیتے یھاں درست ان کوں حشر سوں کام کیا
یو شعر سن دل سوں ولیؔ خطرہ گہر کا کاڑ سٹ
میرا سخن جس کَن اچھے اس کوں گہر سوں کام کیا
81
ہے قد ترا سراپا معنیِ ناز گویا
پوشیدہ دل میں میرے آتا ہے راز گویا
معنی طرف چلیا ہے صورت سوں یوں مرا دل
سورت ستی چلیا ہے کعبے جہاز گویا
ہر یک نگہ میں تیری ہے نغمۂ محبت
ہر تار تجھ نگہ کا ہے تارِ ساز گویا
اے قبلہ رو ہمیشہ محراب میں بھواں کی
کرتی ہیں تیری پلکاں مل کر نماز گویا
تیری کمر مصوّر چترا ہے اس ادا سوں
کیتا ہے صَرف اس میں ناز و نیاز گویا
تجھ زلف کوں جو بولیا ہم دوش مصرع قد
رکھتا ہے مجھ برابر فکر دراز گویا
وہ قاتل ستم گر آتا ہے یوں ولیؔ پر
جلدی سوں صید اوپر آتا ہے باز گویا
82
چشم دلبر میں خوش ادا پایا
عالم دل کوں مبتلا پایا
سیر صحرا کی توں نہ کر ہرگز
دل کے صحرا میں گر خدا پایا
جب نہ آیا تھا شکم مادر میں
ابتدا سوں نہ انتہا پایا
اسم اللہ وو میم احمد ہے
حق ستیں حق کوں حق نما پایا
حفظ کرنے کوں مصطفی رو کوں
فیہ خیراً و حافظا پایا
بعد شاہ نجف ولی اللہ
پیر کامل علی رضا پایا
اس معانی کوں بوالہوس ناداں
کیوں کے سمجھے ولیؔ نے کیا پایا

ردیف ’ب‘
83
ترے جلوے سوں اے ماہِ جہاں تاب
ہوا دل سر بسر دریاے سیماب
ترے مکھ کے سُرج کوں دیکھ جیوں برف
ہوئے ہیں عاشقاں سر تا قدم آب
رکھوں جس خواب میں تجھ لب اُپر لب
مجھے شکر سوں شیریں تر ہے وو خواب
تری نیناں وو قاتل ہیں کہ جن پاس
دو ابرو کی ہیں دو تیغ سیہ تاب
ولیؔ تجھ سوز میں اے آتشیں خو
سراپا ہے بہ رنگ شعلۂ بے تاب
84
کیوں ہوسکے جہاں میں ترا ہم سر آفتاب
تجھ حسن کی اگن کا ہے یک اخگر آفتاب
دیکھا جو تجھ کوں آپ سوں روشن جگت منیں
شرموں لیا نقاب زریں مکھ پر آفتاب
آیا ہے نقل لینے ترے مکھ کتاب کی
تار خطوط سیتی بنا مسطر آفتاب
گرمی سوں بے قرار ہو نکلیا سِنے کوں کھول
تجھ عشق کا پیا ہے مگر ساغر آفتاب
ہندو سُرج کوں دور سوں نت پوجتے ولے
ہندوے زلف کے ہے بغل بھیتر آفتاب
جن نے ترے جمال پہ کیتا ہے یک نظر
دیکھا نئیں وو پھر کے نظر بھر کر آفتاب
پوجا کوں تجھ درس کی ہو جوگی فلک اُپر
نکلیا ہے پہن جامۂ خاکستر آفتاب
تجھ مکھ کے آفتاب اُپر گر کرے نگاہ
پنہاں ہو ہر نظر ستی جیوں اختر آفتاب
جگ میں ولیؔ سو کس کوں برابر کہے ترے
ذرّے سوں ہے نزیک ترے کمتر آفتاب
85
ترے مکھ پر اے نازنیں یو نقاب
جھلکتا ہے جیوں مطلعِ آفتاب
ادا فہم کے دل کی تسخیر کوں
ترا قد ہے جیوں مصرعِ انتخاب
بجا ہے ترے حسن کی تاب سوں
تری زلف کھاتی ہے گر پیچ و تاب
نظر کر کے تجھ مکھ کی صافی اُپر
ہوئی شرم سوں آرسی غرقِ آب
ترے عکس پڑنے سوں اے گل بدن
عجب نئیں اگر آپ ہووے گلاب
ترے وصل میں اس قدر ہے نشاط
کہ مخمل کوں آئے سوں راحت خراب
کریں بخت میرے اگر ٹک مدد
ولیؔ اُس سجن سوں ملوں بے حجاب
86
جب سوں وو نازنیں کی میں دیکھا ہوں چھب عجب
دل میں مرے خیال ہیں تب سوں عجب عجب
جاتا ہے دن تمام اسی مکھ کی یاد میں
ہوتا ہے فکر زلف میں احوال شب عجب
قطعہ
بے تاب ہو کے مثل گدایاں نزیک جا
بے باک ہوکے تب یو کیا میں طلب عجب
دو نین سوں ترے ہے دو بادام کا سوال
سن یو سوال دل میں رہا پستہ لب عجب
بولیا مری نگاہ کی قیمت ہے دو جہاں
جس دیکھنے سوں دل میں ترے ہے طرب عجب
اس دولتِ عظیم کوں یوں مفت مانگنا
لگتی ہے بات مجکو تری بے ادب عجب
کیتا میں اس سوال میں دوجا بھی اک سوال
کر بہرہ مند لب سوں کہ تیرے ہیں لب عجب
یک بار اس سوال میں سن یہ دوجا سوال
دل میں رہا اپس کے وو شیریں لقب عجب
اوّل تو شوخ آکے غضب میں غصہ کیا
سر تا قدم وو ناز اُٹھا یو غضب عجب
جیو میں اپس کی ہمت عالی پہ کر نظر
شیریں لباں سوں اپنے چکھایا رطب عجب
اس شعر کی یہ طرح نکالا ہے جب ولیؔ
یو اختراع سن کے رہے دل میں سب عجب
87
ملیا وو گل بدن جس کوں اُسے گلشن سوں کیا مطلب
جو پایا وصل یوسف اُس کوں پیراہن سوں کیا مطلب
مجھے اسباب خود بینی سوں دائم عکس ہے دل میں
کیا جو ترک زینت کوں اسے درپن سوں کیا مطلب
سخن، صاحب سخن کے سن کے ملنے کی ہوس مت کر
جواہر جب ہوئے حاصل تو پھر معدن سوں کیا مطلب
عزیزاں باغ میں جانا نپٹ دشوار ہے مجھ کوں
گلی گل رو کی پایا ہوں مجھے گلشن سوں کیا مطلب
ولیؔ جنت منیں رہنا نئیں درکار عاشق کوں
جو طالب لا مکاں کا ہے اسے مسکن سوں کیا مطلب
88
ہوا تجھ غم سوں جاری شوق کا طومار ہر جانب
ہوا ہے گرم تیرے عشق کا بازار ہر جانب
تماشا دیکھ اے لیلیٰ کہ تیرے غم کی گردش میں
بگولے کی نمط پھرتا ہے مجنوں خوار ہر جانب
برہ میں دیکھ کر فرہاد پر شیریں کو سنگیں دل
اسی فریاد میں ہے رات دن کہسار ہر جانب
زبان حال سوں مجھ کوں کہا نرگس نے سمجھا کر
کہ اُس انکھیاں کے ہر گلشن میں ہیں بیمار ہر جانب
ہوا ہے مست اس کے جام لب سوں باغ میں لالہ
کہ جس کے مکھ کے جلوے سوں کھُلا گُل زار ہر جانب
تمسک مُہر سوں اس کی رکھا ہوں مِہر سوں دل میں
کہ جس کے خال و خط کی جگ میں ہے گفتار ہر جانب
تفحص کر کے دیکھا میں ہر اک کے مدرسے میں جا
اسی کے حسن کے مطلب کا ہے تکرار ہر جانب
ہر اک لبریز ہے خم تجھ محبت کے اثر سیتی
ہر اک ساغر تری نیناں سوں ہے سرشار ہر جانب
ولیؔ تجھ طبع کے گلشن میں جو کُئی سیر کرتے ہیں
وہ تحفہ کر لے جاتے ہیں گل اشعار ہر جانب

ردیف ’ت‘
89
مدّت کے بعد آج کیا جوں ادا سوں بات
کھلنے سوں اس لباں کے ہوا حلِّ مشکلات
دیکھے سوں آج مجھ پہ شباں روز نیک ہے
وو زلف و مکھ کہ جس سوں عبارت ہے دیس و رات
میٹھی تری یو بات اہے نت نبات ریز
گویا رکھے ہیں لب میں ترے مایۂ نبات
ظلمات سوں نکل کے جہاں میں عیاں اچھے
گر حکم لیوے لب سوں ترے چشمۂ حیات
تجھ ناز ہور ادا سوں مری یہ ہے عرض عرض
یا عین التفات ہو یا حکم التفات
تب سوں اُٹھا ہے دل سوں مرے غیر کا خیال
تیرا خیال جب سوں ہوا ہے مرے سنگات
اُس وقت مجھ کوں عیش دوعالم ملے ولیؔ
جس وقت بے حجاب کروں پیو سنگات بات
90
سبز چیرے نے ترے اے سبز بخت
زہر قاتل ہو کیا جیو لخت لخت
مجھ دل مجروح کے حق میں سجن
مت ہو جیوں الماس ہرگز سینہ سخت
حسن کے کشور کا توں ہے بادشاہ
ہے تجھے ناز و ادا کا تاج و تخت
مکھ اُپر تیرے ہے ایسا جھل جھلاٹ
جس کے دیکھے ہوش نے باندھیا ہے رخت
کر ولیؔ پر ٹک عنایت کی نظر
سن یو میرا حرف اے فرخندہ بخت
91
سجن ہے بسکہ تیرے حسن عالم گیر کی شہرت
سکندر کوں ہوئی حاصل مثال آرسی حیرت
چلیا دہشت سوں ڈرتا کانپتا مشرق سوں مغرب کوں
فلک اوپر سُرج جب سوں سنا تجھ حسن کی شہرت
نہ ہووے مرگ کی تلخی سوں ہرگز آشنا جگ میں
تری شیریں زبانی کا ملے عاشق کوں گر شربت
تری انکھیاں کی گردش نے کیا ساغر سرگرداں
تری زلفاں کے حلقے نے کیا گرداب کوں چکرت
جگت کے دل ربایاں کا ہوا تجھ میں ظہور آکر
زُلف ہے کشن، رخ بدری و لب مصری سخن امرت
نہ ڈھونڈو شہر میں فرہاد و مجنوں کا ٹھکانا تم
کہ ہے عشاق کا مسکن کبھو صحرا کبھو پربت
ولیؔ کوں اے سجن گاہے عطا کر بھیک درسن کی
دیا ہے لطف سوں تجھ کوں خدا نے حسن کی دولت
92
سینے میں ہے تجھ ابروے پیوست کی نشست
جیوں تیر دل میں ہے نگہ مست کی نشست
تجھ زلف کج کا دل منیں بیٹھا ہے یوں خیال
ماہی کے جیوں گلے منیں ہے شِست کی نشست
تیرے دو نین دل میں مرے فتنہ خیز ہیں
مشکل ہے ایک ٹھار دو بدمست کی نشست
تیری نگہ کے باز سوں ہے مرغ دل کا حال
جیوں تن پہ ناتواں کے زبردست کی نشست
تا سرخ رنگ کوں زرد کرے اس سبب یو غم
دل میں ولیؔ کے مس میں ہے جیوں جست کی نشست
93
زباں حال سوں کہتا ہے یوں شمشاد ہر ساعت
پڑیں گے قید میں اس قد کوں دیکھ آزاد ہر ساعت
بچے گا کب تلک اے طائر دل زور وحشت سوں
نگہ کا دام لے آتا ہے وو صیّاد ہر ساعت
ہوا ہے جب ستی پروانہ دل اے شمع رو تیرا
نگہ تجھ چشم کَن جاتی ہے بہر صاد ہر ساعت
اپس کی چشم مے گوں سوں دکھا کر گردش ساغر
صنم کرتا ہے میرے ہوش کوں برباد ہر ساعت
ترا خط خوف میں ہے ہاتھ سوں مقراض کے دائم
کہ جیوں رکھتا ہے کودک دہشتِ استاد ہر ساعت
نہیں یک عاشق و معشوق اس کے درد سوں خالی
گل و بلبل سوں سنتا ہوں یہی فریاد ہر ساعت
ولیؔ مجھ دل میں بستا ہے خیال اُس سرو قامت کا
کہ جس کے شوق سوں جنبش میں ہے شمشاد ہر ساعت
94
لب ترے پر کہ روح کا ہے قوت
کاتب ناز نے لکھا ہے سکوت
نشہ بخشی میں مے سوں بہتر ہے
تجھ لباں کی مفرحِ یاقوت
اس کے دیکھے سوں کیوں رہے طاقت
جس کی باتاں سوں دل ہوا مبہوت
جو مُوا داغ عشق سوں اُس کوں
تختۂ لالہ سوں کرو تابوت
اے ولیؔ سبزۂ لب دلبر
خوش نمائی میں ہے خط یاقوت
95
کیا اس بات نے مجھ دل کو مبہوت
کہ کیوں آتا نئیں وو روح کا قوت
بجا ہے گر شہید سرو قد کوں
بناویں چوب سوں طوبیٰ کی تابوت
روایت خضر سوں پہنچی ہے مجھ کوں
کہ اُس کا خط ہے موج آب یاقوت
دسے پلکاں سوں تجھ انکھیاں کی یو دھج
کہ جیوں برچھی پکڑ نکلے ہیں رجپوت
ولیؔ اس خوش بچن کی بات سر کر
کہ اُس کی بات ہے عشاق کا قوت
96
گمراہ ہیں تجھ زلف میں کئی اہل ہدایت
یہ باٹ ہے ظلمات کی نئیں جس کوں نہایت
غمزے نے کیا ظلم مرے دل پہ سو تس پر
کرتے ہیں ترے نین دو ظالم کی حمایت
عشاق کا ہے خون روا عشق کی رہ میں
تجھ نین کے مفتی سوں سُنیا ہوں یہ روایت
یو مکھ ہے ترا موردِ انوار الہٰی
نازل ہے ترے حسن پہ سب حق کی عنایت
ہر درد پہ کر صبر ولیؔ عشق کی رہ میں
عاشق کو نہ لازم ہے کرے دکھ کی شکایت
97
خوباں کی ہر ادا سوں ہے نازک اداے بیت
معنی ستی بنا ہے نقابِ حیاے بیت
مت شعر پر تو چشم حقارت سوں کر نظر
مانند ابرو واں کے انکھیاں پر ہے جاے بیت
معنی کی صورت اس منیں ہوتی ہے جلوہ گر
روشن ہے آرسی سوں رخِ باصفاے بیت
وو مصرعِ بلند ہے معنی میں مہرباں
لیاتا ہے چیں بھواں منیں ظاہر براے بیت
اس کے سوادِ زلف سوں عالم میں اے ولیؔ
کعبہ نمن سیہ ہے سراپا رداے بیت

ردیف ’ث‘
98
ملتا نئیں ہے مجھ سوں وو دل دار الغیاث
اس بے وفا کے جور سوں صد بار الغیاث
مجھ دل کا دیکھ حال پریشاں ہو آپ سوں
کرتے ہیں تیری زلف کے ہر تار الغیاث
نئیں دیکھتا ہے باغ میں نرگس کوں اے صنم
تیری انکھیاں کا آج طلب گار الغیاث
تیری نَین کوں دیکھ کے گلشن میں گل بدن
نرگس ہوا ہے شوق سوں بیمار الغیاث
بازار میں جہاں کے نہیں کوئی اے ولیؔ
تیرے سخن کا آج خریدار الغیاث
99
شوخ میرا بے میا ہے الغیاث
صاحب جور و جفا ہے الغیاث
وو صنوبر قامتِ گل زار حُسن
محشر ناز و ادا ہے الغیاث
اس کماں ابرو کا ہر تیر نگہ
جیوں خدنگِ بے خطا ہے الغیاث
پائمال قاتل رنگیں ادا
خون عاشق جیوں حنا ہے الغیاث
ہوں پیا کے شربت لب بِن مریض
جس میں گل قند شفا ہے الغیاث
جن نے دیوانہ کیا ہے خلق کوں
وو پری رو کیا بلا ہے الغیاث
بلبل باغ وفا ہوں میں ولیؔ
گل سراپا بے وفا ہے الغیاث
100
کدھی میری طرف لالن تم آتے نئیں سو کیا باعث
چھبیلا مکھ اپس کا ٹک دکھاتے نئیں سو کیا باعث
جدائی کے پھنسا ہوں دام میں بولو مرے شہ کوں
کہ مجھ اس دکھ کے پھاندے سوں چھڑاتے نئیں سو کیا باعث
کیا سب زندگانی کوں فدا تیری محبت میں
اجھوں لگ بات اپس دل کی سناتے نئیں سو کیا باعث
ہوا ہے دل مرا مخمور تیرے غم سوں اے ساجن
اپس کے نین سوں پیالا پلاتے نئیں سو کیا باعث
ولیؔ اس بات کا افسوس ہے مجھ دل منیں دائم
کہ میری بات کوں خاطر میں لاتے نئیں سو کیا باعث

ردیف ’ج‘
101
ہے جلوہ گر صنم میں بہارِ عتاب آج
لینا ہے اس کے ناز و ادا کا حساب آج
عالم کا ہوش کیوں کے رہے گا عجب ہوں میں
چکتا ہے اس کی نین سوں رنگ شراب آج
کیا ناز و کیا غرور ہے اُس نو بہار میں
دیتا نئیں سلام کا میرے جواب آج
کیوں مو نمن ضعیف نہ ہوں غم سوں اے صنم
تیری کمر نے مجھ کوں دیا پیچ و تاب آج
تیرے انگے لباں کے کہ ہیں چشمۂ حیات
لگتا ہے آب خضر مثال سراب آج
اُس کی نگاہ مست سوں معلوم یوں ہوا
یکسر کرے گی خانۂ عاشق خراب آج
اعجاز حسن دیکھ کہ وو روے با عرق
پیدا کیا ہے چشمۂ آتش سوں آب آج
کیا بے خبر ہوا ہے معلّم صنم کوں دیکھ
مکتب میں اُس کے بھول گیا ہے کتاب آج
معلوم نئیں کہ ہاتھ میں شمشیر لے صنم
آتا ہے کس کے قتل کوں ایتا شتاب آج
کیا آرزوے وصل کروں اس سوں اے ولیؔ
دیتا نئیں ہے ناز سوں سیدھا جواب آج
102
ہے حسن کے نگر میں سجن تجھ کوں راج آج
خوش دلبری کا تجھ کوں ملا تخت و تاج آج
اس ناز ہور ادا کے تجمل کوں دیکھ کر
سب دل براں نے آکے دیا تجھ کوں باج آج
پروانہ ہو کے کیوں نہ گرے چاند چرخ سوں
فانوس دل میں شوق ترا ہے سراج آج
تجھ زلف کی زنجیر پہ رکھ دانت فیل مست
کس بھید سوں کنگھی کوں دیا آکے عاج آج
مقصود دوجہاں منیں میرا سو تونچہ ہے
جگ میں نئیں کسی سوں ترے باج کاج آج
لب میں ترے مفرح یاقوت ہے سجن
بیمار دل مرے کوں وہی ہے علاج آج
وو شوخ مجھ کوں آکے ملا اس سبب ولیؔ
شادی میں اس کی صرف کیا ہوں میں لاج آج
103
جولاں گری میں گرم ہے وو شہسوار آج
سینے سوں عاشقاں کے اُٹھے ہے غبار آج
تجھ اسپ برق تاز کی جولاں کوں دیکھ دل
مانند بیجلی کے ہوا بے قرار آج
بے شک کرے گا خاطرِ عشاق باغ باغ
آیا ہے التفات پہ وو نو بہار آج
گل زار تجھ جمال کا گلشن میں دیکھ کر
قرباں ہیں عندلیب ہزاراں ہزار آج
سینے کے رکھ طبق میں دل چاک چاک کوں
لایا ہوں میں نیاز بجاے انار آج
اے آتشیں بہار ترے مکھ کی آب دیکھ
پیدا کیا ہوا کوں دل خاک سار آج
ہیں بے شمار دل میں مرے خار خار شوق
چیرے کوں دیکھ سر پہ ترے نوک دار آج
گردش ترے نین کی کہ جوں دور جام ہے
دیکھے سوں اس کے دل کا گیا ہے خمار آج
تیرے نین نے یک نگہِ التفات سوں
عالم کے وحشیاں کو کیا ہے شکار آج
اطراف آسماں کے ہجوم شفق نہیں
تجھ رنگ نے ہوا کوں کیا لالہ زار آج
برجا ہے آسماں سوں تواضع طلب کرے
پایا ہے تجھ کرم سوں ولیؔ اعتبار آج
104
دیکھے سوں تجھ لباں کے اُپر رنگِ پان آج
چونا ہوئے ہیں لالہ رخاں کے پَران آج
نکلا ہے بے حجاب ہو بازار کی طرف
ہر بوالہوس کی گرم ہوئی ہے دُکان آج
تیرے نین کی تیغ سوں ظاہر ہے رنگ خوں
کس کوں کیا ہے قتل اے بانکے پٹھان آج
آخر کوں رفتہ رفتہ دل خاک سار نے
تیری گلی میں جاکے کیا ہے مکان آج
اعجاز عشق دیکھ کر مجھ ناتواں اُپر
اس سنگ دل کے دل کوں کیا مہربان آج
کل خط زبان حال سوں آکر کرے گا عذر
عاشق سوں کیا ہوا جو کیا تونے مان آج
البتہ گل پیادہ ہو دوڑیں رکاب میں
اس نو بہار حسن کی دیکھیں جو شان آج
تیری بھواں کوں دیکھ کے کہتے ہیں عاشقاں
ہے شاہ جس کے نام چڑھی یو کمان آج
گنگا رواں کیا ہوں اپس کے نین ستی
آ اے صنم شتاب ہے روزِ نہان آج
اے عقل مو شگاف تامل سوں کر نظر
آتا ہے کس ادا سوں وو نازک میان آج
کیوں دائرے سوں زہرہ جبیں کے نکل سکوں
یک تان میں لیا ہے مرے دل کو تان آج
میرے سخن کوں گلشن معنی کا بوجھ گُل
عاشق ہوئے، ہیں بلبل رنگیں بیان آج
جو دھا جگت کے کیوں نہ ڈریں تجھ سوں اے صنم
ترکش میں تجھ نین کے ہیں ارجن کے بان آج
جاناں کوں بسکہ خوف رقیباں ہے دل منیں
ہوتا ہے جان بوجھ ہمن سوں آجانا آج
تجّارِ حسن پاس ہیں وو لعلِ بے بہا
اس جنس آب دار کا لینا ہے دان آج
شعلے کوں دل کے سہج ہے جانا فلک اُپر
برپا کیا ہوں آہ سوں میں نردبان آج
کیوں کر رکھوں میں دل کوں ولیؔ اپنے کھینچ کر
نئیں دست اختیار میں میرے عنان آج

ردیف’ ح‘
105
دستا ہے تجھ جبیں سوں سراسر ظہور صبح
تجھ دیکھنے کوں جگ میں ہوا ہے عبور صبح
بے تاب آفتاب ہے تب سوں جہاں منیں
دیکھا ہے تجھ کوں جب ستی اے رشک نور صبح
تجھ مکھ کی آرسی میں ہے نور خدا عیاں
روشن ہے تجھ جمال ستی کوہ طور صبح
ظاہر ہیں تجھ بہار میں اسباب عیش کے
ہے جلوہ گر یوں تجھ ستی دار السرور صبح
تجھ مکھ کا نور جب سوں تماشا کیا ولیؔ
کڑوا لگا ہے تب سوں جگت میں مرور صبح
106
برنگ صافی دل کیوں ہو صفاے قدح
کہ دست آئینہ رو ہے مدام جائے قدح
زہے طرب کہ ہوا بزم عیش میں دم ساز
صنم کے لعل سوں یاقوت بے بہاے قدح
کیا ہے ساقی عشرت بہار الفت سوں
حناے پنجۂ رنگیں نگار پاے قدح
اگر اشارت ابرو کرے وو ماہ تمام
ہلال بزم میں ہو چرخ زن بجاے قدح
خمار حشر سوں کیا غم ہے مے پرستاں کوں

لکھے جو قبر کے تعویذ پر دعاے قدح
سدا ہے اس خم نیلی سوں جوش زن یہ بات
کہ نقد ہوش فلاطوں ہے رونماے قدح
ہوا ہے قلقل مینا سوں مجھ اُپر ظاہر
کہ مئے پرست کے سینے میں ہے ثناے قدح
ہوا ہے صبح کے مانند آفتاب ضمیر
عیاں ہے جس کے اُپر جلوۂ ضیاے قدح
ولیؔ کے دل ستی اے شوخ احتراز نہ کر
ہمیشہ انجمن گل رخاں ہے جاے قدح

ردیف ’خ‘
107
سجن اَول کے زمانے میں یوں نہ تھا گستاخ
اسی دنوں میں ہوا ہے یو کیا بلا گستاخ
چمن میں مکھ کے ترے مثل تاک ہے سرکش
اپس کے مکھ پہ نہ کر زلف کوں اِتا گستاخ
ترے یو لب پہ خط سبز کیا ہے بوجھ اسے
شکر اُپر ہے یو طوطئی خوش ادا گستاخ
یو رنگ زرد اُڑا مجھ ضعیف کوں لے کر
ہوا ہے کاہ لے جانے یو کہر با گستاخ
ولیؔ کے دل میں ہے شوخی سو تجھ ہوا کی اِتی
تری زُلَف پہ ہوئی جس قدر ہوا گستاخ
108
مژہ بتاں کی ہیں تجھ غم میں خواب مخملِ سرخ
لگی ہے ترک کے پٹکے کوں یا مسلسلِ سرخ
سجن کی دیکھ کے میں چشم سرخ خواب آلود
اپس انکھیاں کوں کیا خواب گاہ مخمل سرخ
کتاب عشق پہ شنگرف اشک خونیں سوں
پلک کی کر کے قلم کھینچتا ہوں جدولِ سرخ
کیا ہے دفع مرے درد سر کوں رونے نے
ہوا ہے حق میں مرے خون دیدہ صندلِ سرخ
شفق نہ بوجھ کہ مجھ آہِ آتشیں نے ولیؔ
فلک کوں جا کے کیا ہے برنگ مِن قلِ سرخ

ردیف’ د‘
109
ہمیشہ ہے بہار سرو آزاد
نہ جاوے دولت حسن خدا داد
ترے رخ سوں کہ دائم بے خزاں ہے
ہوا ہے زیب ور گُل زار ایجاد
ہوا مانند مجنوں مو پریشاں
ترا قد دیکھ کر گلشن میں شمشاد
کیا ہوں سہو راہ کوچۂ غم
ہوا ہوں بسکہ تیرے لطف سوں شاد
خلاصی کیوں کہ پاوے بلبل دل
نگاہ مہرباں ہے دام صیّاد
وفا کوں ترک مت کر ہرگز اے دل
محبت ہے وفا بِن سست بنیاد
تجھ گل بدن پہ جگ کے ہوئے گل عذار بند
ولیؔ جس دل میں ہے زلف پری زاد
110
تجھ گل بدن پہ جگ کے ہوئے گل عذار بند
گلشن میں تجھ بہار کے ہے نو بہار بند
گل زار میں لٹک کے چلے گر تو یک قدم
مانند آبِ آئنہ ہو جوئبار بند
مالی نے تجھ جمال کے گلشن کوں دیکھ کر
بیچا لجا کے شہر میں پھولاں کے ہار بند
تیری نین پہ دیکھ میں آہو کوں مبتلا
بوجھا کہ تجھ نکھ میں ہے وحشت شعار بند
ہے تجھ شکار بند کی ہر یک کوں آرزو
خوش وو شکار جن کو ملے یو شکار بند
تجھ قد کوں دیکھ سرو ہے گلشن میں پا بہ گِل
آزاد یاں ہوا ہے سو بے اختیار بند
امید مجھ کوں یوں ہے ولیؔ کیا عجب اگر
اس ریختے کو سن کے ہو معنی نگار بند
111
جب سوں ہوا ترا یو قدِ دل رُبا بلند
سنتا ہوں ہر طرف سوں صداے بلا بلند
مت پست فطرتاں سوں مل اے سرو نازنیں
تجھ قد کا نام جگ میں ہے نام خدا بلند
بیمار گر نئیں یہ تری چشم غمزہ زن
کیوں ہاتھ میں لیے ہیں نگہ کا عصا بلند
تجھ ابرواں کوں دیکھ کے کیتا ہے اے صنم
تجھ حق منیں ہلال نے دست دعا بلند
گلزار زندگی میں بجز وصل سرو قد
عشاق کوں نئیں ہے دوجا مدعا بلند
یو آفتاب نئیں کہ عیاں ہے فلک اُپر
حق نے کیا جہاں میں ترا نقش پا بلند
میں عاشقاں کی فوج کا سردار ہوں ولیؔ
مجھ آہ کا ہوا ہے علم تا سما بلند
112
ہوا ہے گرم توں جب آفتاب کے مانند
کیا ہے ہوش نے پرواز آب کے مانند
زمیں پہ کیوں نہ گریں اہل بزم جرعہ نمن
تری نگہ میں ہے مستی شراب کے مانند
نگاہ گرم کرے گر فلک کے گلشن میں
گُلِ ستارہ گریں گل گلاب کے مانند
سجن کے غم سوں نکلتا ہے نالۂ بے تاب
ہر ایک رگ ستی تار رباب کے مانند
بہ رنگ برق اگر جلوہ گر ہووے گل رو
غبار سینہ ہو پانی سحاب کے مانند
توقع قدم شہسوار دل میں رکھ
ہوا ہوں خالی اپس سوں رکاب کے مانند
لکھا ہوں بسکہ پری رہ کی زلف کی تعریف
سیاہ نامہ ہوا ہوں کتاب کے مانند
ترے فراق میں ہر آہ اے کماں ابرو
گئی ہے چرخ پہ تیر شہاب کے مانند
ترے خیال میں اے بحر حسنِ دیدۂ تر
ہوئے ہیں آب سراپا حباب کے مانند
کیا ہے طرز تغافل نے شوخ کے جگ میں
ہر ایک چشم کوں تسخیر خواب کے مانند
نہ کر سوال مرے درد کی حکایت کا
کہ مجھ زبان پہ ہے حاضر جواب کے مانند
نہ بھول گرم نگاہی پہ شوخ چشماں کی
محبت ان کی ہے دھوکا سراب کے مانند
گر آبرو کی ہے خواہش کسی کی نعمت پر
نہ کھول حرص کے دیدے کو قاب کے مانند
نہ ہو تو فکرسوں دنیا کی مو نمن باریک
سیاہ دل کو کرے گی خضاب کے مانند
نگاہ گرم سوں اس شعلہ قد نے مجلس میں
کیا برشتہ ولیؔ کوں کباب کے مانند
113
تیری نین کی سختی ہے دلبری کے مانند
تیری نگاہ موزوں ہے عبہری کے مانند
ظاہر نئیں کسی پر تجھ لعل کی حقیقت
واقفیت ہوا ہوں اُس سوں میں جوہری کے مانند
ہرچند رنگ زردی حاصل ہے عاشقوں کوں
لیکن شگفتہ رو ہیں گل جعفری کے مانند
طاقت نئیں کسی کوں تا اس صنم کوں دیکھے
عالم کی ہے نظر سوں پنہاں پری کے مانند
یہ ریختہ ولیؔ کا جاکر اُسے سناؤ
رکھتا ہے فکر روشن جو انوریؔ کے مانند
114
چنچل کوں جا کے بولو آ بیجلی کے مانند
اس وقت انکھیاں برستی ہیں بادلی کے مانند
سوزن سوں تجھ پلک کی اے نور جان و دیدہ
ہر استخواں میں روزن ہے بانسلی کے مانند
عالم میں جس کے سر پر گل دستۂ ادب ہے
وو کیوں کہے چمن کو تیری گلی کے مانند
گر آرزو ہے تجھ کوں مقصد کے گل کے کھلنا
ٹک بند کر زباں کوں مکھ میں کلی کے مانند
مشتاق تجھ درس کا اے شمع بزم خوبی
دیکھا نئیں ہے دوجا ہرگز ولیؔ کے مانند
115
سخن شناس کے نزدیک نئیں ہے کم ز یزید
کسی کے مطلب رنگیں کوں جو کیا ہے شہید
یہ زلف و خال سیہ نے دیا ہے جگ کوں فریب
دغا کے دینے میں یک رنگ ہیں یہ پیر و مرید
کھلا ہے عقدۂ دل تجھ پلک کی سوزن سوں
ترے نَین کا اشارہ ہے قفل دل کی کلید
ہوا ہے مشتری اُس رشک مشتری کا دل
کیا جو اہل خرد کے ہزار دل کوں خرید
ہوا ہے حق کی توجہ سوں اے ہلال ابرو
ترا جمال منور ولیؔ کے دل کی عید

ردیف’ ذ‘
116
اے شکر لب قند سوں تجھ لب کی ہیں باتاں لذیذ
حرف تر اس کے ہیں جیسے حلوۂ سوہاں لذیذ
دل کوں فرحت بخش ہے دائم ترے غم کا ہجوم
صاحب ہمت کوں نت ہے کثرت مہماں لذیذ
مت ہر اک نا اہل کے ملنے سوں راضی ہو صنم
ہے نصیحت تلخ ظاہر لیک ہے پنہاں لذیذ
لذت معنی نہیں کچھ لذت صورت سوں کم
حرف با معنی ہے جیسے بوسۂ خوباں لذیذ
اے ولیؔ معنی نہیں کچھ لذت صورت سوں کم
جیوں ہے دنیا دار کوں فکرِ سرو ساماں لذیذ

ردیف’ ر‘
117
گر چمن میں چلے وو رشک بہار
گل کریں نقد آب و رنگ نثار
بلبلاں ہر طرف سوں اُٹھ دوڑیں
دیکھنے کوں اُسے ہزار ہزار
یاد تجھ خط سبز کی اے شوخ
زخم دل پر ہے مرہم زنگار
حق نے تیری انکھیاں کوں بخشا ہے
مئے وحشت سوں ساغر سرشار
جن نے دیکھا ہے اس پری رو کوں
صورت ہوش سوں ہوا بیزار
تجھ درس کے خیال میں دائم
مثل نیساں ہے چشم گوہر بار
تجھ لب آگے اے مشتری طلعت
آب حیواں کا سرد ہے بازار
بسکہ پایا ہے تجھ جفا سوں شکست
خانۂ دل ہوا ہے آئینہ زار
اے ولیؔ اس سوں حرف ہوش نہ پوچھ
جو ہوا مستِ جلوۂ دیدار
118
مجھ کوں پہنچی اس شکر لب کی خبر
حق شکر خورے کوں دیتا ہے شکر
بوعلی سینا اگر دیکھے اسے
قاعدے حکمت کے سب جائے بِسر
سات پردوں میں رکھوں اس کوں چھپا
آوے گر انکھیاں میں وو نور نظر
مجھ کوں سب عالم کہے باریک بیں
گر لگے ٹک ہاتھ وو نازک کمر
اس لباں کا اے ولیؔ طالب ہے دل
جس کے غم سوں لعل ہے خونیں جگر
119
آیا توں کمر باندھ کے جب جور و جفا پر
میں جی کوں تصدق کیا تجھ بانکی ادا پر
مجھ دیدۂ خوں بار میں یک بار قدم رکھ
اے شوخ ترا جیو ہے گر رنگ حنا پر
انکھیا ہیں یہ خوبان جہاں کی کہ لگی ہیں
بوٹے نئیں نرگس کے صنم تیری قبا پر
تشبیہ جو تجھ خط کوں دیا مشک ختن سوں
عالم کوں وو آگاہ کیا اپنی خطا پر
دشوار ہے حیرت سوں ولیؔ اس کوں نکلنا
باندھا ہے جو دل اُس رخ آئینہ نما پر
120
کیتا ہے نظر جب ستی اس رشک پری پر
باندھیا ہے جو کُئی جیوں کوں اُس چھند بھری پر
دیکھے سوں ترے داغ کے جلوے کوں جگر پر
کیا خوب اُٹھا نقش عقیق جگری پر
چنچل نے نظر ناز سے آہو پہ کیا نئیں
قرباں ہوا اس چشم کی والا نظری پر
ہموار کیا آپ اُپر ترک وفا کوں
باندھیا ہے کمر ناز سوں اب حیلہ گری پر
بوجھا ہے ولیؔ تب ستی موہن نے سُرج کوں
کیتا ہے نظر جب ستی دستار زری پر
121
سجن تجھ گل بدن کا آج نئیں ثانی چمن بھیتر
غلط بولا چمن کیا بلکہ جنّات عدن بھیتر
ترے گلزار رنگیں کا جو کُئی مقتول ہے اے گل
وو اپنے خوں میں جیوں گل غرق ہے خونیں کفن بھیتر
پڑی ہے دل میں پروانے کے تیرے عشق کی آتش
ہوئی ہے شمع تیرے مکھ سوں روشن انجمن بھیتر
تو وو گل پیرہن ہے مصر میں خوبی کے اے موہن
کہ لاکھاں دل کے یوسف ہیں ترے چاہ ذقن بھیتر
چمن میں اس سبب جاتا ہوں اے رشک ہزاراں گل
کہ تیری باس کی پاتا ہوں ٹک بو یا سمن بھیتر
سراپا زندگانی کوں جلاتی ہے ترے شوقوں
عجب تجھ عشق کی گرمی ہے شمع شعلہ زن بھیتر
یہ مکھ کی شمع سوں روشن ہے ہفت اقلیم کی مجلس
ولیؔ پروانگی کرتا تری ملکِ دکن بھیتر
122
اب جدائی نہ کر خدا سوں ڈر
بے وفائی نہ کر خدا سوں ڈر
راست کیشاں سوں اے کماں ابرو
کج ادائی نہ کر خدا سوں ڈر
مت تغافل کوں راہ دے اے شوخ
جگ ہنسائی نہ کر خدا سوں ڈر
ہے جدائی میں زندگی مشکل
آ جُدائی نہ کر خدا سوں ڈر
آرسی دیکھ کر نہ ہو مغرور
خود نمائی نہ کر خدا سوں ڈر
اُس سوں جو آشنائے درد نہیں
آشنائی نہ کر خدا سوں ڈر
رنگ عاشق غضب سوں اے ظالم
کہربائی نہ کر خدا سوں ڈر
اے ولیؔ غیر آستانۂ یار
جبہہ سائی نہ کر خدا سوں ڈر
123
سنایا جب خبر شادی کی قاصد صبح دم آکر
منگا رخصت مرے نزدیک باہر دل سوں غم آکر
ترے ملنے سوں تا روشن کرے دل کی مجالس کوں
ہوئی ہے شعلہ زن سینے میں خواہش دم بدم آکر
بجز تجھ جام لب کے اے پری پیکر نہ پیوں ہرگز
اگر دیوے اپس کے ہاتھ سوں مجھ جام جم آکر
نظارہ جو کیا میں تجھ مبارک حسن کا موہن
کھبا مجھ دل میں تیری زلف خم در خم کا خم آکر
ولیؔ تجھ حسن کی تعریف میں جب ریختہ بولے
سنے تب اُس کوں جان و دل سوں حسّانِ عجم آکر
124
اگر گلزار میں بیٹھے وو سرو نازنیں آکر
کرے نظاّرگی اس کی سو فردوس بریں آکر
اگر ہووے صنم خانے پہ اس بت کا گزر بیشک
تصدق اس پہ ہوویں سب نگارستاں چیں آکر
عجب اُس شوخ چنچل کی انکھاں ہیں شوخ اور چنچل
ہوے قرباں جس اوپر آہوے صحرا نشیں آکر
کرے شیرازہ بندی دل کی جو اس مکھ کے دیکھے سوں
پریشاں ہو اگر دیکھے وو زلف عنبریں آکر
عجب نئیں جال میں اس کے اگر اٹکا ولیؔ کا دل
کہ اس کے دام میں لاکھاں پھنسے ہیں اہل دیں آکر
125
پڑا ہوں کوہِ غم میں اس دل ناشاد سوں جاکر
دعا بولو مری جانب سوں کُئی فرہاد سوں جاکر
برہ کے ہاتھ سوں گرداب غم میں جا پڑا ہے دل
کہو میری حقیقت چرخ بے بنیاد سوں جاکر
گرفتاراں کی غم خواری اِتا لازم ہوئی تجھ پر
حقیقت مرغ دل کی یوں کہو صیّاد سوں جاکر
کیا ہے خون نے سودا کے غلبہ تن منیں میرے
نگہ کے نیشتروں کوں لا کہو فصّاد سوں جاکر
ولیؔ اُس قد کا طالب ہے مبارک باد آ بولو
کہو سمجھا کے گلشن میں ہر اک شمشاد سوں جاکر
126
عاجزاں کے اُپر ستم مت کر
اس قدر سختی اے صنم مت کر
اس ترقی کے وقت میں اے شوخ
مہربانی اپس کی کم مت کر
رحم بے جا ستم برابر ہے
یوں رقیباں اُپر کرم مت کر
اِس نصیحت کوں گوش جاں سوں سُن
دل کوں میرے مکانِ غم مت کر
رام تجھ امر کا ہوا ہے ولیؔ
گر ہے انصاف اس سوں رم مت کر
127
چمن میں جب چلے اُس حسن عالم تاب سوں اُٹھ کر
کرے تعظیم خوش بو ہر گل سیراب سوں اُٹھ کر
کرے گر آرسی گھر میں لجا تجھ مکھ کی مہمانی
دُھلاوے ہات کوں تیرے اپس کی آب سوں اُٹھ کر
ترے ابرو کی گر پہنچے خبر مسجد میں زاہد کوں
تماشا دیکھنے آوے ترا محراب سوں اُٹھ کر
ترے پانواں کی نرمی کی اگر شہرت ہو عالم میں
وہیں آوے قدم بوسی کوں مخمل خواب سوں اُٹھ کر
ولیؔ تجھ زلف کی کر سحر سازی کا بیاں بولے
چلے پاتال سوں باسُک سو پیچ و تاب سوں اُٹھ کر
128
میں تجھے آیا ہوں ایماں بوجھ کر
باعث جمعیتِ جاں بوجھ کر
بلبل شیراز کوں کرتا ہوں یاد
حسن کوں تیرے گلستاں بوجھ کر
دل چلا ہے عشق کا ہو جوہری
لب ترے لعل بدخشاں بوجھ کر
ہر نگہ کرتی ہے نظاّرے کی مشق
خط کوں تیرے خطِّ ریحاں بوجھ کر
اے سجن آیا ہوں ہو بے اختیار
تجھ کوں اپنا راحتِ جاں بوجھ کر
زلف تیری کیوں نہ کھاوے پیچ و تاب
حال مجھ دل کا پریشاں بوجھ کر
رحم کر اُس پر کہ آیا ہے ولیؔ
درد دل کا تجھ کوں درماں بوجھ کر
129
اے بادِ صبا باغ میں موہن کے گزر کر
مجھ داغ کی اُس لالۂ خونیں کوں خبر کر
کیا درد کسی کوں کہ کہے درد مرا جا
اے آہ مرے درد کی توں جا کے خبر کر
سب طرز تغافل کوں مرے حق میں روا رکھ
اے شوخ مری آہ سوں البتہ حذر کر
دوجا نہیں تا پی سوں کہے دل کی حقیقت
اے درد تو جا جیو میں اُس پی کے اثر کر
کیا غم ہے اُسے تیر حوادث سوں جہاں میں
بوجھا جو کوئی گردش ساغر کوں سپر کر
کئی بار لکھا اس کی طرف نامے کوں لیکن
ہر بار سٹا اشک نے مجھ نامے کو تر کر
ہر وقت نہ سٹ کحل تغافل کوں انکھاں میں
ٹک مہر سوں اس طرف اےبے مہر نظر کر
اس صاحب دانش سوں ولیؔ ہے یہ تعجب
یک بارگی کیوں مجھ کوں گیا دل سے بسر کر
130
ہشیار زمانے کے ترے مکھ پہ نظر کر
تجھ نیہہ کے کوچے میں گئے ہوشِ بسر کر
عالم میں ہے وو تیر ملامت کا نشانہ
جس دل میں ترے غم کا گیا تیر گزر کر
تجھ حسن کی جھلکار سوں کیا بدر کو نسبت
جو کئی کہ تجھے بدر کہے اس کوں بدر کر
اس ظالم خوں خوار کوں جی پیش کیا ہوں
جس عشق نے عالم کوں سَٹا زیر و زبر کر
رونے ستی فارغ ہو ولیؔ پیو کوں دیکھا
کعبے کی زیارت کیا دریا سوں اُتر کر
131
شوخ نکلا جب قدم کوں تیز کر
ناز کے شبدیز کوں مہمیز کر
یک بہ یک آیا ادا سوں مجھ طرف
ہر پلک کوں دشنۂ خوں ریز کر
میں کیا یوں عرض از روے نیاز
مہربانی اس کی دست آویز کر
کہہ اپس کی نرگس بیمار کوں
عاشقاں کے خون سوں پرہیز کر
اے ولیؔ آتا ہے وو مقصود دل
خانۂ دل خوں سوں رنگ آمیز کر
132
اے سرو خراماں توں نہ جا باغ میں چل کر
مت قمری و شمشاد کے سودے میں خلل کر
کر چاک گریباں کوں گُلاں صحن چمن میں
آئے ہیں ترے شوق میں پردے سوں نکل کر
صنعت کے مصور نے صباحت کے صفحے پر
تصویر بنایا ہے تری نور کوں حل کر
اے نور نظر شمع کوں دیکھا ہوں سراپا
تجھ عشق کی آتش ستی کاجل ہوئی جل کر
بے آب لگے آب حیات اس کی نظر میں
پانی ہوا تجھ گال کے چو عشق میں گل کر
تجھ ابروے خم دار سوں ہرگز نہ پھرے دل
کیوں جاوے سپاہی دمِ شمشیر سوں ٹل کر
اے جانِ ولیؔ لطف سوں آ بر میں مرے آج
مجھ عاشق بے کل ستی مت وعدۂ کل کر
133
ہوا ہوں بے خبر تجھ مست انکھیاں کی خبر سن کر
ہوا ہوں ناتواں جیوں مو تری نازک کمر سن کر
نئیں تجھ لعل شیریں پر خط سبز اے گلستاں رو
یہ طوطی ہے کہ آئی ہے ترے لب کی شکر سن کر
سراپا ہو کے سودائی پڑا تجھ غم کے حلقے میں
تری زلفاں کی سنبل نے حکایت سر بسر سن کر
پرت کے پنتھ میں ہرگز قدم پیچھے نہ رکھ اے دل
ہٹاتے ہیں قدم نامرد اس رہ کے خطر سن کر
بگولے کی نمط آتا ہے مجنوں بے سرو بے پا
مرے دیوانۂ دل کوں اپس کا راہبر سن کر
صبا کے ہاتھ سوں جیوں ہے ہراک غنچہ پریشاں دل
یونہی ہر دل پریشاں ہے مری آہ سحر سن کر
ولیؔ تیری گلی کوں سن کے یوں مشتاق ہے نس دن
کہ جیوں عشاق ہوں مشتاق وصف مو کمر سن کر
134
دل مرا ہے وو آتشیں پیکر
راکھ ہوگئے ہیں جس کوں دیکھ شرر
کیا کہوں نبض دل کی بے تابی
قوت جس کا ہے آتشیں نشتر
عشق بازاں میں اس کوں راحت ہے
جس کوں الماس کا ملا بستر
اُن نے پایا ہے منزلِ مقصود
عشق جس کا ہے ہادی و رہبر
ترک لذّت کی جس کوں ہے لذّت
شکّر اس کو زہر ، زہر شکّر
آشنایاں کوں موج آب وفا
ہے محبت کی تیغ کا جوہر
بزم دلبر میں اے ولیؔ جا تو
شوق کا آج ہاتھ لے ساغر
135
جو آیا مست ساقی جام لے کر
گیا یک بارگی آرام لے کر
نگہ تیری سدا آتی ہے جیوں تیر
دل زخمی طرف پیغام لے کر
نہ جانوں خط ترا کس بے خطا پر
چلا ہے آج فوج شام لے کر
اُڑا آ ہوئے دل سوں رنگ وحشت
جو آئی زلف تیری دام لے کر
جو کُئی باندھا ہے تیری زلف میں دل
سٹا ہے کفر میں اسلام لے کر
ترے لب ہور تری انکھیاں کوں ہدیہ
چلا ہوں پستہ و بادام لے کر
بنائی ہے جہاں میں لیلۃ القدر
سیاہی تجھ زُلَف کی وام لے کر
تری ساقی گری کوں لالۂ باغ
کھڑا ہے منتظر ہو جام لے کر
میں اس کوں جیوں نگیں کرتا ہوں سجدہ
جو کُئی آتا ہے تیرا نام لے کر
ولیؔ تیرے لباں سوں اے تنک طبع
چلا ہے لذت دشنام لے کر
136
عجب نئیں جو کرے دل میں شیخ کے تاثیر
اگر مقدمۂ عشق کوں کروں تحریر
جنون عشق ہوا اس قدر زمیں کوں محیط
کہ پارسا کوں ہوئی موج بوریا زنجیر
زبان قال نئیں طفل اشک کوں لیکن
زبان حال سوں کرتے ہیں عشق کی تقریر
صفحے پہ چہرۂ عشاق کے مصور عشق
جگر کے خوں سوں لکھا طفل اشک کی تصویر
گلی سوں نیہہ کی کیوں جاسکوں ولیؔ باہر
ہوئی ہے خاک پری رو کی رہ دامن گیر

ردیف’ ز‘
137
ہوا مجھ چشم سوں بستاں غم سبز
ہوا تجھ جور سوں بخت الم سبز
ہوا قد سرو کے مانند صنم کا
لباس سبز سوں سر تا قدم سبز
کہیں جوہر شناساں حسن تجھ دیکھ
زمرد کا تراشے ہیں صنم سبز
ثنا لکھنے میں تجھ آہو نین کی
ہوا جیوں شاخ نرگس ہر قلم سبز
ولیؔ نے جو لکھا تجھ خط کی تعریف
ہوا جیوں برگ ریحاں ہر رقم سبز
138
لباس اپنا کیا وو گل بدن سبز
ہوا سر تا قدم مثل چمن سبز
عجب چھب سوں کھڑا ہے وو پری رو
سر اوپر چیرا بَر میں پیرہن سبز
اگر اس دھج سوں آوے انجمن میں
تو ہوویں بخت اہل انجمن سبز
فصاحت کیا کہوں اُس خوش دہن کی
کسی کا واں نہیں ہوتا سخن سبز
ولیؔ جو جی دیا اُس خط کوں کر یاد
بجا ہے گر کریں اس کا کفن سبز
139
نہ مل ہر بلبل مشتاق سوں اے گل بدن ہرگز
ہر اک گلشن میں جیوں نرگس نہ کھول اپنے نین ہرگز
جہاں کے گل رخا سارے تجھے نازک بدن کہتے
تو ہر پلکاں کے کانٹاں پر نہ رکھ اپنے چرن ہرگز
تو بے شک روح ہے جگ میں خلاصہ چار عنصر کا
بجز تجھ روح کے قائم نہ ہو جگ کا بدن ہرگز
زلیخا سے کتے عاشق ترے پر جیو وارے ہیں
نہ کر مسکن ہر اک یوسف کا یہ چاہِ ذقن ہرگز
بغیر از عید مت دکھلا کسی کوں یہ ہلال ابرو
نہ مل مہتاب میں بھی کس سوں اے چندر بدن ہرگز
جو شائق شمع رو کا ہے اسے وسواس جاں سوں کیا
نہ دھرنا مثل پروانے کے پروائے کفن ہرگز
حقیقت کے لغت کا ترجمہ عشق مجازی ہے
وو پائے شرح میں مطلب، نہ بوجھے جو متن ہرگز
دم تسلیم سوں باہر نکلنا سو قباحت ہے
نہ دھراس دائرے سوں ایک دم باہر چرن ہرگز
غنیمت جان اس تن کے قفس میں مرغ دم اپنا
نہ پہنچے گا بغیر از شوق تا حُب الوطن ہرگز
140
ہوا نئیں وو صنم صاحب اختیار ہنوز
بجائے خود ہے رقیباں کا اعتبار ہنوز
پری رخاں کی جھلک کا کیا ہوں بسکہ خیال
برنگ برق مرا دل ہے بے قرار ہنوز
وو چشم چار ہوئی شوق چار ابرو سیں
ولے نئیں وو دو رنگی ہوا دوچار ہنوز
ہزار بلبل مسکیں کا صید ہے باقی
مقیم ہے چمن حسن میں بہار ہنوز
بجا نئیں تجھے انکار خون عاشق سوں
گیا نئیں ہے ترے ہاتھ سوں نگار ہنوز
اپس کی چشم کی گردش سوں دے پیالہ مجھے
گیا نئیں ہے مری چشم سوں خمار ہنوز
بجائے خود ہے اے رنگیں بہار گل فطرت
تری پلک کا مرے دل میں خار خار ہنوز
چلے ہیں آہوے مشکیں ختن سوں سن کے کہ ہے
نگاہ شوخ صنم درپئے شکار ہنوز
ولیؔ جہاں کے گلستاں میں ہر طرف ہے خزاں
ولے بحال ہے وو سرو گل عذار ہنوز
141
مت جا سجن کہ ہوشِ دل آیا نئیں ہنوز
میں درد اپس کا تجھ کوں سنایا نئیں ہنوز
اس چشم اشک بار سوں میری عجب نہ کر
سینے کا داغ تجھ کوں دکھایا نئیں ہنوز
تجھ لطف کے زلال نے اے مایۂ حیات
میرے سِنے کی آگ بجھایا نئیں ہنوز
ہوں گرچہ خاکسار ولے از رہِ ادب
دامن کوں تیرے ہاتھ لگایا نئیں ہنوز
اپنی انکھاں کے نور کوں تیرے قدم تلے
اے نور دیدہ فرش بچھایا نئیں ہنوز
زاہد اگرچہ فہم میں ہے بوعلیِ وقت
میرے سخن کے رمز کوں پایا نئیں ہنوز
آزاد اپنے عشق سوں مت کر ولیؔ تئیں
تیرا غلام جگ میں کہایا نئیں ہنوز
142
تو ہے رشک ماہ کنعانی ہنوز
تجھ کوں ہے خوباں میں سلطانی ہنوز
ہر جھلک دیتی ہے تجھ رخسار کی
آرسی کوں درس حیرانی ہنوز
شرم سوں تجھ مکھ کے اے دریائے حسن
چہرۂ گو ہر پہ ہے پانی ہنوز
حلقہ زن ہے تجھ دہن کی یاد میں
خاتم دست سلیمانی ہنوز
رات کوں دیکھا تھا تیری زلف کوں
دل میں ہے باقی پریشانی ہنوز
تجھ کمر کوں دیکھ حیراں ہو رہا
مو قلم لے ہاتھ میں مانی ہنوز
روز اوّل سوں چمن میں حسن کے
نئیں ہوا پیدا ترا ثانی ہنوز
جان جاتی ہے، ولے آتا نئیں
کیا سبب وو دلبر جانی ہنوز
اے ولیؔ اس گل بدن کے عشق میں
شغل بلبل ہے غزل خوانی ہنوز
143
داغ سوں دل قُرص زر اندود رکھتا ہے ہنوز
مثل سورج آتش بے دود رکھتا ہے ہنوز
بسکہ گایا ہوں سرود عشق تیری یاد میں
دل یو میرا لہجۂ داؤد رکھتا ہے ہنوز
باغ میں دیکھا ہوں اے یاقوت لب ریحاں کیتیں
شوق تجھ خط کا غبار آلود رکھتا ہے ہنوز
نور تجھ رخسار کا سینے میں ہے نت جلوہ گر
مجمر دل آتشِ نمرود رکھتا ہے ہنوز
گرچہ غیر از نامرادی اب تلک حاصل نئیں
لیک دل تجھ لب ستی مقصود رکھتا ہے ہنوز
تجھ دہان کالعدم سوں ہے تعجب مجھ کہ حق
طالباں کو اس کے کیوں موجود رکھتا ہے ہنوز
یو ولیؔ تجھ عشق کے مجمر پہ تا اسپند کرے
چنگ میں دل کوں بجائے عود رکھتا ہے ہنوز

ردیف’ س‘
144
میں جب ستی دیکھا ہوں بہار گل نرگس
ہے وحشی دل تب سوں شکار گل نرگس
کیوں بار نگہ ہوے تجھ انکھیاں کے چمن میں
پلکاں ہیں مری خار حصار گل نرگس
بیمار ہے اے یار تری چشم کے دوراں
آ دیکھ ٹک یک دیدۂ زار گل نرگس
نرگس نے کیا اس کے نین دیکھ زر ایثار
کر نقد دل اپنے کوں نثار گل نرگس
آیا ہے ولیؔ مطلع رنگیں لے ترے پاس
یو مطلع رنگیں ہے بہار گل نرگس

ردیف’ ش‘
145
عشق کے ہاتھ سوں ہوے دل ریش
جگ میں کیا بادشاہ کیا درویش
جیو میرا ہوا ہے زیر و زبر
جب سوں تیرا فراق آیا پیش
شوخ کے دل سوں دل ہوا پیوست
آتش عشق کا لگا ہے سریش
تجھ پہ قرباں ہوں اے کماں ابرو
جب سوں لیایا ہوں عاشقی کا گیش
جس کوں قربت ہے عشق سوں تیرے
اس کے نزدیک کب عزیز ہیں خویش
تجھ بن اک پل نہیں مجھے آرام
بیگ دکھلا درس اے مرہم ریش
اے ولیؔ اس کا زہر کیوں اُترے
جن نے کھایا ہے عاشقی کا نیش

ردیف’ ص‘
146
کیوں نہ ہو محبوب میرا جگ میں خاص
اس کی کرتے ہیں صفت سب عام خاص
خوش قداں سب اس انگے حیران ہیں
ہے لٹک میں جیوں کبک رفتار خاص
مجھ کوں پہنچا ہے صنم سیں اے سجن
عاشقوں کی جائے ہے دار الخواص
قتل کرتے ہیں دو نیناں پُرخمار
کون ہے لیوے تجھ آنکھوں سیں قصاص
آرزو ہے نت ولیؔ کوں وصل کی
کب ملے گا میرے تئیں وو نور خاص
147
نئیں مرے دل کوں تری زلف کے چوگاں سوں خلاص
زلف تیری سوں ہے لینا مجھے یک روز قصاص
عشق کی راہ میں جن سر کوں دیا ہے جگ میں
حق کے نزدیک اچھے گا سو وہی خاص الخاص
جب لٹ چال سجن کی مجھے یاد آتی ہے
دل مرا رقص میں آتا ہے مثال رقّاص
رکھ رقیباں سیہ رو کے سخن کوں دل میں
پی! نہ دھو! صفحۂ خاطر ستی حرف اخلاص
اے ولیؔ قدر ترے شعر کی کیا بوجھے عوام
اپنے اشعار کوں ہرگز توں نہ دے جز بہ خواص

ردیف’ ض‘
148
تجھ مکھ کے اس چمن میں یو خط ہے بہار محض
جنت ہے جس کے لطف اَگے شرمسار محض
وہ مکھ ترا ہے اے گل گلزار عاشقاں
ہے لالہ زار جس کے آگے داغ دار محض
بن مرہم وصال نہ ہووے اسے شفا
جو تجھ نگہ کے تیر سوں ہے دل فگار محض
شکر خدا کہ جس کے کرم سوں جہان میں
تجھ حسن کا خیال ہے مجھ شرمسار محض
اس کوں قرار کیوں کے اچھے لیل تار میں
جو تجھ زلف کی یاد میں ہے بے قرار محض
اے دل تو اس کی نین کی مستی سوں ذوق کر
بن اس کے جگ کے شغل ہیں تجھ کوں خمار محض
گاہے ولیؔ کے حال پہ چشم کرم سوں دیکھ
مدت سوں تجھ گلی میں ہے امیدوار محض
149
آزاد کوں جہاں میں تعلق ہے جال محض
دل باندھنا کسی سوں ہے دل پر وبال محض
باد خزاں سوں رمز یہ سمجھا کہ جگ منیں
آتی ہے باغ عیش سوں بوے ملال محض
یو بات عارفاں کی سنو دل سوں سالکاں
دنیا کی زندگی ہے یو وہم و خیال محض
بِن خامشی ولیؔ نہ ملے گوہرِ مراد
حیرت کے باج اور ہے سب قیل و قال محض
150
تجھ زلف کے بے تاب کوں مشک ختن سوں کیا غرض
تجھ لعل کے مشتاق کوں کانِ یمن سوں کیا غرض
مدت ستی اے گل بدن چھوڑا چمن کی سیر کوں
مشتاق ہوں تجھ درس کا مجکوں چمن سوں کیا غرض
پروا کفن کی نئیں مجھے اے شمع بزمِ عاشقاں
تجھ عشق میں جو سر دیا اس کوں کفن سوں کیا غرض
برجا ہے گر اہل ہوس طالب نہیں مجھ شعر کے
جن کو سخن کی بوجھ نئیں ان کوں سخن سوں کیا غرض
ہرگز ولیؔ کے پاس تم باتاں وطن کی مت کہو
جونیہہ کے کوچہ میں ہے اس کوں وطن سوں کیا غرض

ردیف’ غ‘
151
دل تجھ نگاہ گرم سوں سوزاں ہے جیوں چراغ
اس سوز شعلہ خیز سوں خنداں ہے جیوں چراغ
وو آب و تاب حسن میں تیرے ہے اے سجن
خورشید جس کوں دیکھ کے لرزاں ہے جیوں چراغ
یوں تجھ نزک خجل ہے نمک ہر جمال کا
روشن صبح کوں دیکھ پشیماں ہے جیوں چراغ
مسند پہ عافیت کی وو ہے بادشاہ وقت
جس دل کی انجمن منیں ایماں ہے جیوں چراغ
عالم کی دوستی سوں ہے نفرت ولیؔ کتیں
ہر آشنا کے دم سوں گریزاں ہے جیوں چراغ
152
جب سے گئے وو شہاں، آہ دریغا دریغ
غم میں ہے ہر دوجہاں، آہ دریغا دریغ
جب سوں وو نورِ جہاں جگ سوں ہوے ہیں نہاں
تب سوں ہے یو غم عیاں، آہ دریغا دریغ
سارے فلک میں ملک غم میں ہیں سر پاؤں لگ
جب سوں سنے یو بیاں، آہ دریغا دریغ
عابد دیں دار کوں، واقفِ اسرار کوں
درد ہے آہ و فغاں، آہ دریغاں دریغ
ویسے شہِ پاک کوں صاحب ادراک کوں
دکھ دیے وو گمرہاں، آہ دریغا دریغ
شاہ کے ماتم کا بھار، سر پہ ہوا بے شمار
تو ہوا خم آسماں، آہ دریغا دریغ
دین کے گلزار میں گلشنِ اسرار میں
کاں سوں آئی یو خزاں، آہ دریغا دریغ
دیں کا ہے خالص وو زر، غم کی کسوٹی اُپر
حق نے کیا امتحاں، آہ دریغا دریغ
غم میں ولیؔ ہے مدام، شاہ کا کمتر غلام
نت کیا وردِ زباں، آہ دریغا دریغ

ردیف’ ف‘
153
پڑی جب نظر چشم دلبر طرف
ہوا ہوش یک بارگی برطرف
اگر آبرو تجھ کوں درکار ہے
نہ جا خوب رویاں کے کشور طرف
گھلے دیکھ تجھ لب کا آب حیات
کرے یک نظر گر توں شکّر طرف
زبس تجھ ملاحت کا مشتاق ہوں
پڑا شور مجھ عشق کا ہر طرف
ولیؔ کوں نئیں مال کی آرزو
خدا دوست نئیں دیکھتے زر طرف
154
نہ کرسکوں ترے یک تار زلف کی تعریف
کروں ہزار کتب تجھ ثنا میں گر تصنیف
عجب نئیں جو فلک پر خط شعاعی دیکھ
اگر ورق پر سُرج کے لکھیں تری تعریف
لطیفہ وقت اُپر زیب بخش مجلس ہے
سدا گلاب میں ہرگز نئیں ہے بوئے لطیف
عجب نئیں جو سجن کہربا ہو مجھ کھینچے
کہ مجھ کوں کاہ نمن عشق نے کیا ہے ضعیف
کیا ہوں برمیں اپس کے لباس عریانی
ولیؔ برہ نے دیا یو قبا مجھے تشریف
155
ترے فراق میں گل کر ایتا ہوا ہوں ضعیف
بجا ہے تن کوں اگر بال سوں کروں تردیف
چمن میں دہر کے ہرگز نہ مجھ ہوا معلوم
کہ کب ہے فصل ربیع اور کدھاں ہے فصل خریف
ترے رقیب کوں عاشق سوں کیوں کے دیوں نسبت
کہ فرق اُن میں ہے جیوں فرق در کثیف و لطیف
تمیز سوں جو اگر مجھ طرف نگاہ کرے
تو شاہ حسن سوں بس ہے مجھے یہی تشریف
عجب نئیں جو مصنف پر آفریں بولے
ولیؔ جو کوئی سنے اس وضاں کی یو تصنیف

ردیف’ ق‘
156
چڑھی دیکھی جو تجھ بھوں کی کماں قرباں ہوئے عاشق
نشانِ ناوکِ مژگانِ خون افشاں ہوے عاشق
خیال سرو بالا ہے گل گل زار خوبی سوں
چمن آسا بہار آراے باغ جاں ہوئے عاشق
مئے سرگشتگی سوں جام دل پر بسکہ رکھتے ہیں
بہ رنگ ساغر گرداب سرگرداں ہوئے عاشق
ز بس تیغ نگاہ شوخ سرکش کی ہے خوں ریزی
نگاہ چشم قربانی نمط حیراں ہوئے عاشق
بہ رنگِ شمع بزم حسن میں ہے جب سوں تو روشن
پتنگ آسا ترے اوپر بلا گرداں ہوئے عاشق
نہیں یو لالۂ صحرا دریا لہو کا بھرا ہے گا
ز بس تجھ غم منیں انکھیاں سوں خوں باراں ہوئے عاشق
ولیؔ کر نقد دل اپنا نثار امرت بچن اوپر
کہ جس جاں بخش جاں آگے غلام از جاں ہوے عاشق

ردیف’ ک‘
157
چہرے پہ ہے سجن کے عجب نور کی جھلک
دیکھے سوں جس جھلک کے گئی بجلی کی چمک
لاتا ہے نذر آئینۂ آفتاب کوں
ہو مشتری جمال ترے کا سجن فلک
اس دور میں خلاصی جاں ہے نپٹ کٹھن
بانکی نَین کے ہاتھ میں خنجر ہے ہر پلک
پوشیدہ کیوں جہاں میں رہے عشق صاف قلب
ہے اس کے لعل لب کے اَگے خوب و بد محک
طاقت ہے کس کوں رخ پہ ترے کرسکے نگاہ
خورشید سوں ادھک ہے ترے چہرے کی جھلک
کہتے ہیں شاعران زمن مجھ کوں اے ولیؔ
ہرگز ترے کلام میں ہم کو نہیں ہے شک
158
اے صنم تیرے مکھ کی دیکھ جھلک
منفعل ہے مدام شمسِ فلک
دیکھ تجھ میں جمال حق کا ظہور
ہیں دعا گو فلک پہ سارے ملک
دیکھ کر تجھ دہن کی تنگی کوں
عالماں کے پڑا ہے دل میں شک
لب ترے کا حقوق ہے مجھ پر
کیوں بھلاؤں میں دل سوں حق نمک
اے ولیؔ جب نظر میں پیو آیا
ہوگیا سب وجود میرا حک

ردیف ’ل‘
159
دیکھ تیرے سو یو کھبالے بال
رشک سوں جل گئے ہیں کالے کال
جب کہ ابرو کی تو کماں کھینچی
تیر مژگاں نے تب سنبھالے بھال
زلف کے پیچ دیکھ کر سنبل
پیچ ہور تاب میں ہے ڈالے ڈال
کئیں شکاریاں نے تجھ نگہ کا دام
دیکھ آتش میں غم کے جالے جال
اس ولیؔ پر نظر رحم کی کر
ہے یہ تقصیر وار بالے بال
160
دل کی مچھلی پر سٹا تجھ برہ نے جنجال جال
دام میں تجھ نیہ کے دل کا ہوا بے حال حال
اے ستم گر عاشقاں پر یوں نہ کر جور و ستم
خیر ہو شر کی حقیقت میں ہے یک مثقال قال
خط نئیں آغاز تجھ رخسار کے یو آس پاس
حسن کے لینے کو یو آئے ہیں استقبال بال
مفلساں کوں عاقبت کے گھر میں نئیں درکار زر
حق کی بخشش سوں انھوں کوں بس ہے نیک اعمال مال
اے ولیؔ حق کی طلب یو دولتِ عظمیٰ اَ ہے
عشق سینے کے خزینے میں ہے مالامال مال
161
لب پہ دل بر کے جلوہ گر ہے جو خال
حوض کوثر پہ جیوں کھڑا ہے بلال
یو ہے عاشق اپس کی صورت کا
جیوں کہ حیراں ہے اُس اُپر تمثال
اُس کے مکھ کی شعاع کوں کرتا ہے
ہر صًبح آفتاب استقبال
نہیں کچھ مال و زر کی مجھ کوں طمع
شوق سوں اس کے دل ہے مالا مال
اے ولیؔ پی مئے محبت کوں
گر ہے رمضان و گر مہِ شوال
162
شمع بزم وفا ہے امرت لال
سرو باغ ادا ہے امرت لال
ماہ نو کی نمن ہے سب کو عزیز
اس سبب کم نما ہے امرت لال
دل مرا کیوں بند ہو اُس کا
آج رنگین قبا ہے امرت لال
خوش لباسی کی کیا کہوں تعریف
وضع میں میرزا ہے امرت لال
اس سوں بے گانگی کبھو نہ کرے
جس ستی آشنا ہے امرت لال
لعل تیرے بھرے ہیں امرت سوں
نام تیرا بجا ہے امرت لال
اے ولیؔ کیا کہوں بیاں اس کا
لطف میں دل ربا ہے امرت لال
163
ہے آج خوش قدی میں کمال گوبند لال
استاد چال سرو ہے چال گوبند لال
برجا ہے اس کے دل کوں کہوں گلشن بہار
آتا ہے جس کے دل میں خیال گوبند لال
خوباں حیا سوں غرق غرق ہوں تو کیا عجب
جس وقت جلوہ گر ہو جمال گوبند لال
ہے بسکہ بے مثال نہ دیکھا جو خواب میں
آئینۂ خیال مثال گوبند لال
کر اس دعا کوں ورد زباں اے ولیؔ مدام
لطف خدا ہو شامل حال گوبند لال
164
مدت ہوئی سجن نے دکھایا نئیں جمال
دکھلا اپس کے قد کوں کیا نئیں مجھے نہال
یک بار دیکھ مجھ طرف اے عید عاشقاں
تجھ ابرواں کی یاد سوں لاغر ہوں جیوں ہلال
برجا ہے گر ہمن پہ تصدق ہو مشتری
بولا ہوں تجھ جمال کوں خورشید بے زوال
وو دل کہ تھا جو سوختۂ آتش فراق
پہنچا ہے جا کے رُخ کو صنم کے برنگ خال
ممکن نئیں کہ بدر ہو نقصاں سوں آشنا
لاوے اگر خیال میں تجھ حسن کا کمال
گر مضطرب ہیں عاشق بے دل عجب نئیں
وحشی ہوئے ہیں تیری انکھاں دیکھ کر غزال
فیض نسیم مہر و وفا سوں جہان میں
گل زار تجھ بہار کا ہے اب تلک بحال
کھویا ہے گل رخاں نے رعونت سوں آب و رنگ
گردن کشی ہے شمع کی گردن اُپر وبال
ہرگز نہ دیوے رسم وفا ہاتھ سوں ولیؔ
یک بار اس غزل کوں سنے گر گوبند لال
165
چمن میں گیا جب سوں وو نونہال
ہوا سرو اُس سرو قد سوں نہال
ہوئی تب سوں خاطر نشاں جب ستی
ترے تیر کی دل میں پائی ہے بھال
موہا سرو نے گرچہ قمری کا دل
ترے قد کی لیکن نرالی ہے چال
مجھے یک گھڑی تجھ بنا چین نئیں
ترے بن ہے ہر آن سینے پہ سال
ترے عشق نے خم کیا ہے مجھے
مرے حال پر زلف تیری ہے دال
مرے دل کوں جیوں گوے گرداں کیا
کہوں کیا تجھ ابرو کے چوگاں کا حال
جہاں میں پھرا لیکن اے باحیا
نہ دیکھا ہے آئینہ تیری مثال
نہ ڈر روز محشر ستی سیّدا
کہ آلِ نبی پر نہ آئے گی آل
طمع مال کی سر بسر عیب ہے
خیالات گنج جہاں سرسوں ٹال
بھروسا نئیں دولت تیز کا
عجب نئیں کہ تا ظہر آوے زوال
جب آیا غضب میں وو آتش مزاج
کیا آب عشاق کے دل کو گال
تجھے زلف صیّاد دیتی ہے پیچ
نہ اِس دام کے ہاتھ سوں دل کو جال
ولیؔ شعر میرا سراسر ہے درد
خط و خال کی بات ہے خال خال
166
میری نگہ کی رہ پہ اے فرخندہ فال چل
ہے روز عید آج اے ابرو ہلال چل
تیری نین کی دید کوں اے نور ہر نظر
شک نئیں اگر ختن ستی آویں غزال چل
ممکن نئیں ہے تن کی طرف اس کی بازگشت
جو دل گیا ہے دلبر دل کش کی نال چل
پیتم کی زلف بیچ دسا مجھ سواد ہند
اس راہ مار پیچ میں اے دل سنبھال چل
وحدت کے مے کدے میں نہیں بار ہوش کوں
اس بے خودی کے گھر کی طرف سُدھ کو ڈال چل
اے بے خبر اگر ہے بزرگی کی آرزو
دنیا کی رہ گزر میں بزرگاں کی چال چل
گر عاقبت کے ملک کی خواہش ہے سلطنت
خوش خصلتی کے ملک میں اے خوش خصال چل
مرشد کی منزلت کا اگر عزم جزم ہے
سایہ نمط تو پیر کے دائم دنبال چل
آیا تری طرف جو ولیؔ تو عجب نہیں
آتے ہیں تجھ گلی منیں صاحب کمال چل
167
بیگ درس دے، نہ دے مکھ پہ اے چنچل انچل
جیو مرا ہت لے، نہ لے رسم فریب و دغل
مجھ پہ نظر کر، نہ کر بات رقیباں ستی
بیت مری سن، نہ سن دوسرے کی جا غزل
میرے نزیک آ، نہ آ رکھ کے وہم دل منیں
جی میں وفا دھر، نہ دھر سینے میں خوف و خلل
ظلم سے دل دھو، نہ دھو مہر کے پانی سوں ہاتھ
موم صفت ہو، نہ ہو کوہ نمن تو اَٹل
قول مجھے دے، نہ دے رسم وفا ہاتھ سوں
آ ولیؔ سوں مل، نہ مل کس سوں اے شیریں شکل
168
کہوں کس کَن عزیزاں! جا کے درد بے نشانِ دل
نئیں یک گوش محرم تا سنے آہ و فغانِ دل
غبار خاطر غم ناک سوں مجھ پر ہوا ظاہر
کہ غیر از درد دوجا نئیں ہے یار کاروانِ دل
ہوئی ہے بند تب سوں راہ اظہار شکایت کی
خیال خال خوباں جب سوں ہے مہر دہانِ دل
پڑی تجھ زلف کافر کیش پر جب سوں نظر میری
صنم تب سوں گئی ہے ہاتھ سوں دل کے عنانِ دل
بیان سینہ چاکاں اے ولیؔ کیوں کر سنے ہریک
کہ بوئے گل سوں نازک تر ہے آہنگ زبانِ دل
169
تجھ بے وفا کے سنگ سوں ہے پارہ پارہ دل
ریزش میں تجھ جفا سوں ہے مثل ستارہ دل
لرزاں ہے تب سوں رعشۂ سیماب کی نمط
جب سوں تری پلک کا کیا ہے نظارہ دل
تجھ مکھ کے آفتاب کی گرمی کوں دیکھ کر
جل شوق کی اَگن سوں ہوا جیوں انگارہ دل
بے شک شفاے خاطر بیمار ہو تدہاں
تجھ لب کے جب طبیب ستی پاوے چارہ دل
آوے اگر ولیؔ کے سِنے کے محل میں توں
دیکھے ترے جمال کوں پھر کر دوبارہ دل
170
عبارت تجھ زُلَف سوں ہے تسلسل
ہوا تیری کمر میں گُم تامل
ترے مکھ کے چمن کوں یاد کرکر
دیا لالے نے اپنے دل اُپر گل
دسے تجھ حسن کے دریا پہ جیوں موج
اگر رخسار پر چھوٹے یو کاکل
ترے رخسار و لب کوں دیکھ اے شمع
ہوئے پروانہ ہر طوطی و بلبل
میں دیکھا ہوں نگاہ دل سوں اے شوخ
تری انکھیاں سے بے جا ہے تغافل
کیا اس دور میں اے جلوہ بدمست
تر انکھیاں نے کارِ نشۂ مل
ہوا زنجیر بند اے دام عشاق
تری زلفاں کے ہر حلقے میں سنبل
ولیؔ تیری گلی کوں دیکھ بولیا
یہی ہے ہند اور کشمیر و کابُل
171
تجھ مکھ اُپر ہے رنگ شراب ایاغ گل
تیری زُلَف ہے حلقۂ دود چراغ گل
معشوق کوں ضرر نئیں عاشق کی آہ سوں
بجھتا نئیں ہے باد صبا سوں چراغ گل
رہتا ہے دل پیا کے تفحص میں رات دن
ہے کار عندلیب ہمیشہ سراغ گل
عاشق مدام حال پریشاں سوں شاد ہے
آشفتگی کے بیچ ہے دائم فراغ گل
تجھ داغ سوا ہوا ہے چمن زار دل مرا
ای شوخ آ کے دیکھ تماشاے باغ گل
جلتے ہیں پی کے شوق سوں عشاق رات دن
ہے دل میں بلبلاں کے شب و روز داغ گل
یوں تجھ سخن میں نشۂ معنی ہے اے ولیؔ
جوں رنگ و بو کی مے سوں ہے لبریز ایاغ گل
172
اے شمع تو روشن کیا جب انجمن گل
اپنے گل مقصود کوں پایا چمن گل
اے غنچہ دہاں نام ترا جب سوں لیا ہوں
اس آن سوں خوش باس ہوا ہے دہن گل
بازار میں شاید کہ کرے سیر سری جن
اس واسطے بازار ہوا ہے وطن گل
تجھ ناز کی تلوار نے جب سوں کیا زخمی
ہے تب ستی آلودۂ خوں پیرہن گل
مجھ دل پہ ولیؔ دل برِ رنگیں کی حقیقت
مخفی نئیں بلبل کے اُپر جیوں سخن گل
173
تجھ زلف اور دہن میں ہے مختصر مطوّل
تو صاحب درس ہے بوجھا ہوں روز اوّل
گل زار میں نکل کر گل گشت اگر کرے توں
تجھ گل بدن کے دیکھے سب گل پڑیں گے گل گل
جگ کے مصوّراں سب تصویر دیکھ تیری
حیرت میں جا پڑے سو لکھنا رہا معطل
تجھ سرو قد کوں دیکھے نقاش نقش بھولے
پھر نقش کاڑھنا سو ان کوں ہوا ہے اشکل
یو در کو مِرگ دیکھے سو مرگ کا ہو طالب
یو خاک تجھ قدم کی سٹ کر مقام جنگل
ہر جنس کا معما بوجھا گیا ہے لیکن
تجھ راز کا معما جگ میں رہا ہے لاحل
خوشبو بدن پہ تیری زلفاں نہیں ہیں چوندھر
کالے بھجنگ مل کر گھیرے درخت صندل
ساری سکھیاں نے مل کر کیا بے خطا دیا ہے
تجھ نازنیں موہن کی انکھیاں میں خطِّ کاجل
اے شوخ چشم عالم سن بات گوش دل سوں
تجھ بے وفا کے غم سوں دائم ولیؔ ہے بے کل

ردیف’ م‘
174
تجھ شاہ خوباں کے ہوئے کئی صاحب اکرام رام
تجھ حسن کے دیوان سوں پائے ہیں کئی حکّام کام
تجھ درس کا کئی برس سوں مشتاق ہوں اے بے وفا
دے شیشۂ لب سوں کدھی یک خیریت انجام جام
گَل کر پڑیں گے گُل نمن بے شک گلستاں کے بھتر
تجھ گل بدن کے حسن کوں گر ٹک کریں گل فام فام
ہر مرغ دل کوں آپ نے لاکر کریں گے بندیاں
دیکھیں گے پھر گر بھر نظر تجھ زلف کا خدام دام
تجھ زلف نے جو دائرے باندھے صفار رخسار پر
دیکھے نئیں اس شان کا کوئی صاحب اسلام لام
تجھ نین کے خنجر سوں ہے مجروح دل عشاق کا
تیری نگہ کی تیغ سوں ہیں صاحب سنگرام رام
تن کے مُلک میں اے ولیؔ تجھ عشق کے حاکم نے آ
دل کی رعیت سوں لے کر چوکھا کیا ہے دام دام
175
غم ترا ہے قوت کھاتا ہوں محبت کی قسم
نئیں مجھے دنیا کا غم تجھ غم کی راحت کی قسم
اے گل باغ نزاکت باغ میں امکان کے
تجھ سا نئیں دیکھا ہوں میں تیری نزاکت کی قسم
جب سوں اے آئینہ رو دیکھی تری تصویر کوں
گل رخاں تب سوں ہوئے تصویر حیرت کی قسم
عاشقاں اے رشک لیلیٰ دیکھ تیرے رم کے تئیں
مثل مجنوں ہیں بیاباں گرد وحشت کی قسم
اے ولیؔ اس دل ربا کوں کہہ کہ میرے حال پر
لطف سوں کر یک نگہ تجھ کوں مروت کی قسم
176
ہجرت کی رات نے مجھ یک آسماں دیا غم
اب مہر اپس کی ہرگز اے صبح رو نہ کر کم
اے آفتاب طلعت دل پر مرے نظر کر
تا یک گھڑی میں آوے تجھ پاس مثل شبنم
تجھ بھوں کو جب سوں دیکھا تجھ پاس اے سری جن
گوشے میں بیٹھ چلاّ مثل کماں ہوا خم
تجھ زلف سوں لیا ہے کعبہ سیاہ پوشی
تیرے ذقن کے شرموں پانی ہوا ہے زم زم
ہے اے ولیؔ پرت سوں معمور کعبۂ دل
نئیں باج حق کے دوجا دل کے حرم کا محرم
177
جلوں تجھ عشق کی آتش منیں تا چند اے ظالم
شتابی آ کہ جی تجھ پر کروں اسپند اے ظالم
خوش ابرو جیوں نگہ رکھتے ہیں انکھیاں میں مجھے جب سوں
تری انکھیاں کے ڈورے کا ہوا ہوں بند اے ظالم
پریشانی کے دفتر کا اسے فہرست کہہ سکیے
تری زلفاں سوں جس کے دل کو ہے پیوند اے ظالم
پڑی ہے آرسی حیرت میں تیرے مکھ کے جلوے سوں
مجھے تجھ حسن کی حیرت کی ہے سوگند اے ظالم
ولیؔ کی سوزش دل کی طبیباں کر سکیں دارو
ترے رخسار و لب سوں گر ملے گل قند اے ظالم
178
صنم کے لعل پر وقت تکلّم
رگِ یاقوت ہے موج تبسّم
سجن مکتب میں جب آیا ہر اک کوں
ہوا ہے سہو تعلیم و تعلّم
سمجھ کر بات کر اے مرد ناصح
نصیحت عاشقاں کو ہے تحکّم
نئیں کُئی داد دیتا اس کی جگ میں
کیا تجھ زلف سوں جس نے تظلّم
نہ جا انکھیاں میں آ مجھ دل میں اے شوخ
کہ نئیں خلوت میں دل کی خوف مردم
ہوا پیدا وو گل رو جب سوں جگ میں
ہوا ہے ہوش میرا تب ستی گم
ہوے اشکِ ولیؔ از بسکہ جاری
اُٹھا امواج دریا میں تلاطم
179
جیوں گل شگفتہ رو ہیں سخن کے چمن میں ہم
جیوں شمع سربلند ہیں ہر انجمن میں ہم
ہم پاس آکے بات نظیریؔ کی مت کہو
رکھتے نہیں نظیر اپس کی سخن میں ہم
ہیں داستان عشق ہمیں یاد کئی ہزار
استاد بلبلاں کے ہیں ہر یک چمن میں ہم
خوباں جگت کے جیوں سوں ملتے ہیں ہم ستی
کامل ہوئے ہیں بسکہ محبت کے فن میں ہم
اس شوخ شعلہ رنگ کی جب سوں لگن لگی
جلتے ہیں تب سوں شعلہ نمط اس لگن میں ہم
یک بار ہنس کے بول صنم نئیں تو حشر لگ
جیوں برق بے قرار رہیں گے گفن میں ہم
ہر چند جگ کے بخت سیاہوں میں ہیں ولے
کاجل ہو، جا بسے ہیں سجن کے نین میں ہم
فرہاد تب سوں تیشہ نمن سر کیا تلے
باندھے ہیں جب سوں جیو کیوں شیریں بچن میں ہم
دو جگ ہوئے ہیں دل سوں فراموش اے ولیؔ
رکھتے ہیں جب سوں یاد سری جَن کی من میں ہم
180
شراب شوق سیں سرشار ہیں ہم
کبھو بے خود کبھو ہشیار ہیں ہم
دو رنگی سوں تری اے سرو رعنا
کبھو راضی، کبھو بے زار ہیں ہم
ترے تسخیر کرنے میں سری جَن
کبھو ناداں، کبھو عیار ہیں ہم
صنم تیرے نین کی آرزو میں
کبھو سالم، کبھی بیمار ہیں ہم
ولیؔ وصل و جدائی سوں سجن کی
کبھو صحرا، کبھو گل زار ہیں ہم

ردیف’ ن‘
181
میٹھا بچن بولے اگر وہ دلبر شیریں زباں
ہو ماہ مصری جیوں شکر آب خجالت میں نہاں
زہرہ جبیناں خلق کے آویں بہ رنگ مشتری
گر ناز سوں بازار میں نکلے وو ماہ مہرباں
اے نور چشم عاشقاں تیری صفت کر نہ سکے
گر مردم بینا کوں ہو مانند مژگاں صد زباں
پڑھنا مطوّل کا کیا اُن نے درس میں مختصر
تیری زباں سوں جو سنا علم معانی کا بیاں
دیکھا ہوں دریائے جنوں تجھ آشنائی میں پیا
ہے پردۂ چشم پری کشتی کوں میری بادباں
دل بند ہے غنچہ نمط تیرے دہن کی فکر میں
ہے تجھ لباں کی یاد سوں ہر اشک رنگ ارغواں
تیری نگہ کے تیر سوں زخمی ہوا شیر فلک
تیری بھواں کے سہم سوں خم ہے کمان آسماں
انجھواں کی سرخی دیکھ کر یاقوت ہے خونیں جگر
ہور زعفراں ہے زرد رو دیکھے سوں رنگ عاشقاں
اے نو بہار خوش لقا جب سوں ہوا ہے تو جدا
تجھ بن ہے دل کے باغ میں اوّل سوں آخر لگ خزاں
نس دن سجن تجھ ہجر میں رہتے ہیں باب چشم وا
تا دُزد خواب آوے نہیں پتلی ہے ان میں پاسباں
یوں دوستاں کے ہجر سوں داغاں ہیں سینے پر ولیؔ
صحرا کے دامن کے اُپر جیوں نقش پائے رہرواں
182
کیوں نہ ہووے عشق سوں آباد سب ہندوستاں
حسن کی دہلی کا صوبہ ہے محمّد یار خاں
پیچ و تاب بے دلاں اس وقت پر بے جا نہیں
لٹ پٹی دستار سوں آتا ہے وو نازک میاں
دل ہوئے عشاق کے بے تاب مانند سپند
جب وو نکلے ہو سوارِ تازیِ آتش عناں
کیوں نہ ہو بے تابیِ عشاق کا بازار گرم
ہے نگاہ شوخ سرکش فتنۂ آخر زماں
جس طرف ہو جلوہ گر وو آفتاب بے نظیر
صبح کے مانند ہووے رنگ روئے گل رخاں
کب نظر آوے گا یا رب وہ جوان تیر قد
جس کے ابرو کے تصور نے کیا مجھ کوں کماں
اے ولیؔ گر مہرباں ہووے چمن آراے حسن
خاطر ناشاد ہووے رشگ گل زار جناں
183
یہ خط تجھ مکھ کے گلشن میں دسے جیوں سبزۂ ریحاں
ورق پر حسن کے دیکھو لکھے ہیں یہ خط ریحاں
جو تجھ خط کی غلامی میں کیا ہے ترک فرماں کوں
تو اس کا باغ کے بھیتر رکھے ہیں ناؤں نافرماں
جو تجھ یاقوت لب کا خط ہوا مشہور عالم میں
رہا یاقوت خط لے کر اپس کا جگ میں ہو حیراں
ترا خط دائرہ ہے جیم کا اور خال ٹھوری پر
بلا شک جیم کا نقطہ ہے اے اہل سخن داں جاں
ولیؔ یہ دائرہ خط کا اہے اس حسن کا قلعہ
سو اس قلعے منیں دیکھو تجلّیِ شہِ شاہاں
184
تجھ قد اُپر جب سوں پڑی جگ میں نگاہ عاشقاں
تب سوں گئی طوبیٰ تلک جیوں تیر آہ عاشقاں
جب سوں ترا مکھ دیکھ کر معشوق سب عاشق ہوئے
تب سوں تو ملک حسن میں ہے بادشاہ عاشقاں
ساعت شناساں دنگ ہیں عشاق کے احوال سوں
یک یک گھڑی تجھ ہجر کی ہے سال و ماہ عاشقاں
پہنچے ہیں منزل سالکاں تجھ حسن کے پرتو ستی
یہ نور تیرا اے سجن ہے شمع راہ عاشقاں
وو یوسف کنعانِ دل کس کارواں میں ہے ولیؔ
جس کے زنخداں کوں جگت بولے ہیں چاہ عاشقاں
185
ہے نازنیں صنم کا زلفاں دراز کرناں
فتنے کا عاشقاں پر دروازہ باز کرناں
دل لے گیا ہے میرا پھر مانگتا ہے جی کوں
بر جا ہے نازنیں کوں عاشق پہ ناز کرناں
اے قبلہ رو دِسے ہے محراب تجھ بھواں کی
واجب ہوا انکھاں سوں اب جا نماز کرناں
کیوں کر چھپا سکوں میں تجھ درد کی حقیقت
ہے کام آہ دل کا افشاے راز کرناں
ایسا بسا ہے آکر تیرا خیال جیو میں
مشکل ہے جیوں سوں تجھ کوں اب امتیاز کرناں
ہے منحصر اسی میں عاشق کی سرخ روئی
خدمت میں گل رخاں کی جیو سوں نیاز کرناں
میں عشق سوں کیا ہوں تجھ دل کوں نرم آخر
ہر اک کا کام نئیں ہے آہن گداز کرناں
یک بارگی رقیبِ بدخو کی بات سن کر
بے جا ہے پاک بیں سوں یوں احتراز کرناں
دروادئ حقیقت جن نے قدم رکھا ہے
اوّل قدم ہے اس کا عشق مجاز کرناں
ہے پہنچنے کا ساماں کعبے کوں مدعا کے
دریائے عاشقی میں دل کوں جہاز کرناں
شاید غزل ولیؔ کی لے جا اسے سنادے
اس واسطے بجا ہے مطرب سوں ساز کرنا
186
قسمت تری ہے حق پہ نہ ہونا اُمید یھاں
نئیں اس قُفَل کوں غیر توکّل کلید یھاں
سختی کے بعد عیش کا امیدوار اچھ
آخر ہے روزہ دار کو اک روز عید یھاں
ظلمات میں یو غم کے ملے گا تجھ آب خضر
دامن تلے ہے رات کے روز سفید یھاں
سب کام اپس کے سونپ کے حق کو نچنت ہو
یہ ہے تمام مقصد گفت و شنید یھاں
حاجت اپس کی کہنہ و نَو اس سوں کہہ ولیؔ
محتاج جس نزک ہیں قدیم و جدید یھاں
187
سجن تجھ انتظاری میں رہیں نس دن کھلی انکھیاں
مثال شمع تیرے غم میں رو رو بہہ چلی انکھیاں
ہوئی جیوں جلوہ گر تجھ یاد سوں مجھ دل میں بے تابی
تپش شعلہ نمن گرمی سوں غم کے تلملی انکھیاں
جدائی جب سوں ہُئی ظاہر تدہان سوں بوجھتا ہوں میں
ترے بِن تیل کے جیوں میل سرمے کی سلی انکھیاں
ترے بن رات دن پھرتیاں ہیں بن بن کشن کے مانند
اپس کے مُکھ اُپر رکھ کر نگہ کی بانسلی انکھیاں
نزک میرے کرم سوں تاکہ آوے بے حجاب ہوکر
تماشے میں ترے جیوں آرسی ہیں صیقلی انکھیاں
تری نیناں پہ گر آہو تصدق ہو تو اَچرج نئیں
کہ اُس کوں دیکھ کر گلشن میں نرگس نے ملی انکھیاں
اتی خواہاں ہیں تجھ حسن و ملاحت ہور لطافت کی
کہ گویا دل میں رکھتیاں ہیں سدا فکر ولیؔ انکھیاں
188
قرار نئیں ہے مرے دل کوں اے سجن تجھ بن
ہوئی ہے دل میں مرے آہ شعلہ زن تجھ بن
شتاب باغ میں آ اے گل بہشتی رو
کہ بلبلاں کوں جہنم ہوا چمن تجھ بن
قِران کب ہو میسر ترا اے زہرہ جبیں
ہر ایک آن ہے مجھ حق میں سو قرن تجھ بن
چمن کی سیر سوں نفرت ہے اس سبب کہ مجھے
سفید داغ سوں مکروہ ہے سمن تجھ بن
اے رشک چشمۂ خضر اپنے مکھ کی شمع دکھا
کہ ہے بہ صورت ظلمات انجمن تجھ بن
نہ کر تغافلی اے مصر حسن کے یوسف
مثال دیدۂ یعقوب ہیں نین تجھ بن
ولیؔ کے دل کی حقیقت بیان کیوں کے کروں
گرہ ہوا ہے زباں پر مری سخن تجھ بن
189
دل ہوا ہے مرا خراب سخن
دیکھ کر حُسن بے حجاب سخن
بزم معنی میں سرخوشی ہے اسے
جس کوں ہے نشۂ شراب سخن
راہ مضمون تازہ بند نہیں
تا قیامت کھلا ہے باب سخن
جلوہ پیرا ہو شاہد معنی
جب زباں سوں اُٹھے نقاب سخن
گوہر اس کی نظر میں جا نہ کرے
جن نے دیکھا ہے آب و تاب سخن
ہرزہ گویاں کی بات کیوں کے سنے
جو سنا نغمۂ رباب سخن
ہے تری بات اے نزاکت فہم
لوح دیباچۂ کتاب سخن
ہے سخن جگ منیں عدیم المثل
جز سخن نئیں دوجا جواب سخن
لفظ رنگیں ہے مطلع رنگیں
نور معنی ہے آفتاب سخن
شعر فہموں کی دیکھ کر گرمی
دل ہوا ہے مرا کباب سخن
عرفیؔ و انوریؔ و خاقانیؔ
مجکوں دیتے ہیں سب حساب سخن
اے ولیؔ درد سر کبھو نہ رہے
جب ملے صندل و گلاب سخن
190
تری زُلَف سوں ہر اک نس ہوں بے قرار سجن
ہوا ہوں شانہ صفت غم سوں دل فگار سجن
جواہراں پہ ہیں غالب ترے یہ ناخن سرخ
حنا سوں اس کے اوپر پھر نہ کر نگار سجن
تری انکھاں کے نشے سوں مدام گلشن میں
نین میں نرگس شہلا کے ہے خمار سجن
صبح پہ وعدہ نہ کر آج مجھ کوں دے دیدار
ترے بچن کا نہیں مجھ کوں اعتبار سجن
اپس کی مکھ کی طرف دیکھ کر نظر فرما
نہ کر زُلَف کی اشارت سوں مار مار سجن
تری بہار کے فیضِ ہوا سوں عالم میں
کھلے ہیں گل کی نمن جگ کے گل عذار سجن
ولیؔ نثار ہے تجھ پر تو اس پہ مہر سوں دیکھ
یو بات تجھ کوں کہاں ہوں میں لاکھ بار سجن
191
سب چمن کے گل رخاں کا تو ہے زیب اے گل بدن
گل بدن تجھ سا نہ دیکھا گرچہ دیکھا سب چمن
انجمن میں تجھ وراں دوجا نہیں کوئی زیب ور
زیب در سو تو نچ ہے مانند شمع انجمن
خوش بچن تیرے فصاحت میں ہیں مستثنائے وقت
وقت گر پاؤں تو تجھ مکھ سوں سنوں میں خوش بچن
برہمن تجھ مکھ کوں دیکھا پاس ہند و زلف کے
زلف کے تاراں جنیؤ کر کے سمجھا برہمن
دھن کے گالاں پر یہ بالاں کوں جو دیکھا مثل گال
گال نے اس خال کوں محبوب سمجھا مال و دھن
تجھ ذقن کی لذتاں میں محو پایا سیب کوں
سیب کوں ہے چاہ تب سوں جب سوں دیکھا تجھ ذقن
کئی جتن سوں شعر بولا ہوں ولیؔ سن شوق سوں
شوق سوں جوہر نمن رکھ اس کوں کر کے کئی جتن
192
مجھ کوں ہے دار الامن پیو کا نقش چرن
پیو کا نقش چرن مجھ کوں ہے دارالامن
پیو کا شیریں بچن مجکوں ہے آب حیات
مجکوں ہے آب حیات پیو کا شیریں بچن
اے مہ سیمیں بدن مکھ کوں اپس کے دکھا
مکھ کوں اپس کے دکھا اے مہ سیمیں بدن
مجھ سوں گیا ما ومن دیکھ کے تیرے نَین
دیکھ کے تیرے نَین مجھ سوں گیا ما ومن
تجھ سوں لگی ہے لگن اے گل باغِ حیا
اے گل باغِ حیا تجھ سوں لگی ہے لگن
زلف تری برہمن مکھ ہے ترا آفتاب
مکھ ہے ترا آفتاب زلف تری برہمن
دستۂ گل ہے سجن سن یو سخن اے ولیؔ
سن یو سخن اے ولیؔ دستۂ گل ہے سجن
193
ہوا ہے جب سوں ترا تل سوار آتش حسن
سپندوار ہے دل بے قرار آتش حسن
یو خط کوں دود نمن دیکھ کر ہوا معلوم
کہ گرم پھر کے ہوا روزگار آتش حسن
ہنوز حسن کی گرمی بجا ہے اے گل رو
خط سیاہ ہے تیرا حصار آتش حسن
وو شمع بزم ادا بر میں کر لباس زری
ہے آفتاب نمن شعلہ زار آتش حسن
نہیں ہے کسوت زر شعلہ قد کے قد اوپر
یہ ہر طرف سوں اُٹھے ہیں شرار آتش حسن
سجن کو دیکھ کے دشوار ہے بجا رہنا
نگاہ تیز نگاہاں ہے خار آتش حسن
ولیؔ کیا ہوں نظر بسکہ اس پری رو پر
ہوا کباب نمن دل شکار آتش حسن
194
گریۂ عشاق سوں خنداں ہے باغ بزم حسن
مغز پروانہ سوں روشن ہے چراغ بزم حسن
کیوں نہ ہووے عاشقاں کوں نشۂ دیوانگی
گردش چشم پری سوں ہے ایاغ بزم حسن
عاشقاں اس آتشیں رخسار کے چہرے اُپر
پیچ و تاب زلف ہے دودِ چراغ بزم حسن
بے خبر ہیں تجھ گلی سوں اس سبب اے گلبدن
بلبلاں کرتی ہیں گلشن میں سراغ بزم حسن
حسن کی مجلس کوں جب روشن کیا وو شمع رو
خوب رویاں سب ہوئے جیوں لالہ داغ بزم حسن
آتش غیرت سوں گل پانی ہوا مغز شمع
وو صنم جب سوں ہوا عالی دماغ بزم حسن
صرف کیتا ہے ولیؔ عالم منیں نقاش طبع
عیش کی تصویر میں رنگ فراغ بزم حسن
195
عاشق کے مکھ پہ نین کے پانی کو دیکھ توں
اس آرسی میں راز نہانی کوں دیکھ توں
سُن بے قرار دل کی اول آہ شعلہ خیز
تب اس حرف میں دل کے معانی کو دیکھ توں
خوبی سوں تجھ حضور و شمع دم زنی میں ہے
اس بے حیا کی چرب زبانی کوں دیکھ توں
دریا پہ جا کے موج رواں پر نظر نہ کر
انجھواں کی میرے آکے روانی کوں دیکھ توں
تجھ شوق کا جو داغ ولیؔ کے جگر میں ہے
بے طاقتی میں اس کی نشانی کو دیکھ توں
196
یک بار مری بات اگر گوش کرے توں
ملنے کو رقیباں کے فراموش کرے تو
ہے بسکہ تیر نَین میں کیفیّت مستی
یک دید میں کونین کوں بے ہوش کرے توں
اے سرو گل اندام اپس نقش قدم سوں
برجا ہے اگر صحن کوں گل پوش کرے توں
غیرت سوں کرے چاک گریباں دل پر خوں
گر گل کی حمائل کوں ہم آغوش کرے توں
اے جان ولیؔ وعدۂ دیدار کوں اپنے
ڈرتا ہوں مبادا کہ فراموش کرے تو
197
چلنے منیں اے چنچل ہاتی کوں لجاوے تو
بے تاب کرے جگ کوں جب ناز سوں آوے توں
یک بارگی ہو ظاہر بے تابیِ مشتاقاں
جس وقت کہ غمزے سوں چھاتی کوں چھپاوے توں
گویا کہ شفق پیچھے خورشید ہوا ظاہر
جب اوٹھ میں پردے کے چہرے کو دکھاوے توں
لوئیِ فلک مکھ میں انگشت تحیّر لے
جب پاؤں نزاکت سوں مجلس میں نچاوے توں
عشاق کی شادی کی اُس وقت بجے نوبت
مردنگ کی جس ساعت آواز سناوے توں
یک تان سنانے میں جی تان لیا سب کا
اب دل سوں بکیں سارے گر بھاؤ بتاوے توں
توبائے ریائی سوں شاید کہ کرے توبہ
اس وقت ولیؔ کوں گر بھر جام پلاوے توں
198
خوبی2 اعجاز حسن یار اگر انشاء کروں
بے تکلف صفحۂ کاغذ یدِ بیضا کروں
پونچتی نئیں کعبۂ مقصود کوں کشتیِ چشم
فیض سوں انجھواں کے دریا کوں مگر پیدا کروں
جیوں نسیم اب لگ سبک روحی مجھے حاصل نہیں
کس طرح اس غنچۂ بند قبا کوں وا کروں
کیا کہوں تجھ قد کی خوبی سرو عریاں کے حضور
خود بہ خود رسوا ہے اس کوں پھر کے کیا رسوا کروں
ہندوے زلف پری رو ہے پریشانی فروش
بیچ دیوے مجھ کوں سودے میں اگر سودا کروں
سنگ دل کے دل پہ ہووے نقش جیوں نقش نگیں
آہ کالے کر قلم جب درد کو انشاء کروں
سر کروں جب وصف تیرے جامۂ گلرنگ کے
جامہ زیباں کو برنگ صورت دیبا کروں
رات کوں آؤں اگر تیری گلی میں اے حبیب
زیور لب ذکر سُبحان الذی اسریٰ کروں
آرزو دل میں یہی ہے وقت مرنے کے ولیؔ
سرو قد کوں دیکھ سیر عالم بالا کروں
199
بھڑکے ہے دل کی آتش تجھ نیہ کی ہوا سوں
شعلہ نمط جلا دل تجھ حسن شعلہ زا سوں
گل کے چراغ گل ہو یک بار جھڑ پڑیں سب
مجھ آہ کی حکایت بولیں اگر صبا سوں
نکلی ہے جست کر کر ہر سنگ دل سوں آتش
چقماق جب پلک کی جھاڑا ہے توں ادا سوں
سجدہ بدل رکھے سر، سر تا قدم عرق ہو
تجھ با حیا کے پگ پر آکر حنا حیا سوں
یھاں درد ہے پرم کا بے ہودہ سر کہے مت
یہ بات سن ولیؔ کی جا کر کہو دوا سوں
200
میری طرف سوں جا کے کہو اس حبیب سوں
گر مجھ کوں چاہتا ہے تو مت مل رقیب سوں
مت خوف کر تو مجھ سوں اے دلدار مہرباں
آزار نئیں ہے گل کوں کبھو عندلیب سوں
مت راہ دے رقیب سیہ رو کوں اے صنم
واجب ہے احتراز بلائے مہیب سوں
پوچھو نکو طبیب کوں مجھ درد کا علاج
بیمار کوں برہ کے غرض نئیں طبیب سوں
اُس بے وفا کی طرز سوں شکوہ نہیں ولیؔ
ہے جنگ رات دیس مجھے مجھ نصیب سوں
201
تجھ مکھ کی جھلک دیکھ گئی جوت چندر سوں
تجھ مکھ پہ عرق دیکھ گئی آب گہر سوں
شرمندہ ہو تجھ مکھ کے دکھے بعد سکندر
بالفرض بناوے اگر آئینہ قمر سوں
تجھ زلف میں جو دل کہ گیا اس کوں خلاصی
نئیں صبح قیامت تلک اس شب کے سفر سوں
ہرچند کہ وحشت ہے تجھ انکھیاں ستی ظاہر
صد شکر کہ تجھ داغ کوں الفت ہے جگر سوں
اشرفؔ کا یو مصراع ولیؔ مجکوں ہے دل چسپ
الفت ہے دل و جاں کوں مرے پیم نگر سوں
202
باندھا ہے جو دل جگ منیں اس نور نظر سوں
دیکھا ہے وو دریا کوں اپس دیدۂ تر سوں
خوں ریزئ عشاق ہے موقوف اسی پر
شمشیر کوں باندھا جو کوئی موے کمر سوں
پتلی و نگہ سوں یو ترا غمزۂ خوں خوار
آیا دل عشاق طرف تیغ و سپر سوں
یک تل نہیں آرام مرے دل کو ترے باج
اے نور نظر دور نہ ہو میری نظر سوں
اُس لب کی حلاوت ہے ولیؔ طبع میں میری
یو شعر مرا جگ منیں میٹھا ہے شکر سوں
203
باندھا ہوں اپس جیو ترے موے کمر سوں
دیکھا ہوں اُسے جب ستی دقّت کی نظر سوں
پہنچی ہے مری فکر بلندی سوں فلک پر
تجھ قد کی جو تعریف کیا اس کے اثر سوں
ہے بسکہ ترے رنگ میں صافی و لطافت
لکھتا ہوں ترے وصف کوں میں آب گہر سوں
انکھیاں سوں ہوا پیو جدا جب ستی میری
جاتے ہیں مرے اشک گیا پیو جدھر سوں
تجھ ہجر میں دامان و گریبان و رُمالاں 
شاکی ہیں ہر اک رات مرے دیدۂ تر سوں
ہیں مغز میں پستے کی نمن تل کے سبب یوں
گویا یہ لباں لے کے گئے گوئے شکر سوں
پڑھتے ہیں ولیؔ شعر ترا عرش پہ قدسی
باہر ہے تری فکر رسا حدّ بشر سوں
204
جب سوں دل باندھا ہے ظالم تجھ نگہ کے تیر سوں
تب سوں رم نے رم کیا رمنے کے ہر نخچیر سوں
بے حقیقت گرم جوشی دل میں نئیں کرتی اثر
شمع روشن کیوں کے ہووے شعلۂ تصویر سوں
جگ میں اے خورشید و وو چرخ زن ہے ذرہ دار
جن نے دل باندھا ہے تیرے حسن عالم گیر سوں
اے پری تجھ قد کا دیوانہ ہوا ہے جب سوں سرو
پائے بند اس کوں کیے ہیں موج کی زنجیر سوں
خواب میں دیکھا جو تیرے سبزۂ خط کوں صنم
سبز بختوں میں ہوا اس خواب کی تعبیر سوں
جگ میں نئیں اہل ہنر اپنے ہنر سوں بہرہ یاب
کوہ کن کوں فیض کب پہنچا ہے جوئے شیر سوں
اے ولیؔ پی کا دہن ہے غنچۂ گلزار حسن
بوئے گل آتی ہے اس کی شوخیِ تقریر سوں
205
اے نور چشم تجھ پر نامہ لکھا پلک سوں
کیتا ہوں مہر اس پر انکھیا کی مردمک سوں
اے رشک مہر انور ٹک مہر سوں خبر لے
گزری ہے آہ میری تجھ غم میں نُہ فلک سوں
اہل چمن کے دل میں بے قدر ہے صنوبر
باندھے ہیں جب ستی جیو تجھ سرو کی لٹک سوں
اُس وقت ہوش عاشق ثابت قدم رہے کیوں
سلطان حسن آوے جب ناز کی کٹک سوں
اے آفتاب طلعت مانند مہ ولیؔ کا
روشن ہوا ہے سینہ تجھ حسن کی جھلک سوں
206
ہوا ہے دنگ بنگالہ تری نرگس کے جادو سوں
معطر ہے سواد ہند تیری زلف کی بو سوں
قسم تیرے تغافل کی کہ نرگس کی قلم لے کر
تری انکھیاں کے جادو کوں لکھا ہوں خون آہو سوں
کیا ہے مصرع برجستۂ قوس قزح موزوں
فلک مضمون رنگیں لے گیا تجھ بیت ابرو سوں
سخن میرا ہوا ہے تب سوں بالا ہر سخن اوپر
لگا ہے دھیان میرا جب ستی اس سرو دل جو سوں
ہوا تجھ حسن پر دو جگ دوانہ گر تعجب نئیں
اگر مجھ سے دوانے کا بندھا دل تجھ پری رو سوں
مجھے گلشن طرف جانا بجا ہے اے مہِ انور
کہ میں پاتا ہوں تجھ زلفاں کی بو ہر رات شبّو سوں
ولیؔ ہر شعر سوں میرے نزاکت جلوہ پیرا ہے
بجا ہے گر لکھوں اس مو کمر کوں خامۂ مُو سوں
207
آتا ہے جب چمن میں توں زریں کلاہ سوں
اُٹھتی ہے فوج حسن تری جلوہ گاہ سوں
بزم ادا و نازکوں وہ شوخ نازنیں
خوش بو کیا ہے عنبر موج نگاہ سوں
بے جا نہیں ہے رخ پہ مرے رنگ اضطراب
باندھا ہوں دل کوں آہوے وحشت پناہ سوں
پروانہ وار عشق میں تیرے جو جیو دیا
اس کا کفن ہے رشتۂ شمع نگاہ سوں
حاجت نہیں چراغ کی تجھ گھر میں اے ولیؔ
روشن ہے بزم عشق تری شمع آہ سوں
208
کیتا ہوں بند دل کوں اس غیرت پری سوں
جن نے کیا ہے مجنوں عالم کوں دلبری سوں
رکھتا ہے عاشقاں سوں بازار حسن گرمی
ہر چیز کی جہاں میں ہے قدر مشتری سوں
عاشق سوں جا کے پوچھو معشوق کی حقیقت
مخفی نہیں ہے خوبی جوہر کی جوہری سوں
جن نے رقم کیا ہے تعریف تجھ نیَن کی
معنی میں کیوں نہ ہووے ہم چشم عبہری سوں
دل دار کی گلی سوں کیوں جا سکوں ولیؔ میں
لیتا لپیٹ دل کوں جب چیرۂ زری سوں
209
جا لیا تمام نس مجھ اس طبع آتشی سوں
اب صبح دم ہے دم لے اے شمع سرکشی سوں
دل داشت کرسکے تو یہ دل لجا اپس سنگ
گر دل کُشی پہ دل ہے تو کیا ہے دل کشی سوں
عاشق کے دیکھنے سوں لاتا ہے چیں جبیں پر
اے خوش ادا میں خوش ہوں تیری یہ ناخوشی سوں
اے پستہ لب ترے لب ہیں کان سب نمک کے
کر بہرہ مند مجکوں اس کی نمک چشی سوں
دنیا کے غل و غش سوں فارغ رہوں ولیؔ میں
یک جام گر ملے مجھ صہبائے بے غشی سوں
210
سیہ روئی نہ لیجا حشر میں دنیائے فانی سوں
سہ نامے کوں دھو اے بے خر انجھواں کے پانی سوں
شب غم روز عشرت سوں بدل ہووے اگر دیکھے
تری جانب وو مہر ذرہ پرور مہربانی سوں
نزک جاناں کے گر تحفہ لجانا ہے تو اے ناداں
لجا گل دستۂ اعمال باغِ زندگانی سوں
نہیں ہے سیر یک ساعت اگر ملک جوانی میں
کہو کیا خضر کوں حاصل ہے ملک جاودانی سوں
اپس کے سر پہ مارا کوہ کن نے تیشۂ غیرت
ہوا جب خسروِ عالم ولیؔ شیریں زبانی سوں
211
میری طرف سوں جا کہو اُس ماہ عالم تاب کوں
یک رات فرش خواب کر مجھ دیدۂ کم خواب کوں
اپنے دل پُرخوں کوں میں لایا ہوں تیرے پیش کش
خرچ گر درکار ہے اطلس تجھے سنجاب کوں
گر عشق میں آیا ہے تو اے دل، گریباں پارہ کر
لیتے ہیں اس بازار میں بے تابیِ سیماب کوں
میرے دل گم نام کی کیا قدر بوجھے بے خبر
ہے دلبراں کَن اعتبار اس گوہر نایاب کوں
مجھ دل کوں سرگرداں کیا ساغر نمن اس شوخ نے
جس کی زلف کے پیچ نے چکر دیا گرداب کوں
صافی دلاں کَن بیٹھنا ہے کسب عزت کا سبب
دریا کا ہوکر ہم نشیں پہنچا ہے موتی آب کوں
تجھ یاد میں انجھواں ستی لبریز ہیں چشم ولیؔ
یک بار دیکھ اے سبز خط اس چشمۂ سیراب کوں
212
تشنگی اپنی نہیں کہتا کسی بے آب کوں
جیوں گہر رکھتا ہے دائم جو گرہ میں آب کوں
اضطراب دل گیا ہے اس کے مکھ کوں دیکھ کر
بے قراری سوں نکالے آرسی سیماب کوں
اشک ریزاں مثل انجم صبح محشر لگ رہا
جن نے دیکھا یک نظر اس ماہ عالم تاب کوں
تجھ بھواں کے خم کوں دیکھا جب ستی اے قبلہ رو
رات دن رکھتا ہے زاہد مکھ اَگے محراب کوں
اے ولیؔ پی کی محبت سوں زمیں کے فرش پر
آنکھ بھر دیکھا نہیں کُئی غیر مخمل خواب کوں
213
خدایا ملا صاحب درد کوں
کہ میرا کہے درد بے درد کوں
کرے غم سوں صد برگ صد پارہ دل
دکھاؤں اگر چہرۂ زرد کوں
ہٹا بوالہوس تجھ بھواں دیکھ کر
کہاں تاب شمشیر نامرد کوں
اگر جل میں جل کر کنول خاک ہو
نہ پہنچے ترے پانوں کی گرد کوں
لکھا تجھ دہن کی صفت میں ولیؔ
ہر ایک فرد میں جوہر فرد کوں
214
دیکھا ہے جن نے اے صنم تجھ طرّۂ طرار کوں
رکھتا ہے سینہ بر منیں جیوں شمع سوز نار کوں
جیوں زخم اُس کی چشم سوں جاری ہے خوں ہردم منیں
دیکھا ہے جو کُئی یک نگہ تجھ ناز کی تلوار کوں
تیری پرت کے پنتھ میں اے دراوے درماندگاں
بخشے ہیں عاصا آہ کا تجھ چشم کے بیمار کوں
اے سرگروہ سرکشاں لایا ہے نسّاجِ فلک
خط شعاعی سوں بُنا تجھ چیرۂ زر تار کوں
ہر استخواں سینے کا ہے مانند نَے فریاد میں
رکھتا ہوں دائم بر منیں تجھ غم کے موسیقار کوں
دیکھا ہے جب سوں آنکھ بھر تجھ مکھ کوں اے رشک چمن
چھوڑاں ہیں تب سوں بلبلاں عشق گلِ گل زار کوں
جیوں معنیِ رنگیں ولیؔ ہو مہرباں مجھ حال پر
وو صاحب معنی سُنے میرے اگر اشعار کوں
215
دیتا نہیں ہے بار رقیب شریر کوں
شاید کہ بوجھتا ہے ہمارے ضمیر کوں
اس نازنیں کی طبع گر آوے خیال میں
بوجھوں صدائے صور قلم کی صریر کوں
برجا ہے اس کوں عشق کے گوشے منیں قرار
جو پیچ و تابِ دل سوں بچھاوے حصیر کوں
اس کے قدم کی خاک میں ہے حشر کی نجات
عشاق کے کفن میں رکھو اس عبیر کوں
مجھ کوں ولیؔ کی طبع کی صافی کی ہے قسم
دیکھا نہیں ہوں جگ میں سجن تجھ نظیر کوں
216
میں دل کو دیا بند کر اس سحر بچن کوں
عشاق جسے دیکھ بسارے ہیں وطن کوں
عنقا ہے سخن اس کا سخن فہم کے نزدیک
رکھتا ہے جو کوئی یاد میں اس غنچہ دہن کوں
و اللہ کہ صادق ہے وہ عشاق کی صف میں
جو صبح نمن سرسوں لپیٹا ہے کفن کوں
اس شوخ نے دکھلا کے اپس رنگ کی خوبی
لوہو میں کیا غرق جو انانِ چمن کوں
ثابت رہے کیوں رنگ ولیؔ اس کا جہاں میں
دیکھا ہے جو دلدار کی زلفاں کی شکن کوں
217
نئیں معلوم ہوتا، داغ دینے کس بچارے کوں
چلا ہے آج یو لالہ ہزارے کے نظارے کوں
لیا ہے گھیر تجھ زلفاں نے تیرے کان کا موتی
مگر یہ ہند کا لشکر لگا ہے آ ستارے کوں
ہر اک احوال میں دلبر نظر میں خوب آتا ہے
لباس خوب کی حاجت نہیں حق کے سنوارے کوں
یہی ہے آرزو دل میں کہ صاحب درد کُئی جاکر
ہمارے درد کی باتاں کہے اس پی پیارے کوں
کمر سوں نئیں جدا ہوتی نظر اس شوخ چنچل کی
ولیؔ آخر کیا ہے صید چیتے نے چکارے کوں
218
دیکھوں گا شتابی ستی اس رشک پری کوں
گر کچھ بھی اثر ہے مری آہ سحری کوں
اے شوخ ترے ملنے کوں انکھیاں کے اُپر رکھ
لایا ہوں تری نذر عقیق جگری کوں
انجن کوں لگا سحر کے غائب ہووے ساحر
دیکھے جو تری نین کی جادو نظری کوں
اے حیلۂ گر رندی تری حیلہ گری دیکھ
سب حیلہ گراں ترک کیے حیلہ گری کوں
یک بارگی ہوتا ہے ولیؔ زر کے نمن زرد
جب باندھ کے آتا ہے تو دستار زری کوں
219
دیکھے گا ہر اک آن تری جلوہ گری کوں
پایا ہے تری مہر سوں جو دیدہ وری کوں
بخشا ہے تری نین نے کیفیت مستی
تجھ مکھ نے خبردار کیا بے خبری کوں
جاری ہوا تجھ غم ستی مجھ اشک کا مطلب
ہم دانہ وہم آب ملا اس سفری کوں
مجھ عاشق دیوانہ کوں گر حکم ہو تیرا
تجھ حور اَگے فرش کروں آج پری کوں
ہر گل کا سِنَہ چاک ہو سن درد کوں میرے
گلشن کی طرف بھیجوں گر آہ سحری کوں
کھا پیچ ڈُبے شرم سوں مغرب منیں سورج
گر دیکھے ترے سیس پہ دستار زری کوں
کرتا ہے ولیؔ سحر سدا شعر کے فن میں
تجھ نین سوں سیکھا ہے مگر جادوگری کوں
220
ہرگز تو نہ لے ساتھ رقیب دغلی کوں
مت راہ دے خلوت منیں ایسے خللی کوں
تیرے لب یاقوت اُپر خطِّ خفی دیکھ
خطاّط جہاں نسخ کیے خطِّ جلی کوں
اے زہرہ جبیں کِشن ترے مکھ کی کلی دیکھ
گاتا ہے ہر اک صبح میں اُٹھ رام کلی کوں
یاقوت کوں ہے قوت ترے خط کی محبت
ہے دل میں غبار اس کے سبب میرعلی کوں
اے ماہِ جبیں مہر لقا تیری جبیں پر
کرتا ہوں ہر اک دم منیں دم نادِ علی کوں
میں دل کوں ترے ہاتھ دیا روزِ ازل سوں
مت دل سوں بسار اپنے محب ازَلی کوں
نئیں منصب و جاگیر نہیں روز وظیفہ
ہر روز ترا نام وظیفہ ہے ولیؔ کوں
221
ہوا ہے رشک چنپے کی کلی کوں
نظر کر تجھ قبائے صندلی کوں
کرے فردوس استقبال اس کا
تصوّر جو کیا تیری گلی کوں
دلِ بے تاب نے تجھ غم کی خاطر
کیا ہے فرش خواب مخملی کوں
ہماری آہ آتش رنگ سن کر
ہوئی ہے بے قراری بیجلی کوں
ترے غم میں دل سوراخ سوراخ
کیا پیدا صدائے بانسلی کوں
دل پُرخوں نے میرے باغ میں جا
دیا تعلیم خوں خواری کلی کوں
کیا ہوں آب خجلت سوں سراپا
ہر اک مصرع سوں مصری کی ڈلی کوں
پڑے سن کر اُچھل جیوں مصرعِ برق
اگر مصرع لکھوں ناصرعلی کوں
ترے اشعار ایسے نئیں فراقیؔ
کہ جس پر رشک آوے گا ولیؔ کوں
222
جو کوئی سمجھا نہیں اُس مکھ پہ آنچل کے معانی کوں
وو کیوں بوجھے کہو اس شوخ چنچل کے معانی کوں
کریں کے بحث اس انکھیاں کے جادو کے سحر سازاں
نہ پہنچے کوئی باریکی میں کاجل کے معانی کوں
وو یوسف کوں کہے ثانی سو اس بے مثل کا کیوں کر
وو بیں کر جوکہ سمجھا چشم احول کے معانی کوں
نہ نکلے بحر حیرت سوں جو ہو اس مکھ کا ہم زانو
یہ بوجھے وو جو پہنچا ہے سجنجل کے معانی کوں
صفائی دیکھ اُس کے مکھ کی ہے بے ہوش سر تا پا
یہی تحقیق سمجھو خواب مخمل کے معانی کوں
بیاں زلف بدیعی کا ہے سعد الدین کا مطلب
اَجھوں لگ تم نہیں سمجھے مطوّل کے معانی کوں
ولیؔ اس ماہ کامل کی حقیقت جو نہیں سمجھا
وو ہرگز نئیں بُجھا عالم میں اکمل کے معانی کوں
223
فدائے دلبر رنگیں ادا ہوں
شہید شاہد گل گوں قبا ہوں
ہر اک مہ رو کے ملنے کا نئیں ذوق
سخن کے آشنا کا آشنا ہوں
کیا ہوں ترک نرگس کا تماشا
طلب گار نگاہ باحیا ہوں
نہ کر شمشاد کی تعریف مجھ پاس
کہ میں اس سرو قد کا مبتلا ہوں
کیا میں عرض اس خورشید رو سوں
تو شاہ حسن میں تیرا گدا ہوں
قدم پر اس کے رکھتا ہوں سدا سر
ولیؔ ہم مشرب رنگ حنا ہوں
224
میں سورۂ اخلاص ترے رو سوں لکھا ہوں
بسم اللہ دیوان تجھ ابرو سوں لکھا ہوں
تجھ چشم کی تعریف کوں آہو کے نَین پر
اکثر قلمِ نرگسِ جادو سوں لکھا ہوں
اے موئے میاں وصف ترے موئے میاں کے
چیتے کی کمر پر قلمِ مو سوں لکھا ہوں
تجھ طرّۂ طراّر کی تعریف کوں اے شوخ
سنبل کے چمن میں گل شبّو سوں لکھا ہوں
اس مردمک چشم طرف حال ولیؔ کا
پلکاں کی قلم کر اَپس انجھو سوں لکھا ہوں
225
تصویر تری جان مصفّا پہ لکھا ہوں
یہ نقش پری پردۂ مینا پہ لکھا ہوں
مجھ عاشق یک رنگ سوں دو رنگ ہوا توں
تیری یہ دو رنگی گل رعنا پہ لکھا ہوں
تجھ سنبل پر پیچ کی خوبی میں کتک سطر
موجاں کی نمن صفحۂ دریا پہ لکھا ہوں
یک تل نہیں آرام ترے تل کے سبب مجھ
یو صورت تل دل کے سویدا پہ لکھا ہوں
فرہاد لکھا صورت معشوق حجر پر
میں صورت دلبر دل شیدا پہ لکھا ہوں
ہرگز نہ کیا نرم صنم دل کوں اپس کے
یہ سنگ دلی تختۂ خارا پہ لکھا ہوں
اے مردمک چشم تجھ انکھیاں کی یہ لالی
نرگس کے قلم سوں گل لالہ پہ لکھا ہوں
اعجاز ترے اس خط روشن کا سری جن
جیوں خط شعاعی ید بیضا پہ لکھا ہوں
پیتم نے قدم رنجہ کیا میری طرف آج
یہ نقش قدم صفحۂ سیما پہ لکھا ہوں
تجھ عشق میں دیکھا ہے یہ دل وسعتِ منزل
یہ حالتِ دل دامن صحرا پہ لکھا ہوں
اے آہ بلندی تجھے اُس قد کے سبب ہے
تنخواہ تری عالمِ بالا پہ لکھا ہوں
تجھ نرگس مخمور کی کیفیّت مستی
اکثر خط ساغر ستی صہبا پہ لکھا ہوں
اس کے دہن تنگ کی تعریف کا نکتہ
صنعت سوں ولیؔ دیدۂ عنقا پہ لکھا ہوں
226
میں عاشقی میں تب سوں افسانہ ہو رہا ہوں
تیری نگہ کا جب سوں دیوانہ ہو رہا ہوں
اے آشنا کرم سوں یک بار آ درس دے
تجھ باج سب جہاں سوں بیگانہ ہو رہا ہوں
باتاں لگن کی مت پوچھ اے شمع بزم خوبی
مدّت سے تجھ جھلک کا پروانہ ہو رہا ہوں
شاید وو گنج خوبی آوے کسی طرف سوں
اس واسطے سراپا ویرانہ ہو رہا ہوں
سودائے زلف خوباں رکھتا ہوں دل میں دائم
زنجیر عاشقی کا دیوانہ ہو رہا ہوں
برجا ہے گر سنوں نئیں ناصح تری نصیحت
میں جام عشق پی کر مستانہ ہو رہا ہوں
کس سوں ولیؔ اپس کا احوال جا کہوں میں
سر تا قدم میں غم سوں غم خانہ ہو رہا ہوں
227
باطن کی گر مدد ہو اسے یار کر رکھوں
اپنے سخن کا اس کوں خریدار کر رکھوں
اس کی ادا و نازکی خوبی کوں کر بیاں
ہر خوب رو کوں صورت دیوار کر رکھوں
لائق ہے گر وو شوخ کہے اپنے فخر میں
آوے اگر پری تو پرستار کر رکھوں
برجا ہے گر چمن میں کہے وو نگاہ کر
نرگس کوں اپنی چشم کا بیمار کر رکھوں
تسبیح تیری زلف کوں کہتی ہے اے صنم
یک تاردے کہ رشتۂ زنار کر رکھوں
تیرے خیال آنے کی پاؤں اگر خبر
سینے کوں داغِ عشق سوں گلزار کر رکھوں
ایسے نصیب میرے کہاں ہیں ولیؔ کہ آج
اُس گل بدن کوں اپنے گلے ہار کر رکھوں
228
صدق ہے آب و رنگِ گلشنِ دیں
پاک بازی ہے شمع راہ یقیں
خوشہ چینِ جمال جاناں ہیں
خرمن ماہ و خوشۂ پرویں
ہے ترے لب سوں اے شکر گفتار
بات کہنا نبات سوں شیریں
قد سوں تیرے عیاں ہے اے جاناں
صورت ناز و معنی تمکیں
بسکہ رویا ہوں یاد کر کے تجھے
چشم میری ہے دامن گل چیں
زلف تیری ہے اے وفا دشمن
دشمنِ دین و دشمنِ آئیں
اے ولیؔ تب نہاں ہو لیلِ فراق
جب عیاں ہو وو آفتاب جبیں
229
آوے اگر وو شوخ ستم گر عتاب میں
جرأت جواب کی نہ رہے آفتاب میں
یک جام میں وو جگ کو کرے مست و بے خبر
تیری نین کا عکس پڑے گر شراب میں
رخسار دل ربا کا صفا کیا بیاں کروں
مخمل نے اس صفا کوں نہ دیکھا ہے خواب میں
تجھ حسن شعلہ زار کی تعریف رشک سوں
سننے کی تاب آج نہیں آفتاب میں
طاقت نہیں کہ تیری ادا کا بیاں لکھے
ہے گرچہ بے نظیر عطارد حساب میں
تجھ زلف حلقہ دار سوں مانند عاشقاں
گرداب و موج مل کے پڑے پیچ و تاب میں
تجھ حسن آبدار کی تعریف کیا کہوں
موتی ہوا ہے غرق تجھے دیکھ آب میں
تیری نگاہ مست، کہ ہے جام بے خودی
رکھتی ہے کیفیّت کہ نہیں وو شراب میں
تیری بھواں کے رتبۂ عالی کوں کر نظر
برجا ہے گر ہلال چلے تجھ رکاب میں
رکھتے ہیں اس سوں گلبدناں رغبتِ تمام
شاید کہ تجھ عرق کا اثر ہے گلاب میں
اے دل شتاب چل کہ تماشے کی بات ہے
بیٹھا ہے آفتاب نکل ماہتاب میں
ملنا بجا نہیں ہے مخالف سوں ایک آن
اس تان کو بجاوے ربابی رباب میں
میرے دل برشتہ میں محشر کا شور ہے
ہے تجھ نمک کا شاید اثر اس کباب میں
آوے وو نو بہار اگر بر سرِ سخن
طوطی کوں لاجواب کرے یک جواب میں
ہرگز نہیں ہے خشت سوں فرق اس کوں اے ولیؔ
خوش طلعتاں کی بات نہیں جس کتاب میں
230
ہے بس کہ آب و رنگ حیا کھیم داس میں
آتا نہیں کسی کے خیال و قیاس میں
ہے اُس کے مکھ سوں جلوہ نما موج آب و تاب
موتی کے مثل گرچہ ہے سادہ لباس میں
ق
بیراگیوں کے پنتھ میں آکر وو مہ جبیں
بیراگ کوں اُٹھا کے چڑھایا اَکاس میں
لگتا ہے اُس گروہ میں وو سرو نازنیں
گویا گلِ گلاب کیا جلوہ گھاس میں
اس کی بھواں کوں بوجھ کے شمشیر آبدار
اہل ہوس کی عقل ہے دائم ہراس میں
آوے فلک سوں زہرہ اُتر گر وو مہ جبیں
یک تان گاوے رام کلی یا بھباس میں
جاتا ہوں باغ یاد میں اس چشم کے ولیؔ
شاید کہ بوے اُس کی ہو نرگس کی باس میں
231
دیکھا ہے جن بنودؔ کوں اکرمؔ کے باغ میں
پہنچی ہے بوے عشق کی اس کے دماغ میں
کھویا ہے تجھ نگاہ نے عالم کے ہوش کوں
گردش عجب ہے تیری انکھیاں کے ایاغ میں
تجھ لب کا آب و رنگ جو کچھ خط سوں ہے عیاں
ہرگز وو آب و رنگ نہیں شب چراغ میں
تجھ شوق کی اگن سوں سِنہ جل گیا تمام
فی الجملہ اس کا رنگ ہے لالے کے داغ میں
تجھ وصل کے خیال سوں غافل نئیں ولیؔ
رہتا ہے رات دیس اسی کے سراغ میں
رکھتا ہوں شمع آہ سجن کے فراق میں
حاجت نہیں چراغ کی میرے رواق میں
آب حیات وصل سوں سینے کو سرد کر
جلتا ہوں رات دیس پیا تجھ فراق میں
سن کر خبر صبا سوں گریباں کوں چاک کر
نکلے ہیں گل چمن سوں ترے اشتیاق میں
اے دل عقیق لب کے یہ آے ہیں مشتری
موتی نہ بوجھ زہرہ جبیں کے بُلاق میں
تیرے سخن کے نغمۂ رنگیں کوں سن ولیؔ
ڈوبا عرق کے بیچ عراقیؔ عراق میں
233
جب تک نہ دیکھا تھا تجھے دل بند تھا اوراق میں
تیری بھواں کوں دیکھ کر جزدان چھوڑا طاق میں
مشرق سوں مغرب لگ سدا پھرتا ہے ہرہر گھر ولے
اب لگ سُرج دیکھا نہیں ثانی ترا آفاق میں
دل مستِ جام بے خودی اُس انجمن میں کیوں نہ ہو
جیوں موج مَے ہے ہر ادا ساقیِ سیمیں ساق میں
تیرے دہن کوں دیکھ کر اے نو بہار عاشقاں
جیوں غنچۂ گل ہر سحر جاتا ہوں استغراق میں
اے صبح تجھ کوں نئیں خبر اس مطلع انوار کی
ہرچند عالم گیر ہے تو حکمت اشراق میں
آیا ہے جب سوں دید میں وو نور چشم عاشقاں
جیوں نور بستا ہے سَدا مجھ دیدۂ مشتاق میں
تیری تواضع دیکھ کر بر جا ہے اے جانِ ولیؔ
گر بوعلی سینا لکھے دفتر ترے اخلاق میں
234
تجھ عشق کی اگن سوں سجن جل گیا ہوں میں
تیری گلی کی خاک میں جا رَل گیا ہوں میں
تجھ سوز میں جلا ہے جو دل شمع کی نمن
پروانہ ہو کے اس کے اُپر بَل گیا ہوں میں
اے آفتاب دیکھ ترے مکھ کی روشنی
بے تاب ہو کے مہ کے نمن گل گیا ہوں میں
یہ پھر کے دیکھنا ترا مجھ دل پہ گھات ہے
تیری نگہ کے رمز کوں اٹکل گیا ہوں میں
تجھ دل کا دیکھ سوز اَدِھک اے ولیؔ مدام
بولا پتنگ ہاتھ کوں یاں مل گیا ہوں میں
235
ہوا تو خسرو عالم سجن! شیریں مقالی میں
عیاں ہیں بدر کے معنی تری صاحب کمالی میں
جو کیفیت سیہ مستی کی تجھ انکھیاں میں ہے ظالم
نہیں وو رنگ وو مستی شراب پرتگالی میں
تری زلفاں کے حلقے میں اَہے یوں نقش رخ روشن
کہ جیسے ہند کے بھیتر لگیں دیوے دِوالی میں
اگرچہ ہر سخن تیرا ہے آب خضر سوں شیریں
ولے لذت نرالی ہے پیا تجھ لب کی گالی میں
کہو اس نور چشم و پستہ لب کوں آشنائی سوں
کہ جیوں بادام کے وو مغز ہوویں یک نہالی میں
نظر میں نئیں ہے مردوں کی صلابت اہل زینت کی
نئیں دیکھا کوئی رنگ شجاعت شیرقالی میں
ولیؔ کے ہر سخن کا وو ہوا ہے مو بہ مو خواہاں
جو کُئی پایا ہے لذت تجھ بھواں کے شعر حالی میں
236
چھپا ہوں میں صد اے بانسلی میں
کہ تا جاؤں پری رو کی گلی میں
نہ تھی طاقت مجھے آنے کی لیکن
بزور آہ پہنچا تجھ گلی میں
عیاں ہے رنگ کی شوخی سوں اے شوخ
بدن تیرا قباے صندلی میں
جو ہے تیرے دہن میں رنگ و خوبی
کہاں یہ رنگ، یہ خوبی کلی میں
کیا جیوں لفظ میں معنی، سری جن
مقام اپنا دل و جان ولیؔ میں
237
دل نے تسخیر کیا شوخ کوں حیرانی میں
آرسی شہرۂ عالم ہے پری خوانی میں
خط کے آنے نے خبردار کیا گل رو کوں
نشۂ ہوش ہے اِس بادۂ ریحانی میں
جوہر آئینہ تجھ خط کی سُنا جب سوں خبر
موجِ گوہر کی نمن غرق ہوا پانی میں
خط کا آخر کوں ہوا رخ پہ پری رو کے گزر
مور کوں راہ ملی ملک سلیمانی میں
دل بے تاب کہ اک آن نہیں اس کوں قرار
زلف دلدار سوں ہمسر ہے پریشانی میں
گل رخاں بات اَپس دل کی مجھے کہتے ہیں
بسکہ ہوں شہرۂ آفاق سخن دانی میں
جُر ولی بات اپس دل کی کسی پاس نہ کہہ
راہ ہر دل کو نہیں مطلب پنہانی میں
238
سحر پرداز ہیں پیا کے نین
ہوش دشمن ہیں خوش ادا کے نین
اے دل اس کے آگے سنبھل کے جا
تیغ بر کف ہیں میرزا کے نین
دل ہوا آج مجھ سوں بے گانہ
دیکھ اس رمز آشنا کے نین
جگ میں اپنا نظیر رکھتے نہیں
دلبری میں وو دل ربا کے نین
نرگسستاں کوں دیکھنے مت جا
دیکھ اس نرگسی قبا کے نین
وو ہے گل زار آبرو کا گل
حق نے جس کو دیئے حیا کے نین
اے ولی کس اَگے کروں فریاد
ظلم کرتے ہیں بے وفا کے نین
239
فرش گر عاشق کریں تجھ راہ میں اپنے نَین
تو نزاکت سوں رکھے نا اُس اُپر اپنے چرن
تجھ لباں کے لعل کی خوبی کا کیا بولوں بیاں
چشم عاشق جس سوں ہیں کان بدخشاں و یمن
خط کے تئیں رحل زمرد مکھ کوں تیرے اہل فضل
مصحف گل بول کر کرسی پہ بٹھلایا سخن
شمع لے انگشت حیرت منھ میں سرتا پا جلی
جب اَپس کے مکھ سوں تو روشن کیا ہے انجمن
پھول کی پکھری پہ جیوں مارا ہے چنگل رنگ نے
دل نے تیوں پکڑا ہے تیرا دامن اے گل پیرہن
منھ پہ شیریں، دل میں سنگیں، حال معشوقاں کا دیکھ
کیوں نہ مارے غم سوں تیشہ سر پر اپنے کوہ کن
اے ولیؔ اس کی گلی دل یاد کرتا ہے مُدام
کیوں کرے نئیں یاد، ہے ایمان الحب الوطن
240
باندھا ہے جب سوں شوخ بے خنجر کمر منیں
سب گل رخاں کے جیو پڑے ہیں خطر منیں
جو آب و رنگ تیرے سخن میں ہے اے سجن
ہرگز وو آب و رنگ نہیں ہے گہر منیں
ہر وقت طبع راغب شربت ہے اے صنم
شاید ترے لباں کا اثر ہے شکر منیں
جمعیت آسماں سوں، توقع بجا نہیں
ہیں آفتاب و ماہ ہمیشہ سفر منیں
قوسِ قزح کا مصرع ثانی ہو اے ولیؔ
تعریف اُس بھواں کی لکھوں جس سطر منیں
241
خوش قداں دل کوں بند کرتے ہیں
ق
نام اپنا بلند کرتے ہیں
اپنے شیریں سخن کوں دے کے رواج
سرد بازار قند کرتے ہیں
جس کوں بے تاب دیکھتے ہیں اُسے
اپنے اوپر سپند کرتے ہیں
بند کرنے کوں عاشقاں کے سدا
زلف اپنی کمند کرتے ہیں
اے ولیؔ جو کہ ہیں بلند خیال
شعر میرا پسند کرتے ہیں
242
خوب رو خوب کام کرتے ہیں
یک نگہ میں غلام کرتے ہیں
دیکھ خوباں کوں وقت ملنے کے
کس ادا سوں سلام کرتے ہیں
کیا وفادار ہیں کہ ملنے میں
دل سوں سب رام رام کرتے ہیں
کم نگاہی سوں دیکھتے ہیں ولے
کام اپنا تمام کرتے ہیں
کھولتے ہیں جب اپنی زلفاں کوں
صبح عاشق کوں شام کرتے ہیں
صاحب لفظ اس کوں کہہ سکیے
جس سوں خوباں کلام کرتے ہیں
دل لجاتے ہیں اے ولیؔ میرا
سرو قد جب خرام کرتے ہیں
243
گل مقصد کے ہار ڈالے ہیں
نقد ہستی جو ہار ڈالے ہیں
کیوں نہ ہو راہ عشق نشتر زار
تیری پلکاں نے خار ڈالے ہیں
دیکھ اُس کے نین کے خنجر کوں
چشم آہوں کوں وار ڈالے ہیں
کیوں کے نکلے برہ کے کوچے سوں
زلف تیری نے مار ڈالے ہیں
اے ولیؔ شہر حسن کے اطراف
خط سوں اس کے حصار ڈالے ہیں
244
جو کہ تجھ پر نگاہ کر تا نئیں
وو اپس کی خودی بسر تا نئیں
کیوں کے ہو میری حُسن سوں تیرے
دھوپ کھانے سوں پیٹ بھرتا نئیں
پی کے لب سوں پیا جو آب حیات
دور آخر تلک وو مرتا نئیں
غیر تیرے خیال کے اے شوخ
دل میں میرے دوجا اُترتا نئیں
اے ولیؔ اس کے نقش عالی کوں
غیر مانی دوجا چتر تا نئیں
245
جو پی کے نام پاک پہ جی سوں فدا نئیں
راضی کسی طرح ستی اس پر خدا نئیں
اے نور جان و دیدہ ترے انتظار میں
مدت ہوئی پلک سوں پلک آشنا نئیں
عشاق مستحق ترحم ہیں اے عزیز
اُن کے غریب حال پہ سختی روا نئیں
ترشی اپس جبیں سوں نکال اے شکر بچن
عشاق پر غضب ہے یہ ناز و ادا نئیں
اے نور بہار حسن و گل باغ جان و دل
افسوس ہے کہ تجھ منیں رنگ وفا نئیں
ترک لباس بس کہ کیا ہوں جہاں منیں
تیری گلی کی خاک درا مجھ قبا نئیں
ڈالے اُکھاڑ کوہ کوں جیوں کاہ اے ولیؔ
عاشق کی آہ سرد کہ جس میں صدا نئیں
246
مجھے گلشن طرف جانا روا نئیں
اگر گلشن میں وو رنگیں ادا نئیں
بغیر از نقد جانِ پاک بازاں
متاع حسن کا دوجا بہا نئیں
کیا ہے عاشقاں کے خوں سوں رنگیں
کفِ خوں ریز پر رنگِ حنا نئیں
سنا ہوں تجھ نگاہ باحیا سوں
کہ ہرگز چشم نرگس میں حیا نئیں
تری زلفاں کے سنبل کا محرک
ہواے عشق بازاں ہے صبا نئیں
ترا قد دیکھ کر کہتی ہے قمری
کہ ہرگز سرو میں ایسی ادا نئیں
ترا مکھ دیکھنا ہے واجب العین
اداے فرض میں خوف و ریا نئیں
عجب ہے اے دُرِ دریاے خوبی
کہ دل تیرا مروت آشنا نئیں
ولیؔ گل رو کی دانش پر نظر کر
بہارِ حسن کوں چنداں بقا نئیں
247
مرا غم دفع کرنے کا وو عالی جاہ قاصد نئیں
تو آوے کیوں مرے نزدیک کچھ گمراہ قاصد نئیں
ہوا ہے مجھ کوں یو معلوم اس بے دست گاہی میں
کہ مجھ احوال پہنچانے کوں غیر از آہ قاصدنئیں
دوجے کو مطلع کرنا نہیں غیرت روا رکھتی
ہمن سے بے سروماں نزک اس راہ قاصد نئیں
جو میرے جان و دل کا حال ہے تجھ ہجر میں ساجن
تجھے وو حال پہنچانے کروں کیا آہ قاصد نئیں
بجز وجدانِ دلبر کُئی نہ پاوے حال عاشق کا
تو میرے راز کے نامے ستی آگاہ قاصد نئیں
نہ پاوے شاہد معنی اپس کوں جو کیا خالی
خبر یوسف کی پہنچانے کوں غیر از چاہ قاصد نئیں
ولیؔ کیوں کر لکھوں اس بے خبر کوں درد دل اپنا
لِجانے درد کے نامے کوں کُئی دل خواہ قاصد نئیں
248
سجن کے باج عالم میں دگر نئیں
ہمن میں ہے ولے ہم کو خبر نئیں
عجب ہمّت ہے اس کی جس کوں جگ میں
بغیر از یار دوجے پر نظر نئیں
نہ پاوے صندلِ راز الٰہی
جسے گرمی سوں دل کی درد سر نئیں
ہوا نئیں جب تلک خالی اپس سوں
گرفتاراں میں ہرگز معتبر نئیں
نہ دیویں راہ تجکو ملک دل میں
وفا کا جب تلک تجھ میں اثر نئیں
اپس کے مدعا کے آشیاں کوں
نہ پہنچے جب تلک ہمت کے پر نئیں
نہ پوچھو درد کی بے درد سوں بات
کہے کیا بے خبر جس کوں خبر نئیں
ہوا ہوں جیوں کماں خم زور غم سوں
سِنے میں تیر ہے آہ جگر نئیں
ولیؔ اس کی حقیقت کیوں کے بوجھوں
کہ جس کا بوجھنا حدِّ بشر نئیں
249
دیکھا ہے جن نے باغ میں اس سرو قد کے تئیں
طوبیٰ کی خوش قدی پہ سٹا دست رو کے تئیں
دل جا پڑا ہے جاہ زنخداں میں یک بیک
اے زلف یار پہنچ تو میری مدد کے تئیں
اے سرو تیرے قد سوں ہے نت عید عاشقاں
قرباں کیا ہوں تجھ پہ میں عمرِ ابد کے تئیں
ہیں دنگ آسماں پہ ملک جب کیا شکار
آہو نے تجھ نین کے فلک کے اسد کے تئیں
یاجوج ہو رقیب جب آیا سجن کے پاس
پیدا کیا حجاب سکندر کی سد کے تئیں
درکار نئیں ہے صافیِ دل کوں لباس زر
جیوں آرسی پسند کیا ہوں نمد کے تئیں
پی کے مشابہت کا دِسا نئیں مجھے ولیؔ
دیکھا ہوں آفتاب نمط چار حد کے تئیں
250
اے سامری تو دیکھ مری ساحری کے تئیں
شیشے میں دل کے بند کیا ہوں پری کے تئیں
اس زلف کے طلسم کوں دیکھا ہوں جب ستی
پایا ہوں تب سوں رشتۂ جادوگری کے تئیں
اُس گُن بھری چنچل نے لیا مکھ پہ جب اَنچل
قرباں کیا اپس پہ شہ خاوری کے تئیں
خورشید لے کے مکھ پر شفق شرم سوں چھپا
نکلا ہے جب وو پہن لباس زری کے تئیں
پیدا ہوا ہے جگ میں ولیؔ صاحب سخن
میری طرف سوں جا کے کہو انوریؔ کے تئیں
251
تجھ حسن نے دیا ہے بہار آرسی کے تئیں
بخشا ہے خال و خط نے نگار آرسی کے تئیں
روشن ہے بات یہ کہ اَول سادہ لوح تھی
بخشے ہیں اس کے منھ سوں سنگھار آرسی کے تئیں
خوبی منیں اَوَل سوں ہوئی ہے دو چند تر
جب سوں کیا صنم نے دو چار آرسی کے تئیں
حیرت کی انجمن میں وو حیرت فزا نے جا
ایک دید میں کیا ہے شکار آرسی کے تئیں
کس خط کے پیچ و تاب کوں دل میں رکھے کہ آج
جیوں آبجو نہیں ہے قرار آرسی کے تئیں
حیرت سوں آنکھ اپس کی نہ موندے حشر تلک
یک پل ہو اس نزک جو گزار آرسی کے تئیں
گر اس کے دیکھنے کی ولیؔ آرزو ہے تجھ
بیگی اپس کے دل کی سنوار آرسی کے تئیں

ردیف ’و‘
252
ہر رات اپس کے لطف و کرم سوں ملا کرو
ہر دن کوں عید بوجھ گلے سوں لگا کرو
وعدہ کیے تھے رات کہ آؤں گا صبح میں
اے مہربان وعدے کوں اپنے وفا کرو
حق تجھ سوں ہم کلام رکھے مجکوں رات دن
اس بات سوں مدام رقیباں جلا کرو
کب لگ رکھو گے طرز تغافل کوں دل منیں
ٹک کان دھر کے حال کسی کا سنا کرو
جب لگ ہے آسمان و زمیں جگ میں برقرار
جیوں پھول اس جہاں کے چمن میں ہنسا کرو
آیا ہوں احتیاج لے تم پاس اے صنم
اپنے لباں کے خضر سوں حاجت روا کرو
یک بات ہے ولیؔ کی سنو کان دھر سجن
میری انکھاں کے باغ میں دائم رہا کرو
253
چاہو کہ ہوش سرسوں اپس کے بدر کرو
یک بار اُس پری کی گلی میں گزر کرو
ہے قصّۂ دراز کے سننے کی آرزو
اُس زُلف تابدار کی تعریف سر کرو
بوجھو ہلال چرخ کوں ابروے پیر زال
اس کی بھواں کے خم پہ اگر ٹک نظر کرو
اس گل کے گر وصال کی ہے دل میں آرزو
شبنم نمن تمام انکھیاں اپنی تر کرو
اے دوستاں بہ تنگ ہوا ہوں میں ہوش سوں
پیتم کا نانوں لے کے مجھے بے خبر کرو
پہنچا ہے جس کے ہجر کی سختی سوں حال نزع
اُس بے خبر کوں حال سوں میرے خبر کرو
ہر شعر سوں ولیؔ کے عزیزاں بیاض میں
مسطر کے خط کوں رشتۂ سلک گہر کرو
254
وحشیِ ملک عدم کوں تمھیں تسخیر کرو
خون عنقا کے اگر رنگ سوں تصویر کرو
دل دیوانۂ عاشق کوں دوجے قید نہیں
زلف کی موج سوں اس پگ منیں زنجیر کرو
گرد خجلت کوں ندامت کے انجھو ساتھ ملاؤ
موردِ رحمت حق اس ستی تعمیر کرو
صفحۂ نین پہ پتلی کی سیاہی لے کر
نقطۂ خال کی تعریف کوں تحریر کرو
عشق کہتا ہے ولیؔ آ کے بآواز بلند
اے جواناں تمھیں سب درد کوں مل پیر کرو
255
چاہو کہ پی کے پگ تلے اپنا وطن کرو
اوّل اپس کوں عجز میں نقشِ چرن کرو
ہے گل رخاں کو ذوقِ تماشاے عاشقاں
داغاں ستی دلاں کوں اپس کے چمن کرو
ثابت ہو عاشقی میں جلا جو پتنگ وار
تارِ نگاہ شمع سوں اس کا کفن کرو
گر آرزو ہے دل میں ہم آغوشیِ صنم
انجھواں سوں اپنے سیج پہ فرش سمن کرو
چاہو کہ ہو ولیؔ کی نمن جگ میں دُور بیں
انکھیاں میں سرمہ پیو کی خاک چرن کرو
256
عالم کوں تیغ ناز سوں بے جاں نکو کرو
غمزے سوں اپنے غارت ایماں نکو کرو
جمعیت آرزو ہے فلاطوں کوں خم منیں
زلفاں دکھا کے اس کوں پریشاں نکو کرو
آئینۂ جمال منور کوں کر عیاں
خوبانِ خود پرست کوں حیراں نکو کرو
زاہد چلا ہے صورت محراب دیکھ کر
ابرو دکھا کے اس کوں پریشاں نکو کرو
ہے روز حشر، روز مکافات ہر عمل
ہر اک کوں قتل خنجر مژگاں نکو کرو
درکار ہے نثار کوں گوہر اے عاشقاں
انجھواں کو صرف گوشۂ داماں نکو کرو
مدّت سوں تجھ نگاہ کا مشتاق ہے ولیؔ
کن نے کہا غریب پر احسان نکو کرو
257
مت تمن انتظار ماہ کرو
ماہ رو کوں چراغ راہ کرو
سفر عشق کا اگر ہے خیال
ہمّت دل کوں زاد راہ کرو
مکھ دکھا وے گا یوسفِ معنی
دل سوں گر دیکھنے کی چاہ کرو
عاشقاں! عاشقی کے دعوے پر
آہ و زاری کوں دو گواہ کرو
گل و بلبل کا گرم ہے بازار
اس چمن میں جدھر نگاہ کرو
سرخ روئی ہے عاشقاں کی مدام
گر رقیباں کا رو سیاہ کرو
حال دل پر ولیؔ کے اے جاناں
نظرِ لطف گاہ گاہ کرو
258
صحبت غیر موں جایا نہ کرو
دردمنداں کوں کڑھایا نہ کرو
حق پرستی کا اگر دعویٰ ہے
بے گناہاں کوں ستایا نہ کرو
اپنی خوبی کے اگر طالب ہو
اپنے طالب کوں جلایا نہ کرو
ہے اگر خاطر عشاق عزیز
غیر کوں درس دکھایا نہ کرو
مجکوں ترشی کا ہے پرہیز صنم
چینِ ابرو کوں دکھایا نہ کرو
دل کوں ہوتی ہے سجن، بے تابی
زلف کوں ہاتھ لگایا نہ کرو
نگہِ تلخ سوں اپنی ظالم
زہر کا جام پلایا نہ کرو
ہم کوں برداشت نہیں غصّے کی
بے سبب غصّے میں آیا نہ کرو
پاک بازاں میں ہے مشہور ولیؔ
اس سوں چہرے کوں چھپایا نہ کرو
259
شوخی و ناز سوں عشاق کوں حیراں نہ کرو
گردش چشم کوں غارت گرِ ایماں نہ کرو
فکر جمعیت اپس دل میں کیے ہیں زہاد
زلف کوں کھول غریباں کوں پریشاں نہ کرو
عشق کا داغ ہے محتاج نمک کا دائم
لب دلدار بِنا اس کا نمک داں نہ کرو
تب تلک بوئے محبت کی نہ پاؤ ہرگز
جب تلک گل کی نمن چاک گریباں نہ کرو
لب تمھارے ہیں شفا بخش ولیؔ ہے بیمار
حیف صد حیف کہ اس وقت میں درماں نہ کرو
260
غفلت میں وقت اپنا نہ کھو ہشیار ہو ہشیار ہو
کب لگ رہے گا خواب میں بیدار ہو بیدار ہو
گر دیکھنا ہے مدعا اس شاہد معنی کار‘و
ظاہر پرستاں سوں سدا بیزار ہو بیزار ہو
جیوں چتر داغ عشق کوں رکھ سر پر اپنے اولاً
تب فوج اہل درد کا سردار ہو سردار ہو
وو نور چشم عاشقاں ہے جیوں سحر جگ میں عیاں
اے دیدہ وقتِ خواب نئیں بیدار ہو بیدار ہو
مطلع کا مصرع اے ولیؔ دردِ زباں کر رات دن
غفلت میں وقت اپنا نہ کھو ہشیار ہو ہشیار ہو
261
اے دل سدا اُس شمع پر پروانہ ہو پروانہ ہو
اس نو بہار حسن کا دیوانہ ہو دیوانہ ہو
اے یار گر منظور ہے تجھ آشنائی عشق کی
ہر آشنائے عقل سوں بے گانہ ہو بے گانہ ہو
میری طرف ساغر بکف آتا ہے وہ مستِ حیا
اے دل تکلف برطرف مستانہ ہو مستانہ ہو
اُس آشنائے گوش سوں ہونا ہے مجکو آشنا
دریاے دل میں اے سخن دُردانہ ہو دُردانہ ہو
میرے سخن کوں مہر سوں سنتا ہے وو رنگیں ادا
اے سرگزشت حال دل افسانہ ہو افسانہ ہو
چاہے کہ شاہ حُسن کوں لادے اپس کے حکم میں
ٹک عشق کے میدان میں مردانہ ہو مردانہ ہو
جاری رکھے گا کب تلک رسم جفا و جور کوں
اے معنیِ ہر جان و دل جانا نہ ہو جانا نہ ہو
مجکوں خمار ہجر سوں پیدا ہوا ہے دردِ سر
اے گردش چشم پری، پیمانہ ہو پیمانہ ہو
اس وقت پیتم کی نگہ کرتی ہے مشقِ دلبری
یہ آن غفلت کی نئیں فرزانہ ہو فرزانہ ہو
اے عقل کب لگ وہم سوں یک جا کرے گی خار و خس
آتا ہے سیلِ عاشقی ویرانہ ہو ویرانہ ہو
عالم میں تجکوں اے ولیؔ ہے فکرِ جمعیت اگر
ہر دم خیال یار سوں ہم خانہ ہو ہم خانہ ہو
262
نہ دیو آزار میرے دل کوں اے آرام جاں سمجھو
یہ خوبی کچھ سدا رہتی نئیں اے مہرباں سمجھو
کیا ہے پیچ و تاب عشق نے بے تاب مجھ دل کوں
ہوا ہوں موے سوں باریک اے نازک میاں سمجھو
تمھارے نین نے زخمی کیا تیر تغافل سوں
کرو گے کب تلک یہ ظلم اے ابرو کماں سمجھو
تمھاری خیر خواہی کا بیاں ہے مجھ زباں اوپر
یقیں ہے مہرباں ہو مجھ پہ گر میرا بیاں سمجھو
سخن کے آشنا سوں لطف رکھتا ہے سخن کہنا
ولیؔ سوں بات کرتا ہے بجا اے دوستاں سمجھو

ردیف ’ہ‘
263
سجن ٹک ناز سوں مجھ پاس آ آہستہ آہستہ
چھپی باتیں اپس دل کی سنا آہستہ آہستہ
غرض گویاں کی باتاں کوں نہ لا خاطر منیں ہرگز
سجن اس بات کوں خاطر میں لا آہستہ آہستہ
ہر اک بات سننے پر توجہ مت کر اے ظالم
رقیباں اس سیں ہوئیں گے جدا آہستہ آہستہ
مبادا محتسب بدمست سن کر تان میں آوے
طنبورہ آہ کا اے دل بجا آہستہ آہستہ
ولیؔ ہرگز اپس کے دل کوں سینے میں نہ رکھ غمگیں
کہ بر لاوے گا مطلب کوں خدا آہستہ آہستہ
264
کیا مجھ عشق نے ظالم کوں آب آہستہ آہستہ
کہ آتش گل کوں کرتی ہے گلاب آہستہ آہستہ
وفاداری نے دلبر کی بجھایا آتش غم کوں
کہ گرمی دفع کرتا ہے گلاب آہستہ آہستہ
عجب کچھ لطف رکھتا ہے شب خلوت میں گل رو سوں
خطاب آہستہ آہستہ جواب آہستہ آہستہ
مرے دل کوں کیا بے خود تری انکھیاں نے آخر کوں
کہ جیوں بے ہوش کرتی ہے شراب آہستہ آہستہ
ہوا تجھ عشق سوں اے آتشیں رو دل مرا پانی
کہ جیوں گلتا ہے آتش سوں گلاب آہستہ آہستہ
ادا و ناز سوں آتا ہے وو روشن جبیں گھر سوں
کہ جیوں مشرق سوں نکلے آفتاب آہستہ آہستہ
ولیؔ مجھ دل میں آتا ہے خیال یار بے پروا
کہ جیوں انکھیاں منیں آتا ہے خواب آہستہ آہستہ
265
ہوا ظاہر خط روئے نگار آہستہ آہستہ
کہ جیوں گلشن میں آتی ہے بہار آہستہ آہستہ
کیا ہوں رفتہ رفتہ رام اس کی چشم وحشی کوں
کہ جیوں آہو کوں کرتے ہیں شکار آہستہ آہستہ
جو اپنے تن کوں مثل جوئبار اول کیا پانی
ہوا اس سرو قد سوں ہم کنار آہستہ آہستہ
برنگ قطرۂ سیماب میرے دل کی جنبش سوں
ہوا ہے دل صنم کا بے قرار آہستہ آہستہ
اسے کہنا بجا ہے عشق کے گل زار کا بلبل
جو گل رویاں میں پایا اعتبار آہستہ آہستہ
مرا دل اشک ہو پہنچا ہے کوچے میں سریجن کے
گیا کعبے میں یہ کشتی سوار آہستہ آہستہ
ولیؔ مت حاسداں کی بات سوں دل کوں مکدر کر
کہ آخر دل سوں جاوے گا غبار آہستہ آہستہ
266
ہوئے ہیں رام پیتم کے نَین آہستہ آہستہ
کہ جیوں پھاندے میں آتے ہیں ہرن آہستہ آہستہ
مرا دل مثل پروانے کے تھا مشتاق جلنے کا
لگی اس شمع سوں آخر لگن آہستہ آہستہ
گریباں صبر کا مت چاک کر اے خاطر مسکیں
سنے گا بات وو شیریں بچن آہستہ آہستہ
گل و بلبل کا گلشن میں خلل ہووے تو برجا ہے
چمن میں جب چلے وو گل بدن آہستہ آہستہ
ولیؔ سینے میں میرے پنجۂ عشق ستم گر نے
کیا ہے چاک دل کا پیرہن آہستہ آہستہ
267
ترے غم میں مرے نیناں سوں گر جاری ہوں جیحوں اُٹھ
کریں تعظیم اس سیلِ انجھو کی کوہ و ہاموں اُٹھ
ترے قامت کی بالائی میں گر مصرع کروں موزوں
سرو قد سوں کرے تعظیم میری سر و موزوں اُٹھ
شکست فوج دل آساں ہے گر نیناں ترے ظالم
نگہ کی تیغ قاتل لے کریں شب کو سو شبخوں اُٹھ
اگر تجھ حسن کی شہرت سُنے اے غیرت لیلیٰ
عجب نئیں قبر میں سیں گر چلے رسوا ہو مجنوں اُٹھ
تری بیمار چشماں کی حقیقت کس پہ ظاہر نئیں
گیا ہے سُدھ بسر عالم کی عرصے سوں فلاطوں اُٹھ
ولیؔ تیری نگاہ مست کی تعریف گر بولے
تو استقبال کوں آویں ہزاراں چشم میگوں اُٹھ
268
آج دستا ہے حال کچھ کا کچھ
کیوں نہ گزرے خیال کچھ کا کچھ
دل بے دل کوں آج کرتی ہے
شوخ چنچل کی چال کچھ کا کچھ
مجکوں لگتا ہے اے پری پیکر
آج تیرا جمال کچھ کا کچھ
اثر بادۂ جوانی ہے
کر گیا ہوں سوال کچھ کا کچھ
اے ولیؔ دل کوں آج کرتی ہے
بوے باغ وصال کچھ کا کچھ
269
تجھ مکھ پہ جو اس خط کا اندازہ ہوا تازہ
اب حسن کے دیواں کا شیرازہ ہوا تازہ
پھولاں نے اپس کا رنگ ایثار کیا تجھ پر
تجھ مکھ پہ جب اے موہن یو غازہ ہوا تازہ
اس حسن کے عالم میں تو شہرۂ عالم ہے
ہر مکھ سوں ترا جگ میں آوازہ ہوا تازہ
سینے سوں لگانے کی ہوئی دل کو امنگ تازی
آلس ستی جب تجھ میں خمیازہ ہوا تازہ
جو شعر لباسی تھے جیوں پھول ہوئے باسی
جب شعر ولیؔ تیرا یو تازہ ہوا تازہ
270
گریاں ہے ابر چشم مری اشک بار دیکھ
ہے برق بے قرار مجھے بے قرار دیکھ
فردوس دیکھنے کی اگر آرزو ہے تجھ
اے جیو پی کے مکھ کے چمن کی بہار دیکھ
حیرت کا رنگ لے کے لکھے شکلِ بے خودی
تیرے ادا و ناز کوں مانی نگار دیکھ
وہ دل کہ تجھ دَتَن کے خیالاں سوں چاک تھا
لایا ہوں تیری نذر بجاے انار دیکھ
اے شہسوار تو جو چلا ہے رقیب پاس
سینے میں عاشقاں کے اُٹھا ہے غبار دیکھ
تیری نگاہ خاطر نازک پہ بار ہے
اے بوالہوس نہ پی کی طرف بار بار دیکھ
تجھ عشق میں ہوا ہے جگر خون و داغ دار
دل میں ولیؔ کے بیٹھ کے یو لالہ زار دیکھ
271
جی چل بچل ہوا ہے چنچل تیری چال دیکھ
دل جا پڑا خلل میں ترے مکھ کا خال دیکھ
ہر شب ہوں پیچ و تاب میں تجھ زلف کے سبب
گل کر ہوا ہوں بال نمط تیرے بال دیکھ
خوباں جو تجھ پہ رشک لجاویں توکیا عجب
جلتا ہے آفتاب یو جاہ و جلال دیکھ
اے نو بہار حسن تو گلشن میں جب چلا
گّل کر ہوئے گلاب گُلاں تیرے گال دیکھ
مت کہہ اپس کے حال کوں رمّال کے اَگے
مصحف میں اس جمال کے اَے جیو فال دیکھ
دونو جہاں کی عید کی ہے آرزو اگر
پیتم کے ابرواں میں دو شکلِ ہلال دیکھ
دل پیچ و تاب میں ہے ولیؔ کا مثال موج
تجھ زلف تابدار کا پُر پیچ حال دیکھ
272
تیرے نَین کا دیکھ کے مے خانہ آئنہ
ہے تجھ نگاہ مست کا دیوانہ آئنہ
اے شمع سر بلند ترا نور دیکھ کر
سب جوہراں کیے ہیں سو پروانہ آئنہ
صافی اپس کی لے کے سنوارا ہے شوق سوں
رکھنے کوں تجھ خیال کے کاشانہ آئنہ
جب سوں پڑا ہے عکس ترا آئنے بِھتر
تب سوں لیا ہے شکل پری خانہ آئنہ
تجھ صاف مکھ پہ دیکھ کے یو خطِّ جوہراں
زنجیر پگ میں ڈال ہے دیوانہ آئنہ
تیرے نین کی دیکھ کے پتلی کوں اے صنم
سر تا قدم ہے صورت بت خانہ آئنہ
مانند اس ولیؔ کے ہوا مست و بے خبر
تجھ نین سوں پیا ہے جو پیمانہ آئنہ

ردیف ’ی‘
273
منگا کے پی کوں لکھوں میں اپس کی بے تابی
لیا نَین کی سفیدی سوں کاغذ آبی
لکھا پلک کے قلم سوں میں اے کماں ابرو
جگر کے خون سوں تجھ تیغ کی سیہ تابی
ہوا ہے جب سوں وو نور نظر انکھاں سوں جدا
نہیں نظر میں مری تب سوں غیر بے خوابی
نگہ کے جھاڑ کا پھل تو ہے اے بہار کرم
ترے جمال کے گلشن میں نِت ہے سیرابی
ولیؔ خیال میں اس مہ کوں جو کوئی کہ رکھے
تو خواب میں نہ دسے اس کوں غیر مہتابی
274
آیا وو شوخ باندھ کے خنجر کمر ستی
عالم کوں قتل عام کیا اک نظر ستی
طاقت رہے نہ بات کی پھر انفعال سوں
تشبیہہ تجھ لباں کوں اگر دوں شکر ستی
غم نے لیا ہے تب سوں مجھے پیچ و تاب میں
باندھا ہے جب سوں جیو کوں اس مو کمر ستی
غم کے چمن کوں باد خزاں کا نہیں ہے خوف
پہنچا ہے اس کوں آب مری چشم تر ستی
یک بار جا کے دیکھ ولیؔ اس دسَن کے تئیں
لکھتا ہوں جس کے وصف کوں آب گہر ستی
275
اُس سوں رکھتا ہوں خیالِ دوستی
جس کے چہرے پر ہے خال دوستی
خشک لب وو کیوں رہے عالم منیں
جس کوں حاصل ہے زلال دوستی
شمع بزم اہل معنی کیوں نہ ہوئے
جس اُپر روشن ہے حال دوستی
اس سخن سوں آشنا ہے دردمند
دردِ دوری ہے وبال دوستی
اے سجن تجھ مکھ کے مصحف میں مجھے
دیکھنا بر جا ہے فال دوستی
فیض سوں تجھ قد کے اے رنگیں بہار
تازہ و تر ہے نہال دوستی
اے ولیؔ ہر آن کر مشق وفا
ہے وفاداری کمال دوستی
276
جو کُئی ہر رنگ میں اپنے کو شامل کر نئیں گنتے
ہمن سب عاقلاں میں اس کوں عاقل کر نئیں گنتے
مدرس مدرسے میں گر نہ بولے درس درشن کا
تو اس کوں عاشقاں اُستاد کامل کر نئیں گنتے
خیالِ خام کوں جو کئی کہ دھووے صفحۂ دل سوں
تصوف کے مطالب کوں وو مشکل کر نئیں گنتے
جو بسمل نئیں ہوا تیری نین کی تیغ سوں بسمل
شہیداں جگ کے اُس بسمل کوں بسمل کر نئیں گنتے
پرت کے پنتھ میں جو کُئی سفر کرتے ہیں رات ہور دن
وو دنیا کوں بغیر از چاہ بابل کر نئیں گنتے
نہیں جس دل میں پی کی یاد کی گرمی کی بے تابی
تو ویسے دل کوں سارے دلبراں دل کر نئیں گنتے
رہے محروم تیری زلف کے مہرے سوں وو دائم
جو کُئی تیری نَین کوں زہر قاتل کر نئیں گنتے
نہ پاوے وو دنیا میں لذت دیوانگی ہرگز
جو تجھ زلفاں کے حلقے کوں سلاسل کر نئیں گنتے
بغیر از معرفت سب بات میں گر کُئی اچھے کامل
ولیؔ سب اہل عرفاں اس کوں کامل کر نئیں گنتے
277
بزرگاں کَن جو کُئی آپس کوں ناداں کر نئیں گنتے
سخن کے آشنا اُن کوں سخن داں کر نئیں گنتے
طریقہ عشق بازاں کا عجب نادر طریقہ ہے
جو کُئی عاشق نئیں اُس کوں مسلماں کر نئیں گنتے
گریباں جو ہوا نئیں چاک بے تابی کے ہاتھوں سوں
گلے کا دام ہے اس کوں گریباں کر نئیں گنتے
عجب کچھ بوجھ رکھتے ہیں سر آمد بزم معنی کے
تواضع نئیں ہے جس میں اس کوں انساں کر نئیں گنتے
ولیؔ راہِ محبت میں وفاداری مقدّم ہیوفا نئیں جس
میں اس کوں اہل ایماں کر نئیں گنتے
278
سجن! تجھ بِن ہمن گلشن کوں گلشن کر نئیں گنتے
بجز تیرے مہ روشن کوں روشن کر نئیں گنتے
سکندر کیوں نہ جاوے بحر حیرت میں کہ مشتاقاں
تمھارے مکھ اَگے درپن کوں درپن کر نئیں گنتے
نئیں تیرے رقیباں سوں عداوت دل میں ہمنا کے
مروت دوستاں دشمن کوں دشمن کر نئیں گنتے
اگر انجھواں کے گوہر سوں مکلّل نئیں ہوا دامن
محبت مشرب اس دامن کوں دامن کر نئیں گنتے
ولیؔ دل میں ہمارے حاسداں کا خوف نئیں ہرگز
مجرد رَو کسی رہ زن کوں رہ زن کر نئیں گنتے
279
تجھ گوش میں کیا ہے جب سوں مکان موتی

اُس روز سوں ہوا ہے صافی کی کان موتی
بالی نئیں عزیزاں! عاشق کے مارنے کوں
تا گوش کھینچتا ہے زریں کمان موتی
بے جا نئیں ہے لرزاں تجھ گوش میں سریجن
منگتا ہے تجھ نگہ سوں دائم اَمان موتی
اے شوخ جب کیا ہوں تعریف تجھ دَتن کی
میرے سخن کوں سُن کر پکڑا ہے کان موتی
بالی میں نازنیں کی رہتا ہے رات ہور دن
مدّت ستی ولیؔ کا ہوکر پران موتی
280
کاں لگ بیاں کروں میں بالاں کے کھَب کی شوخی
جس کن ہے موے سوں کم دار الحرب کی شوخی
حیرت سوں گئی پری سوں پر مارنے کی طاقت
دیکھی جو یک نظر بھر تجھ ناز و چھب کی شوخی
گستاخ ہو کے مہندی تیرے قدم لگی ہے
کس رنگ سوں کہوں میں اس بے ادب کی شوخی
ہیرے کا تجھ دسن سوں روشن ہوا ہے ہردا
یاقوت سوں ادھک ہے تجھ رنگ لب کی شوخی
تجھ لب اَگے سٹی ہے پستے کوں پست کر کر
اور شرم سوں لہو میں ڈوبی عنَب کی شوخی
دل کر کے جیوں کھلونا تیرے نذر کیا ہے
منظور ہے جسے تجھ لہو و لعب کی شوخی
طفل طلب نے ہٹ سوں تجھ لب پہ دل بندھا ہے
معذور رکھ ولیؔ کے طفل طلب کی شوخی
281
ترے قد کی نزاکت سوں دسے مجھ سرو جیوں لکڑی
ترے گل برگ لب آگے خجل ہے پھول کی پکھڑی
کلاہ آبرو اس کی اُتاری باغباں بھوئیں پر
چمن میں پھول کی ڈالی تجھے جو دیکھ کر اکڑی
ستم پرور سوں دکھ کہنا کٹے پر لَون لانا ہے
نہ کہیو سر اُسے جو کُئی نہ بوجھے سر ہے یا ککڑی
غریبی سوں نہ سمجھو سادہ دل بقّال پُرفن کوں
کہ جو کھا اُن ہر عاشق کوں بھواں کی ہاتھ لے تکڑی
نہ ہو وے اے ولیؔ حل ہرگز اس کا عقدۂ مشکل
تماشے سوں کہ جن نے دل منیں اپنے گرہ پکڑی
282
مجھ دل میں بے دل کے سدا وو دلبر جاناں بسے
جیوں روح قالب کے بھتر یوں مجھ منیں پنہاں بسے
پتلی میں میرے نین کے بستا ہے دلبر عین یوں
پردے منیں ظلمات کے جیوں چشمۂ حیواں بسے
اس دل ربا دل دار کا ہے ٹھار میرے دل منیں
یوں دل بھِتر رہتا ہے وو جیوں دل منیں ایماں بسے
ہے دل مراد دریائے غم اور نقش اس لب سرخ کا
رہتا ہے میرے دل میں یوں دریا میں جیوں مرجاں بسے
یوں دل میں میرے اے ولیؔ بستا ہے وو اہل شفا
سینے منیں جیوں بید کے ہر درد کا درماں بسے
283
یہ مرا رونا کہ تیری ہے ہنسی
آپ بَس نئیں پَر بسی ہے پَر بسی
کُلِّ عالم میں کرم، میرے اُپر
جُز رسی ہے جز رسی ہے جز رسی
رات دن جگ میں رفیق بے کساں
بے کسی ہے بے کسی ہے بے کسی
مست ہونا عشق میں تیرے صنم
ناکسی ہے ناکسی ہے ناکسی
باعثِ رسوائیِ عالم ولیؔ
مفلسی ہے مفلسی ہے مفلسی
284
زبان یار ہے از بسکہ یار خاموشی
بہار خط میں ہے برجا بہار خاموشی
سیاہیِ خط شب رنگ سوں مصور ناز
لکھا نگار کے لب پر نگار خاموشی
اُٹھا ہے لشکر اہل سخن میں حیرت سوں
خبار خط سوں صنم کے غبار خاموشی
ظہور خط میں کیا ہے حیا نے بس کہ ظہور
یو دل شکار ہوا ہے شکار خاموشی
ہمیشہ لشکر آفات سوں رہے محفوظ
نصیب جس کوں ہوا ہے حصار خاموشی
غرور زر سوں بجا ہے سکوت بے معنی
کہ بے صدا ہے سدا کوہسار خاموشی
ولیؔ نگاہ کر اس خط سبز رنگ کوں آج
کہ طور نور میں ہے سبزہ زار خاموشی
285
کیوں نہ آوے نشۂ غم سوں دماغ عاشقی
بادۂ حیرت سوں ہے لب ریز ایاغ عاشقی
اشک خوں آلود ہے سامان طغراے نیاز
مُہر فرمان وفاداری ہے داغ عاشقی
آب سوں دریا کے ہرگز کام نئیں عشاق کوں
گریۂ حسرت سوں ہے سرسبز باغ عاشقی
گر طلب ہے تجکوں راز خانۂ دل ہو عیاں
آہ کی آتش سوں روشن کر چراغ عاشقی
دردمنداں باغ میں ہرگز نہ جاویں اے ولیؔ
گر نہ دیوے نالۂ بلبل سراغ عاشقی
286
مشتاق ہیں عشاق تری بانکی ادا کے
زخمی ہیں محبّاں تری شمشیر جفا کے
ہر پیچ میں چیرے کے ترے لپٹے ہیں عاشق
عالم کے دلاں بند ہیں تجھ بند قبا کے
لرزاں ہے ترے دست اَگے پنجۂ خورشید
تجھ حسن اَگے مات ملائک ہیں سما کے
تجھ زلف کے حلقے میں ہے دل بے سرو بے پا
ٹک مہر کرو حال اُپر بے سر و پاکے
تنہا نہ ولیؔ جگ منیں لکھتا ہے ترے وصف
دفتر لکھے عالم نے تری مدح و ثنا کے
287
تجھ مکھ کی آب دیکھ گئی آب آب کی
یہ تاب دیکھ عقل گئی آفتاب کی
تجھ حسن کے دریا کا سُنا جوش جب ستی
پُرنم ہیں اشتیاق سوں انکھیاں حباب کی
جگ، تجھ لباں کے دیکھ تبسم کوں سُدھ سٹا
زنجیر پائے عقل ہے موج اس شراب کی
دیکھا ہوں جب سوں خواب میں وو چشم نیم خواب
صورت خیال و خواب ہوئی مجکو خواب کی
میرے سخن میں فکر سوں کر اے ولیؔ نگاہ
ہر بیت مجھ غزل منیں ہے انتخاب کی
288
جس کوں لذت ہے سجن کے دید کی
اس کوں خوشی وقتی ہے روز عید کی
دل مرا موتی ہو تجھ بالی میں جا
کان میں کہتا ہے باتاں بھید کی
زلف نئیں تجھ مکھ پر اے دریاے حسن
موج ہے یہ چشمۂ خورشید کی
اُس کے خط و خال سوں پوچھو خبر
بوجھتا ہندو ہے باتاں بید کی
تجھ دہن کو دیکھ کر بولا ولیؔ
یہ کلی ہے گلشن اُمید کی
289
پریشاں عاشقاں کے دل فدا ہیں تجھ ستم گر کے
بلاگرداں ہیں جیو جوہر نمن تجھ تیغ و خنجر کے
دیا ہے حق نے اس دنیا میں جنت کے قصور اُن کو
بجان و دل جو کئی مشتاق ہیں تجھ حور پیکر کے
ترے اس حسن عالم گیر کوں کھینچے اپس بَر میں
مگر رکھتی ہے کیا یہ آرسی طالع سکندر کے
اگر چاہوں لکھوں تجھ لعل کے اوصاف رنگیں کوں
رگ یاقوت سے اول بناؤں تار مُسطر کے
ولیؔ تیرے سخن یاقوت سوں رنگیں ہوئے لیکن
خریداراں جہاں بھیتر کہاں ہیں آج گوہر کے
290
نرگس قلم ہوئی ہے سجن تجھ نین اَگے
شکر ڈبی ہے آب میں تیرے بچن اَگے
غنچے کوں گل کے حال میں آنا محال ہے
تیرے دہن کی بات کہوں گر چمن اَگے
ڈالا ہے تیرے چیرے نے غنچے کوں بیچ میں
ہر گل ہے سینہ چاک ترے پیرہن اَگے
ہے تجھ نیَن کے پاس مرا عجز بے اثر
زاری نہ جاوے پیش کدھی راہزن اَگے
کر حال پر ولیؔ کے پیا لطف سوں نظر
لایا ہے سر نیاز سوں تیرے چرن اَگے
291
تجھ لب کی شیرنی سوں ہوئی دل کوں بستگی
تجھ زلف کی شکن نے دیا مجھ شکستگی
تیرے نین کے دام میں بادام بند ہے
چھوڑیا ترے لباں ستی پستے نے بستگی
تجھ قد کی راستی نے کیا بند سرو کوں
آزادگی سوں آج ہوئی اس کوں رُستگی
تجھ زلف سحر ساز کے جلوے کے فیص سوں
بے طاقتی میں ہوش نے پایا ہے جستگی
مجلس سوں جو ولیؔ کی وو شیریں ادا اُٹھا
عشرت کے تار ساز نے پائی گسستگی
292
اس کوں حاصل کیوں کے ہوئے جگ میں فراغ زندگی
گردش افلاک ہے جس کوں ایاغ زندگی
اے عزیزاں سیر گلشن ہے گل داغ الم
صحبت احباب ہے معنی میں باغ زندگی
لب ہیں تیرے فی الحقیقت چشمۂ آب حیات
خضر خط نے اس سوں پایا ہے سراغ زندگی
جب سوں دیکھا نئیں نظر بھر کاکل مشکیں یار
تب سوں جیوں سنبل پریشاں ہے دماغ زندگی
آسماں میری نظر میں کُلبۂ تاریک ہے
گر نہ دیکھوں تجکوں اے چشم و چراغ زندگی
لالۂ خونیں کفن کے حال سوں ظاہر ہوا
بستگی ہے خال سوں خوباں کے داغ زندگی
کیوں نہ ہووے اے ولیؔ روشن شب قدر حیات
ہے نگاہ گرم گل رویاں چراغ زندگی
293
جسے عشق کا تیر کاری لگے
اُسے زندگی کیوں نہ بھاری لگے
نہ چھوڑے محبت دم مرگ لگ
جسے یار جانی سوں یاری لگے
نہ ہووے اُسے جگ میں ہرگز قرار
جسے عشق کی بے قراری لگے
ہر اک وقت مجھ عاشق پاک کوں
پیاری تری بات پیاری لگے
ولیؔ کوں کہے تو اگر یک بچن
رقیباں کے دل میں کٹاری لگے
294
تعریف اس پری کی جسے تم سناؤ گے
تا حشر اس کے ہوش کوں اس میں نہ پاؤگے
جس وقت سر کرو گے بیاں اس کی زلف کا
سودا زدوں پہ غم کے سیہ روز لاؤ گے
جس وقت اُس کے حسن کو دیکھو گے بے حجاب
حیراں ہوں کیونکے جامے میں اپنے سماؤ گے
طوبیٰ طرف نہ دیکھو گے ہرگز نگاہ کر
گر اس کے قد سوں جیو کو اپنے لگاؤ گے
دوگے اگر ولیؔ کوں خبر اُس کے لطف سوں
آتش نمن رقیب کا سینہ جلاؤ گے
295
ترا قد دیکھ اے سیّد معالی
سخن فہماں کی ہوئی ہے فکر عالی
ترے پانواں کی خوبی پر نظر کر
ہوئے ہیں گل رخاں جیوں نقش قالی
شفق لوہو میں ڈوبا سر سوں یک لگ
تو باندھا سر پہ جب چیرا گلالی
ہوا تیرے خیالاں سوں سرا پا
مرا دل مثل فانوس خیالی
تری انکھیاں دسیں مجھ یوں سیہ مست
پیا گویا شراب پرتگالی
گیا ہے خوف سوں اُڑ لعل کا رنگ
ترے یاقوت لب کی دیکھ لالی
خیال اس خال کا از بس ہے دلچسپ
نہیں دنیا میں یک دل اس سوں خالی
ترے لب ہور ترے ابرو کے دیکھے
پڑھوں شعر زُلالیؔ اور ہلالیؔ
تری انکھیاں میں ڈورے دیکھ کر سرخ
بنائی خلق نے ریشم کی جالی
کرے تا استراحت مجھ انکھیاں میں
کیا ہوں وو پلک تو شک نہالی
اگر پوچھے وو بے پروا مرا نانوں
کہوں مشتاق رند لا اُبالی
ہوئے معزول خوباں جگ کے جب سوں
ہوا تو حسن کے کشور کا والی
ولیؔ تب سوں ہوا ہم کار فرہاد
سنا جب سوں تری شیریں مقالی
296
کرتی ہے دل کوں بے خود اس دل ربا کی گالی
گویا ہے جام حیرت اس خوش ادا کی گالی
کس ناز و کس ادا سوں آتا ہے اے عزیزاں
ہے میرزا ادا میں اُس میرزا کی گالی
مدت کے بعد گرمی دل کی فرو ہوئی ہے
شربت ہے حق میں میرے اس بے وفا کی گالی
گل زار سوں وفا کے کیوں جا سکوں میں باہر
کرتی ہے بندوں کوں گلگوں قبا کی گالی
جیوں گل شگفتگی سوں جامے میں نئیں سماتا
جب سوں سنا ولیؔ نے رنگین ادا کی گالی
297
اقلیم دلبری کا وو دل ربا ہے والی
آتا ہے جس پہ صادق مفہوم بے مثالی
وحشی نگہ کوں ہرگز مسند نشیں نہ پاوے
محروم صید سوں ہے ہر آن شیر قالی
جُز رمزداں نہ پہنچے معنی کوں اس کے ہرگز
مدِّ نگاہ عاشق ہے مصرع خیالی
ابیات صاف و رنگیں رکھتا ہے مثنوی میں
تیرے لباں کا گویا شاگرد ہے زلالیؔ
جب لگ مری حقیقت تفصیل سوں نہ بوجھے
ہرگز نہ ہو مسخر وو رند لا اُبالی
غیرت کوں کام فرما، نا محرموں سوں مت مل
اے نوجواں نئیں ہے ہنگام خُرد سالی
آزردکی سوں اس کی مت خوف کر ولیؔ توں
ہے عین مہربانی اس مہرباں کی گالی
298
اگر گلشن طرف وو نوخط رنگیں ادا نکلے
گل و ریحاں سوں رنگ و بو شتابی پیشوا نکلے
کھلے ہر غنچۂ دل جیوں گل شاداب شادی سوں
اگر ٹک گھر سوں باہر وو بہار دل کشا نکلے
غنیم غم کیا ہے فوج بندی عشق بازاں پر
بجا ہے آج وو راجہ اگر نوبت بجا نکلے
نثار اس کے قدم اوپر کروں انجھواں کے گوہر سب
اگر کرنے کوں دل جوئی وو سروِ خوش ادا نکلے
صنم آے کروں گا نالۂ جاں سوز کوں ظاہر
مگر اس سنگ دل سوں مہربانی کی صدا نکلے
رہے مانند لعل بے بہا شاہاں کے تاج اوپر
محبت میں جو کُئی اسباب ظاہر کوں بہا نکلے
بخیلی درس کی ہرگز نہ کیجیو اے پری پیکر
ولیؔ تیری گلی میں جب کہ مانندِ گدا نکلے
299
اگر باہر اپس کے گھر سوں موہن یک قدم نکلے
تماشا دیکھنے اس کا ہر اک سینے سوں غم نکلے
ترے مکھ کے گلستاں کی اگر حوراں میں شہرت ہو
تو ہر اک مست ہوکر چھوڑ گل زار ارم نکلے
اگر اے رشک چیں جاوے تو کرنے سیر ملک چیں
تو ہر دیول سوں استقبال کوں تیرے صنم نکلے
ترے اس حسن پر مائل ہیں جگ کے عابد و زاہد
یو شہرت سن عجب نئیں بھوئیں سوں ابراہیم ادہم نکلے
اگر ملک عرب میں تو دکھاوے آنکھ کا جلوہ
تو اس کی دید کوں بے خود ہو آہوے حرم نکلے
فجر کے وقت گر دلبر چلے حماّم کی جانب
تو جیوں سورج ہر اک کے دل سوں یک چشمہ گرم نکلے
ولیؔ سودا زدہ دل کی حقیقت گر سکوں لکھنا
تو دیوانہ نہ ہو سا نکل پگ میں باہر یک رقم نکلے
300
اگر ٹک گھر سوں وو گل گوں قبا شیریں بچن نکلے
مرے سینے سوں بے تابانہ آہِ کوہ کن نکلے
ہر اک نقش قدم سوں دستۂ گُل جلوہ پیرا ہوئے
اگر سیر گلستاں کوں وو رشک صد چمن نکلے
خُتن میں ہور خطا میں بوئے آہو کی نہ پاوے کُئی
نگہ کی تیغ قاتل لے اگر وو من ہرن نکلے
بندھا ہے اے صنم جو دل ترے ماتھے کے صندل پر
عجب نئیں ہے اگر سائے سوں اس کے برہمن نکلے
چراغاں کی نہ ہووے گرمیِ بازار کیوں آخر
ولیؔ جب جانب مجلس وو زیبِ انجمن نکلے
301
چھوڑ اے شوخ طرز خود کامی
مت ہو ہر دیدہ باز کا دامی
تجھ لب و زلف کے تماشے کوں
چل کے آئے ہیں مصری و شامی
زلف تیری ہوئی ہے چرب زباں
حفظ کر کر قصیدۂ لامی
باغ میں تجھ انکھاں سوں پایا ہے
گل نرگس تخلّصِ جامیؔ
نامۂ حسن پر نگہ کر دیکھ
پی کی انکھیاں ہیں مُہر بادامی
اے نگیں لب کیا ہے حق نے تجھے
نونہالانِ حسن میں نامی
چشم رکھتا ہوں اے سجن کہ پڑھوں
تجھ نگہ سوں قصیدۂ جامی
پستہ لب تجھ انکھاں کوں کر کر یاد
پہنتا ہوں قبائے بادامی
اے ولیؔ غیر عشق حرف دگر
پختہ مغزاں کے نزد ہے خامی
302
تری انکھیاں کوں دیکھے دل ہے آہوے بیابانی
تری زلفاں سوں جی ہے بستۂ دامِ پریشانی
ہوا ہے دل ہر اک عاشق کا نالاں مثل بلبل کے
ترے مکھ نے کیا ہے جب سوں جگ بھیتر گلستانی
ہوا یاقوت رنگیں دیکھ تیرے لعل رنگیں کوں
ہوا سرسبز جو تجھ خط میں دیکھا رنگ ریحانی
سجن تیری غلامی میں کیا ہوں سلطنت حاصل
مجھے تیری گلی کی خاک ہے تخت سلیمانی
ولیؔ کوں گر ترے نزدیک کُئی دیکھے تو یوں بوجھے
لگی ہے صفحۂ ہستی اُپر تصویر حیرانی
303
چیتے کوں نہیں دی ہے یہ باریک میانی
پائی ہے کہاں غنچے نے یہ تنگ دہانی
آغوش میں آنے کی کہاں تاب ہے اس کوں
کرتی ہے نگہ جس قد نازک پہ گرانی
دریا سوں مری طبع کے جوشاں ہے ہر اک شب
تجھ زلف کی تعریف میں امواج معانی
کیا تاب مرے دل کوں، کہ آئینۂ فولاد
تجھ حسن کی ہیبت سوں ہوا صورت پانی
ہو شمۂ مجھ حال سوں واقف، کہ دیا ہے
تجھ زہدۂ آفاق کوں حق نے ہمہ دانی
دریا ستی نسبت ہے بجا طبع کوں میری
اس مرتبہ امواج سخن کی ہے روانی
معشوق کی مت گرمیِ ظاہر پہ نظر کر
پروانے کوں جیوں شمع سوں اخلاص زبانی
مت دور ہو یک آن ولیؔ پاس سوں ہرگز
اے باعث جمعیّتِ ایاّم جوانی
304
ترا لب دیکھ حیواں یاد آوے
ترا مکھ دیکھ کنعاں یاد آوے
ترے دو نین جب دیکھوں نظر بھر
مجھے تب نرگسستاں یاد آوے
تری زلفاں کی طولانی کوں دیکھے
مجھے لیل زمستاں یاد آوے
ترے خط کا زمرد رنگ دیکھے
بہار سنبلستاں یاد آوے
ترے مکھ کے چمن کے دیکھنے سوں
مجھے فردوس رضواں یاد آوے
تری زلفاں میں یو مکھ جو کہ دیکھے
اُسے شمع شبستاں یاد آوے
جو کُئی دیکھے مری انکھیاں کو روتے
اُسے ابر بہاراں یاد آوے
جو میرے حال کی گردش کوں دیکھے
اُسے گرداب گرداں یاد آوے
ولیؔ میرا جنوں جو کُئی کہ دیکھے
اُسے کوہ و بیاباں یاد آوے
305
اُس وقت مرے جیو کا مقصود بر آوے
جس وقت مرے بر منیں وو سیم برآوے
انکھیاں کی کروں مسند و پُتلیاں کروں بالش
وو نور نظر آج اگر میرے گھر آوے
اس وقت مرے بخت کی ظاہر ہو بلندی
جس وقت وو خوش قامت عالی نظر آوے
جامے منیں غنچے کی نمن رہ نہ سکوں میں
گر پی کی خبر لے کے نسیمِ سحر آوے
گر اس مہ دل جو‘ کا گزر میری طرف ہو
دل کے شجر خشک کوں پھر برگ و بر آوے
اس وقت مجھے دعویِ تسخیر بجا ہے
جس وقت مرے حکم میں وو عشوہ گر آوے
تجھ چشم سیہ مست کے دیکھے ستی زاہد
تجھ زلف کے کوچے منیں ایماں بِسر آوے
تجھ لب کی اگر یاد میں تصنیف کروں شعر
ہر شعر منیں لذت شہد و شکر آوے
جس آن ولیؔ وصف کروں پی کے دتن کا
ہر شعر مرا غیرت سِلک گہر آوے
306
سرود عیش کاویں ہم، اگر وو عشوہ ساز آوے
بجاویں طبل شادی کے اگر وو دل نواز آوے
خمار ہجر نے جس کے دیا ہے درد سر مجکوں
رکھوں نشہّ نمن انکھیاں میں گر وو مست ناز آوے
جنونِ عشق میں مجکوں نہیں زنجیر کی حاجت
اگر میری خبر لینے کوں وو زلف دراز آوے
ادب کے اہتمام آگے نہ پاوے بار واں ہرگز
ترے سائے کی پا بوسی کوں گر رنگ ایاز آوے
عجب نئیں گر گلاں دوڑیں پکڑ کر صورت قمری
ادا سوں جب چمن بھیتر وو سرو سرفراز آوے
پرستش اُس کی میرے سر پہ ہوئے سر ستی لازم
صنم میرا رقیباں کے اگر ملنے سوں باز آوے
ولیؔ اس گوہر کانِ حیا کی کیا کہوں خوبی
مرے گھر اس طرح آتا ہے جیوں سینے میں راز آوے
307
جس وقت تبسم میں وو رنگیں دہن آوے
گل زار میں غنچے کے دہن پر سخن آوے
تاحشر اُٹھے بوئے گلاب اس کے عرق سوں
جس بَر منیں یک بار وو گل پیرہن آوے
سایہ ہو مرا سبز برنگ پرِ طوطی
گر خواب میں وو نو خطِ شیریں بچن آوے
مجھ حال اُپر ہالۂ مہ رشک لجا وے
جس وقت مجھ آغوش میں وو سیم تن آوے
گر حال میں رقت کے ترے لب کوں کروں یاد
ہر اشک مرا رشک عقیق یمن آوے
کھینچیں اپس انکھیاں منیں جیوں کحل جواہر
عشاق کے گر ہاتھ وو خاکِ چرن آوے
یک گل کوں اپس حال میں اس وقت نہ پاوے
جس وقت چمن بیچ وو رشک چمن آوے
عالم میں ترے ہوش کی تعریف کیا ہوں
ایسا تو نہ کر کام کہ مجھ پر سخن آوے
گر ہند میں تجھ زلف کی، کافر کوں خبر ہو
لینے کوں سبق کفر کا ہر برہمن آوے
ہرگز سخن سخت کوں لاوے نہ زباں پر
جس ذہن میں یک بار وو نازک بدن آوے
تجھ بر کی اگر وصف کوں تحریر کروں میں
ہر لفظ کے غنچے ستی بوئے سمن آوے
تا حشر کرے سیر خیاباں کے چمن میں
گر گور پہ عاشق کے وہ امرت بچن آوے
برجا ہے اگر جگ میں ولیؔ پھر کے دُجے بار
رکھ شوق مرے شعر کا شوق حسنؔ آوے
308
کسی کی گر خطا اوپر ترے ابرو پہ چیں آوے
نہ سمجھا کر سکے تجھ کوں اگر فغفور چیں آوے
بجز تیرے دہن ہرگز نہ چاہوں دولت عنقا
اگر خورشید کے مانند فلک زیرنگیں آوے
نہ جاوے کچھ چراغاں سوں شب فرقت کی تاریکی
اُجالا تب ہو مجھ گھر میں کہ جب وو مہ جبیں آوے
کہیں مجھ دل کوں سب مل خاتم مہر سلیمانی
خیال لعل دلبر اس میں کر ہوکر نگیں آوے
ولیؔ مصرع فراقیؔ کا پڑھوں تب، جبکہ وو ظالم
کمر سوں کھینچتا خنجر، چڑھاتا آستیں آوے
309
اگر بازار میں خوبی کے وو رشک پری آوے
عجب نئیں گر فلک سیتی سُرج ہو مشتری آوے
قلم نرگس کی جب لے کر لکھوں تجھ چشم کی خوبی
ہزاراں آفریں کر تا مرے گھر عبہری آوے
کبھی خاطر منیں خطرہ نہ آوے حور جنت کا
اگر یک بار مجھ خلوت میں وو رشک پری آوے
سجن! میں خواب میں دیکھا ہوں تیرے مکھ کا آئینہ
عجب نئیں گر مرے گھر دولت اسکندری آوے
ولیؔ رکھتا ہوں سینے میں ہزاراں گوہر معنی
دکھاؤں اپنے جوہر کوں اگر کُئی جوہری آوے
310
فلاطوں ہوں زمانے کا سجن جب مجھ گلی آوے
نہ بوجھوں طفل مکتب کر اگر وہاں بوعلی آوے
سرود عشق مجھ دل میں لبالب ہے، عجب مت کر
اگر مجھ آہ کی نَے سوں صدائے بانسلی آوے
تماشا دیکھنے تیرے دہن کا اے گلستاں رو
برنگ گل نکل کر ہر چمن سوں ہر کلی آوے
کروں کیا اے سجن تجھ پر مرا افسوں نئیں چلتا
وگر نہ اک اشارت میں پری مجھ گھر چلی آوے
غرور حسن نے تجکوں کیا ہے اس قدر سرکش
کہ خاطر میں نہ لاوے تو اگر تجھ گھر ولیؔ آوے
311
یک بار گر چمن میں وو نو بہار جاوے
بلبل کے دل سوں گل کا سب اعتبار جاوے
آوے اگر کرم سوں مانند ابر رحمت
دیکھے سوں آب اس کی دل کا غبار جاوے
چنچل کی بات لاوے طوطی اگر زباں پر
البتہ آرسی کے دل سوں غبار جاوے
جاتی ہے حاسداں کے یوں دل میں بیت میری
سینے میں دشمناں کے جیوں ذوالفقار جاوے
مستی نے تجھ نَین کی بے خود کیا ولیؔ کوں
آوے جو بزم مَے میں کیوں ہوشیار جاوے
312
اگر وو رشک گل زار ارم گلشن طرف جاوے
عجب نئیں باغ میں مالی کیے پر اپنے پچھتاوے
کہاں ہے تاب مانی کوں کہاں بہزاد کوں طاقت
کہ تیری ناز کی تصویر تجکوں لکھ کے دکھلاوے
رکھے جیوں دانۂ تسبیح عنبر طبلۂ دل میں
خیال خال دلبر عاشق بے دل اگر پاوے
کہاں ہے آج یا رب جلوۂ مستانۂ ساقی
کہ دل سوں تاب، جی سوں صبر، سر سوں ہوش لے جاوے
کیا ہے جس کی زلفاں نے ہمارے دل کوں سرگرداں
نئیں کُئی اس ہٹیلے کوں وہ نازنیں ٹک کام فرماوے
ولیؔ ارباب معنی میں اسے ہے عرش کا رُتبہ
پری زاد معانی کوں جو کُئی کرسی پہ بٹھلاوے
313
تو اس زلفاں کے حلقے سوں اگر دریا پہ چل جاوے
عجب نئیں اے پری پیکر اگر گرداب بل جاوے
کہاں طاقت ہے ہر اک کوں کہ دیکھے تجھ طرف ظالم
ترے ابرو کی یہ شمشیر رستم دیکھ ٹل جاوے
لگے برسات انجھواں کی ہر اک کے دیدۂ تر سوں
جہاں مانند بجلی کے مرا چنچل چپل جاوے
تو جب نہانے کوں جاوے روز روشن جانب دریا
تری زلفاں کے ہندو کی سیاہی تار جل جاوے
ترے فدوی ترے دربار آسکتے نہیں ہرگز
رقیب رو سیہ جاوے تو اس گھر سوں خلل جاوے
چمن میں گر خبر جاوے ہمارے دل کی سوزش کی
دل بلبل کے مانند ہر گل خوش رنگ جل جاوے
کروں جب آہ و نالہ کا علم برپا ترے غم میں
مرے انجھواں کی فوجاں سوں ندی کا پل کھسل جاوے
تری انکھیاں کی ہے تعریف ہر ہر بیت میں میری
غزالاں صید ہو آویں جہاں میری غزل جاوے
ولیؔ ہے اس قدر صافی صنم کے صاف چہرے پر
کہ اس کے وصف لکھنے میں قلم کا پگ پھسل جاوے
314
دل چھوڑ کے، یار کیوں کے جاوے
زخمی ہے شکار کیوں کے جاوے
جب لگ نہ ملے نہ شراب دیدار
انکھیاں کا خمار کیوں کے جاوے
ہے حسن ترا ہمیشہ یکساں
جنت سوں بہار کیوں کے جاوے
انجھواں کی اگر مدد نہ ہووے
مجھ دل کا غبار کیوں کے جاوے
ممکن نہیں اب ولیؔ کا جانا
ہے عاشق زار کیوں کے جاوے
315
چمن میں جلوہ گر جب وو گل رنگیں ادا ہووے
خزانِ خاطر عاشق بہار مدعا ہووے
ہوا ہوں زرد و لاغر کاہ کے مانند تجھ غم میں
بجا ہے گر کشش تیری بھواں کی کہربا ہووے
برنگ گرد باد اس کوں کرے عالم میں سرگرداں
جسے عشق بلا انگیز خوباں رہنما ہووے
نہ چھوڑیں راستی روشن دلاں صبح قیامت لگ
اگر جیوں شمع ہر ہر آن تن سوں سر جدا ہووے
اَپس کے کعبۂ مقصد کوں بے سعی سفر پہنچوں
خیال اُس کا اگر کشتی میں دل کی ناخدا ہووے
چمن میں دل کے جب گزرے خیال اس سرو قامت کا
سراپا آہ سردِ سینہ سروِ خوش ادا ہووے
پڑھے گر فاتحہ ظالم لب جاں بخش سوں اپنے
شہادت گاہ عاشق چشمۂ آب بقا ہووے
نہ ہوے یک صبح نانِ گرم سورج سوں اسے سیری
تمھارے درس کی نعمت کی جس کوں اشتہا ہووے
جُدا اُس گوہرِ یکتا سوں ہونا سخت مشکل ہے
اگر یک آن ہم دریا دلاں سوں آشنا ہووے
ولیؔ مشکل نہیں ہرگز پہنچنا آب حیواں کوں
اگر خضرِ خط خوباں ہمارا رہنما ہووے
316
اگر موہن کرم سوں مجھ طرف آوے تو کیا ہووے
ادا سوں اس قد نازک کوں دکھلاوے تو کیا ہووے
مجھے اس شوخ کے ملنے کا دائم شوق ہے دل میں
اگر یک بار مجھ سوں آکے مل جاوے تو کیا ہووے
رقیباں کے نہ ملنے میں نہایت اس کی خوبی ہے
اگر دانش کوں اپنی کام فرماوے تو کیا ہووے
پیا کے قند لب اوپر کیا ہے ہٹ مرے دل نے
محبت سوں اگر ٹک اس کوں سمجھاوے تو کیا ہووے
ولیؔ کہتا ہوں اس موہن سوں ہر اک بات پردے میں
اگر میرے سخن کے مغز کوں پاوے تو کیا ہووے
317
اگر مجھ کَن، تو اے رشک چمن ہووے تو کیا ہووے
نگہ میری کا تیرا مکھ وطن ہووے تو کیا ہووے
سیہ روزاں کے ماتم کی سیاہی دفع کرنے کوں
اگر یک نس تو شمع انجمن ہووے تو کیا ہووے
تری باتاں کے سننے کا ہمیشہ شوق ہے دل میں
اگر یک دم تو مجھ سوں ہم سخن ہووے تو کیا ہووے
مُوا جو شوق میں تجھ دیکھنے کے اے ہلال ابرو
اسے انکھیاں کے پردے کا کفن ہووے تو کیا ہووے
اگر غنچہ نمن یک رات اِس ہستی کے گلشن میں
ولیؔ مجھ بر میں وو گل پیرہن ہووے تو کیا ہووے
318
گرمی سوں وو پری رو جب شعلہ تاب ہووے
برجا ہے دل جلوں کا سینہ کباب ہووے
جو تجھ سوں ہو مقابل وو شرم سوں عجب نئیں
جیوں عکس آرسی میں گر غرق آب ہووے
تصویر تجھ پری کی دیکھا ہے جن نے اُس کا
برجا ہے گر تخلص حیرت مآب ہووے
آلودہ کیوں نہ ہووے دامان پاک زاہد
جب دست نازنیں میں جام شراب ہووے
شبنم میں غرق ہووے شرمندگی سوں ہر گل
وو گل بدن چمن میں جب بے حجاب ہووے
تیرے لباں کے آگے برجا ہے اے پری رو
گر آب زندگانی موج سراب ہووے
کیوں بے خودی نہ آوے اس وقت پر ولیؔ کوں
وو سرو ناز پیکر جب نیم خواب ہووے
319
تجھ رخ سوں جب کنارے صبح نقاب ہووے
عالم تمام روشن جیوں آفتاب ہووے
آوے تو کیا عجب ہے شیشے پہ دل کے آفت
جس وقت وو ستم گر مست شراب ہووے
برجا ہے انجمن میں اس دل رُبا کی اَے دل
گر تار سوں نگہ کے تار رباب ہووے
کیوں کر رہے عزیزاں تاریکیِ شب غم
وو رشک ماہ انور جب بے حجاب ہووے
گرمی سوں دیکھتا ہوں تیری طرف اے گل رو
تا وو رقیب بد خو جَل بَل کباب ہووے
ہے ماہ نو کے دل میں یہ آرزو ہمیشہ
اے شہسوار آکر تیری رکاب ہووے
ہرہر نگہ سوں اپنی بے خود کرے ولیؔ کوں
وو چشم مست سر خوش جب نیم خواب ہووے
320
وو محبت میں تری فانی ہوئے
روز و شب جو محو حیرانی ہوئے
دیکھ تجھ ابرو کی جوہر دار تیغ
جوہراں تلوار کے پانی ہوئے
تجھ نَین کے خنجراں پر کر نظر
دیدہ بازاں چشم قربانی ہوئے
اے سجن تیری پرت کے دوست کے
دوستاں کئی دشمن جانی ہوئے
جب سوں تو کھایا ہے پان اے آفتاب
تیرے لعلِ لب بدخشانی ہوئے
تجھ دہان کالعدم کی یاد سوں
بات میں عشاق کئی فانی ہوئے
تجھ دتن کی دیکھ خوبی گوہراں
غرق دریائے پشیمانی ہوئے
تجھ کو جو دیکھے یہاں اے صبح رو
جیوں سُرج دل اُن کے نورانی ہوئے
عشق میں اُس رشک لیلیٰ کے ولیؔ
مثل مجنوں کئی بیابانی ہوئے
321
جب کیا رات کوں تجھ زلف نے بے تاب مجھے
تب پریشانی میں جیوں کال دِسے خواب مجھے
تیرے غبغب کے خیالاں میں پھنسا جب ستی دل
عشق نے بحر میں غم کے کیا گرداب مجھے
مضطرب عشق سوں ہوں مجکوں ملامت نہ کرو
تپش دل نے دیا رعشۂ سیماب مجھے
جب کیا چاہ ترے چاہ زنخداں کی یو دل
چرخ گرداں نے دیا گردش دولاب مجھے
خم ہوئی قوسِ قزح اس کا خمِ ابرو دیکھ
جس نے دیوار میں غم کے کیا محراب مجھے
چمن اُمید کا گرمی سوں گنہ کی جو سُکھا
ابر رحمت نے کیا فیض سوں سیراب مجھے
جم کے رتبے سوں ولیؔ مرتبہ اوپر ہے اگر
جام میں دل کے میسّر ہو مئے ناب مجھے
322
سرخوشی حاصل ہوئی ہے آج گوناگوں مجھے
سبزۂ خط نے دیا ہے نشۂ افیوں مجھے
کشتۂ منت، نئیں مینائے نرگس کا کبھی
ہے خیال چشم خوباں بادۂ گل گوں مجھے
لالہ و گل مجھ سوں لے جاتے ہیں رنگ و بوے درد
گل رخاں کے عشق نے جب سوں کیا خوں مجھے
ہوش کھونا عاشق بے دل کا کچھ مشکل نہیں
نام لے اُس رشک لیلیٰ کا کرو مجنوں مجھے
کیوں نہ ہووے آہ میری ہمسر سرو بلند
یاد آتا ہے عزیزاں وو قد موزوں مجھے
کثرت اسباب دل لینے کوں کچھ درکار نئیں
یک نگاہ لطف سوں کر اے صنم مفتوں مجھے
آبرو کی کس سوں راکھوں جگ منیں چشم امید
ہر گھڑی کرتے ہیں رسوا دیدۂ پُرخوں مجھے
کیا ہوا گر عقل دور اندیش کی سنتا ہوں بات
ہوش سوں کھووے گا آخر وو لب میگوں مجھے
اے ولیؔ رکھ دل میں آوے وو صنم آہنگ شوق
نغمۂ عشاق کا آوے اگر قانوں مجھے
323
کیوں نہ حاصل ہو رِم آہو مجھے
اُس کی انکھیاں نے کیا جادو مجھے
رات آنے کہہ کے پھر آیا نئیں
پیچ دیتا ہے وو مشکیں مو مجھے
اے عزیزاں کیا کروں اخلاص کی
پہنچتی نئیں گل بدن سوں بو مجھے
کیوں کے بیٹھوں گوشۂ آرام میں
کھینچتا ہے وو کماں ابرو مجھے
بلبل نالاں ہوا ہوں درد سوں
جب نظر آیا ہے وو گل رو مجھے
شوخیِ چشم پری کا دنگ ہوں
حیرت افزا ہے رم آہو مجھے
ذہن میں بستا ہے وو خورشید رو
گرمیِ غم سوں ہوئی ہے خو مجھے
بسکہ ہوں تیری جدائی سوں ضعیف
آرسی دیتی نئیں ہے رو مجھے
اے ولیؔ ہے جگ میں محراب دعا
قبلہ رو کا ہر خم ابرو مجھے
324
تجھ نگاہ مست سوں حاصل ہے مدہوشی مجھے
تجھ لبِ خاموش نے بخشی ہے خاموشی مجھے
غیر سوں خالی کیا ہوں دل کوں اپنے جیوں حباب
تجھ نگہ نے جب سوں بخشی خانہ بردوشی مجھے
جام میں روشن ہے جم کی سلطنت کا سب حساب
عیش سلطانی کا ہے فیضِ قدح نوشی مجھے
تجھ کمر کی تاب پر طاقت ربائی ختم ہے
اس نزاکت نے دیا میل ہم آغوشی مجھے
اے ولیؔ از بسکہ اس کی یاد میں ہے محو دل
غیر کے خطرے سوں نس دن ہے فراموشی مجھے
325
حافظے کا حسن دکھلایا ہے نسیانی مجھے
ہے کلید قفل دانش طرز نادانی مجھے
موجزن ہے دل میں میرے ہر رین میں پیچ و تاب
جب سوں تیری زلف نے دی ہے پریشانی مجھے
کیوں پری رویاں نہ آویں حکم میں میرے تمام
تجھ دہن کی یاد ہے مُہر سلیمانی مجھے
یک پلک دوجے پلک سوں نئیں ہوئی ہے آشنا
جب سوں تیرے حسن نے بخشی ہے حیرانی مجھے
اے ولیؔ حق رفاقت کے ادا کرتے کیا
مستحق مغفرت آلودہ دامانی مجھے
326
مدت ہوئی سجن نے کتابت نئیں لکھی
آنے کی اپنے رمز و کنایت نئیں لکھی
میں اپنے دل کی تجکوں حکایت نئیں لکھی
تیری مفارقت کی شکایت نئیں لکھی
کرتا ہوں اپنے دل کی نمن چاک چاک اسے
جو آہ کے قلم سوں کتابت نئیں لکھی
تصویر تیرے قد کی مصوّر نہ لکھ سکے
ہرگز کسی نے ناز کی صورت نئیں لکھی
مارا ہے انتظار نے مجکوں ولے ہنوز
اُس بے وفا کوں دل کی حقیقت نئیں لکھی
وو دل ہے نور حق ستی فارغ کہ جس منیں
مصحف سوں تجھ جمال کے آیت نئیں لکھی
کیوں سنگ دل تمام مسخر ہوے، اگر
طالع میں میرے کشف و کرامت نئیں لکھی
ڈرتا ہوں سادگی ستی موہن کی اے ولیؔ
اس خوف سوں رقیب کی غیبت نئیں لکھی
327
پڑا حیرت میں دل اُس حسن عالم گیر کے دیکھے
مصوّر دنگ ہے جس جلوۂ تصویر کے دیکھے
ہوا جی محو یوں اُس زلف خم در خم کے دیکھے سوں
کہ جیوں ہوتی ہے طالب کی حقیقت پیر کے دیکھے
تری زلفاں کے پیچاں سوں مرے دل کوں اندیشہ نئیں
کہ دیوانے کو جیوں پروا نئیں زنجیر کے دیکھے
مرا دل دیکھ کر غمزے کوں تیرے ہوئی ہے خوش وقتی
کہ جیوں ہوتی ہے شادی شیر کوں نخچیر کے دیکھے
کھلا یوں دل مرا تیری نگہ کے تیر کی خاطر
کماں آغوش جیوں کر کھولتی ہے تیر کے دیکھے
ترے مکھ کے صفحے پر خط لکھا قدرت کے کاتب نے
تعجب میں ہیں سب خطاّط اس تحریر کے دیکھے
ولیؔ کے دل کوں یوں ہوتی ہے راحت تجھ گلی بھیتر
کہ جیوں ہوتی ہے خاطر منشرح کشمیر کے دیکھے
328
مست تیرے جام لب کا باغ میں لالا اَہے
بے خودی کا ہاتھ میں اُس کے سدا پیالا اَہے
شوق سوں تجھ سرو قد کے سرکشی پایا ہے سرو
سب نہالاں میں سخن اس کا سدا بالا اَہے
تجھ لٹک چلنے کی کیفیت صنوبر نے سُنا
تو گلاں کی انجمن میں مست و متوالا اَہے
بے نشاں ہے جس کے دل میں نئیں محبت کی شراب
شیشۂ خالی نمن مجلس سوں نر والا اَہے
اس انکھاں ہور زلف کا از بسکہ دیکھا ہے طلسم
شعر تیرا اے ولیؔ یو سحر بنگالا اَہے
329
کمر اس دل رُبا کی دل رُبا ہے
نگہ اُس خوش ادا کی خوش ادا ہے
سجن کے حسن کوں ٹک فکر سوں دیکھ
کہ یہ آئینۂ معنی نما ہے
یہ خط ہے جوہر آئینہ راز
اسے مشک ختن کہنا بجا ہے
ہوا معلوم تجھ زلفاں سوں اے شوخ
کہ شاہ حسن پر ظلّ ہُما ہے
نہ ہووے کو کن کیوں آکے عاشق
جو وو شیریں ادا گل گوں قبا ہے
نہ پوچھو آہ و زاری کی حقیقت
عزیزاں عاشقی کا مقتضا ہے
ولیؔ کوں مت ملامت کر اے واعظ
ملامت عاشقوں پر کب روا ہے
330
نگہ کی تیغ لے وو ظالم خوں خوار آتا ہے
جگت کے خوب رویاں کا سپہ سالار آتا ہے
ہر اک دیدے کوں حکم آرسی ہے اس کے جلوے سوں
جدھاں وو حیرت افزا جانب بازار آتا ہے
سُرج کو بوجھتا ہوں صبح کے تاراں سوں بھی کمتر
نظر میں میری جب وو یار مہ رخسار آتا ہے
صنوبر کے دل اوپر کیوں نہ ہو قائم قیامت تب
ادا سوں جب چمن بھیتر وو خوش رفتار آتا ہے
مثال شمع کرتا ہے سِنے کی انجمن روشن
ولیؔ جس شب کوں مجھ دل میں خیال بار آتا ہے
331
ترے خورشید مُکھ اوپر عجب جھلکار دستا ہے
ترے رخسار پر تل نقطۂ پرکار دستا ہے
اگرچہ جام جم میں راز عالم تھا عیاں لیکن
ترے مکھ کے سجنجل میں دوجا اسرار دستا ہے
انکھیاں نرگس، زُلَف دہن غنچہ عذاراں گل
ترے مُکھ کے گلستاں میں یو سب گلزار دستا ہے
حقیقت زلف تیری کی جگت پر کچھ نہیں ظاہر
یو بے شک مجھ گناہاں کا سیہ طومار دستا ہے
نگہبانی کوں تجھ مکھ کی بندھے ہے زلف نے حلقہ
خزینے حسن کے اوپر یو بے شک مار دستا ہے
تری چنچل انکھیاں کی جگ منیں تمثیل ظاہر نئیں
مگر پُتلی نیَن کی یو کشن اوتار دستا ہے
تری انکھیاں کے پردے میں خدا کے راز ہیں مخفی
سیاہی نَین کی یو نقطۂ اسرار دستا ہے
ترے گل زار مُکھ اوپر پسینے کا یو شبنم نئیں
کہ ہر یک بوند رخ اوپر دُرِ شہوار دستا ہے
ولیؔ مشتاق درسن کا اگر نئیں تو سبب کیا یو
جو تجھ دربار پر دایم ہزاراں بار دستا ہے
332
مغز اس کا سو باس ہوتا ہے
گل بدن کے جو پاس ہوتا ہے
آشتابی، نئیں تو جاتا ہوں
کیا کروں جی اداس ہوتا ہے
کیوں کے کپڑے رنگوں میں تجھ غم میں
عاشقی میں لباس ہوتا ہے؟
تجھ جدائی میں نئیں اکیلا میں
درد و غم آس پاس ہوتا ہے
اے ولیؔ دل ربا کے ملنے کوں
جی میں میرے ہلاس ہوتا ہے
333
آج سرسبز کوہ و صحرا ہے
ہر طرف سیر ہے تماشا ہے
چہرۂ یار و قامت زیبا
گل رنگین و سرو رعنا ہے
معنیِ حسن و معنیِ خوبی
صورتِ یار سوں ہویدا ہے
دم جاں بخش نو خطاں مجکوں
چشمۂ خضر ہے مسیحا ہے
کمر نازک و دہان صنم
فکر باریک ہے معما ہے
مو بہ مو اس کوں ہے پریشانی
زلف مشکیں کا جس کوں سودا ہے
کیا حقیقت ہے تجھ تواضع کی
یو تلطف ہے یا مدارا ہے
سببِ دل ربائیِ عاشق
مہر ہے لطف ہے دلاسا ہے
جوں ولیؔ رات دن ہے محو خیال
جس کوں تجھ وصل کی تمناّہے
334
عشاق کی تسخیر کوں بالا یہ بلا ہے
یا ناز مجسّم ہے یا تصویر ادا ہے
از بسکہ دل اس رشک پری پر جو بندھا ہوں
ہر موسوں مرے رنگ جنوں جلوہ نما ہے
یا لفظ ہے رنگین ہم آغوش معانی
یا بر میں گل اندام کے گل رنگ قبا ہے
جاتا نہیں گلشن کی طرف صبح وو گل رو
بوجھا ہے کہ واں آہ مری باد صبا ہے
بیماریِ عاشق ہے تجھ انکھیاں ستی لیکن
صد شکر کہ تجھ لب منیں ہر دکھ کی دوا ہے
مجھ حال پر اے بوعلی وقت نظر کر
تجھ چشم میں بوجھا ہوں کہ قانون شفا ہے
گر حکم میں میرے ہو سعادت تو عجب نئیں
سایہ ترا مجھ سر کے اُپر ظل ہما ہے
یک دید کا وعدہ دیا توں اپنی رضا سوں
راضی ہوں میں اس پر کہ تری جس میں رضا ہے
پایا ہوں ولیؔ سلطنت ملک قناعت
اب تخت و چتر حق میں مرے ارض و سما ہے
335
نہ وہ بالا نہ وہ بالی بلا ہے
بلائے عاشقاں ناز و ادا ہے
تغافل شوخ کا عاشق کے حق میں
ستم ہے ظلم ہے جور و جفا ہے
کہا مژگاں نے اس کی سو زباں سوں
کہ عاشق پر ستم کرنا روا ہے
نہ جاوے تجھ کوں چھوڑ اے گلشن ناز
مرا دل بلبل باغ وفا ہے
زہے دولت کہ دائم سایۂ یار
ہمارے سر پہ جیوں ظل ہما ہے
مرا دل کیوں نہ جاوے اس گلی میں
گلی اس دل ربا کی دل کشا ہے
ہمیشہ عندلیب عاشقی کوں
گل مقصود تیرا نقش پا ہے
ولیؔ آتے ہیں راہ عشق میں وو
کہ جن کوں استقامت کا عصا ہے
336
دیکھا ہوں جسے وو مبتلا ہے
خوباں کی نگاہ نئیں بلا ہے
گر تجھ کوں ہے عزم سیر گلشن
دروازۂ آرسی کھلا ہے
صیقل سوں تیری بھواں کی اے شوخ
آئینۂ عشق کوں جلا ہے
تجھ باج نظر میں بلبلاں کی
گلشن نئیں دشت کربلا ہے
خوباں کا ہوا جو سرد بازار
تجھ حسن کا جب سوں غلغلا ہے
جیوں شمع ہوا جو تجھ پہ عاشق
وہ سر سوں قدم تلک جلا ہے
اے اہل ہوس نگاہ مت کر
بالائے سہی قداں بلا ہے
یک دل نئیں آرزو سوں خالی
برجا ہے محال اگر خلا ہے
تسخیر کیا ہے گوش گل کوں
بلبل کا ولیؔ عجب گلا ہے
337
صنم میرا سخن سوں آشنا ہے
مجھے فکر سخن کرنا بجا ہے
چمن منیں وصل کے ہر جلوۂ یار
گل رنگیں بہار مدّعا ہے
نہ بخشے کیوں ترا خط زندگانی
کہ موج چشمۂ آب بقا ہے
تغافل نے ترے زخمی کیا مجھ
تری یہ کم نگاہی نیمچا ہے
نئیں واں آب، غیر از آب خنجر
شہادت گاہ عاشق کر بلا ہے
غنیمت بوجھ ملنے کوں ولیؔ کے
نگاہ پاک بازاں کیمیا ہے
338
گلستانِ لطافت میں ترا قد سرو رعنا ہے
ہمیشہ نازکی کے آبجو میں جلوہ پیرا ہے
عدم ہے تجھ دہن کا جگ میں ثانی اے پری پیکر
اگر بالفرض و التقدیر ثانی ہے تو عنقا ہے
ہوا ہے دل نشیں وو سرو قامت بسکہ مجھ دل میں
صنوبر گر مرے سائے سوں پیدا ہوتو بَرجا ہے
پریشانی کے مکتب کا معلم اس کوں کہہ سکیے
تری زلف پریشاں کا صنم جس سر میں سودا ہے
ولیؔ میری تواضع سوں رقیب سنگ دل دائم
پشیماں ہے خجل ہے منفعل ہے سخت رسوا ہے
339
قد ترا رشک سرو رعنا ہے
معنیِ نازکی سراپا ہے
تجھ بھواں کی میں کیا کروں تعریف
مطلعِ شوخ و رمز و ایما ہے
ساقی و مطرب آج ہیں ہم رنگ
نشۂ بے خودی دو بالا ہے
کیوں نہ ہر ذرہ رقص میں آوے
جلوہ گر آفتاب سیما ہے
نہ رہے اس کے قد کوں دیکھ بجا
سرو ہر چند پائے برجا ہے
چمن حسن میں نگہ کر دیکھ
زلف معشوق عشق پیچا ہے
نہ کرے کیوں نثار نقد نیاز
جس کوں تجھ ناز کی تمنا ہے
کیوں نہ مجھ دل کوں زندگی بخشے
بات تیری دم مسیحا ہے
سنبل اس کی نظر میں جا نہ کرے
جس کوں تجھ گیسواں کا سودا ہے
اس کے پیچاں کا کچھ شمار نہیں
زلف ہے یا یہ موج دریا ہے
ترک کر اے رقیب فرعونی
آہ میری عصائے موسا ہے
آج تجھ غم سوں ہے ولیؔ گریاں
دیکھ جَل پور کا تماشا ہے
340
کماں ابرو پہ جیو قرباں ہوا ہے
دل اس کے تیر کا پیکاں ہوا ہے
بھواں تیغ و پلک، خنجر، نگہ، تیر
یو کس کے قتل کا ساماں ہوا ہے
مرا دل مجھ سوں کر کر بے وفائی
پسندِ خاطر خوباں ہوا ہے
پیا ہے جام دل سوں بادۂ خوں
جو بزم عشق میں مہماں ہوا ہے
عزیزاں کیا ہے پروانے کے دل میں
کہ جی دینا اُسے آساں ہوا ہے
طبیباں کا نئیں محتاج ہرگز
جسے درد بتاں درماں ہوا ہے
برنگ گل فراق گل رخاں میں
گریباں چاک تا داماں ہوا ہے
سواد خطِّ خوباں دل کشی میں
بہار گلشن ریحاں ہوا ہے
ولیؔ تصویر اس کی جن نے دیکھا
مثال آرسی حیراں ہوا ہے
341
عشق نئیں یہ ہنر بر آیا ہے
دشمن ہوش و صبر آیا ہے
دیکھ اُس کی کلاہ بارانی
چاند پر آج ابر آیا ہے
مجھ سوں وحشی ہیں خوش نین، گویا
فوج آہو میں ببر آیا ہے
یا صنم کا ہے غمزۂ بے دیں
یا ولایت سوں گبر آیا ہے
اے ولیؔ کیا سبب کہ آج صنم
بر سر جور و جبر آیا ہے
342
سُرج ہے شعلہ تری اگن کا جو جا فلک پر جھلک لیا ہے
نمک نے اپنے نمک کوں کھوکر ترے نمک سوں نمک لیا ہے
یہ درسوں تیرے جو نور چمکا سو اس سوں تارے ہوئے منور
یو چاند تجھ حسن کا جو نکلا فلک نے تجھ سوں اُچک لیا ہے
ترے درس کا یہ نور انور جدھاں سوں روشن ہوا ہے جگ میں
تدھاں سوں بجلی نے اس چمک سوں اپس چمک میں چمک لیا ہے
ترے شکر لب کی کیا ثنا کہوں کہ لعل جگ میں جو ہے معزز
ترے لباں کی یہ دیکھ سرخی سو اُس نے رنگ و دمک لیا ہے
جو کھول لٹ کوں چلا لٹک کر جھلک جھلک کر جو مکھ دکھایا
سوں لٹ کو دیکھے ولیؔ اٹک کر سجن نین میں اٹک لیا ہے
343
مکتب میں جس کے ہاتھ ادا کی کتاب ہے
خوبی میں آج ہم سبق آفتاب ہے
ظاہر ہوا ہے مجھ پہ ترے ناز سوں صنم
رنگیں بہار حسن بہار عتاب ہے
مانند مو ضعیف کیا اس کے شوق نے
جس مو کمر کا ناؤں نزاکت مآب ہے
کیفیت بہار ادا تب سوں ہے عیاں
وو مست ناز جب ستی مست شراب ہے
تیرے نَین کے دور میں بے وقر ہے شراب
مے خانہ تجھ نگاہ سوں دائم خراب ہے
دیوان میں ازل کے ملے جب سوں حسن و عشق
تب سوں نیاز و ناز میں باہم حساب ہے
پوشیدہ حال عشق رہے کیوں کے اے ولیؔ
غماز یادِ زلفِ صنم پیچ و تاب ہے
344
عشق میں جس کوں مہارت خوب ہے
مشرب مجنوں طرف منسوب ہے
عاشق بے تاب سوں طرز وفا
جیوں ادا محبوب کی محبوب ہے
عشق کے مفتی نے یوں فتویٰ دیا
دیکھنا، خوباں کا درس خوب ہے
لخت دل پر خط لکھا ہوں یار کوں
داغ دل مہر سر مکتوب ہے
غمزہ و ناز و ادائے نازنیں
ظلم ہے طوفان ہے آشوب ہے
لکھ دیا یوسف غلامی خط تجھے
گرچہ نورِ دیدۂ یعقوب ہے
ہر گھڑی پڑھتا ہے اشعار ولیؔ
جس کوں حرف عاشقی مرغوب ہے
345
جسے اقلیم تنہائی میں انداز اقامت ہے
جبین حال پر اُس کی سدا رنگ سلامت ہے
گزر اس سرو قامت کا ہوا ہے جب سوں مسجد میں
موذن کی زباں اوپر ہمیشہ لفظ قامت ہے
مجھے روز قیامت کا رہا نئیں خوف اے واعظ
خیال قامتِ رعنا مرے حق میں قیامت ہے
ہوا ہے صورت دیوار زاہد کنج عزلت میں
یہی اس حسن حیرت بخش کی ظاہر کرامت ہے
ہوا ہے جو جبیں فرسا تری محراب ابرو میں
صف عشاق میں اس کوں بحکم عشق امامت ہے
سیہ بختی ہوئی جگ میں نصیب عاشق بے دل
یہ تجھ زلف پریشاں کی پریشانی کا شامت ہے
نہ ہو ناصح کی سختی سوں مکدر اے دل شیدا
سَدا نقد محبت کا محک سنگ ملامت ہے
شرف ذاتی ہے تجھ کوں اے گل گل زار معشوقی
تجلی مکھ اُپر تیرے سیادت کی علامت ہے
ولیؔ جو عشق بازی کی حقیقت سوں نئیں واقف
سخن اس کا قیامت میں گل باغ ندامت ہے
346
جس دل رُبا سوں دل کوں مرے اتحاد ہے
دیدار اُس کا میری انکھاں کی مراد ہے
رکھتا ہے بر میں دلبر رنگیں خیال کوں
مانند آرسی کے جو صاف اعتقاد ہے
شاید کہ دام عشق میں تازہ ہوا ہے بند
وعدے پہ گل رخاں کے جسے اعتماد ہے
باقی رہے گا جور و ستم روز حشر لگ
تجھ زلف کی جفا میں نپٹ امتداد ہے
مقصود دل ہے اُس کا خیال اے ولیؔ مجھے
جیوں مجھ زباں پہ نام محمدؐ مراد ہے
347
سرو میرا مہر سوں آزاد ہے
شوخ ہے بے درد ہے صیاد ہے
ہاتھ سوں اُس غمزۂ خوں ریز کے
داد ہے بے داد ہے فریاد ہے
آب ہووے کیوں کے دل اس سرو کا
سخت ہے بے رحم ہے فولاد ہے
عشق میں شیریں بچن کے رات دن
آہ دل پر تیشۂ فرہاد ہے
غم نئیں مجنوں کوں ہرگز اے ولیؔ
خانۂ زنجیر اگر آباد ہے
348
ہے بجا عشاق کی خاطر اگر ناشاد ہے
غمزۂ خوں خوار ظالم بر سر بے داد ہے
کیوں نہ ہو فوارۂ خوں جوش زن رگ رگ ستی
ہر نگاہ تیز خوباں نشتر فصاد ہے
یک گھڑی تجھ ہجر میں اے دل رُبا تنہا نہیں
مونس دم ساز میرا آہ ہے، فریاد ہے
تل بناتے دیکھ اس کوں مجھ پہ یوں ظاہر ہوا
صید کرنے کوں ہمارے رغبت صیاد ہے
آسماں اوپر نہ بوجھو چادر ابر سفید
جا نمازِ زاہد عزلت نشیں برباد ہے
حرف شیریں اُس ستی ہوتے ہیں ہر دم جلوہ گر
اہل معنی کی زباں کیا تیشۂ فرہاد ہے
سرو کی دارستگی اوپر نظر کر اے ولیؔ
باوجود خود نمائی کس قدر آزاد ہے
349
گل رخاں میں جس کے سر پر طرۂ زرتار ہے
زیب گلزار ادا وو سرو خوش رفتار ہے
چہرۂ گل رنگ و زلف موج زن خوبی منیں
آیت جنات تجری تحتہا الانہار ہے
بسکہ بے درداں ہوئے ہیں مجتمع چاروں طرف
بستۂ زلف پری رویاں پہ مارا مار ہے
زخم دل تھا گرچہ کاری لیکن اس سوں غم نئیں
سبزۂ خطِّ دل آرا مرہمِ زنگار ہے
کیوں کے جاوے بوالہوس اس کی گلی میں ہو دلیر
ہر نگاہ تیز اس کی تیر ہے تروار ہے
کیوں نہ لیویں زاہد تجھ دیکھ طرز برہمن
رشتۂ اخلاص تیرا رشتۂ زنار ہے
مت نصیحت کر ولیؔ کوں اے سخن نا آشنا
ترک کرنا عشق کوں دشوار ہے دشوار ہے
350
عشق میں صبر و رضا درکار ہے
فکر اسباب وفا درکار ہے
چاک کرنے جامۂ صبر و قرار
دل برِ رنگیں قبا درکار ہے
ہر صنم تسخیر دل کیوں کر سکے
دل رُبائی کوں ادا درکار ہے
زلف کوں وا کر کہ شاہ عشق کوں
سایۂ بال ہما درکار ہے
رکھ قدم مجھ دیدۂ خوں بار پر
گر تجھے رنگ حنا درکار ہے
دیکھ اس کی چشم شہلا کوں اگر
نرگس باغ حیا درکار ہے
عزم اس کے وصل کا ہے اے ولیؔ
لیکن امداد خدا درکار ہے
351
بیاباں عاشقاں کوں ملک اسکندر برابر ہے
ہر اک گوہر انجھو کا تخت کے اختر برابر ہے
جنوں کے ملک کے سلطاں کوں کیا کیا حاجت ہے ، افسرکی
بگولا سر اُپر مجنوں کے سو افسر برابر ہے
جو کُئی حاصل کیا ہے دولت عالی کوں سوزش کی
پھپھولا اس دل دریا بھتر گوہر برابر ہے
فنا کر کر جو کُئی دنیا کی سمجھا زندگانی کوں
اسے گزران کرنے کوں جنگل ہور گھر برابر ہے
ولیؔ دیواں میں میرے تودۂ دفتر کی حاجت نئیں
کہ مجھ دیواں میں ہر اک شعر سو دفتر برابر ہے
352
نہ سمجھو خود بخود دل بے خبر ہے
نگہ میں اُس پری رُو کی اثر ہے
اجھوں لگ مکھ دکھایا نئیں اپس کا
سجن مجھ حال سوں کیا بے خبر ہے
مروت ترک مت کر اے پری رو
محبت میں مروت معتبر ہے
ترے قد کے تماشے کا ہوں طالب
کہ راہ راست بازی بے خطر ہے
تری تعریف کرتے ہیں ملائک
ثنا تیری کہاں حد بشر ہے
بیانِ اہل معنی ہے مطوّل
اگرچہ حسب ظاہر مختصر ہے
ولیؔ مجھ رنگ کوں دیکھے نظر بھر
اگر وو دل ربا مشتاق زر ہے
353
نہ جانوں خط میں تیرے کیا اثر ہے
کہ اُس دیکھے سوں دل زیر و زبر ہے
اُسے باریک بیں کہتے ہیں عاشق
نظر میں جس کو وو نازک کمر ہے
نہ ہووے کیوں ہجوم راست بازاں
جہاں اس سرو قامت کا گزر ہے
ہر اک سوں آشنا ہو نا ہنر نئیں
پری رخسار سوں ملنا ہنر ہے
نہ پاؤں تجھ سوں گر سیب زنخداں
نہال عشق بازی بے ثمر ہے
رہیں گے خاک ہو تیری گلی میں
وفاداری ہماری اس قدر ہے
ولیؔ مجھ دل کی آتش پر نظر کر
جہنم کی زباں پر الحذر ہے
354
مکھ ترا آفتاب محشر ہے
شور اس کا جہاں میں گھر گھر ہے
رگ جاں سوں ہوا ہے خون جاری
یاد تیری پلک کی نشتر ہے
پہنچتاہے دلوں کوں ہر جاگہ
غم ترا روزیِ مقدّر ہے
مکھ ترا بحر حسن ہے جاناں
زلف پُرپیچ موج عنبر ہے
بات میٹھی ترے لباں کی صنم
حسد انگیز شیر و شکّر ہے
قد سوں تیرے کدھیں نہ پایا پھل
حق میں میرے درخت بے بر ہے
تجھ بن اے نور بخش محفل دل
حالِ مجلس تمام ابتر ہے
آگ ہُئی ہے بقدر نیزہ بلند
شمع نئیں آفتاب محشر ہے
دود آتش کیا ہے سرمۂ چشم
داغِ دل دیدۂ سمندر ہے
صفحۂ دل پہ درد کوں لکھنے
رشتۂ آہ تار مسطر ہے
آج جیوں آرسی ہوے ہیں عزیز
خود نمائی جِنوں کا جوہر ہے
سادہ رو ہیں ہمیشہ باعزت
آب نِس دن محیط گوہر ہے
مجکوں پہنچی ہے آرسی سوں یہ بات
صاف دل وقت کا سکندر ہے
سیر دریاے معرفت کوں سنوار
کشتیِ دل اگر قلندر ہے
اے ولیؔ کیا ہے حاجت قاصد
نامہ میرا پرِ کبوتر ہے
355
قبلۂ اہل صفا شمشیر ہے
ہادیِ مشکل کشا شمشیر ہے
غازیاں اہل سعادت کیوں نہ ہو
سایۂ بال ہُما شمشیر ہے
بوالہوس اس کے اَگے کیوں آسکے
صورت دست قضا شمشیر ہے
کیوں نہ دشمن کے کرے سینے میں جا
ناخنِ شیر خدا شمشیر ہے
اولاً ریحان و آخر لالہ رنگ
ظاہرا برگِ حنا شمشیر ہے
زندۂ جاوید شہدا کیوں نہ ہوں
موجۂ آب بقا شمشیر ہے
سالک راہ فنا کوں دم بدم
آخرت کی رہنما شمشیر ہے
صاحب ہمت کوں نت ہے دست گیر
مرشد حاجت روا شمشیر ہے
راہ غربت میں کہ مشکل ہے تمام
ناتوانوں کا عصا شمشیر ہے
دشمناں کیوں کر سکیں مکرو فریب
صیقل زنگ دغا شمشیر ہے
کیوں نہ ہووے آب سر سوں تا قدم
جوہر کانِ حیا شمشیر ہے
کیوں نہ ہووے قتل عاشق دم بدم
شوخ کی بانکی ادا شمشیر ہے
جن نے پکڑا گوشۂ آزادگی
اُس کوں موج بوریا شمشیر ہے
کعبۂ فتح و ظفر میں اے ولیؔ
شکل محراب دعا شمشیر ہے
356
عاشقاں کی قید تیرا حسن عالم گیر ہے
بلبلاں کے واسطے ہر موج گل زنجیر ہے
تجھ نَین کی ہے نگاہ راست تیر بے خطا
کج ادائی تجھ بھواں کی جوہر شمشیر ہے
حسن تیرا عالم علوی سوں دیتا ہے خبر
یہ دم عیسیٰ کی تیرے دم منیں تاثیر ہے
کیا کہ حیراں تری تعریف اے آئینہ رو
مو بہ مو تیرا سرا پا ناز کی تصویر ہے
اے ولیؔ کہتی ہے بلبل اس کا سن رنگیں سخن
غنچہ لب کے لب اُپر جیوں بوے گل تقریر ہے
357
تشنہ لب کوں تشنگی مَے کی نئیں ناسور ہے
پنبۂ مینا اسے جیوں مرہم کافور ہے
یاد سوں ساقی کے نس دن ہر پلک ہے شاخ تاک
اشک حسرت اس اُپر جیوں خوشۂ انگور ہے
اُس کا دل ہرگز نہ ہو ویراں ازل سوں تا ابد
یاد سوں دلدار کی جس کا سِنہ معمور ہے
نفس سرکش پر جو کُئی پایا ہے یاں فتح و ظفر
دارِ عقبیٰ کے بھتر الحق و ہی منصور ہے
تجھ تجلی کے صحیفے کا سُرج ہے یک ورق
عکس تیری زلف کا جگ میں شبِ دیجور ہے
جو سیاہی ہور سفیدی سوں ہوا ہے آشنا
اہل بینش کی نظر میں وو سدا منظور ہے
جلد رو ہو عشق کی رہ میں کہ تا پہنچے نزیک
کاہلی کوں سٹ دے اے سالک کہ منزل دور ہے
خاکساری جس کوں سلطانی ہے اس عالم منیں
کاسۂ خالی اُسے جیوں چینیِ فغفور ہے
یار کے دیدار کا طالب ہے موسیٰ ہر زماں
اے ولیؔ دربار اُس کا اس کوں کوہ طور ہے
358
نہ بوجھو خود بخود موہن میں اَڑ ہے
رقیب رو سیہ فتنہ کی جڑ ہے
ہر اک زلفاں کے دیکھے نئیں اٹکتا
اٹکتا ہوں جہاں دل کی پکڑ ہے
کروں کیوں سنگ دل کے دل کوں تسخیر
زبردستی میں بیجاپُر کا گَڑ ہے
نئیں بل دار چیرا سر پر اس کے
عزیزاں! یو جوانی کی اکڑ ہے
برستا ہے سجن کے مکھ اُپر نور
نگاہوں کی ہر ایک جانب سوں جھڑ ہے
عجب تیزی ہے تجھ پلکاں میں اے شوخ
دو عالم اس دُودھاری سوں دو دھڑ ہے
ولیؔ تو بحر معنی کا ہے غواّص
ہر اک مصرع ترا موتیاں کی لڑ ہے
359
اُس کے نین میں غمزۂ آہو پچھاڑ ہے
اے دل سنبھال چل کہ اَگے مار دھاڑ ہے
تجھ نین کے چمن منیں کیوں آسکوں کہ یاں
خاراں کی ٹھار خنجر مژگاں کی باڑ ہے
جس کوں نئیں ہے بو‘جھ ترے حسن پاک کی
تنکا نزیک اُس کے مثال پہاڑ ہے
نرگس کے پھولنے کی کرے سیر دم بہ دم
جو تجھ نگاہ مست کا کیفی کراڑ ہے
دل میں رکھا جدھاں سوں ولیؔ پنجتن کی یاد
داڑِم نمن تدھاں سوں سِنے میں دڑاڑ ہے
360
حُسن کا مسند نشیں وو دلبر ممتاز ہے
دلبراں کا حسن جس مسند کا پا انداز ہے
غیرت حیرت ہے خبر اُس آئنہ رو کی کسے
راز کے پردے میں جس کی خامشی آواز ہے
اُس نزاکت آفریں پر ناز ہے کیا ناز کا
سر ستی پاؤں تلک سب ناز ہے سب ناز ہے
دل منیں آکر ہوا خلوت نشیں تیرا خیال
غم ترا سینے میں میرے راز کا ہمراز ہے
وو اپس کے وقت کا منصور ہے عالم منیں
صدق سوں تجھ باٹ میں جو عاشق سرباز ہے
سوکھ کر تجھ غم منیں یہ تن ہوا ہے جیوں رباب
دل مرا سینے میں میرے جیوں کہ تار ساز ہے
یاد سوں اُس رشک گلزار ارم کی اے ولیؔ
رنگ کوں میرے سدا جیوں بوئے گل پرداز ہے
361
لہریا چیرا صنم کا بسکہ خوش انداز ہے
دل ربائی میں برنگ موج گل ممتاز ہے
موسم خط میں نہ کر فکر اے گل رنگیں ادا
سبزۂ گلزار خوبی کا ابھی آغاز ہے
روبرو آنے میں اس کے حال دل ظاہر ہوا
جلوۂ آئینہ رویاں کاشف ہر راز ہے
غیر سوں الفت پکڑنا ہجر میں درکار نئیں
دم بدم آہ دل بے تاب گر دم ساز ہے
زندگی میں طائروں کوں خلاصی کیوں کے ہو
پنجۂ ظلم ستم گر چنگل شہباز ہے
دردمنداں کی نظر سوں اس کا گرنا ہے بجا
جو برنگ طفل اشک عاشقاں غماز ہے
زندہ کرنا استخواں کوں گرچہ تھا کارِ مسیح
زندہ کرنا شوق کوں تجھ ناز کا اعجاز ہے
دردمنداں کو سدا ہے قول مطرب دل نواز
گرمیِ افسردہ طبعاں شعلۂ آواز ہے
بزم کوں رونق دیا ہے جب سوں وو عالی مقام
رشتۂ آہ دل بے تاب تار ساز ہے
دیکھنا آئینہ رو کا امر مشکل نئیں ولے
سدِّ راہ سینہ صافاں طالع ناساز ہے
اے ولیؔ یہ مصرع موزوں ہے ہر دل کا عزیز
قامت رعنا صنم کا سرو باغ ناز ہے
362
مجھ حکم میں وو راست قد دل نواز ہے
جس کے ہر ایک بول میں عشرت کا ساز ہے
دم ساز زہرہ رو ہے جو خالی ہے آپ سوں
نے کی صدائے خاص سوں واضح یہ راز ہے
کہتے ہیں کھول پردہ شناسانِ مدعا
جو اوج میں ہوا کے اُڑے شاہ باز ہے
جب سوں رکھا ہوں عشق کی آتش اُپر قدم
تب سوں مثال عود مرا جیو گداز ہے
اے بوالہوس نہ دل میں رکھ آہنگ عاشقی
جاں باز عاشقاں پہ یہ دروازہ باز ہے
کرنے کوں سیر راہ حجاز و عراق عشق
عشاق پاس ساز و نوا سب نیاز ہے
تو اصل کے دائرے میں ہے جگ دُجے ہیں فرع
اوج حضیض ہیچ تو ہی یکّہ تاز ہے
تیرے خیال میں جو ہوا خشک جیوں رباب
مضراب غم کا ہاتھ اُس اوپر دراز ہے
محراب تجھ بھواں کی عجب ہے مقام خاص
ہر پنج گاہ جس میں دلوں کی نماز ہے
سن حرف راست باز کا مت مل رقیب سوں
ہرچند تیری طبع مخال نواز ہے
خاراں دلاں کے چشم کی نسبت کے فیض سوں
سرمے کوں اصفہاں کے عجب امتیاز ہے
بولی تجھے صبا نے سرِ زلف یہ سخن
نوروز عاشقاں کا ترا حسن و ناز ہے
بانگ بلند بات یہ کہتا ہوں اے ولیؔ
اس شعر پر بجا ہے اگر مجکوں ناز ہے
363
زلف موہن کی کہ عنبر بیز ہے
حسن کے دعوے کی دست آویز ہے
ہے گل رعنا بہار حسن کا
ناز تیرا، جو نیاز آمیز ہے
شوق کے مرکب کوں راہ عشق میں
اے سجن تیری نگہ مہمیز ہے
ہر پلک تیری کہ ہے تیغ فرنگ
عاشقاں کے مارنے کوں تیز ہے
ہاتھ میں میرے نہ سمجھو تم بیاض
شوخ کے ملنے کی دست آویز ہے
چاہتا ہوں دل ستی اے نازنیں
جنگ تیری وو کہ صلح آمیز ہے
تجھ سخن کے وصف لکھنے میں قلم
ابرنیساں کے نمن دُر ریز ہے
تجھ تغافل سوں ہوا ہے رونما
گریۂ عاشق کہ خوں آمیز ہے
دل مرا اے دلبر شیریں بچن
تجھ لباں کے شوق سوں لبریز ہے
اے ولیؔ لگتا ہے ہر دل کوں عزیز
شعر تیرا بسکہ شوق انگیز ہے
364
ہر نگاہ شوخ و سرکش دشنۂ خوں ریز ہے
تیغ اس ابرو کی ہر دم مارنے کوں تیز ہے
عشق کے دعوے میں اُس کی بات رکھتی ہے اساس
سنبل زلف پری سوں جس کوں دست آویز ہے
آج گل گشتِ چمن کا وقت ہے اے نوبہار
بادۂ گل رنگ سوں ہر جام گل لبریز ہے
جب سوں تیری زلف کا سایہ پڑا گلشن منیں
تب ستی صحن چمن ہر ٹھار سنبل خیز ہے
سادہ رویاں کوں کیا مشتاق اپنے حسن کا
شعر تیرا اے ولیؔ از بسکہ شوق انگیز ہے
365
تحصیل دل کے ہونے یہ مکھ کتاب بس ہے
دانائے منتخب کوں یہ انتخاب بس ہے
مجھ حال کا کرے گر آکر سوال دلبر
تو لاجواب ہونا مجکوں جواب بس ہے
تاب کمر سوں تیری بے تاب بسکہ ہوں میں
مانند زلف خوباں مجھ پیچ و تاب بس ہے
جو عشق کے نگر کا ہے صوبہ دار جگ ہے
مجنونِ لیلائے حسن اس کا خطاب بس ہے
جو کُئی ولیؔ کے مانند پیتا ہے عشق کی مَے
اس برہا کے جلے کوں دل کا کباب بس ہے
366
عاشق کوں تجھ درس کا دائم خیال بس ہے
خاموش ہو کے رہنا اتنا چہ قال بس ہے
گر خلق عید خاطر منگتی ہے ماہ نو کوں
مجھ دل کی عید ہونے ابرو ہلال بس ہے
گر کانورومیں لوگاں عالم کوں موہتے ہیں
مجھ دل کوں موہ لینے یہ خط و خال بس ہے
ہر دل رُبا کوں ہرگز دیتا نہیں ہوں دل مَیں
دل بستگی کوں میری وو بے مثال بس ہے
ہرچند اے ولیؔ ہوں میں غرقِ بحر عصیاں
مجکوں شفیعِ محشر حضرت کی آل بس ہے
367
ہم کو شفیع محشر وو دیں پناہ بس ہے
شرمندگی ہماری عذر گناہ بس ہے
خاطر سوں گئی ہے خواہش اسباب دُنیوی کی
ہمت برہ کی رہ میں مجھ زاد راہ بس ہے
جو صاف دل ہیں اُن کوں درکار نئیں ہے زینت
جیوں آرسی، نمد کی سر پر کلاہ بس ہے
اسباب جنگ رکھنا درکار نئیں ہمن کوں
دشمن کو مارنے کوں اک تیر آہ بس ہے
نئیں آرزو کہ بیٹھوں مسند پہ سلطنت کی
تیری گلی میں آنا یہ دست گاہ بس ہے
درکار نئیں ہے مسجد سجدے کوں عاشقاں کے
محراب تجھ بھواں کی اے قبلہ گاہ بس ہے
مت تیر ہور کماں کی کر فکر اے خوش ابرو
عاشق کے مارنے کوں سیدھی نگاہ بس ہے
تجھ عشق کے جلے کوں کیا کام چاندنی سوں
تجھ حسن کا تماشا اے رشک ماہ بس ہے
بے جا ہے بادشاہی ہر خوب رو کوں دینا
خوبی کے تخت اوپر اک بادشاہ بس ہے
دل لے گیا ہمارا جادو سوں وو پری رُو
دیوانگی ہماری اس پر گواہ بس ہے
درکار نئیں کہ دیکھوں ہر اک ادا کوں تیری
تجھ چال کا تماشا اے کج کلاہ بس ہے
غم نئیں اگر رقیباں آئے ہیں چڑھ ولیؔ پر
اے دوست تجھ کرم کی اس کوں پناہ بس ہے
368
آج ہر گل نور کی فانوس ہے
کوہ و صحرا صورتِ طاؤس ہے
گر نہ نکلے سیر کوں وو نوبہار
ظلم ہے، فریاد ہے، افسوس ہے
اے صنم تیرے دہن کے شوق سوں
ہر کلی میں نغمۂ ناقوس ہے
نور سوں تجھ یاد کی اے شمع رو
پردۂ دل پردۂ فانوس ہے
دیکھ کر اُس کی ادا و ناز کوں
ہر پری کوں خواہش پا بوس ہے
دل نہ دے دوجے کوں غافل بوجھ اسے
کم نگاہی شوخ کی جاسوس ہے
دیکھنے سوں سیر نئیں ہوتا ولیؔ
مدّعا اُس کا کنار و بوس ہے
369
سرو میرا جب ستی گل پوش ہے
ہر طرف سوں بلبلاں کا جوش ہے
اے سجن یک بات ہے لیکن اُسے
بوجھتا ہے وو کہ جس کوں ہوش ہے
گول پگڑی کے نہ پھر ہرگز تو گرد
گول پگڑی حسن کا سرپوش ہے
دیکھنا تجھ قد کا اے نازک بدن
باعثِ خمیازۂ آغوش ہے
اب خلاصی عشق سوں ممکن نہیں
دام دل، زلف دو دامی پوش ہے
کیوں نہ ہو امید کا روشن چراغ
شمع مجلس ساقیِ مے نوش ہے
ہر سخن تیرا الطافت سوں ولیؔ
مثل گوہر زینت ہرگوش ہے
370
دل طلب گار ناز مہوش ہے
لطف اس کا اگرچہ دل کش ہے
مجھ سوں کیوں کر ملے گا حیراں ہوں
شوخ ہے، بے وفا ہے سرکش ہے
کیا تری زلف کیا ترے ابرو
ہر طرف سوں مجھے کشاکش ہے
تجھ بن اے داغ بخش سینہ و دل
چمنِ لالہ دشت آتش ہے
اے ولیؔ تجربے سوں پایا ہوں
شعلۂ آہ شوق بے غش ہے
371
ہر طرف ہنگامۂ اجلاف ہے
مت کسو سوں مل اگر اشراف ہے
ہر سحر تجھ نعمت دیدار کی
آرسی کوں اشتہائے صاف ہے
نئیں شفق ہر شام تیرے خواب کوں
پنجۂ خورشید مخمل باف ہے
نقد دل دوجے کوں دینا تجھ بغیر
حق شناسوں کے نزک اسراف ہے
کیا کروں تفسیر غم، ہر اشک چشم
راز کے قرآن کا کشاف ہے
مست جام عشق کوں کچھ غم نہیں
خاطر ناصح اگر نا صاف ہے
وسوسے سوں دل کو مت کر زر قلب
سینہ صافوں کی نظر صراف ہے
جب سوں وو آتا ہے ہمراہ رقیب
دردمنداں کا مکاں اعراف ہے
رحم کرتا نئیں ہمارے حال پر
شوخ ہے سرکش ہے بے انصاف ہے
اے ولیؔ تعریف اس کی کیا کروں
ہر طرح مستغنی الاوصاف ہے
372
ہرچند کہ اس آہوے وحشی میں بھڑک ہے
بے تاب کے دل لینے کوں لیکن ندھڑک ہے
عشاق پہ تجھ چشم ستم گار کا پھرنا
تروار کی اوجھڑ ہے کَتّے کی سُڑک ہے
گرمی سوں تری طبع کی ڈرتے ہیں سیہ بخت
غصے سوں کڑکنا ترا بجلی کی کڑک ہے
تیری طرف انکھیاں کوں کہاں تاب کہ دیکھیں
سورج سوں زیادہ ترے جامے کی بھڑک ہے
کرنے کوں ولیؔ عاشق بے تاب کوں زخمی
وو ظالم بے رحم نپٹ ہی ندھڑک ہے
373
اے دوست تیری یاد میں دل کوں کمال ہے
نقش مراد آئینہ تیرا خیال ہے
ہے راستی سوں قد کوں ترے مرتبہ بلند
جنّت میں اس کے عشق سوں طوبیٰ نہال ہے
حاجت نہیں شمع کی اس انجمن منیں
جس انجمن میں شمع سجن کا جمال ہے
آ اے مہِ دو ہفتہ مرے پاس ایک روز
ہرآن تجھ فراق کی سینہ پہ سال ہے
ہم سایۂ بُتاں نے کیا قد مرا دوتا
اس مدعا پہ طرۂ خمدار دال ہے
زاہد کوں مثل دانۂ تسبیح ایک آن
کوچے ستی ریا کے نکلنا محال ہے
لازم ہے درس یار کی تحصیل رات دن
ہر مدرسے کے بیچ یہی قیل و قال ہے
جب سوں ترے خیال نے دل میں کیا گزر
بے تاب جیو مرے پر غضب وجد و حال ہے
اے عاشقاں کی عید تامل سوں کر نظر
تیری بھواں کی یاد میں تن جیوں ہلال ہے
صد برگ سو زبان ستی کہتا ہے یو بچن
غنچے کوں تجھ دہن سوں سدا انفعال ہے
روئے زمیں کا خال ہے زینت میں اے صنم
تیرا جو مثل نقش قدم پائمال ہے
تیری نَین کی یاد میں جن نے سفر کیا
اس کے سفر کی راہ نگاہ غزال ہے
بانگ بلند بات یہ کہتا ہوں اے سجن
کعبے میں تجھ جمال کے تل جیوں بلال ہے
خاموش گر رہا ہے ولیؔ تو عجب نہیں
غواّص کا ہمیشہ خموشی کمال ہے
374
حسن تیرا سُرج پہ فاضل ہے
مکھ ترا رشک بدر کامل ہے
حسن کے درس میں لیا جو سبق
مجھ نزک فاضل و مکمل ہے
رات دن تجھ جمال روشن سوں
فضل پروردگار شامل ہے
جس کوں تجھ حسن کی نئیں ہے خبر
بے گماں وو جہاں میں غافل ہے
زاد رہ دل سوں جو بغل میں لیا
عشق کے پنتھ میں وو عاقل ہے
عشق کے راہ کے مسافر کوں
ہر قدم تجھ گلی میں منزل ہے
اے ولیؔ طرز عشق آسان نئیں
آزمایا ہوں میں کہ مشکل ہے
375
نشّہ بخش عاشقاں وو ساقیِ گل فام ہے
جس کی انکھیاں کا تصوّر بے خودی کا جام ہے
کھولنا زلفاں کا کچھ درکار نئیں اے خوش نَین
یک نگاہ ناز تیری دوجہاں کا دام ہے
آفتاب آتا ہے محرم ہو کے تجھ کوچے طرف
صبح صادق اس کے بَر میں جامۂ احرام ہے
دل کوں جمعیت ہے جب جاتا ہوں دنبال صنم
آرسی کے ساتھ میں سیماب کوں آرام ہے
مت قدم رکھ اس طرف اے زاہد خلوت نشیں
غمزۂ خوں خوار ظالم دشمنِ اسلام ہے
جس صنم کی سرکشی کا جگ میں ہے صیت بلند
شکر حق وو کافر بدکیش میرا رام ہے
اے ولیؔ کیوں خشک مغزی کا نہیں کرتا علاج
یاد اُن انکھیاں کی تجھ کوں روغنِ بادام ہے
376
اس سرو خوش ادا کوں ہمارا سلام ہے
اُس یار بے وفا کوں ہمارا سلام ہے
لیتا نئیں سلام ہمارا حجاب سوں
اُس صاحب حیا کوں ہمارا سلام ہے
اُس باج دل میں میرے دوجا نئیں ہے مدّعا
اُس دل کے مدعا کوں ہمارا سلام ہے
ناز و ادا سوں دل کوں مرے مبتلا کیا
اُس نازنین پیا کوں ہمارا سلام ہے
آرام جان و دل ہے ولیؔ جس کا دیکھنا
اُس جان دل رُبا کو ہمارا سلام ہے
377
اس شاہ نو خطاں کو ہمارا سلام ہے
جس کے نگینِ لب کا دوعالم میں نام ہے
سرشار انبساط ہے اُس انجمن منیں
جس کوں خیال تیری انکھیاں کا مدام ہے
جس سرزمیں میں تیری بھواں کا بیاں کروں
خوبی ہلال چرخ کی وہاں ناتمام ہے
جب لگ ہے تجھ گلی میں رقیب سیاہ رو
تب لگ ہمارے حق میں ہر اک صبح شام ہے
تنہا نہ سبد عشق میں تھیر ہوا ولیؔ
یہ زلف حلقہ دار دوعالم کا دام ہے
378
ترا مجنوں ہوں صحرا کی قسم ہے
طلب میں ہوں تمنا کی قسم ہے
سراپا ناز ہے تو اے پری رو
مجھے تیرے سراپا کی قسم ہے
دیا حق حسن بالا دست تجکوں
مجھے تجھ سرو بالا کی قسم ہے
کیا تجھ زلف نے جگ کوں دِوانا
تری زلفاں کے سودا کی قسم ہے
دو رنگی ترک کر ہر اک سے مت مل
تجھے تجھ قدِّ رعنا کی قسم ہے
کیا تجھ عشق نے عالم کوں مجنوں
مجھے تجھ رشک لیلیٰ کی قسم ہے
ولیؔ مشتاق ہے تیری نگہ کا
مجھے تجھ چشم شہلا کی قسم ہے
379
صنم میرا نپٹ روشن بیاں ہے
برنگ شعلہ سر تا پا زباں ہے
نظر کرنے میں دل اس کا لیا ہوں
کمندِ گل، نگاہ بلبلاں ہے
بجا ہے گر وو سرو گلشنِ ناز
ہماری راستی پر مہرباں ہے
وفا کر حسن پر مغرور مت ہو
وفاداری بہار بے خزاں ہے
صنم مجھ دیدہ و دل میں گزر کر
ہوا ہے، باغ ہے، آب رواں ہے
ہوا تیر ملامت کا نشانہ
نظر میں جس کی وو ابرو کماں ہے
ولیؔ اس کی جفا سوں خوف مت کر
جفا کرنا وفا کا امتحاں ہے
380
یو تل زنگی و خط مشک ختن ہے
سخن مصری و لب کان یمن ہے
مجھ اوپر کھینچتے ہیں تیغ ہندی
ترے ابرو کہ چیں جن کا وطن ہے
ہوئی ہے دنگ تصویر فرنگ دیکھ
تری صورت کہ یہ رشک دمن ہے
دسے تیرے نَین میں کا نور ودیس
تری باتاں میں بنگالے کا فن ہے
ترے لب میں دِسے لعلِ بدخشاں
سخن تیرا ہر اک دُرِّ عدن ہے
تری یہ زلف ہے شام غریباں
جبیں تیری مجھے صبح وطن ہے
ولیؔ ایران و توراں میں ہے مشہور
اگرچہ شاعر ملک دکن ہے
381
عارفاں پر ہمیشہ روشن ہے
کہ فن عاشقی عجب فن ہے
کیوں نہ ہو مظہر تجلی یار
کہ دل صاف مثل درپن ہے
عشق بازاں ہیں تجھ گلی میں مقیم
بلبلاں کا مقام گلشن ہے
سفر عشق کیوں نہ ہو مشکل
غمزۂ چشم یار رہ زن ہے
بار مت دے رقیب کوں اے یار
دوستاں کا رقیب چشم سوزن ہے
مجکوں روشن دلاں نے دی ہے خبر
کہ سخن کا چراغ روشن ہے
گھیر رکھتا ہے دل کوں جامۂ تنگ
جگ منیں دور دور دامن ہے
عشق میں شمع رو کے جلتا ہوں
حال میرا سبھوں پہ روشن ہے
اے ولیؔ تیغ غم سوں خوف نہیں
خاکساری بدن پہ جوشن ہے
382
دشمن دیں کا دین دشمن ہے
راہزن کا چراغ رہزن ہے
ترش روئی ہے حسن اہلِ لباس
چین دامن کا زیب دامن ہے
پاک بازی میں دل کوں ہے عزّت
صافی درپن آب درپن ہے
باغ گل راستی کا ہے سرسبز
سرو گلشن میں حسن گلشن ہے
اے ولیؔ صاحب سخن کی زباں
بزم معنی میں شمع روشن ہے
383
شکار انداز دل وو من ہرن ہے
لقب جس شوخ کا جادو نَین ہے
ہوا ہے جو شہید لالہ رُویاں
برنگ داغ دل خونیں کفن ہے
نئیں درکار گل گشت چمن زار
بہار عاشقاں وو گل بدن ہے
کرے گی سنگ دل کے دل میں جا نقش
صدائے بے دلاں فرہاد فن ہے
بجا ہے اس کوں کہنا خسروِ وقت
نظر میں جس کو وو شیریں بچن ہے
ترا قد اے بہار گلشن ناز
مثال سرو زیب انجمن ہے
خودی سوں اولاً خالی ہو اے دل
ق
اگر اس شمع روشن کی لگن ہے
غلام و فدوئ درگاہ احمد
صدا اس کی زباں پر یو بچن ہے
ہوا جو خادم شاہ ولایت
ولیؔ ہے والی ملک سخن ہے
384
ترے لب پر جو خط عنبریں ہے
خط یاقوت سوں نقش نگیں ہے
چمن آرائے باغ خوش ادائی
نہال قد سرو گل جبیں ہے
کہو زاہد کوں جاوے اس گلی میں
اگر مشتاق فردوس بریں ہے
نہ آوے گی کدھی لکھنے میں ہرگز
مصوّر یو ادائے نازنیں ہے
ہمیشہ دیکھتی ہے تجھ کمر کوں
نگہ میری سدا باریک بیں ہے
مرے حق میں عنایت نامۂ یار
مثال شہپر روح الامیں ہے
کرے اک آن میں جگ کوں دِوانہ
نگہ تیری کہ جادو آفریں ہے
نہیں گل برگ گلشن میں اے لالن
ترے گل گوں کا یو دامان زیں ہے
سویدا کی نمط جاوے نہ ہرگز
خیال اس خال کا جو دل نشیں ہے
ولیؔ جن نے سنا میرے سخن کوں
زباں پر اس کی ذکر آفریں ہے
385
ہر اک سوں مل متواضع ہو سروری یہ ہے
سنبھال کشتیِ دل کوں قلندری یہ ہے
نکال خاطر فاتر سوں جام کا غم
صفا کر آئینۂ دل سکندری یہ ہے
تو جان بوجھ، آجانا ہوا سو میں بوجھا
کہ زندگی منیں مقصود زر گری یہ ہے
خیال یار کوں رکھ اپنے دل میں محکم کر
کہ عاشقاں کے نزک شیشہ و پری یہ ہے
بسا عزیز ہیں تجھ مکھ کے آفتاب پرست
تو جلوہ گر ہو کہ اب ذرہ پروری یہ ہے
ٹک اک نقاب اُچا کر اپس کا مکھ دکھلا
کہ دلبراں کے نزک حق دل بری یہ ہے
بسار دل سوں اپس کے تو یاد خاقانیؔ
ولیؔ کوں دیکھ کہ اب رشک انوریؔ یہ ہے
386
نکل اے دل رُبا گھر سوں کہ وقت بے حجابی ہے
چمن میں چل بہار نسترن ہے ماہتابی ہے
کسی کی بات سنتا نئیں کسی پر رحم کرتا نئیں
ہٹیلا ہے، ستمگر ہے، جفا جو ہے، شرابی ہے
گیا ہے جب سوں وو گل رو چمن میں مے کشی کرنے
ہر اک گل صورت ساغر ہر اک غنچہ گلابی ہے
گلی میں اُس ستم گر کی نہ جا اے دل، نہ جا اے دل
کہ جاں بازی میں آفت ہے، قیامت ہے، خرابی ہے
کسے طاقت ہے انکھیاں کھول کر دیکھے تری جانب
جھلک تجھ حسن روشن کی شعاع آفتابی ہے
تمھارے اُس سجن مدت سوں فدوی ہیں دعا گو ہیں
ہمن سوں بے حسابی بات کرنا بے حسابی ہے
وفاداری بہار گلشن خوبی ہے اے گل رو
نہ بوجھو سرسری ہرگز سخن میرا کتابی ہے
بہار عاشقی کوں تازہ کرنا اے گل رعنا
تلطّف ہے، مدارا ہے کرم ہے، بے عتابی ہے
ولیؔ پایا رباعی چار ابرو کے تصوّر میں
تخلّص چشم گریاں کا بجا ہے گر سحابیؔ ہے
387
مفلسی سب بہار کھوتی ہے
مرد کا اعتبار کھوتی ہے
کیوں کے حاصل ہو مجکو جمعیت
زلف تیری قرار کھوتی ہے
ہر سحر شوخ کی نگہ کی شراب
مجھ انکھاں کا خمار کھوتی ہے
کیوں کے ملنا صنم کا ترک کروں
دلبری اختیار کھوتی ہے
اے ولیؔ آب اُس پری رو کی
مجھ سِنے کا غبار کھوتی ہے
388
دل کوں تجھ باج بے قراری ہے
چشم کا کام اشک باری ہے
شب فرقت میں مونس و ہمدم
بے قراروں کوں آہ و زاری ہے
اے عزیزاں مجھے نہیں برداشت
سنگ دل کا فراق بھاری ہے
فیض سوں تجھ فراق کے ساجن
چشم گریاں کا کام جاری ہے
فوقیت لے گیا ہوں بلبل سوں
گرچہ منصب میں وو ہزاری ہے
عشق بازوں کے حق میں قاتل کی
ہر نگہ خنجر و کٹاری ہے
آتش ہجر لالہ رو سوں ولیؔ
داغ سینے میں یادگاری ہے
389
عشق بے تاب جاں گدازی ہے
حسن مشتاق دل نوازی ہے
اشک خونیں سوں جو کیا ہے وضو
مذہب عشق میں نمازی ہے
جو ہوا راز عشق سوں آگاہ
وو زمانے کا فخر رازی ہے
پاک بازاں سوں یوں ہوا مفہوم
عشق مضمون پاک بازی ہے
جاکے پہنچی ہے حد ظلمت کوں
بسکہ تجھ زلف میں درازی ہے
تجربے سوں ہوا مجھے ظاہر
ناز مفہوم بے نیازی ہے
اے ولیؔ عیش ظاہری کا سبب
جلوۂ شاہد مجازی ہے
390
کوچۂ یار عین کاسی ہے
جوگیِ دل وہاں کا باسی ہے
پی کے بیراگ کی اداسی سوں
دل پہ میرے سدا اُداسی ہے
اے صنم تجھ جبیں اُپر یہ خال
ہندوے ہردوار باسی ہے
زلف تیری ہے موج جمنا کی
تل نزک اس کے جیوں سناسی ہے
گھر ترا ہے یہ رشک دیولِ چیں
اس میں مدت سوں دل اُپاسی ہے
یہ سیہ زلف تجھ زنخداں پر
ناگنی جیوں کُنوے پہ پیاسی ہے
طاس خورشید غرق ہے جب سوں
بر میں تیرے لباس طاسی ہے
جس کی گفتار میں نئیں ہے مزا
سخن اس کا طعام باسی ہے
اے ولیؔ جو لباس تن پہ رکھا
عاشقاں کے نزک لباسی ہے
391
ترا مکھ مشرقی، حسن انوری، جلوہ جمالی ہے
نَین جامی، جبیں فردوسی، و ابرو ہلالی ہے
ریاضی فہم و گلشن طبع و دانا دل، علی فطرت
زباں تیری فصیحی و سخن تیرا زُلالی ہے
نگہ میں فیضی و قدسی سرشتِ طالب و شیدا
کمالِ بدر دل اہلی و انکھیاں سوں غزالی ہے
تو ہی ہے خسرو روشن ضمیر و صائب و شوکت
ترے ابرو یہ مجھ بیدل کوں طغرائے وصالی ہے
ولیؔ تجھ قد و ابرو کا ہوا ہے شوقی و مائل
تو ہر اک بیت عالی ہور ہر اک مصرع خیالی ہے
392
نہ پوچھو خود بخود اس شوخ میں صاحب کمالی ہے
نگاہ پاک بازاں حسن کے گلشن کا مالی ہے
نہ جانوں کیا بلا لاوے گی اُس کے کان سوں لگ کر
بلائے جان مشتاقاں کہ جس کا نانون بالی ہے
سدا اس مو کمر کا وصف آتا ہے زباں اوپر
عزیزاں طبع میں میری عجب نازک خیالی ہے
زباں پر قمریاں کی یہ سخن جاری ہے گلشن میں
کہ عشقِ سرو قد رکھتا ہے جس کی فکر عالی ہے
ہمیشہ جیوں صنوبر، راست بازاں وجد کرتے ہیں
مگر قدِ پری رو مصرع برجستہ حالی ہے
عیاں ہے شاہ بیتِ عبہری تجھ چشم جادو سوں
کرشمہ تجھ بھواں میں معنیِ بیت ہلالی ہے
کہا اس شکریں گفتار نے میرے سخن سن کر
کہ طوطی کی زباں اوپر عجب شیریں مقالی ہے
نہ جانوں کس پری رو کا گزر ہے آج مجلس میں
کہ حیرت سوں ہر اک گل رو مثال نقش قالی ہے
ولیؔ وو سرو قامت ہے بہار گلشن خوبی
نہ رہنا اس کی صحبت میں نپٹ بے اعتدالی ہے
393
باغِ ارم سوں بہتر موہن تری گلی ہے
ساکن تری گلی کا ہر آن میں ولیؔ ہے
تجھ عشق کی صدا سوں لبریز ہوں سراپا
ہر استخواں میں میری آواز بانسلی ہے
بولے ہیں اہل دل نے یہ بات تہہ دلی سوں
عارف کا دل بغل میں قرآن ہیکلی ہے
تجھ مکھ کے گرد یو خط باریک ہے ولیکن
انکھیاں کوں نور دینے جیوں قطعۂ جلی ہے
امید ہے کہ ہووے مجھ درد سر کا درماں
جامے کا رنگ تیرے اے شوخ صندلی ہے
یک بار دل جلے کوں ٹھہرا کدھی نہ دیکھا
تیری نگاہ ظالم مانند بیجلی ہے
آتا نہیں ہے تجھ بن اک آن خواب راحت
تکیہ مرے سرہانے ہر چند مخملی ہے
ہرگز ترے دہن میں نئیں رنگ و بو سخن کا
گویا دہن یہ تیرا تصویر کی کلی ہے
مجکوں کہا سجن نے لاؤں گا بندگی میں
زمرے میں شاعراں کے ہر چند تو ولیؔ ہے
394
قد میں تیرے وو خوش خرامی ہے
جس سوں تجھ ناز کی تمامی ہے
گرچہ سب خوب رو ہیں خوب دلے
سرو میرا سبھوں میں نامی ہے
ہر پلک تیری اے نگۂ بدمست
نشّہ بخشی میں شعر جامی ہے
آتش شوق زلف سوں تیری
دل عاشق کباب شامی ہے
سرو کوں باوجود آزادی
تجھ ستی دعوئ غلامی ہے
جو بندھا تجھ نگین لب سوں جانا
عشق بازاں کے حق میں خامی ہے
تب کا مشتاق جی ہے لکھمن سوں
کِشن سوں جب کہ رام رامی ہے
اے ولیؔ اس کے بیت ابرو ہیں
معنیِ نسخۂ حسامی ہے
395
گرچہ طناز یار جانی ہے
مایۂ عیش جاودانی ہے
یاد کرتی ہے خط کوں زلف صنم
کام ہندو کا بید خوانی ہے
تجھ سوں ہرگز جدا نہ ہوں اے جاں
جب تلک مجھ میں زندگانی ہے
آشنا نونہال سوں ہونا
ثمرۂ گلشنِ جوانی ہے
دل میں آیا ہے جب سوں سرو رواں
تب سوں مجھ شعر میں روانی ہے
اے سکندر نہ ڈھونڈ آب حیات
چشمۂ خضر خوش بیانی ہے
وقت مرنے کے بولتا ہے پتنگ
کہ محبت رفیق جانی ہے
گرچہ پابند لفظ ہوں لیکن
دل مرا عاشقِ معانی ہے
اے ولیؔ تیغ غم سوں خوف نئیں
خاکساری بدن پہ جوشن ہے
396
سدا ہم کوں خیال رنگ روے یار جانی ہے
ہمارے شیشۂ دل میں شرابِ ارغوانی ہے
زبانِ حال سوں کہتا ہے خضرِ سبزۂ نو خط
بیاں کرنا صنم کے لب کا آب زندگانی ہے
گیا ہے حسن کی شادی میں از بس بے تکلف ہو
سراپا عشق کے بر میں لباس زعفرانی ہے
تواضع کی توقع نونہالاں سوں نہ رکھ اے دل
کہ بے باکی و شوخی لازم وقت جوانی ہے
ہوا ہے شوق زلف مو کمر سوں جو سخن سرزد
ولیؔ وو شعر نازک موج دریائے معانی ہے
397
مو بہ مو میں تجھ غم سوں ضعف و ناتوانی ہے
ٹک کرم کرو ساجن، وقت مہربانی ہے
دیکھنے سوں خوباں کے منع مت کر اے زاہد
موسم بزرگی نئیں عالم جوانی ہے
جیو یاد کرتا ہے نو بہار کے خط کوں
رات دن برہمن کا کام بید خوانی ہے
کنج غم میں تنہا نئیں عاشق بلا انگیز
گر شب جدائی میں آہ یار جانی ہے
یک سخن ترے لب سوں اے مسیح روح افزا
حق میں جاں نثاروں کے آب زندگانی ہے
تجھ سوں ہم نشیں ہونا، اے گل بہار دل
وجہ شادمانی ہے، عیش جاودانی ہے
نام اس دو رنگے کا، کیوں نہ ہو گل رعنا
چیرہ ارغوانی ہے، جامہ زعفرانی ہے
جب سوں نو خط گل رو، جلوہ گر ہے گلشن میں
سبزہ کہربائی ہے، رنگ گل خزانی ہے
سادہ رو جہاں کے سب گوش رکھ کے سنتے ہیں
اے ولیؔ سخن تیرا، گوہر معانی ہے
398
تجھ کوں خوباں میں بادشاہی ہے
سَر اُپر سایۂ الٰہی ہے
باعثِ دل رُبائیِ عاشق
خوش نگاہوں میں خوش نگاہی ہے
کم نکلنے میں اس پری رو کے
عشق بازاں کی خیرخواہی ہے
جگ میں تیری بھواں کی شہرت سوں
کشتیِ عاشقاں تباہی ہے
قتل عشاق پر بندھیا ہے کمر
غمزۂ تیغ زن سپاہی ہے
شاہ خوباں کے رخ پہ سبزۂ خط
حسن کی فوج کی سیاہی ہے
کیوں نہ ہو عشق باز خسرو وقت
عشق کا داغ چتر شاہی ہے
نو خطاں کی طرف نہ جا زاہد
زہد و تقویٰ کا واں مناہی ہے
عشق بازاں میں ہے ولیؔ ثابت
طالبِ گل رخاں کماہی ہے
399
مت تصور کرو مجھ دل کوں کہ ہرجائی ہے
چمن حسن پری رو کا تماشائی ہے
گل رخا کیوں نہ کہیں تجکوں سکندر طالع
جلوہ گر بر میں ترے جامۂ دارائی ہے
یاد کرتا ہے سدا مصرع زنجیر جنوں
دل بے تاب کہ تجھ زلف کا سودائی ہے
چشم خونبار کوں رونے سوں نئیں ہرگز غم
خط شب رنگ ترا سرمۂ بینائی ہے
دیکھ کر اس کوں ہوئے سرو و صنوبر پابند
اس قدر قد میں ترے جلوۂ رعنائی ہے
شیخ مت گھر سوں نکل آج توں خوباں کے حضور
گول دستار تری باعث رسوائی ہے
اے ولیؔ رہنے کوں دنیا میں مقام عیش
کوچۂ یار ہے یا گوشۂ تنہائی ہے
400
شکر وو جان گئی، پھر آئی
عیش کی آن گئی پھر آئی
تیرے آنے ستی اے راحت جاں
شہر کی جان گئی پھر آئی
پھر کے آنا ترا ہے باعث شوق
جس طرح تان گئی پھر آئی
تیرے آنے ستی اے مایۂ حسن
عشق کی شان گئی پھر آئی
اے ولیؔ قند مکرر ہے یو بات
شکر، وو جاں گئی پھر آئی
401
ترا مکھ ہے چراغ دل رُبائی
عیاں ہے اس میں نور آشنائی
لکھا ہے تجھ قد اوپر کاتب صنع
سراپا معنیِ نازک ادائی
تو ہے سر پاؤں لگ از بسکہ نازک
نگہ کرتی ہے تجھ پگ کوں حنائی
ہوا تیری نگہ کی بسکہ ہے مجھ
ہوا ہے دل مِرا تیر ہوائی
ثنا تیری کیا ہوں ورد از بس
بجا ہے گر کہیں مجھ کوں ثنائی
محبت میں تری اے گوہر پاک
ہوا ہے رنگ میرا کہربائی
تری انکھیاں کی مستی دیکھنے میں
گئی ہے پارسا کی پارسائی
ولیؔ ہنستی ہے ہر شب بزم میں شمع
پتنگ میں دیکھ کر عشقِ ریائی
402
سجن میں ہے شعار آشنائی
نہ ہو کیوں دل شکار آشنائی
صنم تیری مروت پر نظر کر
ہوا ہوں بے قرار آشنائی
نپٹ دشوار تھا مجھ دل میں اے جاں
زمانِ انتظار آشنائی
ہوا معلوم تجھ ملنے سوں لالن
کہ رنگیں ہے بہار آشنائی
حیا کے آب سوں باغ وفا میں
رواں ہے جوئبار آشنائی
وفا دشمن نہ ہو اے آشناور
وفا پر ہے مدار آشنائی
مروت کے ہمیشہ ہاتھ میں ہے
عنان اختیار آشنائی
مدارا ترک مت کر اے حیا دوست
مدارا ہے حصار آشنائی
ولیؔ اس واسطے گریاں ہوں ہر آن
کہ تر ہو سبزۂ زار آشنائی
403
تجھ مکھ کا رنگ دیکھ کنول جل میں جل گئے
تیری نگاہِ گرم سوں گَل گَل پگھل گئے
ہر اک کوں کاں ہے تاب جو دیکھے تری طرف
شیراں تری نگاہ کی دہشت سوں ٹل گئے
صافی ترے جمال کی کاں لگ بیاں کروں
جس پر قدم نگاہ کے اکثر پھسل گئے
مرنے ستی جو آگئے مُوئے اس جگت منیں
تصویر کی نمط وو خودی سوں نکل گئے
پائے ہیں جو کہ لذت دیں جگ میں اے ولیؔ
وو ہات اس دنیا منیں حسرت سوں مل گئے
404
اندوہ و غم کی بات ترے باج بن گئی
آواز میری آہ کی پھر تا گگن گئی
تا حشر اس کا ہوش میں آنا محال ہے
جس کی طرف صنم کی نگاہِ نین گئی
سُرمے کا منھ سیاہ کیا اُن نے جگ منیں
جس کی نیَن میں پیو کی خاک چرن گئی
تنہا سواد ہند میں شہرت نئیں صنم
تجھ زلف مشک بو کی خبر تا خُتن گئی
اب لگ ولیؔ پیا نے دکھایا نئیں درس
جیوں شمع انتظار میں ساری رَیَن گئی
****

2 تبصرے:

Zulfiqar Naqvi کہا...

لاجواب کام ۔۔۔واااہ

Tahir Raza کہا...

واللہ جوااب نہین جتنی بھی داد دون کم ہے برملا مجھے ولی دکنی کے مزید مکمل کلام کا لنک چاہیے ہو سکے تو عنایت کرین

رابطہ فارم

نام

ای میل *

پیغام *